Danishkadah Danishkadah Danishkadah
حضرت محمد مصطفیٰﷺ نے فرمایا، حسن ؑ کے حصے میں میرا رعب و دبدبہ اور سیاست ہے اور حسین ؑ کے حصہ میں میری شجاعت اور سخاوت ہے خصال صدوق ؒباب الاثنین حدیث122، بحارالانوارکتاب تاریخ فاطمۃ ؑوالحسن ؑ والحسین ؑ باب12

خاتمہ

خاتمہ موت کے آداب اور اس سے متعلق چند دعائیں

موت کے آثار رونما ہونے پر توبہ کرے

جاننا چاہیے کہ جب کسی فرد پر موت کے آثار ظاہر ہونے لگیں تو جسے سب سے پہلے مرنے والے کے حالات کو سنبھالنا چاہیے وہ خود مرنے والا ہی ہے جس کو آخرت کا سفر در پیش ہے اور اسے اس سفر کے لیے زاد راہ کی ضرورت ہے . پس سب سے پہلا اور ضروری کام جو اسے کرنا چاہیے وہ اپنے گناہوں کا اعتراف اور کوتاہیوں کا اقرار ہے کہ گذشتہ پر ندامت کے ساتھ صدق دل سے توبہ کرے اور خدائے تعالیٰ کی بارگاہ میں آہ و زاری کرے کہ وہ اس کے گزشتہ گناہوں کو معاف کر دے اور پیش آمدہ حالات اور ہولناک واقعات میں اس کو نہ تو خود اس کے حوالے کرے اور نہ دوسروں کے سپرد کرے .

حقوق اللہ اور حقوق العباد کی طرف توجہ

پھر اپنی مصیبت کی طرف توجہ کرے اور حقوق اللہ و حقوق العباد جو اس کے ذمے نکلتے ہیں انہیں خود ادا کرے اور دوسروں کے سپرد نہ کرے کیونکہ مرنے کے بعد اس کے سبھی اختیارات اوروں کے ہاتھ آجاتے ہیں اور اس کے پاس نہیں رہتے، پھر وہ اپنے مال و متاع کو حسرت کی نگاہوں سے دیکھتا رہتا ہے تب جن و انس میں سے شیطان اس مرنے والے کے وارثوں کے دلوں میں وسوے ڈالتے رہتے ہیں اور اس امر میں مانع ہوتے ہیں کہ وہ اس کے ذمے رہ جانے والے واجبات سے اس کو بری کریں . اس وقت یہ بات اس کے بس سے باہر ہوتی ہے کہ کسی سے یہ کہے کہ اسے دنیا میں لوٹا یاجائے تا کہ وہ اپنے مال سے شائستہ اعمال بجا لائے اس وقت اس کی چیخ و پکار کوئی نہیں سنتا اور اس کی حسرت و پشیمانی بے سود ہوتی ہے لہذا وہ اپنے مال میں ایک تہائی کی وصیت کر دے کہ یہ اس کے قریبی رشتہ داروں کو دیاجائے اور اس میں سے صدقہ و خیرات اور جو اس کے مناسب حال ہے خرچ کیا جائے ،کیونکہ وہ ایک تہائی سے زیادہ کی وصیت کا اختیار نہیں رکھتا پھر وہ اپنے مومن بھائیوں سے معافی مانگے کہ ان کے جو حقوق اس پر ہیں ان سے بری الذمہ ہو جائے مثلاً جس کی غیبت کی ہے یا توہین کی ہے یا کسی کو دکھ پہنچایا ہے وہ افراد موجود ہوں تو ان سے التماس کرے کہ وہ اسے معاف کر دیں اگر وہ موجود نہ ہوں تو مومن بھائیوں سے درخواست کرے کہ وہ اس کی معافی کے لیے دعا مانگیں تاکہ جو کچھ اس کے ذمہ ہے وہ اس سے بری اور سبکدوش ہو جائے پھر اپنے اہل و عیال اور اولاد کے معاملات کو خداوند کریم پر توکل کے بعد کسی امانت دار شخص کے سپرد کرے اور اپنے چھوٹے بچوں کے لیے کوئی وصی مقرر کرے اس کے بعد اپنا کفن منگوائے اور جو کچھ مفصل کتابوں میں درج ہے، یعنی کلمہ شہادتین ، اذکار، عقائد، دعائیں، اور آیات اس پر خاک شفا سے لکھوائے ، یہ اس صورت میں ہے کہ اس سے پہلے غفلت میں رہا اور اپنا کفن تیار کر کے نہ رکھا ہو ورنہ مومن کو چاہیے کہ وہ ہمیشہ اپنا کفن تیار کر کے رکھے ،جو ہر وقت اس کے پاس موجود رہے . جیسا کہ امام جعفر صادق فرماتے ہیں کہ جس شخص کا کفن اس کے گھر میں موجود ہوتا ہے اس کو غافلوں کی فہرست میں نہیں لکھا جاتا اور وہ جب بھی اپنے کفن پر نظر کرتا ہے تو اسے ثواب ملتا ہے اور اب اپنے بیوی بچوں سے بے فکر ہوکر پوری طرح سے بارگاہ رب العزت کی طرف متوجہ ہوجائے اور اس کی یاد میں لگ جائے یہ فکر کرے کہ یہ فانی امور اس کے کام نہیں آئیں گے اور پروردگار کی مہربانی اور اس کے لطف و کرم کے بغیر دنیا و آخرت میں کوئی چیز اسے فائدہ نہیں دے گی اور اس کی فریاد رسی نہیں کرے گی۔ اس بات کا یقین کرے کہ اگر حق تعالیٰ کی ذات پر توکل کرے گا تو اس کے پسماندگان کے تمام معاملات اچھے طریقے سے انجام پائیں گے اور یہ بھی ذہن میں رکھے کہ اگر وہ خود زندہ رہ جائے تو بھی مشیت الٰہی کے بغیر و ہ انہیں کوئی فائدہ نہیں پہنچا سکے گا نہ ان سے کسی ضرر کو دور کر سکے گا اور جس خدا نے انہیں پیدا کیا ہے وہ ان پر خود اس سے بھی زیادہ مہربان ہے ،اس وقت اسے رحمت خداوندی کا بہت زیادہ امیدوار ہونا چاہیے. نیز حضرت رسول(ص) اکرم اور ائمہ معصومین کی شفاعت کی آس رکھنی چاہیے ان کی تشریف آوری کا منتظر ہونا چاہیے ، بلکہ اس بات کا یقین رکھنا چاہیے کہ وہ ذوات مقدسہ اس وقت تشریف فرما ہوتی اور اپنے شیعوں کو خوشخبریاں دیتی ہیں اور ملک الموت سے ان کے بارے میں سفارشیں کرتی ہیں

تاکید در امر وصیت

شیخ طوسی(رح) مصباح المتہجد میں فرماتے ہیں کہ وصیت کرنا مستحب ہے اور انسان اسے ترک نہ کرے کیونکہ روایت میں ہے کہ انسان کے لیے بہتر یہ ہے کہ وہ کوئی ایسی رات بسر نہ کرے جس میں وصیت نامہ اس کے سر ہانے نہ پڑا ہو ، بیماری کی حالت میں اس کے بارے میں زیادہ تاکید کی گئی ہے اور ضروری ہے کہ اچھی سے اچھی وصیت کرے اپنے آپ کو حقوق اللہسے عہدہ برآ کرے اور لوگوں پر کیے ہوئے، مظالم سے گلو خلاصی کرائے حضرت رسول اللہ سے روایت ہے کہ جو شخص موت کے وقت اچھی وصیت نہ کرے تو اس کی عقل اور مروت میں نقص ہوتا ہے، لوگوں نے پوچھا یارسول(ص) اللہ! کیسی وصیت اچھی ہوتی ہے؟ آپ(ع) نے فرمایا: جب انسان کا وقت وفات قریب ہو اور لوگ اس کے پاس جمع ہوں تو یہ کہے:

اَللّٰہُمَّ فاطِرَ السَّمٰوَاتِ وَالْاََرْضِ عالِمَ الْغَیْبِ وَالشَّہادَۃِ الرَّحْمنَ

اے معبود! اے آسمانوں اور زمین کے پیدا کرنے والے نہاں و عیاں کے جاننے والے بڑے رحم والے

الرَّحِیمَ، إنِّی ٲَعْہَدُ إلَیْکَ ٲَنِّی ٲَشْہَدُ ٲَنْ لاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ وَحدَہُ

مہربان میں تجھ سے عہد کرتا ہوں، میں گواہی دیتا ہوں کہ نہیں کوئی معبود مگر اللہ جو یکتا ہے

لاَ شَرِیکَ لَہُ وَٲَنَّ مُحَمَّداً صَلَّی اﷲُ عَلَیْہِ وَآلِہِ عَبْدُہُ وَرَسُولُہُ

کوئی اس کا شریک نہیں اور یہ کہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ اس کے بندے اور رسول(ص)ہیں

وَٲَنَّ السَّاعَۃَ آتِیَۃٌ لاَ رَیْبَ فِیہا وَٲَنَّ اﷲَ یَبْعَثُ مَنْ فِی الْقُبُورِ

یقیناً قیامت آنے والی ہے ، اس میں کچھ شبہ نہیں اللہ ان لوگوں کو اٹھائے گا جو قبروں میں ہیں

وَٲَنَّ الْحِسابَ حَقٌّ وَٲَنَّ الْجَنَّۃَ حَقٌّ وَٲَنَّ مَا وُعِدَ فِیہا مِنَ النَّعِیمِ

حساب و کتاب حق ہے، جنت اور وہ نعمتیں بھی جو اس میں کھانے پینے

مِنَ الْمَٲْکَلِ وَالْمَشْرَبِ وَالنِّکاحِ حَقٌّ وَٲَنَّ النَّارَ حَقٌّ وَٲَنَّ الْاِیمانَ حَقٌّ

کے لیے دی جائیں گی حق ہیں نکاح حق ہے، جہنم حق ہے ایمان حق ہے،

وَٲَنَّ الدِّینَ کَما وَصَفَ وَٲَنَّ الْاِسْلامَ کَما شَرَعَ وَٲَنَّ الْقَوْلَ

دین حق ہے، جیسے اس نے بتایا اسلام حق ہے جیسے اس نے حکم دیا حق بات وہی ہے

کَما قالَ وَٲَنَّ الْقُرْآنَ کَما ٲَنْزَلَ، وَٲَنَّ اﷲَ ہُوَ الْحَقُّ الْمُبِین

جو اس نے کہی قرآن حق ہے جیسے اس نے نازل کیا اور اللہ واضح حق ہے، میں اس دنیا

وَٲَنِّی ٲَعْہَدُ إلَیْک فِی دارِ الدُّنْیا ٲَنِّی رَضِیتُ بِکَ رَبّاً

میں اس دنیا میں تیرے ساتھ عہد کرتا ہوں کہ یقینا میں راضی ہوں کہ تو میرا رب ہے

وَبِالاِْسْلامِ دِیناً وَبِمُحَمَّدٍ صَلَّی اﷲُ عَلَیْہِ وَآلِہِ نَبِیّاً وَبِعَلِیٍّ وَلِیّاً

اسلام میرا دین ہے ،حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ میرے نبی ہیں، علی(ع) میرے ولی ہیں

وَبِالْقُرْآنِ کِتاباً وَٲَنَّ ٲَہْلَ بَیْتِ نَبِیِّکَ عَلَیْہِ وَعَلَیْہِمُ اَلسَّلَامُ ٲَئِمَّتِی

قرآن میری کتاب ہے اور اس پر کہ تیرے نبی کے اہل بیت میرے امام ہیں تیرے نبی اور ان اماموں پر سلام

اَللّٰہُمَّ ٲَنْتَ ثِقَتِی عِنْدَشِدَّتِی وَرَجائِی عِنْدَ کُرْبَتِی وَعُدَّتِی عِنْدَ

اے معبود! سختی کے وقت تو میرا سہارا ہے، پریشانی میں تو ہی میری آس ہے تو ہی میرا ذخیرہ ہے، ان

الْاَُمُورِ الَّتِی تَنْزِلُ بِی وَٲَنْتَ وَلِیِّی فِی نِعْمَتِی والہی والہ ابائی

حادثوں میں جو مجھ پر آ پڑتے ہیں تو میرا نعمت دینے والا مولا ہے میرا اور میرے بزرگوں کا معبود ہے

صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ وَلاَ تَکِلْنِی إلی نَفْسِی طَرْفَۃَ عَیْنٍ ٲَبَداً وَآنِسْ

رحمت فرما محمد(ص) اور ان کی آل(ع) پر اور مجھے پلک چھبکنے تک بھی میرے نفس کے حوالے نہ کر قبر کی تنہائی

فِی قَبْرِی وَحْشَتِی وَاجْعَلْ لِی عِنْدَکَ عَہْداً یَوْمَ ٲَلْقاکَ مَنْشُوراًَ ۔

میں میرا ہمدم بن اپنے ہاں میرے لیے عہد مقرر فرما جب حشر میں تیرے سامنے حاضر ہوں گا۔

عہد نامہ میت

پس یہی عہد میت ہے جس دن وہ اپنی حاجات کی وصیت کر رہا ہوتا ہے اور وصیت کرنا ہر مسلمان پر واجب ہے امام جعفر صادق فرماتے ہیں کہ اس بات کی تصدیق خداوند عالم سورہ مریم میں فرما رہا ہے:’’ لَا یَمْلِکونَ الشَّفَاعَۃَ اِلَّامَنِ اتَّخَذَ عِنْدَ الرَّحْمٰنِ عَھْداً‘‘ یعنی شفاعت کے مالک نہیں ہوں گے مگر وہ لوگ جنہوں نے خدائے رحمن کے ہاں سے عہد لے لیا ہے اور یہ وہی عہد ہے . حضرت رسول(ص) نے امام علی بن ابیطالب(ع) سے فرمایا: یہی چیز اپنے اہل بیت اور اپنے شیعوں کو بھی تعلیم کرو اور اس کے ساتھ ہی فرمایا کہ یہی چیز مجھے جبرائیل نے بتائی ہے. پھر شیخ فرماتے ہیں کہ یہی چیز لکھ کر میت کے جرید تین کے ساتھ رکھی جاتی ہے اور اسے لکھنے سے پہلے یہ دعا پڑھی جائے:

بِسْمِ اﷲِ الرَّحْمنِ

شروع کرتا ہوں اللہ کے نام جو رحمن

الرَّحِیمِ ٲَشْہَدُ ٲَنْ لاَ

رحیم ہے میں گواہی دیتا ہوں کہ

إلہَ إلاَّ اﷲُ وَحْدَہُ لاَ

نہیں کوئی معبود مگر اللہ جو یکتا ہے

شَرِیکَ لَہُ وَٲَشْہَدُ

کوئی اس کا شریک نہیں میں گواہی دیتا ہوں

ٲَنَّ مُحَمَّداً عَبْدُہُ

کہ محمدﷺ اس کے بندے

وَرَسُولُہُ صَلَّی اللہ

اور رسول(ص)ہیں ، خدا رحمت کرے ان

عَلَیْہِ وَآلِہِ، وَٲَنَّ

پر اور ان کی آل(ع) پر

الْجَنَّۃَ حَقٌّ وَٲَنَّ النَّارَ

جنت حق ہے، جہنم

حَقٌّ وَٲَنَّ السَّاعَۃَ

حق ہے، قیامت حق ہے،

حَقٌّ آتِیَۃٌ لاَ رَیْبَ فِیہا

وہ آنے والی ہے ، اس میں شک نہیں

وَٲَنَّ اﷲَ یَبْعَثُ مَنْ فِی الْقُبُورِ

کہ اللہ ان لوگوں کو اٹھائے گا جو قبروں میں ہیں۔

پھر یہ لکھے:

بِسْمِ اﷲِ الرَّحْمن

شروع کرتا ہوں اللہ کے نام جو رحمن

الرَّحِیمِ شَہِدَ الشُّہُودُ

رحیم ہے اس تحریر میں نام بردہ

الْمُسَمَّوْنَ فِی ہذَا

گواہی دیتے ہیں کہ

الْکِتابِ ٲَنَّ ٲَخاہُمْ

اللہ عزو جل کے دین میں

فِی اﷲِ عَزَّوَجَلَّ فلان بن فلان۔

ان کے بھائی نے ﴿فلان بن فلان﴾۔

یہاں مرنے والے شخص کا نام لکھے۔

ٲَشْہَدَ ہُمْ وَاسْتَوْدَعَہُمْ

انہیں گواہ بنایا ان کے سپرد کیا اور ان

وَٲَقَرَّ عِنْدَہُمْ ٲَنَّہُ یَشْہَدُ

کے سامنے اقرار کیا کہ وہ گواہی دیتا

ٲَنْ لاَ إلہَ إلاَّ اَﷲُ وَحْدَہُ

ہے کہ نہیں معبود مگر اللہ جو یکتا ہے

لاَ شَرِیکَ لَہُ، وَٲَنَّ

کوئی اس کا شریک نہیں اور یہ کہ

مُحَمَّداً صَلَّی اﷲُ

حضرت محمد صلی اللہ

عَلَیْہِ وَآلِہِ عَبْدُہُ وَرَسُولُہُ

علیہ و آلہ اس کے بندے اور اس

وَٲَنَّہُ مُقِرٌّ بِجَمِیعِ

کے رسول(ص) ہیں اور وہ تمام

الْاََنْبِیَائِ وَالرُّسُلِ

انبیاء و رسل کا

عَلَیْہِمُ اَلسَّلَامُ، وَٲَنَّ

اقرار کرتا ہے اور اللہ

عَلِیّاً وَلِیُّ اﷲِ وَ إمَامُہُ

کے ولی علی(ع) اس کے امام ہیں ، ان

وَٲَنَّ الْاََئِمَّۃَ مِنْ وُلْدِہِ

کی اولاد سے ائمہ اس

ٲَئِمَّتُہُ وَٲَنَّ ٲَوَّلَہُمُ

کے امام ہیں کہ ان میں اول

الْحَسَنُ وَالْحُسَیْنُ

حسن ہیں اور حسین

وَعَلِیُّ بْنُ الْحُسَیْن

علی بن الحسین علیہماالسلام،

وَمُحَمَّدُ بْنُ عَلِیٍّ

محمد ابن علی علیہماالسلام،

وَجَعْفَرُ بْنُ مُحَمَّدٍ

جعفر بن محمد علیہماالسلام،

وَمُوسَی بْنُ جَعْفَرٍ

موسیٰ بن جعفرعلیہماالسلام،

وَعَلِیُّ بْنُ مُوسَی

علی بن موسیٰ علیہماالسلام،

وَمُحَمَّدُ بْنُ عَلِیٍّ

محمد بن علی علیہماالسلام،

وَعَلِیُّ بْنُ مُحَمَّدٍ

علی بن محمد علیہماالسلام،

وَالْحَسَنُ بْنُ عَلِیٍّ

حسن بن علی علیہماالسلام

وَالْقائِمُ الْحُجَّۃُ عَلَیْہِمُ

اور حجت القائم علیہماالسلام

اَلسَّلَامُ وَٲَنَّ الْجَنَّۃَ

امام ہیں اور یہ کہ جنت

حَقٌّ وَالنَّارَ حَقٌّ وَالسَّاعَۃَ

حق ہے، جہنم حق ہے، قیامت آنے

آتِیَۃٌ لاَ رَیْبَ فِیہا

والی ہے، اس میں کوئی شبہ نہیں

وَٲَنَّ اﷲَ یَبْعَثُ مَنْ

اور اللہ انہیں اٹھائے گا جو قبروں

فِی الْقُبُورِ وَٲَنَّ مُحَمَّداً

میں ہیں اور یہ کہ حضرت محمد

صَلَّی اﷲُ عَلَیْہِ وَآلِہِ

صلی اللہ علیہ و آلہ

عَبْدُہُ وَرَسُولُہُ، جائَ

اس کے بندے اور رسول ہیں جو حق

بِالْحَقِّ وَٲَنَّ عَلِیّاً وَلِیُّ

لے کر آئے . علی خدا کے ولی

اﷲِ وَالْخَلِیفَۃُ مِنْ

اور خدا کے رسول(ص) کے

بَعْدِ رَسُولِ اﷲِ

بعد ان کے خلیفہ ہیں، خدا رحمت

صَلَّی اﷲُ عَلَیْہِ وَآلِہِ

کرے ان پر اور ان کی آل(ع) پر

وَمُسْتَخْلَفُہُ فِی ٲُمَّتِہِ

رسول(ص) نے انہیں اپنی امت میں

مُؤَدِّیاً لِاَمْرِ رَبِّہ

خلیفہ بنایا اپنے رب

تَبَارَکَ وَتَعَالَی وَٲَنَّ

تبارک و تعالیٰ کے حکم سے

فاطِمَۃَ بِنْتُ رَسُولِ

اور فاطمہ دختر رسول سلام اللہ علیہا

اﷲِ وَابْنَیْہَا الْحَسَنَ

اور ان کے دو بیٹے حسن اور حسین

وَالْحُسَیْنَ إبْنَا رَسُولِ

رسول اللہ (ص) کے دو بیٹے ان کے

اﷲِ وَسِبْطاہُ وَ إمَامَا

دو نواسے دونوں ہدایت والے امام

الْہُدَی وَقائِدا الرَّحْمَۃِ

رحمت والے پیشوا ہیں

وَٲَنَّ عَلِیّاً وَمُحَمَّداً

اور علی ، محمد،

وَجَعْفَراً وَمُوسَی

جعفر، موسیٰ،

وَعَلِیّاً وَمُحَمَّداً وَعَلِیّاً

علی، محمد، علی،

وَحَسَناً وَالْحُجَّۃَ عَلَیْہِمُ

حسن اور حجت القائم

اَلسَّلَامُ ٲَئِمَّۃٌ وَقادَۃٌ

امام سردار

وَدُعاۃٌ إلَی اﷲِ جَلَّ

اور خدائے جل و علا کی طرف

وَعَلا وَحُجَّۃٌ عَلَی عِبادِہِ

بلانے والے اور اس کے بندوں پر حجت ہیں.

پھر لکھے :

یَا شُہُوْدُ ۔

اے گواہو!

اے فلاں اے فلاں کہ جن کا اس تحریر میں نام لیا گیا ہے، اس شہادت کو میرے لیے اس وقت تک قائم رکھو، جب حوض کوثر پر مجھ سے ملو گے. پھر گواہ یہ کہیں کہ اے فلاں.

نَسْتَوْدِعُکَ اﷲَ

ہم تجھے اللہ کے حوالے کرتے ہیں

وَالشَّہادَۃُ وَالْاِقْرارُ

اس گواہی، اقرار

وَالْاِخائُ مَوْدُوعَۃٌ

اور بھائی چارے کے ساتھ جو

عِنْدَ رَسُولِ اﷲِ صَلَّی

رسول اللہ صلی

اﷲُ عَلَیْہِ وَآلِہِ وَنَقْرَٲُ

اللہ علیہ و آلہ کے پاس امانت ہے ،

عَلَیْکَ السَّلامَ

ہم کہتے ہیں تم پر سلام

وَرَحْمَۃُ اﷲِ وَبَرَکاتُہ

خدا کی رحمت اور برکتیں ہوں ۔

آداب محتضر اور تلقین کلمات فرج

اس کے بعد پرچے کو تہہ کر کے اس پر مہر لگائے نیز اس پر گواہوں کی مہریں اور خود میت کی بھی مہر لگائی جائے پھر اسے میت کی داہنی طرف جریدے کے ساتھ رکھ دیا جائے . بہتر یہ ہے کہ یہ نوشتہ کافور یا لکڑی کی نوک سے لکھا جائے اور اسے خوشبو و غیرہ سے معطر نہ کیا جائے۔ بہتر ہے کہ قرب موت مرنے والے کے پیروں کے تلوے قبلہ کی طرف کیے جائیں اس کے ساتھ ایک ایسا شخص ہونا چاہیے جو سورہ یاسین اور صافات کی تلاوت اور ذکر خدا کرے، مرنے والے کو شہادتین کی تلقین کرے ایک ایک امام کا نام لے کر اس سے اقرار کرائے اور اسے کلمات فرج کی تلقین کرے اور وہ یہ ہیں :

لاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ الْحَلِیمُ

نہیں ہے معبود مگر اللہ جو بردبار اور

الْکَرِیمُ لاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ

سخی ہے، نہیں ہے معبود مگر اللہ جو

الْعَلِیُّ الْعَظِیمُ سُبْحانَ

بلند و بزرگ تر ہے ، پاک تر ہے

اﷲِ رَبِّ السَّمٰوَاتِ

اللہ جو مالک ہے سات آسمانوں کا

السَّبْعِ وَرَبِّ الْاََرَضِینَ

اور مالک ہے سات زمینوں کا

السَّبْعِ وَمَا فِیہِنَّ وَمَا

اور جو کچھ ان میں ہے اور جو

بَیْنَہُنَّ وَمَا تَحْتَہُنَّ

کچھ ان کے درمیان ہے اور جو کچھ

وَرَبِّ الْعَرْشِ الْعَظِیمِ

ان کے نیچے ہے اور عظمت والے

وَالْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ

عرش کا مالک ہے، حمد ہے، اللہ کے

الْعالَمِینَ، وَالصَّلاۃُ

لیے جو عالمین کا رب ہے اور درود

عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ الطَّیِّبِینَ۔

ہو حضرت محمدﷺ اور ان کی پاک آل(ع) پر۔

یہ احتیاط کی جائے کہ مرنے والے کے پاس کوئی جنب یا حائض نہ آئے، جب اس کی روح پرواز کرجائے تو اسے سیدھا لٹا کر اس کی آنکھیں بند کردی جائیں باز و سیدھے کر کے پہلوؤں کے ساتھ لگا دیئے جائیں اس کا منہ بند کیا جائے پنڈلیاں کھینچ کر سیدھی کردی جائیں اور اس کی ٹھوڑی باندھ دی جائے . اس کے بعد کفن کے حصول کی کوشش شروع کر دی جائے ۔کفن میں واجب تین کپڑے ہیں یعنی لنگ، کفنی اور بڑی چادر مستحب ہے کہ ان کپڑوں کے علاوہ یمنی چادر بھی ہو یا کوئی اور چادر ہو اس کے علاوہ ایک پانچواں کپڑا بھی ہے جسے ران پیچ کہتے ہیں اور یہ میت کی رانوں پر لپیٹا جاتا ہے نیز مستحب ہے کہ مذکورہ کپڑوں کے علاوہ اسے عمامہ بھی باندھا جائے پھر اس کے لیے کافور مہیا کیا جائے کہ جو آگ میں پکاہوا نہ ہو افضل یہ ہے کہ اس کا وزن تیرہ درہم اور ایک تہائی درہم ہو، اس کا اوسط وزن چار مثقال اور کم از کم ایک درہم ہو. اور اگر اتنا کافور ملنا بھی مشکل ہوتو پھر جتنا بھی ملے وہ حاصل کیا جائے، بہتر ہے کہ کفن میں سے ہرکپڑے پر یہ لکھا جائے میت کانام اور کہے:

یَشْہَدُ

گواہی دیتا ہے

ٲَنْ لاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ وَحْدَہُ

کہ نہیں کوئی معبود مگر اللہ جو یکتا ہے

لاَ شَرِیکَ لَہُ، وَٲَنَّ

کوئی اس کاشریک نہیں ، یہ کہ

مُحَمَّداً رَسُولُ اﷲِ وَٲَنَّ

حضرت محمدﷺ اللہ کے رسول ہیں

عَلِیّاً ٲَمِیرُ الْمُؤْمِنِینَ

حضرت علی(ع) مومنوں کے امیر ہیں

وَالْاََئِمَّۃَ مِنْ وُلْدِہِ۔

اور جو امام ان کی اولاد میں ہیں۔

یہاں ہر ایک امام کانام لکھا جائے بعد میں لکھیں۔

ٲَئِمَّتُہُ ٲَئِمَّۃُ الْہُدَی

اس کے امام ہیں جو ہدایت و نیکی

الْاََبْرار۔

والے امام ہیں۔

مرنے کے بعد احکام

یہ سب کچھ خاک شفا سے یا انگلی سے لکھا جائے سیاہی سے نہیں پھر میت کو تین غسل دیئے جائیں۔ پہلا غسل بیری کے پتوں والے پانی سے دوسرا کافور ملے پانی سے اور تیسرا خالص پانی سے . اس غسل کی کیفیت وہی ہے جو غسل جنابت کی ہے سب سے پہلے میت کے ہاتھ تین مرتبہ دھوئے جائیں پھر اس کی شرمگاہوں کو تھوڑی سی اشنان ﴿خوشبودار بوٹی﴾ کے ساتھ تین مرتبہ دھویا جائے، اس کے بعد غسل کی نیت سے اس کا سر بیری کے پتوں والے پانی سے تین مرتبہ دھویا جائے، پھر اس کے دائیں اور بائیں پہلوؤں کو بھی اسی طرح دھویا جائے۔

البتہ اس دوران میت کے سارے بدن پر ہاتھ پھیرا جائے گا یہ سب بیری کے پتوں والے پانی سے دھونا ہوگا اس کے بعد پانی والے برتن کو اچھی طرح دھویا جائے تا کہ بیری کا اثر زائل ہوجائے ، پھر برتن میں نیاپانی ڈال کر اس میں تھوڑا سا کافور ڈالا جائے . اور اس سے میت کو اسی طرح غسل دیا جائے جس طرح بیری کے پانی سے دیا گیا تھا . اگر پانی بچ جائے تو اسے انڈیل دیا جائے گا اور برتن کو اچھی طرح سے دھوکراس میں خالص پانی ڈال کر اس سے میت کو تیسرا غسل اسی ترتیب سے دیا جائے گا جو پہلے بیان ہو چکی ہے غسل دینے والے کو میت کے داہنی طرف ہونا چاہیے اور جب بھی میت کے کسی عضو کو غسل دے تو عفواً عفواً کہے اور جب غسل دے چکے ایک صاف کپڑے سے میت کے بدن کو خشک کرے۔

نیز واجب ہے کہ غسل دینے والا اسی وقت یا اس کے بعد خود بھی غسل مس میت کرے اور مستحب ہے کہ غسل دینے سے پہلے وضو کرے ۔ غسل دینے کے بعد میت کو کفن پہنایا جائے پہلے ران پیچ لے کر اسے بچھایا جائے اس پر تھوڑی روئی رکھے اس پر زریرہ ﴿خوشبودار بوٹی﴾ چھڑکے اور یہ روئی میت کی اگلی پچھلی شرمگاہوں پر رکھ دے پھر اس کپڑے کو میت کی رانوں پر لیٹ دے اس کے بعد لنگ کو ناف سے لے کر پاؤں کی طرف جہاں تک پہنچے باندھ دیا جائے اور کفن سے میت کے بدن کو ڈھانپا جائے اس کے اوپر بڑی چادر لپیٹی جائے اور اوپر سے جرہ یا کوئی اور چادر ڈالی جائے۔ میت کے ساتھ جرید تین، یعنی کھجور یا کسی اور درخت کی تازہ لکڑیاں رکھی جائیں، جن کی لمبائی ایک ہاتھ کے برابر ہو ان میں سے ایک میت کی داہنی جانب بدن سے ملاکر لنگ باندھنے کی جگہ پر رکھی جائے اور دوسری کو بائیں جانب چادر اور کفن کے درمیان رکھا جائے پھر میت کے سات اعضائے سجدہ یعنی پیشانی، دونوں ہتھیلیوں، دونوں گھنٹوں اور دونوں پیروں کے انگوٹھوں کے سروں پر کافور ملا جائے، اگر کافور بچ جائے تو وہ اس کے سینے پر چھڑک دیا جائے اس کے بعد میت کو کفن میں لپیٹ دیا جائے اور اس کے سراور پاؤں کی طرف سے کفن کو بند لگا دیئے جائیں، لیکن جب اسے دفن کیا جانے لگے تو کفن کے بندکھول دیئے جائیں بہرحال جب تکفین میت سے فارغ ہوجائیں تو اسے ایک تابوت میں رکھ کر جنازہ گاہ لے جائیں تا کہ اس کی نماز جنازہ پڑھی جائے۔ علامہ مجلسی(رح) زاد المعاد میں نماز میت کے باب میں فرماتے ہیں جس کا خلاصہ یہ ہے نماز میت کا پڑھنا ہر ایسے مسلمان پر واجب ہے ۔

جسے کسی مومن مسلمان کے مرنے کی اطلاع ہوجائے اگر ان میں سے کوئی ایک مسلمان بھی یہ نماز ادا کردے تو یہ دوسرے تمام مسلمانوں سے ساقط ہوجاتی ہے بلا اختلاف یہ نماز ہر بالغ شیعہ اثنا عشری کے لیے پڑھنا واجب ہے اور زیادہ مشہور اور قوی امر یہی ہے کہ چھ ماہ کے بچے کی میت پر بھی یہ نماز پڑھنا واجب ہے ، ظاہر یہ ہے کہ اس نماز کو قربۃً الی اللہ کے قصد سے ادا کرنے پر اکتفا کیا جائے اگر چھ ماہ سے کم عمر کا بچہ زندہ پیدا ہوا ہو اور مرجائے تو بعض علمائ اس پر نماز پڑھنا مستحب سمجھتے ہیں اور بعض اسے بدعت جانتے ہیں . لیکن احوط یہ ہے کہ اس پر نماز نہ پڑھی جائے ،میت پر نماز پڑھنے کا زیادہ حقدار بنا بر قول مشہور اس کا وارث ہی ہے اور شوہر اپنی بیوی پر نماز پڑھنے میں زیادہ اولویت رکھتا ہے۔

واجب ہے کہ نماز پڑھنے والا قبلہ رخ کھڑا ہو میت کا سراس کی داہنی جانب ہو اور میت کو پشت کے بل لٹا یاجائے اس نماز میں حدث سے پاک ہونے کی شرط نہیں ہے چنانچہ جنب مرد، حیض والی عورت اور بے وضو شخص بھی یہ نماز پڑھ سکتا ہے ،لیکن سنت ہے کہ با وضو ہوکر پڑھی جائے اگر پانی نہ مل سکے یا پانی کے استعمال میں کوئی امر مانع ہویا وقت تنگ ہوتو سنت ہے کہ تیمم کیا جائے اور احادیث کے مطابق کسی عذر کے بغیر بھی تیمم کیا جا سکتا ہے نیز سنت ہے کہ اگر میت مرد کی ہوتو پیش نماز اس کی کمر کے مقابل کھڑا ہو اور اگر عورت کی ہے تو اس کے سینے کے مقابل کھڑے ہوکر نماز پڑھے اور سنت ہے کہ جوتے اتار کر نماز پڑھے اور واجب ہے کہ نماز کی نیت کر کے پانچ تکبیریں پڑھی جائیں . سنت ہے کہ ہر تکبیر پر ہاتھوں کو کانوں کے برابر لایا جائے اور مشہور یہی ہے کہ پہلی تکبیر کے بعد کہے:

ٲَشْہَدُ ٲَنْ لاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ

میں گواہ ہوں کہ نہیں ہے کوئی معبود مگر اللہ

وَٲَشْہَدُ ٲَنَّ مُحَمَّداً

اور میں گواہ ہوں کہ محمدﷺ اللہ کے

رَسُولُ اللہ۔

رسول ہیں ۔

دوسری تکبیر کے بعد کہے:

اَللّٰہُمَّ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ۔

اے معبود! رحمت فرما محمد وآل محمد پر۔

تیسری تکبیر کے بعد کہے:

اَللّٰہُمَّ اغْفِرْ لِلْمُؤْمِنِینَ وَالْمُؤْمِناتِ۔

اے معبود! بخش دے مومن مردوں اور مومنہ عورتوں کو۔

چوتھی تکبیر کے بعد کہے:

اَللّٰہُمَّ اغْفِرْ لِہذَا الْمَیِّتِ

اے معبود! بخش دے اس میت کو۔

پھر پانچویں تکبیر کہہ کر نماز ختم کرے یہ نماز کافی ہے۔

لیکن قول مشہور کی بنا پر بہتر ہے کہ نمازیوں ادا کی جائے اور نیت کرنے کے بعد پہلی تکبیر میں کہے:

اَﷲُ ٲَکْبَرُ ٲَشْہَدُ ٲَنْ

اللہ بزرگ تر ہے. میں گواہ ہوں کہ

لاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ وَحْدَہُ

نہیں ہے معبود مگر اللہ جو یکتا ہے

لاَ شَرِیکَ لَہُ وَٲَشْہَدُ

کوئی اسکا شریک نہیں اور میں گواہ ہوں

ٲَنَّ مُحَمَّداً عَبْدُہُ

کہ محمدﷺ اس کے بندے اور

وَرَسُولُہُ ٲَرْسَلَہُ بِالْحَقِّ

رسول(ص)ہیں، اللہ نے انہیں حق کے

بَشِیراً وَنَذِیراً بَیْن

ساتھ بھیجا، وہ تا قیامت خوشخبری

یَدَیِ السَّاعَۃِ۔

دینے اور ڈرانے والے ہیں .

