Danishkadah Danishkadah Danishkadah
حضرت امام علی نے فرمایا، توبہ کا حسن، گناہوں کو دھو ڈالتا ہے۔ مستدرک الوسائل حدیث13707

مفاتیح الجنان و باقیات الصالحات (اردو)

دعائے مشلول

اس دعا کا ایک اور نام بھی ہے یعنی دعا الشاب الماخوذ بذنبہیہ وہ دعا جو ایک نوجوان نے اپنے گنا ہوں کی سزا میں گرفتار ہونے کے بعد پڑھی۔مہج الد عو ات اور کتابِ کفعمی میں مذکو ر ہے یہ وہ دعا ہے جو امیر المو منین- نے اس نوجوان کو تعلیم فرمائی جو اپنے والدین کی نافرمانی کرنے کے با عث شل ہوگیا تھا جب اس نے یہ دعا پڑھی تو خواب میں دیکھا کہ رسول اللہ (ص) نے اپنا د ست شفقت اسکے بدن پر پھیرا اور فرما یا کہ اس اسم اعظم کو حفظ کر لے کہ یقینا تیرا کا م بن جا ئے گا ۔اب جو اسکی آنکھ کھلی تو کیا د یکھتا ہے کہ اسکا نا کا رہ جسم درست ہو گیا ہے وہ دعا یہ ہے :

اَللّٰھُمَّ إنِّی ٲَسْٲَ لُکَ بِاسْمِکَ بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمنِ الرَّحِیمِ، یَا ذَا الْجَلالِ

اے اللہ! میں تجھ سے سوال کرتا ہوں تیرے نام کے واسطے سے اﷲ کے نام سے شروع کرتا ہوں جو رحمن ورحیم ہے اے صاحب

وَالاِِکْرامِ، یَا حَیُّ یَا قَیُّومُ، یَا حَیُّ لاَ إلہَ إلاَّ ٲَ نْتَ، یَا ھُوَ یَا مَنْ لاَ یَعْلَمُ ما ھُوَ وَلاَ

جلالت و بزرگی اے زندہ، اے نگہبان، اے زندہ سوائے تیرے کوئی معبود نہیں اے وہ کہ جسے کوئی نہیںجانتا کہ وہ کیا ہے اور کیسا

کَیْفَ ھُوَ وَلاَ ٲَیْنَ ھُوَ وَلاَ حَیْثُ ھُوَ إلاَّ ھُوَ، یَا ذَا الْمُلْکِ وَالْمَلَکُوتِ، یَا ذَا الْعِزَّۃِ

ہے ،وہ کہاں ہے ،وہ کیوںکر ہے ہاں وہ خود ہی جانتا ہے۔ اے صاحب ملک و ملکوت اے صاحب عزت و اقتدار، اے بادشاہ،

وَالْجَبَرُوتِ یا مَلِکُ یَا قُدُّوسُ یَا سَلامُ یَا مُؤْمِنُ یَا مُھَیْمِنُ یَا عَزِیزُ یَا جَبّارُ

اے پاک، اے سلا متی والے، اے امن دینے وا لے، اے پاسبان، اے عزت والے، اے زبردست ،اے بڑائی والے،

یَا مُتَکَبِّرُ یَا خالِقُ یَا بارِیَُ یَا مُصَوِّرُ، یَا مُفِیدُ یَا مُدَبِّرُ، یَا شَدِیدُ

اے پیدا کرنے والے، اے وجود دینے والے، اے صورت بنانے والے ،اے فائدہ دینے والے، اے تدبیر والے، اے محکم کار

یَا مُبْدِیَُ، یَا مُعِیدُ یَا مُبِیدُ یَا وَدُودُ یَا مَحْمُودُ یَا مَعْبُودُ

اے صاحب ایجاد، اے مرجع خلق، اے ظالم کوختم کرنے والے، اے محبت والے، اے نیک صفات والے، اے معبود

یَا بَعِیدُ یَا قَرِیبُ یَا مُجِیبُ، یَا رَقِیبُ یَا حَسِیبُ، یَا بَدِیعُ یَا رَفِیعُ

اے بعید، اے قریب، اے دعا قبول کرنے والے، اے نگہبان ،اے حساب کرنے والے ،اے ایجاد کرنے والے، اے بلند مرتبہ

