حکم اور حاکم

سوال۲۱۸:۔رویت ہلال کے مسئلہ میں حاکم اور اسکے حکم سے کیا مراد ہے؟
’’حکم‘‘ یعنی مجتہد جامع الشرائط کا جزئی موضوعات جیسے اول ِ ماہ کا ثبوت ، سرپرست کا تعین ، متولی کا تعین، لوگوں کے درمیان جھگڑے کا خاتمہ وغیرہ میں شرعی موازین و ضوابط کی رو سے انشاء کرنا اور یہ حکم تمام مکلفین پر حتیٰ کہ مجتہدین پر بھی حجت ہے اور سب پر اس حکم کی اطاعت و پیروی کرنا ضروری ہے ،اور کوئی مجتہد بھی اُس کے حکم کی اطاعت کو نقص ورد نہیں کر سکتا مگر یہ کہ اُسے یقین ہو جائے کہ اس نے اشتباہ وخطا کی ہے۔ حکم سے مراد ، فقط خبرواعلان نہیں ہے بلکہ لفظ ’’حکَمتُ‘‘یا اسکے ہم معانی الفاظ استعمال کئے جائیں۔
تمام رسالہ عملیہ (توضیح المسائل) میں حاکم سے مراد ،مجتہد جامع الشرائط صاحبِ فتویٰ ہی ہے۔(۱)

(حوالہ)
(۱)مبانی تکملۃالمنہاج ،کتاب، القضاء،ص ۳،التنقیح فی شرح العروثقی،کتاب الاجتہادوالتقلید ،م ۵۷،۶۸،
عروۃ الوثقیٰ،م۵۷، ،توضیح المسائل مراجع ،م۷