پھر دوسری تکبیر کہے:

اﷲُ ٲَکْبَرُ اَللّٰہُمَّ صَلِّ

اللہ بزرگ تر ہے اے معبود! رحمت

عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ

نازل فرما محمدﷺ و آل(ع)

مُحَمَّدٍ وَبارِکْ عَلَی

محمدﷺ پر اور برکت نازل فرما

مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ

محمدﷺ و آل محمد پر

وَارْحَمْ مُحَمَّداً وَآلَ

اور رحم فرما محمدﷺ و آل(ع)

مُحَمَّدٍ کَٲَفْضَلِ مَا

محمدﷺ پر اس سے بیشتر جو

صَلَّیْتَ وَبارَکْتَ

رحمت کی تو نے اور برکت نازل

وَتَرَحَّمْتَ عَلَی إبْراہِیمَ

کی تو نے اور رحم فرمایا تو نے ابراہیم

وَآلِ إبْراہِیمَ إنَّکَ

اور آل(ع) ابراہیم(ع) پر. بے شک تو

حَمِیدٌ مَجِیدٌ وَصَلِّ

خوبی والا، شان والا ہے اور رحمت

عَلَی جَمِیعِ الْاََنْبِیائِ

فرما تمام نبیوں

وَالْمُرْسَلِینَ۔

اور رسولوں پر۔

پھر تیسری تکبیر کہے:

اﷲُ ٲَکْبَرُ اَللّٰہُمَّ اغْفِرْ

اللہ بزرگ تر ہے. اے معبود! بخش

لِلْمُؤْمِنِینَ وَالْمُؤْمِناتِ

دے مومن مردوں اور مومنہ عورتوں کو

وَالْمُسْلِمِینَ وَالْمُسْلِماتِ

اور مسلمان مردوں اور مسلمہ عورتوں کو

الْاََحْیائِ مِنْہُمْ وَالْاََمْواتِ

ان میں جو زندہ ہیں اور جو مرگئے ہیں

تابِعْ بَیْنَنا وَبَیْنَہُمْ

تو ہمیں اور ان کو نیکیوں

بِالْخَیْراتِ إنَّکَ

میں باہم ملادے، بے شک

مُجِیبُ الدَّعَواتِ

تو دعائیں قبول کرنے والا ہے

إنَّکَ عَلَی کُلِّ شَیْئٍ

یقینا تو ہر چیز پر قدرت

قَدِیرٌ۔

رکھتا ہے ۔

پھرچوتھی تکبیر کہے:

اﷲُ ٲَکْبَرُ اَللّٰہُمَّ إنَّ

اللہ بزرگ تر ہے. اے معبود! بے شک

ہذَا عَبْدُکَ وَابْنُ

یہ تیرا بندہ،تیرے بندے

عَبْدِکَ وَابْنُ ٲَمَتِکَ

کا بیٹا اور تیری کنیز کا بیٹا

نَزَلَ بِکَ وَٲَنْتَ خَیْرُ

تیرا مہمان ہوا ہے اور تو سب

مَنْزُولٍ بِہِ۔ اَللّٰہُمَّ إنَّا

سے بہتر مہمانواز ہے. اے معبود! یقیناً

لاَ نَعْلَمُ مِنْہُ إلاَّ خَیْراً

ہم نہیں جانتے اس سے متعلق مگر نیکی

وَٲَنْتَ ٲَعْلَمُ بِہِ مِنَّا

اور تو اسے ہم سے زیادہ جانتا ہے

اَللّٰہُمَّ إنْ کانَ مُحْسِناً

اے معبود! اگر یہ نیکو کار ہے تو اس

فَزِدْ فِی إحْسانِہِ وَ إنْ

کی نیکیوں میں اضافہ کر دے اور اگر

کانَ مُسِیئاً فَتَجَاوَزْ

یہ بدکار ہے تو اس سے درگذر فرما

عَنْہُ وَاغْفِرْ لَہُ اَللّٰہُمَّ

اور اسے بخش دے. اے معبود!

اجْعَلْہُ عِنْدَکَ فِی

تو اسے اپنے ہاں اعلیٰ علیین

ٲَعْلَی عِلِّیِّینَ وَاخْلُفْ

میں جگہ دے اور اس کے عیال

عَلَی ٲَہْلِہِ فِی الْغابِرِینَ

میں اس کا جانشین ہو جا

وَارْحَمْہُ بِرَحْمَتِکَ

اور اس پر رحم فرما اپنی رحمت سے

یَا ٲَرْحَمَ الرَّاحِمِینَ۔

اے سب سے زیادہ رحم کرنے والے.

پھر پانچویں تکبیرکہے:

اَﷲُ ٲَکْبَر۔

اللہ بزرگ تر ہے۔

اس پر نماز ختم کرے.

اگر میت عورت کی ہے تو یوں کہے:

اَللّٰہُمَّ إنَّ ہذِہِ ٲَمَتُکَ

اے معبود! بے شک یہ تیری کنیز

وَابْنَۃُ عَبْدِکَ وَابْنَۃُ

تیرے بندے کی بیٹی اور تیری کنیز

ٲَمَتِکَ نَزَلَتْ بِکَ

کی بیٹی تیری مہمان ہوئی ہے

وَٲَنْتَ خَیْرُ مَنْزُولٍ بِہاِ

اور تو بہترین مہمان نواز ہے۔

اَللّٰہُمَّ إنَّا لاَ نَعْلَمُ مِنْہا

اے معبود! یقیناً ہم اسکے متعلق نہیں جانتے

إلاَّ خَیْراً وَٲَنْتَ ٲَعْلَمُ

مگر نیکی اور تو اسے ہم سے زیادہ

بِہا مِنَّا اَللّٰہُمَّ إنْ ْکانَتْ

جانتا ہے. اے معبود! اگر یہ

مُحْسِنَۃً فَزِدْ فِی

نیکوکار رہی ہے تو اس کی نیکیوں میں

إحْسانِہا وَ إنْ کانَتْ

اضافہ کردے اور اگر یہ

مُسِیئَۃً فَتَجاوَزْ عَنْہا

بدکار رہی ہے تو اس سے درگذر فرما

وَاغْفِرْ لَہا اَللّٰہُمَّ

اور اسے بخش دے. اے معبود!

اجْعَلْہا عِنْدَکَ

تو اپنے ہاں اسے اعلیٰ

فِی ٲَعْلَی عِلِّیِّینَ وَاخْلُفْ

علیین میں جگہ دے اور اس کے

عَلَی ٲَہْلِہا فِی الْغابِرِینَ

عیال میں اس کا جانشین بن جا،

وَارْحَمْہا بِرَحْمَتِکَ

اس پر رحم فرما، اپنی رحمت سے

یَا ٲَرْحَمَ الرَّاحِمِینَ۔

اے سب سے زیادہ رحم کرنے والے۔

اگر بے کس کی میت ہوتو کہے:

اَللّٰہُمَّ اغْفِرْ لِلَّذِینَ تابُوا

اے معبود! ان کو بخش دے، جنہوں

وَاتَّبَعُوا سَبِیلَکَ وَقِہِمْ

نے توبہ کی اور تیرے راستے پر چلے

عَذَابَ الْجَحِیمِ۔

تو ان کو جہنم کے عذاب سے بچا ۔

اگر نابالغ بچے کی میت ہوتو کہے:

اَللّٰہُمَّ اجْعَلْہُ لاََِبَوَیْہِ

اے معبود! اسے قرار دے اس کے

وَلَنَا سَلَفاً وَفَرَطاً

والدین کے لیے اور ہمارے لیے

وَٲَجْراً۔

ہراول ذخیرہ اور اجر ۔

تشیع جنازہ اور دفن میت

اور سنت ہے کہ جب تک وہاں سے جنازہ نہ اٹھایا جائے خاص کر پیش نماز اور دوسرے لوگ بھی اسی جگہ کھڑے رہیں ایک اور روایت میں ہے کہ نماز سے فارغ ہونے کے بعد کہے:

رَبَّنا آتِنا فِی الدُّنْیا حَسَنَۃً وَفِی الْاَخِرَۃِ حَسَنَۃً وَقِنَا عَذابَ النَّارِ۔

اے ہمارے رب! ہمیں دنیا میں نیکی عطا کر اور آخرت میں بھی نیکی عطا کر اورہمیں جہنم کے عذاب سے بچا۔

امام جعفر صادق فرماتے ہیں: بہتر ہے کہ مرحوم کی خبر مرگ مومن بھائیوں کو دی جائے تا کہ وہ اس کے جنازے میں شریک ہوں ، اس پر نماز پڑھیں اس کے لیے استغفار کریں اور میت کو اور ان کو بھی ثواب ملے. ایک حسن حدیث میں امام جعفر صادق سے منقول ہے کہ جب مومن کو قبر میں لٹاتے ہیں تو اسے آواز آتی ہے کہ سب سے پہلی عطا جو ہم نے تم پر کی ہے وہ بہشت ہے اور جو لوگ تیرے جنازے کے ساتھ آئے ہیں ان پر ہم نے سب سے پہلی عطا یہ کی ہے کہ ان کے گناہ معاف کر دیئے ہیں۔

ایک اور حدیث میں آپ(ع) فرماتے ہیں کہ مومن کو قبر میں جو سب سے پہلا تحفہ دیا جاتا ہے ، وہ یہ ہے کہ اس کے ساتھ آنے والے تمام لوگوں کے گناہ بخش دیئے جاتے ہیں . ایک اور حدیث میں فرماتے ہیں جو شخص کس مومن کے جنازے کے ہمراہ جاتا اور اس کے دفن تک وہاں رہتا ہے تو خداوند تعالیٰ قیامت کے دن ستر ملائکہ کو حکم دے گا کہ وہ قبر سے اٹھائے جانے سے حساب کے موقع تک اس کے ساتھ رہ کر اس کے لیے استغفار کرتے رہیں۔ نیز فرماتے ہیں :جو شخص جنازے کے ایک کونے کو کندھا دے گا تو اس کے پچیس کبیرہ گناہ معاف کر دیئے جائیں گے اور جو شخص ﴿بہ ترتیب﴾ چاروں کونوں کو کندھا دے گا تو وہ گناہوں سے بری ہوجائے گا۔ جنازے کو چار افراد اٹھائیں اور جو شخص جنازے کے ساتھ ہو اس کے لیے بہتر یہ ہے کہ سب سے پہلے میت کے داہنے ہاتھ کی طرف آئے جو جنازے کا بایاں پہلو ہے وہاں اپنا دایاں کندھا دے پھر میت کے دائیں پاؤں کی طرف آکر کندھا دے، اس کے بعد میت کے بائیں ہاتھ کی طرف آئے جو جنازے کا دایاں پہلو ہے، وہاں بایاں کندھا دے اور میت کے بائیں پاؤں کی طرف آئے اور آکر اس کونے کو بائیں کندھے پر اٹھائے۔

اگر وہ دوسری مرتبہ چاروں اطراف کو کندھا دینا چاہے تو جنازے کے آگے سے پیچھے کی طرف آئے اور مذکورہ طریقے سے اسے کندھا دے اکثر علمائ اس کے برعکس فرماتے ہیں کہ جنازے کے داہنی طرف سے ابتدا کرے یعنی میت کے دائیں طرف سے کندھا دے۔

لیکن معتبر احادیث کے مطابق پہلا طریقہ اچھا ہے اور اگر دونوں طریقوں سے جنازے کو کندھا دے تو بہت بہتر ہے جنازے کے ساتھ چلنے میں افضل طریقہ یہ ہے کہ جنازے کے پیچھے چلے یا اسکے دائیں بائیں رہے، لیکن جنازے کے آگے ہرگز نہ چلے، اکثر حدیثوں سے ظاہر ہوتا ہے کہ اگر وہ جنازہ مومن کا ہوتو اس کے آگے چلنا بہتر ہے ورنہ پیچھے چلنا ہی مناسب ہے کیونکہ ملائکہ اس کیلئے عذاب لے کر آگے سے آتے ہیں جنازے کے ساتھ سوار ہوکر چلنا مکروہ ہے اور رسول اللہ کا ارشاد ہے کہ جو شخص کسی جنازے کو دیکھے وہ یہ دعا پڑھے:

اﷲُ ٲَکْبَرُ ہذَا مَا وَعَدَنَا

اللہ بزرگ تر ہے یہی وہ چیز ہے جس کا

اﷲُ وَرَسُولُہُ وَصَدَقَ

اللہ و رسول(ص) نے ہم سے وعدہ کیا اللہ

اﷲُ وَرَسُولُہُ، اَللّٰہُمَّ

اور اسکے رسول(ص)نے سچ فرمایا اے معبود!