یَا مَنِیعُ یَا سَمِیعُ، یَا عَلِیمُ یَا حَلِیمُ یَا کَرِیمُ یَا حَکِیمُ یَا قَدِیمُ، یَا عَلِیُّ

اے عالی مقام، اے سننے والے، اے علم والے، اے حلم والے، اے مہربان، اے حکمت والے ،اے وجود قدیم، اے عالی شان

یَا عَظِیمُ، یَا حَنَّانُ یَا مَنَّانُ، یَا دَیَّانُ یَا مُسْتَعانُ

اے بزرگی والے، اے محبت کرنے والے، اے احسان کرنے والے، اے حسا ب کرنے والے، اے جز ادینے والے، اے مدد کرنے

یَا جَلِیلُ یَا جَمِیلُ، یَا وَکِیلُ یَا کَفِیلُ، یَا مُقِیلُ یَا مُنِیلُ

والے، اے جلالت والے، اے صا حب جما ل، اے کارساز، اے سرپرست ،اے معاف کرنے والے ،اے پہنچانے والے

یَا نَبِیلُ یَا دَلِیلُ یَا ہادِی یَا بادِی یَا ٲَوَّلُ یَا آخِرُ، یَا ظاھِرُ یَا باطِنُ، یَا قائِمُ یَا دائِمُ

اے باعظمت ،اے رہنما ،اے رہبر، اے ابتدائ کرنے والے ،اے اول، اے آخر، اے ظاہر، اے باطن ،اے استوار ،اے ہمیشہ رہنے

یَا عالِمُ یَا حاکِمُ، یَا قاضِی یَا عادِلُ، یَا فاصِلُ یَا واصِلُ، یَا طاھِرُ

والے، اے علم والے، اے صاحب حکم، اے منصف ،اے عدل کرنے والے، اے سب سے جدا، اے سب سے ملے ہو ئے، اے پاک ،

یَا مُطَہِّرُ، یَا قادِرُ یَا مُقْتَدِرُ، یَا کَبِیرُ یَا مُتَکَبِّرُ، یَا واحِدُ یَا ٲَحَدُ یَا صَمَدُ، یَا مَنْ لَمْ

اے پاک کرنے والے، اے قدرت والے، اے اقتدار والے، اے بزرگ، اے بزرگی والے، اے یگانہ، اے یکتا ،اے بے نیاز، اے وہ

یَلِدْ وَلَمْ یُولَدْ وَلَمْ یَکُنْ لَہُ کُفُواً ٲَحَدٌ ، وَلَمْ یَکُنْ لَہُ صاحِبَۃٌ وَلاَ کانَ مَعَہُ وَزِیرٌ وَلاَ

جو کسی کا باپ نہیں اور نہ کسی کا بیٹا ہے اور جسکا کوئی ہمسر نہیں ہے اور نہ ہی اس کی کوئی زوجہ ہے نہ اس کیلئے کوئی وزیر ہے اور نہ اس نے

اتَّخَذَ مَعَہُ مُشِیراً وَلاَ احْتاجَ إلی ظَھِیرٍ وَلاَ کانَ مَعَہُ مِنْ إلہٍ غَیْرُھُ لاَ إلہَ إلاَّ ٲَنْتَ

اپنا کوئی مشیر بنایا ہے نہ وہ کسی مددگار کی حاجت رکھتا ہے اور نہ اسکے ساتھ کوئی اور معبود ہے سوائے تیرے کوئی معبود نہیں

فَتَعالَیْتَ عَمَّا یَقُولُ الظَّالِمُونَ عُلُوّاً کَبِیراً، یَا عَلِیُّ یَا شامِخُ یَا باذِخُ یَا فَتَّاحُ

پس تو اس سے بہت زیادہ بلند ہے جو یہ ظالم کہا کرتے ہیں۔اے عالی شان اے بلند مرتبہ والے اے عالی مرتبہ اے کھولنے والے

یَا نَفَّاحُ یَا مُرْتاحُ، یَا مُفَرِّجُ یَا ناصِرُ یَا مُنْتَصِرُ یَا مُدْرِکُ یَا