زِدْنا إیماناً وَتَسْلِیماً

ہمارے ایمان و تسلیم میں اضافہ کر

الْحَمْدُ لِلّٰہِ الَّذِی تَعَزَّزَ

حمد ہے اللہ کے لیے جو اپنی قدرت

بِالْقُدْرَۃِ وَقَہَرَ الْعِبادَ

سے غالب ہوا اور موت کے ذریعے

بِالْمَوْت۔

بندوں پر حاوی ہوا۔

کوئی فرشتہ آسمان میں نہیں مگر یہ کہ وہ گریہ کرے گا اور پڑھنے والے کے لیے رحمت چاہے گا۔

امام جعفر صادق فرماتے ہیں کہ جنازہ اٹھاتے وقت یہ دعا پڑھی جائے:

ِبِسْمِ اﷲِ وَبِاﷲِ اَللّٰہُمَّ

خدا کے نام سے خدا کی ذات سے اے معبود

صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ

رحمت فرما محمد

وَآلِ مُحَمَّدٍ وَاغْفِرْ

و آل محمد پر اور مومن مردوں

لِلْمُؤْمِنِینَ وَالْمُؤْمِناتِ

اور مومنہ عورتوں کو بخش دے.

منقول ہے کہ امام زین العابدین جب کسی جنازے کو دیکھتے تو یہ دعا پڑھتے:

الْحَمْدُ لِلّٰہِ الَّذِی لَمْ

حمد ہے اللہ کے لیے جس نے

یَجْعَلَنِی مِنَ السَّوادِ

مجھے ہلاک ہونے والے گروہ

الْمُخْتَرَمِ۔

میں نہیں رکھا ۔

عورتوں کے لیے جنازے کے ساتھ جانا سنت نہیں ہے، بعض علما کا قول ہے کہ جنازے کو تیز رفتاری کے ساتھ لے جانا مکروہ ہے اور جو لوگ جنازے کے ساتھ ہوں ان کے لیے ہنسنا اور فضول باتیں کرنا بھی مکروہ ہے۔

علامہ مجلسی(رح) حلیۃ المتقین میں لکھتے ہیں حضرت رسول(ص) سے منقول ہے کہ جو شخص کسی کی نماز جنازہ پڑھتا ہے اس پر ستر ہزار فرشتے نماز پڑھیں گے اور اس کے تمام سابقہ گناہ معاف ہوجائیں گے اگر جنازے کے ہمراہ جائے اور اس کی تدفین تک وہاں رہے تو اس کے ہر قدم کے بدلے اسے ایک قیراط ثواب دیا جائے گا اور یہ قیراط کوہ احد کے برابر ہوتا ہے۔

ایک اور حدیث میں ارشاد فرماتے ہیں جو بھی مومن کسی کی نماز جنازہ پڑھے گا تو جنت اس کے لیے واجب ہوجائے گی، بشرطیکہ وہ منافق یا والدین کا نافرمان نہ ہو. معتبر سند کے ساتھ امام جعفر صادق سے منقول ہے کہ جب کوئی مومن مرتا ہے اور اس کے جنازے پر آکر چالیس مومن یہ کہتے ہیں:

اَللّٰھُمَّ اِنَّا لَا نَعْلَمُ مِنْہُ

یعنی اے معبود! ہم اس کے متعلق

اِلَّاخَیْراً وَ اَنْتَ اَعْلَمُ

سوائے نیکی کے کچھ نہیں جانتے اور

بِہِِ مِنَّا.

تو اسے ہم سے زیادہ جانتا ہے۔

تب خدائے تعالیٰ فرماتا ہے میں نے تمہاری گواہی قبول کر لی اور اس کے گناہ معاف کر دیئے ہیں جن کو تم نہیں جانتے ہو اور میں جانتا ہوں۔

ایک اور معتبر حدیث میں رسول اللہ سے منقول ہے کہ مومن کے مرنے کے بعد وہ پہلی چیز جو اس کے نامہ اعمال میں لکھتے ہیں وہ وہی ہوتی ہے جو بات لوگ اس کے بارے میں کہتے ہیں . اگر نیک بات کہتے ہیں تو نیکی لکھی جاتی ہے اور اگر بری بات کہتے ہیں تو برائی لکھی جاتی ہے۔

مولف کہتے ہیں: شیخ طوسی(رح) مصباح المتہجد میں فرماتے ہیں: مستحب ہے کہ جنازے کی تربیع کی جائے یعنی پہلے میت کے دائیں طرف کندھا دیا جائے اس کے بعد دائیں پاؤں کی طرف پھر بائیں پاؤں کی طرف اور بعد میں میت کے بائیں ہاتھ کی طرف سے کندھا دیا جائے گویا جنازے کے چاروں اطراف کو اس طرح کندھا دیا جائے جس طرح چکی کو گھمایا جاتا ہے جب جنازے کو قبر کے نزدیک لائیں تو اگر میت مرد کی ہے تو اسے قبر کی پائنتی کی طرف لے جائیں اور قبر کے کنارے تک لے جاتے ہوئے تین مرتبہ اٹھائیں اور زمین پر رکھیں . پھر قبر میں اتاریں، اگر میت عورت کی ہے تو اسے قبر کے کنارے قبلہ کی طرف لائیں پھر قبر میں اتاریں میت کا وارث یا کوئی اور شخص جس کو ولی نے اجازت دی ہو کہ وہ پائنتی کی طرف سے قبر میں اترے کہ یہی قبر کا دروازہ ہے اور جب وہ قبر میں اتر جائے تو یہ کہے:’’

اَللّٰہُمَّ اجْعَلْہا رَوْضَۃً

اے معبود! تو اسے جنت کے

مِنْ رِیاضِ الْجَنَّۃِ وَلاَ

باغوں میں ایک باغ بنادے اور

تَجْعَلْہا حُفْرَۃً مِنْ

اسے جہنم کے گڑھوں میں سے

حُفَرِ النَّارِ۔

ایک گڑھا نہ بنا۔

اور مناسب ہے کہ قبر میں اتر نے والا وہ شخص سراور پاؤں سے ننگا ہو اور اپنے بٹن کھول دے وہ میت کو قبر میں اتار نے کے لیے اٹھائے اور سر کی طرف اسے قبر میں لے جائے اور یہ کہے:

بِسْمِ اﷲِ وَبِاﷲِ وَفِی

اللہ کے نام اور اللہ کی ذات سے،

سَبِیلِ اﷲِ وَعَلَی مِلَّۃِ

اللہ کی راہ میں اور رسول(ص)اللہ کے

رَسُولِ اﷲِ۔ اَللّٰہُمَّ

دین پر. اے معبود! تجھ

إیماناً بِکَ وَتصْدِیقاً

پر ایمان اور تیری کتاب کی تصدیق

بِکِتابِکَ ہذَا مَا وَعَدَنَا

کرتے ہوئے، یہی چیز ہے جس کا اللہ

اﷲُ وَرَسُولُہُ وَصَدَقَ

و رسول(ص)نے ہم سے وعدہ کیا اور اللہ

اﷲُ وَرَسُولُہُ اَللّٰہُمَّ

اور اسکے رسول(ص)نے سچ فرمایا. اے معبود!

زِدْنا إیماناً وَتَسْلِیماً۔

ہمارے ایمان و یقین میں اضافہ فرما۔

پس میت کو داہنی کروٹ پر لٹادے. اس کے بدن کا رخ قبلہ کی طرف کر کے کفن کے بند کھول دے اور اس کے رخسارے کو زمین پر ٹکا دے مستحب ہے کہ اس کے ساتھ خاک شفا بھی رکھے اور پھر قبر پر اینٹیں چن دے اور اینٹیں چننے والا شخص یہ پڑھے:

اَللّٰہُمَّ صِلْ وَحْدَتَہُ،

اے معبود! اس کی تنہائی کا ساتھی رہ

وَآنِسْ وَحْشَتَہُ وَارْحَمْ

خوف میں ہمدم بن اور اس کی بے

غُرْبَتَہُ وَٲَسْکِنْ إلَیْہِ

کسی پر رحم فرما اپنی رحمتوں سے

مِنْ رَحْمَتِکَ رَحْمَۃً

خاص رحمت اس کے ساتھ کر دے،

یَسْتَغْنِی بِہا عَنْ رَحْمَۃِ

اس کے ذریعے اسے اپنے غیر

مَنْ سِواکَ وَاحْشُرْہُ

کی رحمت سے بے نیاز کر دے

مَعَ مَنْ کانَ یَتَوَلاَّہُ

اس کو پاک ائمہ کے ساتھ محشور

مِنَ الْاََئِمَّۃِ الطَّاہِرِینَ۔

فرما جن سے وہ محبت رکھتا تھا ۔

تلقین میت

اور مستحب ہے کہ میت کو شہادتین اور ائمہ طاہرین کے ناموں کی اس وقت تلقین کی جائے، جب اسے قبر میں اتارا جا چکے اور قبر کو بند نہ کیا ہو پس تلقین کرنے والا کہے:یافلاں بن فلاں، یعنی میت کانام اور اس کے باپ کانام لے کر کہے:

اذْکُرِ الْعَہْدَ الَّذِی

اس عہد کو یاد کرو جس پر رہتے ہوئے

خَرَجْتَ عَلَیْہِ مِنْ دارِ

اس دنیا سے جارہے ہو

الدُّنْیا شَہادَۃَ ٲَنْ لاَ

یہ گواہی کہ نہیں ہے

إلہَ إلاَّ اﷲُ وَحْدَہُ لاَ

کوئی معبود مگر اللہ جو یکتا ہے کوئی

شَرِیکَ لَہُ، وَٲَنَّ

اس کا شریک نہیں اور یہ کہ حضرت

مُحَمَّداً عَبْدُہُ وَرَسُولُہُ

محمدﷺ اس کے بندے اور رسول ہیں .

وَٲَنَّ عَلِیّاً ٲَمِیرَ الْمُؤْمِنِینَ

نیز یہ کہ علی مومنوں کے امیر ہیں

وَالْحَسَنَ وَالْحُسَیْن

اور حسن اور حسین

اور بارہویں امام تک ہر ایک کا نام لے۔

ٲَئِمَّتُکَ ٲَئِمَّۃُ الْہُدَیٰ

تیرے امام ہیں جو ہدایت والے

الْاََبْرَارُ۔

خوش کردار ہیں۔

جب قبر پر اینٹیں چن لے تو پھر قبر پر مٹی ڈالیں اور مستحب ہے کہ جو لوگ وہاں موجود ہوں اور اپنے ہاتھوں کی پشت کے ساتھ اس پر مٹی ڈالیں اور اس حال میں یہ کہیں:

إنَّا لِلّٰہِ وَ إنَّا إلَیْہِ

یقیناً ہم اللہ کے ہیں اور اسی کی

رَاجِعُونَ ہذَا مَا

طرف لوٹیں گے، یہی وہ چیز ہے

وَعَدَنَا اﷲُ وَرَسُولُہُ

جسکا وعدہ ہم سے اللہ و رسولﷺ نے کیا

وَصَدَقَ اﷲُ وَرَسُولُہُ

اور اللہ اور اسکے رسولﷺ نے سچ فرمایا

اَللّٰہُمَّ زِدْنا إیماناً

اے معبود!ہمارے ایمان و یقین

وَتَسْلِیما۔

میں اضافہ فرما۔

پس جب میت کو قبر میں اتارنے والا اس سے باہر نکلے تو پائنتی کی طرف سے باہر آئے، پھر قبر کو بند کردے اور اسے زمین سے چار انگشت کے برابر بلند کرے. اس قبر کی مٹی کے علاوہ اس پر دوسری مٹی نہ ڈالے اور بہتر ہے کہ قبر کے سر ہانے کوئی اینٹ رکھ دی جائے یاتختی لگادی جائے۔

اس کے بعد قبر پر پانی چھڑکا جائے اور اس کی ابتدا قبر کے سرہانے کی طرف سے کی جائے۔ پانی قبر کے چاروں طرف ڈالا جائے اور اس کا اختتام سرہانے کی طرف ہی کیا جائے جہاں سے شروع کیا تھا. اگر کچھ پانی بچ رہے تو اسے قبر کے درمیان گرادیا جائے، پس جب قبر مکمل طور پر بند کی جا چکی ہوتو جو بھی شخص چاہے اس پر اپنا ہاتھ رکھے اور انگلیوں کو پھیلا دے. پھر میت کے لیے اس طرح دعا مانگے:

ًاَللّٰہُمَّ آنِسْ وَحْشَتَہُ

اے معبود! اس کے خوف میں ہمدم

وَارْحَمْ غُرْبَتَہُ وَٲَسْکِنْ

بن اس کی بے کسی پر رحم کر اس کا ڈر

رَوْعَتَہُ وَصِلْ وَحْدَتَہُ

دور کردے، اس کی تنہائی کا ساتھی

وَٲَسْکِنْ إلَیْہِ مِنْ

رہ اور اپنی رحمتوں سے خاص رحمت اسکے

رَحْمَتِکَ رَحْمَۃً

ساتھ کردے کراس کے ذریعے

یَسْتَغْنِی بِہا عَنْ رَحْمَۃِ

اسے اپنے غیر کی رحمت سے بے

مَنْ سِواکَ وَاحْشُرْہُ

نیاز کردے اوراس کو ان کے ساتھ

مَعَ مَنْ کانَ یَتَوَلاَّہُ۔

اٹھانا، جن سے محبت رکھتا تھا۔

پھر جب سارے لوگ اس کی قبر سے واپس چلے جائیں تو جو شخص میت کے امر کا زیادہ حقدار ہے، وہ واپس جانے میں جلدی نہ کرے اور اس پر احسان کرتے ہوئے بلند آواز سے تلقین پڑھے، اگر تقیہ مانع نہ ہو پس کہے:اے فلاں ابن فلاں﴿ میت کا اور اس کے باپ کا نام لے﴾ :

اﷲُ رَبُّکَ وَمُحَمَّدٌ

اللہ تیرا رب ہے حضرت محمد (ص)

نَبِیُّکَ وَالْقُرْآنُ

تیرے نبی ہیں اور قرآن تیری

کِتابُکَ، وَالْکَعْبَۃُ

کتاب ہے، کعبہ تیرا

قِبْلَتُکَ وَعَلِیٌّ إمامُکَ

قبلہ ہے، حضرت علی تیرے امام ہیں

وَالْحَسَنُ وَالْحُسَیْنُ

اور حسن اور حسین۔

اور بارہویں امام تک ہر ایک کا نام لے

ٲَئِمَّتُکَ ٲَئِمَّۃُ الْہُدَی الْاََبْرَارُ۔

تیرے امام ہیں، وہ امام ہدایت والے خوش کردار ہیں۔

مولف کہتے ہیں: احتضار ﴿جان کنی﴾ کے علاوہ دو اور مقامات ہیں، جہاں میت کو تلقین کرنا مستحب ہے، ایک وہ وقت جب میت کو قبر میں لٹایا جائے اور بہتر یہ ہے کہ دائیں ہاتھ سے اس کے داہنے شانے کو اور بائیں ہاتھ سے اس کے بائیں شانے کو پکڑ کر اسے ہلاتے ہوئے، تلقین پڑھی جائے اور اس کے پڑھنے کا دوسرا وقت وہ ہے، جب میت کو دفن کر چکیں، چنانچہ مستحب ہے کہ میت کا ولی یعنی سب سے قریبی رشتہ دار دوسرے لوگوں کے چلے جانے کے بعد قبر کے سرہانے بیٹھ کر بلند آواز سے تلقین پڑھے اور بہتر ہے کہ دونوں ہاتھوں کی ہتھیلیاں قبر پر رکھے اور اپنا مُنہ قبر کے قریب لے جا کر تلقین پڑھے اگر کسی کو اپنا نائب بنائے تو بھی مناسب ہے۔

روایات میں آیا ہے کہ میت کے لیے اس وقت جو تلقین پڑھی جاتی ہے تو منکر اپنے ہمراہ نکیر سے کہتا ہے کہ آؤ واپس چلیں، کیونکہ اسے اس کی حجت کی تلقین کردی گئی ہے. لہذا اب اس سے سوال کرنے کی ضرورت نہیں رہی. چنانچہ وہ سوال نہیں کرتے اور لوٹ جاتے ہیں ۔

تلقین جامع میت

علامہ مجلسی(رح) کا ارشاد ہے کہ اگر تلقین اس طرح سے پڑھی جائے تو زیادہ جامع ہوگی۔

اسْمَعْ افْہَمْ یَا فُلانَ

تو سن اور سمجھ اے فلاں

ابْنَ فُلانٍ۔

بن فلاں۔

یہاں میت کا اور اس کے باپ کا نام لے اور کہے:

ہَلْ ٲَنْتَ عَلَی الْعَہْدِ

آیا تو اسی عہد پر قائم ہے

الَّذِی فارَقْتَنا عَلَیْہ

جس پر تو ہمیں چھوڑ کر آیا ہے، یعنی

مِنْ شَہادَۃِ ٲَنْ لاَ إلہَ

یہ گواہی کہ نہیں ہے معبود

إلاَّ اﷲُ وَحْدَہُ لاَ

مگر اللہ جو یکتا ہے ، کوئی

شَرِیکَ لَہُ وَٲَنَّ

اس کا شریک نہیں اور یہ کہ

مُحَمَّداً صَلَّی اﷲُ عَلَیْہِ

حضرت محمد صلی اللہ علیہ و

وَآلِہِ عَبْدُہُ وَرَسُولُہُ

آلہ اس کے بندے اور رسول ہیں،

وَسَیِّدُ النَّبِیِّینَ وَخَاتَمُ

وہ نبیوں کے سردار اور پیغمبروں کے

الْمُرْسَلِینَ وَ ٲَنَّ عَلِیَّاً

خاتم ہیں. اور یہ کہ حضرت علی

ٲَمِیرُ الْمُؤْمِنِینَ وَسَیِّد

مومنوں کے امیر اوصیاء

الْوَصِیِّینَ وَ إمامٌ افْتَرَضَ

کے سردار اور ایسے امام ہیں کہ اللہ نے انکی

اﷲُ طاعَتَہُ عَلَی الْعالَمِین

اطاعت تمام جہانوں پر فرض کردی ہے،

وَٲَنَّ الْحَسَنَ وَالْحُسَیْنَ

نیز حسن و حسین،

وَعَلِیَّ بْنَ الْحُسَیْنِ

علی زین العابدین،

وَمُحَمَّدَ بْنَ عَلِیٍّ

محمد باقر،

وَجَعْفَرَ بْنَ مُحَمَّدٍ

جعفر صادق،

وَمُوسَی بْنَ جَعْفَرٍ

موسیٰ کاظم،

وَعَلِیَّ بْنَ مُوسی

علی رضا،

وَمُحَمَّدَ بْنَ عَلِیٍّ

محمد تقی،

وَعَلِیَّ بْنَ مُحَمَّدٍ

علی نقی،

وَالْحَسَنَ بْنَ عَلِیٍّ

حسن عسکری،

وَالْقَائِمَ الْحُجَّۃَ الْمَہْدِیَّ

اور حجت القائم مہدی(عج) کہ ان سب

صَلَواتُ اﷲِ عَلَیْہِمْ

پر خدا کی رحمت ہو،

ٲَئِمَّۃُ الْمُؤْمِنِینَ وَحُجَجُ

یہ مومنون کے امام اوراللہ کی ساری

اﷲِ عَلَی الْخَلْقِ ٲَجْمَعِینَ

مخلوق پر اس کی حجتیں ہیں. تیرے یہ

وَٲَئِمَّتَکَ ٲَئِمَّۃُ ہُدیً

امام ہدایت والے خوش

ٲَبْرَارٌ، یَا فُلانَ ابْنَ

کردار ہیں. اے فلاں بن

فُلانٍ إذا ٲَتَاکَ الْمَلَکانِ

فلاں، جب تیرے پاس دو مقرب

الْمُقَرَّبانِ رَسُولَیْنِ

فرشتے دو پیام بر اللہ

مِنْ عِنْدِ اﷲِ تَبَارَکَ

تبارک و تعالیٰ کی طرف سے آئیں

وَتَعَالَی وَسَئَلَکَ عَنْ

اور تجھ سے پوچھیں، تیرے رب

رَبِّکَ وَعَنْ نَبِیِّکَ

تیرے نبی تیرے

وَعَنْ دِینِکَ وَعَنْ

دین تیری کتاب

کِتابِکَ وَعَنْ قِبْلَتِکَ

تیرے قبلہ اور تیرے

وَعَنْ ٲَئِمَّتِکَ فَلا

ائمہ کے متعلق تو ڈرمت

تَخَفْ وَقُلْ فِی جَوابِہِما

اور ان کے جواب میں کہہ کہ اللہ

اﷲُ جَلَّ جَلالُہُ رَبِّی

جل و جلالہ میرا رب ہے.