اے بخشنے والے اے ہوا کو چلانے والے اے راحت دینے والے اے مدد کرنے والے اے مدد دینے والے اے پہنچنے والے اے

مُھْلِکُ یَا مُنْتَقِمُ یَا باعِثُ یَا وارِثُ، یَا طالِبُ یَا غالِبُ، یَا مَنْ لاَ یَفُوتُہُ ہارِبٌ، یَا تَوَّابُ

ہلاک کرنے والے اے بدلہ لینے والے اے اٹھانے والے اے وارث اے طالب اے غالب اے وہ جس سے بھاگنے والا بھاگ

یَا ٲَوَّابُ یَا وَہَّابُ یَا مُسَبِّبَ الْاَسْبابِ یَا مُفَتِّحَ الْاَ بْوابِ،

نہیں سکتا اے توبہ قبول کرنے والے اے پلٹنے والے اے بہت دینے والے اے اسباب مہیاکرنے والے اے دروازوں کے

یَا مَنْ حَیْثُ ما دُعِیَ ٲَجابَ یَا طَھُورُ یَا شَکُورُ یَا عَفُوُّ

کھولنے والے اے وہ کہ جسے پکارا جا ئے تو وہ دعا قبول کرتا ہے اے بہت پاکیزہ اے بہت شکر کرنے والے اے معاف کرنے والے

یَا غَفُورُ، یَا نُورَ النُّورِ، یَا مُدَبِّرَ الاَُْمُورِ، یَا لَطِیفُ یَا خَبِیرُ، یَا مُجِیرُ یَا

اے بخشنے والے اے نورکے پیدا کرنے والے اے امورکی تدبیرکرنے والے اے مہربان اے خبردار اے پناہ دینے والے اے

مُنِیرُ، یَا بَصِیرُ یَا ظَھِیرُ یَا کَبِیرُ، یَا وِتْرُ یَا فَرْدُ، یَا ٲَبَدُ یَا سَنَدُ یَا صَمَدُ،

روشن کرنے والے اے بینا اے مددگاراے سب سے بڑے اے بزرگ اے یکتا اے تنہا اے ہمیشگی والے اے نگہبا ن اے بے نیاز

یَا کافِی یَا شافِی، یَا وافِی یَا مُعافِی، یَا مُحْسِنُ یَا مُجْمِلُ، یَا مُنْعِمُ یَا مُفْضِلُ،

اے کافی اے شفا د ینے والے اے وفا کرنے والے اے معا ف کرنے و الے اے احسا ن کرنے والے اے نیکوکار اے نعمت دینے

یَا مُتَکَرِّمُ یَا مُتَفَرِّدُ، یَا مَنْ عَلا فَقَھَرَ، یَا مَنْ مَلَکَ فَقَدَرَ،

والے اے بزرگواراے بڑے مرتبے والے اے یگانگی والے اے وہ جو بلندی کیساتھ غالب ہے اے وہ جو مالک ہے پھر قادر ہے

یَا مَنْ بَطَنَ فَخَبَرَ، یَا مَنْ عُبِدَ فَشَکَرَ، یَا مَنْ عُصِیَ فَغَفَرَ، یَا مَنْ لاَ تَحْوِیہِ الْفِکَرُ،

اے وہ جو نہاں ہے اور باخبر ہے اے وہ جو معبود ہے تو بدلہ دیتا ہے اے جو نافرمانی پر بخشتا ہے اے وہ جو فکر میں سما نہیں سکتا اور نگاہ

وَلاَ یُدْرِکُہُ بَصَرٌ، وَلاَ یَخْفی عَلَیْہِ ٲَثَرٌ، یَا رازِقَ الْبَشَرِ، یَا مُقَدِّرَ کُلِّ قَدَرٍ،

اسے دیکھ نہیں پاتی اور کوئی نشان اس سے پوشیدہ نہیں ہے اے انسانوں کو رزق دینے والے اے ہر اندازہ کے مقرر کرنے والے

یَا عالِیَ الْمَکانِ یَا شَدِیدَ الْاَرْکانِ یَا مُبَدِّلَ الزَّمانِ یَا قابِلَ الْقُرْبانِ یَا ذَا الْمَنِّ

اے بلند مرتبہ اے محکم وسائل والے اے زمانے کو بدلنے والے اے قربانی قبول کرنے والے اے صاحب نعمت و احسان