وَمُحَمَّدٌ صَلَّی اﷲُ

حضرت محمد صلی اللہ

عَلَیْہِ وَآلِہِ نَبِیِّی وَالْاِسْلامُ

علیہ و آلہ میرے نبی ہیں. اسلام میرا

دِینِی وَالْقُرْآنُ کِتابِی

دین ہے، قرآن میری کتاب ہے،

وَالْکَعْبَۃُ قِبْلَتِی وَٲَمِیرُ

کعبہ میراقبلہ ہے. اور امیرالمومنین

الْمُؤْمِنِینَ عَلِیُّ بْنُ

علی بن ابیطالب علیہماالسلام

ٲَبِی طالِبٍ إمامِی،

میرے امام ہیں،

وَالْحَسَنُ بْنُ عَلِیٍّ

ان کے بعد حسن مجتبیٰ بن علی علیہماالسلام

الْمُجْتَبَی إمامِی وَالْحُسَیْنُ

میرے امام ہیں اور حسین (ع)بن

بْنُ عَلِیٍّ الشَّہِیدُ بِکَرْبَلائَ

علی علیہماالسلام جو کربلا میں شہید ہوئے میرے

إمامِی وَعَلِیٌّ زَیْنُ الْعابِدِینَ

امام ہیں، علی زین العابدین

إمامِی وَمُحَمَّدٌ باقِرُ

میرے امام ہیں، نبیوں کے علم پھیلانے

عِلْمِ النَّبِیِینَ إمامِی

والے اور محمد باقر جو میرے امام ہیں

وَجَعْفَرٌ الصَّادِقُ إمامِی

جعفر صادق میرے امام ہیں،

وَمُوسَی الْکاظِمُ إمامِی

موسیٰ کاظم میرے امام ہیں،

وَعَلِیٌّ الرِّضا إمامِی

علی رضا میرے امام ہیں،

وَمُحَمَّدٌ الْجَوادُ إمامِی

محمد تقی جواد میرے امام ہیں،

وَعَلِیٌّ الْہَادِی إمامِی

علی نقی ہادی میرے امام ہیں،

وَالْحَسَنُ الْعَسْکَرِیُّ

حسن عسکری میرے

إمامِی وَالْحُجَّۃُ الْمُنْتَظَرُ

امام ہیں حجت منتظر میرے

إمامِی ہؤُلائِ صَلَواتُ

امام ہیں. ان سب پر خدا کی

اﷲِ عَلَیْہِمْ ٲَجْمَعِینَ

رحمت ہو کہ یہی میرے

ٲَئِمَّتِی وَسادَتِی وَقادَتِی

امام میرے سردار ،میرے پیشوا اور

وَشُفَعائِی بِہِمْ ٲَتَوَلَّی

میرے شفیع ہیں، میں ان سے محبت

وَمِنْ ٲَعْدائِہِمْ ٲَتَبَرَّٲُ

کرتا ہوں، ان کے دشمنوں سے

فِی الدُّنْیا وَالْاَخِرَۃِ

نفرت کرتا ہوں، دنیا و آخرت میں

ثُمَّ اعْلَمْ یَا فُلانَ ابْنَ

پس جان لے اے فلاں بن

فُلانٍ ٲَنَّ اﷲَ تَبارَکَ

فلاں یہ کہ اللہ تبارک و

وَتَعالی نِعْمَ الرَّبُّ

تعالیٰ بہترین رب ہے

وَٲَنَّ مُحَمَّداً صَلَّی

اور حضرت محمد صلی

اﷲُ عَلَیْہِ وَآلِہِ نِعْمَ

اللہ علیہ و آلہ بہترین

الرَّسُولُ وَٲَنَّ ٲَمِیرَ

رسول ہیں، امیرالمومنین

الْمُؤْمِنِینَ عَلِیَّ بْنَ

علی بن ابیطالب (ع) اور

ٲَبِی طالِبٍ وَٲَوْلادَہُ

ان کی اولاد سے

الْاََئِمَّۃَ الْاََحَدَ عَشَر

گیارہ امام بہترین

نِعْمَ الْاََئِمَّۃ وَٲَنَّ مَا

ائمہ ہیں اور یہ کہ جس چیز کو

جائَ بِہِ مُحَمَّدٌ صَلَّی

لے کر حضرت محمد صلی

اﷲُ عَلَیْہِ وَآلِہِ حَقٌّ

اللہ علیہ و آلہ آئے وہ حق ہے،

وَٲَنَّ الْمَوْتَ حَقٌّ

موت حق ہے،

وَسُؤَالَ مُنْکَرٍ وَنَکِیرٍ

قبر میں منکر و نکیر کا سوال کرنا حق

فِی الْقَبْرِ حَقٌّ وَالْبَعْثَ

ہے، قبروں سے اٹھنا

حَقٌّ وَالنُّشُورَ حَقٌّ

حق ہے، حشر و نشر حق ہے،

وَالصِّراطَ حَقٌّ وَالْمِیزانَ

صراط حق ہے، میزان عمل حق ہے

حَقٌّ وَتَطایُرَ الْکُتُبِ

نامہ اعمال کا کھولا جانا حق ہے،

حَقٌّ وَالْجَنَّۃَ حَقٌّ

جنت حق ہے، جہنم

وَالنَّارَ حَقٌّ وَٲَنَّ

حق ہے، اور یقیناً

السَّاعَۃَ آتِیَۃٌ

قیامت آکر رہے گی

لاَ رَیْبَ فِیہا، وَٲَنَّ

اس میں شک نہیں اور

اﷲَ یَبْعَثُ مَنْ فِی الْقُبُور۔

خدا انہیں اٹھائے گا جو قبروں میں ہیں۔

اس کے بعد کہے:

ٲَفَہِمْتَ یَا فُلانُ؟

اے فلاں کیا تو نے سمجھ لیا ہے؟

حدیث میں ہے کہ اس کے جواب میں میت کہتی ہے کہ ہاں میں نے سمجھ لیا. پھر کہے:

ثَبَّتَکَ اﷲُ بالْقَوْل

خدا تجھے اس مضبوط قول پر قائم

الثَّابِتِ ہَدَاکَ اﷲُ

رکھے خدا تجھے صراط

إلی صِراطٍ مُسْتَقِیمٍ

مستقیم کی ہدایت کرے

عَرَّفَ اﷲُ بَیْنَکَ وَبَیْنَ

خدا اپنی رحمت کی قرار گاہ میں

ٲَوْلِیائِکَ فِی مُسْتَقَرٍّ

تیرے اور تیرے اولیائ کے

مِنْ رَحْمَتِہِ۔

درمیان جان پہچان کرائے۔

پھر کہے:

اَللّٰہُمَّ جافِ الْاََرْضَ

اے معبود! اس کی قبر کی دونوں

عَنْ جَنْبَیْہِ وَاصْعَدْ

اطراف کو کشادہ کر اس کی روح کو

بِرُوحِہِ إلَیْکَ وَلَقِّہِ

اپنی طرف اٹھالے اور اسے دلیل و

مِنْکَ بُرْہاناً اَللّٰہُمَّ

برہان عطا فرما. اے معبود اسے

عَفْوَکَ عَفْوَکَ۔

معاف فرما، معاف فرما۔

خاتمہ کتاب

میں نے اس باشرف رسالے کے مضامین کو لفظ ’’عفو‘‘ پر ختم کیا ہے اور امید و اثق ہے کہ پروردگار عالم کا عفو و کرم اس روسیاہ کے اور ان لوگوں کے بھی شامل حال ہوگا جو اس رسالے پر عمل کریں گے. اس کی تالیف کا سلسلہ ۱۹ محرم الحرام ۱۳۵۴ھ کو روز جمعہ کی آخری ساعتوں میں ہمارے مسموم امام ہمارے غریب اور مظلوم مولا امام ابوالحسن علی رضا(ع) کے قرب میں اختتام کو پہنچا ﴿ان پر اور ان کے بزرگان پر زندہ و پائندہ خدا کا سلام ہو﴾۔

وَالْحَمْدُ لِلّٰہِ اَوَّلاً وَّ آخِرًا وَّ صَلّیَ اﷲُ عَلیٰ مُحَمَّدٍ وَّ اٰلِہٰ۔

حمد ہے اللہ کے لیے آغاز و انجام میں اور خدا کی رحمت ہو محمدﷺ اور ان کی آل علیہم السلام پر۔

اس رسالے کو اپنے گناہکار ہاتھوں سے عباس بن محمد رضا قمی نے مرتب کیا﴿خدا ان دونوں کے گناہ معاف فرمائے ﴾. اس بابرکت رسالے باقیات الصالحات کی (پہلی) کتابت غلام رضا صفا بن مرحوم و مغفور حسین باقر آبادی نے 1406ھ میں مکمل کی۔

 

 

فہرست مفاتیح الجنان

فہرست سورہ قرآنی

تعقیبات, دعائیں، مناجات

جمعرات اور جمعہ کے فضائل

جمعرات اور جمعہ کے فضائل
شب جمعہ کے اعمال
روز جمعہ کے اعمال
نماز رسول خدا ﷺ
نماز حضرت امیرالمومنین
نماز حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا
بی بی کی ایک اور نماز
نماز امام حسن
نماز امام حسین
نماز امام زین العابدین
نماز امام محمد باقر
نماز امام جعفر صادق
نماز امام موسیٰ کاظم
نماز امام علی رضا
نماز امام محمد تقی
نماز حضرت امام علی نقی
نماز امام حسن عسکری
نماز حضرت امام زمانہ (عج)
نماز حضرت جعفر طیار
زوال روز جمعہ کے اعمال
عصر روز جمعہ کے اعمال

تعین ایام ہفتہ برائے معصومین

بعض مشہور دعائیں

قرآنی آیات اور دعائیں

مناجات خمسہ عشرہ

ماہ رجب کی فضیلت اور اعمال

ماہ شعبان کی فضیلت واعمال

ماہ رمضان کے فضائل و اعمال

ماہ رمضان کے فضائل و اعمال
(پہلا مطلب)
ماہ رمضان کے مشترکہ اعمال
(پہلی قسم )
اعمال شب و روز ماہ رمضان
(دوسری قسم)
رمضان کی راتوں کے اعمال
دعائے افتتاح
(ادامہ دوسری قسم)
رمضان کی راتوں کے اعمال
(تیسری قسم )
رمضان میں سحری کے اعمال
دعائے ابو حمزہ ثمالی
دعا سحر یا عُدَتِیْ
دعا سحر یا مفزعی عند کربتی
(چوتھی قسم )
اعمال روزانہ ماہ رمضان
(دوسرا مطلب)
ماہ رمضان میں شب و روز کے مخصوص اعمال
اعمال شب اول ماہ رمضان
اعمال روز اول ماہ رمضان
اعمال شب ١٣ و ١٥ رمضان
فضیلت شب ١٧ رمضان
اعمال مشترکہ شب ہای قدر
اعمال مخصوص لیلۃ القدر
اکیسویں رمضان کی رات
رمضان کی ٢٣ ویں رات کی دعائے
رمضان کی ٢٧ویں رات کی دعا
رمضان کی٣٠ویں رات کی دعا

(خاتمہ )

رمضان کی راتوں کی نمازیں
رمضان کے دنوں کی دعائیں

ماہ شوال کے اعمال

ماہ ذیقعدہ کے اعمال

ماہ ذی الحجہ کے اعمال

اعمال ماہ محرم

دیگر ماہ کے اعمال

نوروز اور رومی مہینوں کے اعمال

باب زیارت اور مدینہ کی زیارات

مقدمہ آداب سفر
زیارت آئمہ کے آداب
حرم مطہر آئمہ کا اذن دخول
مدینہ منورہ کی زیارات
کیفیت زیارت رسول خدا ۖ
زیارت رسول خدا ۖ
کیفیت زیارت حضرت فاطمہ سلام اللہ علیہا
زیارت حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا
زیارت رسول خدا ۖ دور سے
وداع رسول خدا ۖ
زیارت معصومین روز جمعہ
صلواة رسول خدا بزبان حضرت علی
زیارت آئمہ بقیع
قصیدہ ازریہ
زیارت ابراہیم بن رسول خدا ۖ
زیارت فاطمہ بنت اسد
زیارت حضرت حمزہ
زیارت شہداء احد
تذکرہ مساجد مدینہ منورہ
زیارت وداع رسول خدا ۖ
وظائف زوار مدینہ

امیرالمومنین کی زیارت

فضیلت زیارت علی ـ
کیفیت زیارت علی
پہلی زیارت مطلقہ
نماز و زیارت آدم و نوح
حرم امیر المومنین میں ہر نماز کے بعد کی دعا
حرم امیر المومنین میں زیارت امام حسین ـ
زیارت امام حسین مسجد حنانہ
دوسری زیارت مطلقہ (امین اللہ)
تیسری زیارت مطلقہ
چوتھی زیارت مطلقہ
پانچویں زیارت مطلقہ
چھٹی زیارت مطلقہ
ساتویں زیارت مطلقہ
مسجد کوفہ میں امام سجاد کی نماز
امام سجاد اور زیارت امیر ـ
ذکر وداع امیرالمؤمنین
زیارات مخصوصہ امیرالمومنین
زیارت امیر ـ روز عید غدیر
دعائے بعد از زیارت امیر
زیارت امیر المومنین ـ یوم ولادت پیغمبر
امیر المومنین ـ نفس پیغمبر
ابیات قصیدہ ازریہ
زیارت امیر المومنین ـ شب و روز مبعث

کوفہ کی مساجد

امام حسین کی زیارت

فضیلت زیارت امام حسین
آداب زیارت امام حسین
اعمال حرم امام حسین
زیارت امام حسین و حضرت عباس
(پہلا مطلب )
زیارات مطلقہ امام حسین
پہلی زیارت مطلقہ
دوسری زیارت مطلقہ
تیسری زیارت مطلقہ
چوتھی زیارت مطلقہ
پانچویں زیارت مطلقہ
چھٹی زیارت مطلقہ
ساتویں زیارت مطلقہ
زیارت وارث کے زائد جملے
کتب حدیث میں نااہلوں کا تصرف
دوسرا مطلب
زیارت حضرت عباس
فضائل حضرت عباس
(تیسرا مطلب )
زیارات مخصوص امام حسین
پہلی زیارت یکم ، ١٥ رجب و ١٥شعبان
دوسری زیارت پندرہ رجب
تیسری زیارت ١٥ شعبان
چوتھی زیارت لیالی قدر
پانچویں زیارت عید الفطر و عید قربان
چھٹی زیارت روز عرفہ
کیفیت زیارت روز عرفہ
فضیلت زیارت یوم عاشورا
ساتویں زیارت یوم عاشورا
زیارت عاشورا کے بعد دعا علقمہ
فوائد زیارت عاشورا
دوسری زیارت عاشورہ (غیر معروفہ )
آٹھویں زیارت یوم اربعین
اوقات زیارت امام حسین
فوائد تربت امام حسین

کاظمین کی زیارت

زیارت امام رضا

سامرہ کی زیارت

زیارات جامعہ

چودہ معصومین پر صلوات

دیگر زیارات

ملحقات اول

ملحقات دوم

باقیات الصالحات

مقدمہ
شب وروز کے اعمال
شب وروز کے اعمال
اعمال مابین طلوعین
آداب بیت الخلاء
آداب وضو اور فضیلت مسواک
مسجد میں جاتے وقت کی دعا
مسجد میں داخل ہوتے وقت کی دعا
آداب نماز
آذان اقامت کے درمیان کی دعا
دعا تکبیرات
نماز بجا لانے کے آداب
فضائل تعقیبات
مشترکہ تعقیبات
فضیلت تسبیح بی بی زہرا
خاک شفاء کی تسبیح
ہر فریضہ نماز کے بعد دعا
دنیا وآخرت کی بھلائی کی دعا
نماز واجبہ کے بعد دعا
طلب بہشت اور ترک دوزخ کی دعا
نماز کے بعد آیات اور سور کی فضیلت
سور حمد، آیة الکرسی، آیة شہادت اورآیة ملک
فضیلت آیة الکرسی بعد از نماز
جو زیادہ اعمال بجا نہ لا سکتا ہو وہ یہ دعا پڑھے
فضیلت تسبیحات اربعہ
حاجت ملنے کی دعا
گناہوں سے معافی کی دعا
ہر نماز کے بعد دعا
قیامت میں رو سفید ہونے کی دعا
بیمار اور تنگدستی کیلئے دعا
ہر نماز کے بعد دعا
پنجگانہ نماز کے بعد دعا
ہر نماز کے بعد سور توحید کی تلاوت
گناہوں سے بخشش کی دعا
ہرنماز کے بعد گناہوں سے بخشش کی دعا
گذشتہ دن کا ضائع ثواب حاصل کرنے کی دعا
لمبی عمر کیلئے دعا
(تعقیبات مختصر)
نماز فجر کی مخصوص تعقیبات
گناہوں سے بخشش کی دعا
شیطان کے چال سے بچانے کی دعا
ناگوار امر سے بچانے والی دعا
بہت زیادہ اہمیت والی دعا
دعائے عافیت
تین مصیبتوں سے بچانے والی دعا
شر شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا
رزق میں برکت کی دعا
قرضوں کی ادائیگی کی دعا
تنگدستی اور بیماری سے دوری کی دعا
خدا سے عہد کی دعا
جہنم کی آگ سے بچنے کی دعا
سجدہ شکر
کیفیت سجدہ شکر
طلوع غروب آفتاب کے درمیان کے اعمال
نماز ظہر وعصر کے آداب
غروب آفتاب سے سونے کے وقت تک
آداب نماز مغرب وعشاء
تعقیبات نماز مغرب وعشاء
سونے کے آداب
نیند سے بیداری اور نماز تہجد کی فضیلت
نماز تہجد کے بعددعائیں اور اذکار

صبح و شام کے اذکار و دعائیں

صبح و شام کے اذکار و دعائیں
طلوع آفتاب سے پہلے
طلوع وغروب آفتاب سے پہلے
شام کے وقت سو مرتبہ اﷲاکبر کہنے کی فضیلت
فضیلت تسبیحات اربعہ صبح شام
صبح شام یا شام کے بعد اس آیة کی فضیلت
ہر صبح شام میں پڑھنے والا ذکر
بیماری اور تنگدستی سے بچنے کیلئے دعا
طلوع وغروب آفتاب کے موقعہ پر دعا
صبح شام کی دعا
صبح شام بہت اہمیت والا ذکر
ہر صبح چار نعمتوں کو یاد کرنا
ستر بلائیں دور ہونے کی دعا
صبح کے وقت کی دعا
صبح صادق کے وقت کی دعا
مصیبتوں سے حفاظت کی دعا
اﷲ کا شکر بجا لانے کی دعا
شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا
دن رات امان میں رہنے کی دعا
صبح شام کو پڑھنی کی دعا
بلاؤں سے محفوظ رہنے کی دعا
اہم حاجات بر لانے کی دعا

دن کی بعض ساعتوں میں دعائیں

پہلی ساعت
دوسری ساعت
تیسری ساعت
چوتھی ساعت
پانچویں ساعت
چھٹی ساعت
ساتویں ساعت
آٹھویں ساعت
نویں ساعت
دسویں ساعت
گیارہویں ساعت
بارہویں ساعت
ہر روز وشب کی دعا
جہنم سے بچانے والی دعا
گذشتہ اور آیندہ نعمتوں کا شکر بجا لانے کی دعا
نیکیوں کی کثرت اور گناہوں سے بخشش کی دعا
ستر قسم کی بلاؤں سے دوری کی دعا
فقر وغربت اور وحشت قبر سے امان کی دعا
اہم حاجات بر لانے والی دعا
خدا کی نعمتوں کا شکر ادا کرنے والی دعا
دعاؤں سے پاکیزگی کی دعا
فقر وفاقہ سے بچانے والی دعا
چار ہزار گناہ کیبرہ معاف ہو جانے کی دعا
کثرت سے نیکیاں ملنے اور شر شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا
نگاہ رحمت الہی حاصل ہونے کی دعا
بہت زیادہ اجر ثواب کی دعا
عبادت اور خلوص نیت
کثرت علم ومال کی دعا
دنیاوی اور آخروی امور خدا کے سپرد کرنے کی دعا
بہشت میں اپنے مقام دیکھنے کی دعا

دیگر مستحبی نمازیں

نماز اعرابی
نماز ہدیہ
نماز وحشت
دوسری نماز وحشت
والدین کیلئے فرزند کی نماز
نماز گرسنہ
نماز حدیث نفس
نماز استخارہ ذات الرقاع
نماز ادا قرض وکفایت از ظلم حاکم
نماز حاجت
نماز حل مہمات
نماز رفع عسرت(پریشانی)
نماز اضافہ رزق
نماز دیگر اضافہ رزق
نماز دیگر اضافہ رزق
نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
نماز استغاثہ
نماز استغاثہ بی بی فاطمہ
نماز حضرت حجت(عج)
دیگر نماز حضرت حجت(عج)
نماز خوف از ظالم
تیزی ذہن اور قوت حافظہ کی نماز
گناہوں سے بخشش کی نماز
نماز دیگر
نماز وصیت
نماز عفو
(ایام ہفتہ کی نمازیں)
ہفتہ کے دن کی نماز
اتوار کے دن کی نماز
پیر کے دن کی نماز
منگل کے دن کی نماز
بدھ کے دن کی نماز
جمعرات کے دن کی نماز
جمعہ کے دن کی نماز

بیماریوں کی دعائیں اور تعویذات

بیماریوں کی دعائیں اور تعویذات
دعائے عافیت
رفع مرض کی دعا
رفع مرض کی ایک اوردعا
سر اور کان درد کا تعویذ
سر درد کا تعویذ
درد شقیقہ کا تعویذ
بہرے پن کا تعویذ
منہ کے درد کا تعویذ
دانتوں کے درد کا تعویذ
دانتوں کے درد کا تعویذ
دانتوں کے درد کا ایک مجرب تعویذ
دانتوں کے درد کا ایک اور تعویذ
درد سینے کا تعویذ
پیٹ درد کا تعویذ
درد قولنج کا تعویذ
پیٹ اور قولنج کے درد کا تعویذ
دھدر کا تعویذ
بدن کے ورم و سوجن کا تعویذ
وضع حمل میں آسانی کا تعویذ
جماع نہ کر سکنے والے کا تعویذ
بخار کا تعویذ
پیچش دور کرنے کی دعا
پیٹ کی ہوا کیلئے دعا
برص کیلئے دعا
بادی وخونی خارش اور پھوڑوں کا تعویذ
شرمگاہ کے درد کی دعا
پاؤں کے درد کا تعویذ
گھٹنے کے درد
پنڈلی کے درد
آنکھ کے درد
نکسیر کا پھوٹن
جادو کے توڑ کا تعویذ
مرگی کا تعویذ
تعویذسنگ باری جنات
جنات کے شر سے بچاؤ
نظر بد کا تعویذ
نظر بد کا ایک اور تعویذ
نظر بد سے بچنے کا تعویذ
جانوروں کا نظر بد سے بچاؤ
شیطانی وسوسے دور کرنے کا تعویذ
چور سے بچنے کا تعویذ
بچھو سے بچنے کا تعویذ
سانپ اور بچھو سے بچنے کا تعویذ
بچھو سے بچنے کا تعویذ

کتاب الکافی سے منتخب دعائیں

سونے اور جاگنے کی دعائیں

گھر سے نکلتے وقت کی دعائیں

نماز سے پہلے اور بعد کی دعائیں

وسعت رزق کیلئے بعض دعائیں

ادائے قرض کیلئے دعائیں

غم ،اندیشہ و خوف کے لیے دعائیں

بیماریوں کیلئے چند دعائیں

چند حرز و تعویذات کا ذکر

دنیا وآخرت کی حاجات کیلئے دعائیں

بعض حرز اور مختصر دعائیں

حاجات طلب کرنے کی مناجاتیں

بعض سورتوں اور آیتوں کے خواص

خواص با سور قرآنی
خواص بعض آیات سورہ بقرہ وآیة الکرسی
خواص سورہ قدر
خواص سورہ اخلاص وکافرون
خواص آیة الکرسی اورتوحید
خواص سورہ توحید
خواص سورہ تکاثر
خواص سورہ حمد
خواص سورہ فلق و ناس اور سو مرتبہ سورہ توحید
خواص بسم اﷲ اور سورہ توحید
آگ میں جلنے اور پانی میں ڈوبنے سے محفوظ رہنے کی دعا
سرکش گھوڑے کے رام کی دعا
درندوں کی سر زمین میں ان سے محفوظ رہنے کی دعا
تلاش گمشدہ کا دستور العمل
غلام کی واپسی کیلئے دعا
چور سے بچنے کیلئے دعا
خواص سورہ زلزال
خواص سورہ ملک
خواص آیہ الا الی اﷲ تصیر الامور
رمضان کی دوسرے عشرے میں اعمال قرآن
خواب میں اولیاء الہی اور رشتے داروں سے ملاقات کا دستور العمل
اپنے اندر سے غمزدہ حالت کو دور کرنے کا دستور العمل
اپنے مدعا کو خواب میں دیکھنے کا دستور العمل
سونے کے وقت کے اعمال
دعا مطالعہ
ادائے قرض کا دستور العمل
تنگی نفس اور کھانسی دور کرنے کا دستور العمل
رفع زردی صورت اور ورم کیلئے دستور العمل
صاحب بلا ومصیبت کو دیکھتے وقت کا ذکر
زوجہ کے حاملہ ہونے کے وقت بیٹے کی تمنا کیلئے عمل
دعا عقیقہ
آداب عقیقہ
دعائے ختنہ
استخارہ قرآن مجید اور تسبیح کا دستور العمل
یہودی عیسائی اور مجوسی کو دیکھتے وقت کی دعا
انیس کلمات دعا جو مصیبتوں سے دور ہونے کا سبب ہیں
بسم اﷲ کو دروزے پر لکھنے کی فضیلت
صبح شام بلا وں سے تحفظ کی دعا
دعائے زمانہ غیبت امام العصر(عج)
سونے سے پہلے کی دعا
پوشیدہ چیز کی حفاظت کیلئے دستور العمل
پتھر توڑنے کا قرآنی عمل
سوتے اور بیداری کے وقت سورہ توحید کی تلاوت خواص
زراعت کی حفاظت کیلئے دستور العمل
عقیق کی انگوٹھی کی فضیلت
نیسان کے دور ہونے جانے کی دعا
نماز میں بہت زیادہ نیسان ہونے کی دعا
قوت حافظہ کی دوا اور دعا
دعاء تمجید اور ثناء پرودرگار

موت کے آداب اور چند دعائیں

ملحقات باقیات الصالحات

ملحقات باقیات الصالحات
دعائے مختصراورمفید
دعائے دوری ہر رنج وخوف
بیماری اور تکلیفوں کو دور کرنے کی دعا
بدن پر نکلنے والے چھالے دور کرنے کی دعا
خنازیر (ہجیروں )کو ختم کرنے کیلئے ورد
کمر درد دور کرنے کیلئے دعا
درد ناف دور کرنے کیلئے دعا
ہر درد دور کرنے کا تعویذ
درد مقعد دور کرنے کا عمل
درد شکم قولنج اور دوسرے دردوں کیلئے دعا
رنج وغم میں گھیرے ہوے شخص کا دستور العمل
دعائے خلاصی قید وزندان
دعائے فرج
نماز وتر کی دعا
دعائے حزین
زیادتی علم وفہم کی دعا
قرب الہی کی دعا
دعاء اسرار قدسیہ
شب زفاف کی نماز اور دعا
دعائے رہبہ (خوف خدا)
دعائے توبہ منقول از امام سجاد