وَالاِحْسانِ یَا ذَا الْعِزَّۃِ وَالسُّلْطانِ یَا رَحِیمُ یَا رَحْمنُ یَا مَنْ ھُوَ کُلَّ یَوْمٍ فِی شَٲْنٍ

اے صاحب عزت اور ابدی حکومت والے اے رحیم اے رحمن اے وہ کہ ہر روز جسکی نئی شان ہے اے وہ

یَا مَنْ لاَ یَشْغَلُہُ شَٲْنٌ عَنْ شَٲْنٍ، یَا عَظِیمَ الشَّٲْنِ یَا مَنْ ھُوَ بِکُلِّ مَکانٍ، یَا سامِعَ

جسے ایک کام دوسرے کام سے غافل نہیں کرتا اے بڑے مقام والے اے وہ جو ہر جگہ موجود ہے اے آوازوں کے

الْاَصْواتِ یَا مُجِیبَ الدَّعَواتِ یَا مُنْجِحَ الطَّلِباتِ یَا قاضِیَ الْحاجاتِ یَا مُنْزِلَ

سننے والے اے دعا ئیں قبول کرنے والے اے مرادیں برلانے والے اے حاجات پوری کرنے والے اے برکتیں نازل کرنے

الْبَرَکاتِ یَا راحِمَ الْعَبَراتِ یَا مُقِیلَ الْعَثَراتِ یَا کاشِفَ الْکُرُباتِ یَا وَ لِیَّ الْحَسَناتِ

والے اے آنسوئوں پر رحم کھانے والے اے گناہوں کے معاف کرنے والے اے سختیاں دور کرنے والے اے نیکیوں کو پسند کرنے

یَا رافِعَ الدَّرَجاتِ یَا مُؤْتِیَ السُّؤْلاتِ یَا مُحْیِیَ الْاَمْواتِ یَا جامِعَ الشَّتاتِ یَا مُطَّلِعاً

والے اے مرتبے بلند کرنے والے اے مرادیں پوری کرنے والے اے مردوں کو زندہ کرنے والے اے بکھروں کو اکٹھا کرنے

عَلَی النِّیَّاتِ، یَا رادَّ ما قَدْ فاتَ یَا مَنْ لاَ تَشْتَبِہُ عَلَیْہِ الْاَصْواتُ، یَا مَنْ لاَ تُضْجِرُھُ

والے اے نیتوں کی خبر رکھنے والے اے کھوئی ہوئی چیزیں لوٹانے والے اے وہ جس پر آوازیں مشتبہ نہیں ہوتیں اے وہ جسے

الْمَسْٲَلاتُ وَلاَ تَغْشاھُ الظُّلُماتُ یَا نُورَ الْاَرْضِ وَالسَّماواتِ یَا سابِغَ النِّعَمِ یَا دافِعَ

کثرت سوال سے تنگی نہیں ہوتی اور تاریکیاں اسے گھیرتی نہیں ہیں اے آسمانوں اور زمین کی روشنی اے نعمتوں کے پورا کرنے

النِّقَمِ، یَا بارِیَٔ النَّسَمِ، یَا جامِعَ الاَُْمَمِ، یَا شافِیَ السَّقَمِ

والے اے بلائیں ٹالنے والے اے جانداروں کو پیدا کرنے والے اے امتوںکو جمع کرنے والے اے بیماروں کو شفا دینے والے

یَا خالِقَ النُّورِ وَالظُّلَمِ یَا ذَا الْجُودِ وَالْکَرَمِ یَا مَنْ لاَ یَطَٲُ عَرْشَہُ قَدَمٌ، یَا ٲَجْوَدَ

اے روشنی اور تاریکی کے پیدا کرنے والے اے صاحب جودو کرم اے وہ جس کے عرش پر کسی کا قدم نہیں آیا اے سخیوں میںسے

الْاَجْوَدِینَ، یَا ٲَکْرَمَ الْاَکْرَمِینَ، یَا ٲَسْمَعَ السَّامِعِینَ، یَا ٲَبْصَرَ النَّاظِرِینَ،

سب سے بڑے سخی اے بزرگی والوں سے زیادد بزرگ اے سننے والوں میں سے زیادہ سننے والے اے دیکھنے والوں میں سے زیادہ

یَا جارَ الْمُسْتَجِیرِینَ، یَا ٲَمانَ الْخائِفِینَ، یَا ظَھْرَ اللاَّجِینَ یَا وَ لِیَّ الْمُؤْمِنِینَ

دیکھنے والے اے پناہ گزینوں کی پناہ گاہ اے ڈرے ہوئوں کی جائے امن اے پناہ چاہنے والوں کی جائے پناہ اے مومنوں کے

یَا غِیاثَ الْمُسْتَغِیثِینَ، یَا غایَۃَ الطَّالِبِینَ، یَا صاحِبَ کُلِّ غَرِیبٍ، یَا مُؤْنِسَ کُلِّ

سرپرست اے فریادیوں کے فریاد رس اے طلبگاروں کی امید اے ہر سفر کرنے والے کے ساتھی اے ہر اکیلے کے ہم نشیں

وَحِیدٍ، یَا مَلْجَٲَ کُلِّ طَرِیدٍ، یَا مَٲْوی کُلِّ شَرِیدٍ، یَا حافِظَ کُلِّ ضَّالَّۃٍ، یَا راحِمَ

اے ہر نکالے گئے کی جائے پناہ اے بے ٹھکانوں کی قرارگاہ اے گمشدہ کے نگہبان اے بڑے بوڑھے پر رحم

الشَّیْخِ الْکَبِیرِ، یَا رازِقَ الطِّفْلِ الصَّغِیرِ، یَا جَابِرَ الْعَظْمِ الْکَسِیرِ، یَا فَاکَّ کُلِّ ٲَسِیرٍ

کرنے والے اے ننھے بچے کو روزی دینے والے اے ٹوٹی ہڈی کو جوڑنے والے اے ہر قیدی کو رہائی دینے والے اے بے چارے

یَا مُغْنِیَ الْبَائِسِ الْفَقِیرِ، یَا عِصْمَۃَ الْخائِفِ الْمُسْتَجِیرِ، یَا مَنْ لَہُ التَّدْبِیرُ وَالتَّقْدِیرُ

مفلس کو غنی بنانے والے اے خائف پناہ گزین کی جائے قرار اے تدبیر اور تقدیر کے مالک

یَا مَنِ الْعَسِیرُ عَلَیْہِ سَھْلٌ یَسِیرٌ یَا مَنْ لاَ یَحْتاجُ إلی تَفْسِیرٍ یَا مَنْ ھُوَ عَلَی کُلِّ شَیْئٍ

اے وہ جس کے لیے ہر مشکل کام آسان اور ہلکا ہے اے وہ جو تفسیر کا محتاج نہیں اے وہ جو ہر چیز پر قدرت

قدِیرٌ، یَا مَنْ ھُوَ بِکُلِّ شَیْئٍ خَبِیرٌ، یَا مَنْ ھُوَ بِکُلِّ شَیْئٍ بَصِیرٌ، یَا مُرْسِلَ الرِّیاحِ،

رکھتا ہے اے وہ جو ہر چیز سے واقف ہے اے وہ جو ہر چیز کو دیکھتا ہے اے ہوائوں کو چلانے والے

یَا فَالِقَ الْاِصْباحِ یَا بَاعِثَ الْاَرْواحِ، یَا ذَا الْجُودِ وَالسَّماحِ، یَا مَنْ بِیَدِھِ کُلُّ مِفْتاحٍ،

اے صبح کی پو کھولنے والے اے روحوں کو بھیجنے والے اے عطا و سخاوت والے اے وہ جس کے ہاتھ میںساری کنجیاں ہیں

یَا سَامِعَ کُلِّ صَوْتٍ، یَا سَابِقَ کُلِّ فَوْتٍ، یَا مُحْیِیَ کُلِّ نَفْسٍ بَعْدَ الْمَوْتِ ، یَا عُدَّتِی

اے ہر آواز کے سننے وا لے اے ہر گزرے ہوئے سے پہلے اے ہر نفس کو اس کی موت کے بعد زندہ کرنے والے اے سختیوں میں

فِی شِدَّتِی، یَا حافِظِی فِی غُرْبَتِی، یَا مُؤْنِسِی فِی وَحْدَتِی، یَا وَلِیِّی فِی نِعْمَتِی

میری پناہ اے سفر میں میرے محافظ اے میری تنہائی کے ہمدم اے میری نعمتوںکے مالک

یَا کَھْفِی حِینَ تُعْیِینِی الْمَذٰاھِبُ وَتُسَلِّمُنِی الْاَقارِبُ وَیَخْذُلُنِی کُلُّ صَاحِبٍ یَا عِمَادَ

اے میری پناہ جب مجھ پر راہیں بند ہوجائیں اور رشتہ دار مجھے دور کر دیں اور احباب مجھے چھوڑ جائیں اے اسکے سہارے جسکا

مَنْ لاَ عِمادَ لَہُ یَا سَنَدَ مَنْ لاَ سَنَدَ لَہُ یَا ذُخْرَ مَنْ لاَ ذُخْرَ لَہُ یَا حِرْزَ مَنْ لاَ حِرْزَ لَہُ

کوئی سہارا نہیں اے اسکی سند جسکی کوئی سند نہیں اے اسکے ذخیرے جسکا کوئی ذخیرہ نہیں

یَا کَھْفَ مَنْ لاَ کَھْفَ لَہُ، یَا کَنْزَ مَنْ لاَ کَنْزَ لَہُ، یَا رُکْنَ

اے اسکی پناہ جسکی کوئی پناہ نہیں اے اسکی اما ن جسکی کوئی امان نہیں اے اسکے خزانے جسکا کوئی خز انہ نہیں

مَنْ لاَ رُکْنَ لَہُ، یَا غِیاثَ مَنْ لاَ غِیاثَ لَہُ، یَا جَارَ مَنْ لاَ جَارَ لَہُ، یَا جَارِیَ اللَّصِیقَ

اے اسکے پشت پناہ جسکا کوئی پشت پناہ نہیں اے اسکے فریاد رس جسکا کوئی فریاد رس نہیں اے اسکے ہمسائے جسکا کوئی

یَا رُکْنِیَ الْوَثِیقَ، یَا إلھِی بِالتَّحْقِیقِ، یَا رَبَّ الْبَیْتِ الْعَتِیقِ، یَا شَفِیقُ یا رَفِیقُ،

ہمسایہ نہیں جو نزدیک تر ہے اے میرا مضبوط ترین سہارہ اے میرے حقیقی معبود اے خانہ کعبہ کے پروردگار اے مہربان اے دوست

فُکَّنِی مِنْ حَلَقِ الْمَضِیقِ، وَاصْرِفْ عَنِّی کُلَّ ھَمٍّ وَغَمٍّ وَضِیقٍ، وَاکْفِنِی شَرَّ مَا لاَ

مجھے تنگ گھیرے سے آزاد کر مجھ سے ہر غم و اندیشہ اور تنگی دور فرما دے مجھے اس شر سے بچا جو میری طاقت

ٲُطِیقُ، وَٲَعِنِّی عَلَی ما ٲُطِیقُ، یَا رَادَّ یُوسُفَ عَلَی یَعْقُوبَ، یَا کاشِفَ ضُرِّ ٲَیُّوبَ،

سے زیادہ ہے اور اس میں مدد دے جو میں سہہ سکتا ہوں اے وہ جس نے یعقوب (ع)کو یوسف(ع) واپس دلایا اے ایو ب (ع)کا دکھ دور کرنے

یَا غافِرَ ذَ نْبِ داوُدَ، یَا رافِعَ عِیسَی بْنِ مَرْیَمَ وَمُنْجِیَہُ مِنْ ٲَیْدِی الْیَھُودِ، یَا مُجِیبَ

والے اے دائود(ع) کی خطا معاف کرنے والے اے عیسی (ع)بن مریم کو آسمان پر اٹھانے والے۔ اور انہیں یہودیوں کے چنگل سے

نِدائِ یُونُسَ فِی الظُّلُماتِ یَا مُصْطَفِیَ مُوسی بِالْکَلِماتِ، یَا مَنْ غَفَرَ لاَِدَمَ خَطِیئَتَہُ

چھڑانے والے اے تاریکیوں میں یونس(ع) کی فریاد کو پہنچنے والے اے موسیٰ(ع) کو اپنے کلام کیلئے منتخب کرنے والے اے آدم(ع)

وَرَفَعَ إدْرِیسَ مَکَاناً عَلِیّاً بِرَحْمَتِہِ، یَا مَنْ نَجَّی نُوحاً مِنَ الْغَرَقِ، یَا مَنْ ٲَھْلَکَ عاداً

کے ترک اولی کو معاف کرنے والے اور ادریس (ع)کو اپنی رحمت سے بلند مقام پر لے جانے والے اے نوح (ع) کو ڈوبنے سے بچانے

الاَُْولی وَثَمُودَ فَما ٲَبْقَی وَقَوْمَ نُوحٍ مِنْ قَبْلُ إنَّھُمْ کَانُوا ھُمْ ٲَظْلَمَ وَٲَطْغَی

والے اے وہ جس نے عاد اولی اور ثمود کوہلا ک کیا پس کسی کو باقی نہ چھوڑا اور ان سے پہلے قوم نوح (ع)کو ہلاک کیا جو بڑے ظالم سرکش اور

وَالْمُؤْتَفِکَۃَ ٲَھْوَی، یَا مَنْ دَمَّرَ عَلی قَوْمِ لُوطٍ، وَدَمْدَمَ عَلی قَوْمِ شُعَیْبٍ، یَا مَنِ

دین میں افترا کرنے والے تھے اے وہ جس نے قوم لوط کی بستیوں کو الٹ دیا اور قوم شعیب پر عذاب بھیجا تھا اے وہ جس

اتَّخَذَ إبْراھِیمَ خَلِیلاً یَا مَنِ اتَّخَذَ مُوسی کَلِیماً وَاتَّخَذَ مُحَمَّداً صَلَّی اللّهُ عَلَیْہِ وَآلِہِ

نے ابراہیم(ع) کو اپنا خلیل بنایا اے وہ جس نے موسی(ع) کو اپنا کلیم بنایا اور محمد

وَعَلَیْھِمْ ٲَجْمَعِینَ حَبِیباً، یَا مُؤْتِیَ لُقْمانَ الْحِکْمَۃَ، وَالْواھِبَ

کو اپنا حبیب قرار دیا کہ خدا کی رحمت ہو ان پر انکی آل (ع) پر اور ان سب ہستیوں پر جنکا ذکر ہو ا ہے اے لقما ن (ع)کو حکمت عطاکرنے والے

لِسُلَیْمانَ مُلْکاً لاَ یَنْبَغِی لاََِحَدٍ مِنْ بَعْدِھِ، یَا مَنْ نَصَرَ ذَا الْقَرْنَیْنِ عَلَی الْمُلُوکِ

اور سلیما ن (ع)کو ایسی سلطنت د ینے و الے کہ جیسی سلطنت انکے بعد کسی کو نہیں ملی اے وہ جس نے جا بر بادشا ہوں کے خلاف ذوالقرنین

الْجَبابِرَ ۃِ یَا مَنْ ٲَعْطَی الْخِضْرَ الْحَیاۃَ وَرَدَّ لِیُوشَعَ بْنِ نُونٍ الشَّمْسَ بَعْدَ غُرُوبِہا

(ع)کی مدد فرمائی اے وہ جس نے خضر (ع)کو دا ئمی زندگی دی اور یوشع (ع)بن نون کی خاطر آفتاب کو پلٹایاجب کہ وہ غروب ہو چکا تھا اے وہ جس

یَا مَنْ رَبَطَ عَلی قَلْبِ ٲُمِّ مُوسی، وَٲَحْصَنَ فَرْجَ مَرْیَمَ ابْنَۃِ عِمْرانَ، یا مَنْ حَصَّنَ

نے مادر موسی(ع) کے دل کو سکون دیا اور مریم بنت عمران(ع) کو پاکدامنی سے سرفراز فرمایا اے وہ جس نے

یَحْیَی بْنَ زَکَرِیَّا مِنَ الذَّنْبِ وَسَکَّنَ عَنْ مُوسَی الْغَضَبَ یَا مَنْ بَشَّرَ زَکَرِیَّا بِیَحْیی

یحییٰ(ع) بن زکریا(ع)کو گناہ سے محفوظ رکھا اور موسی (ع)سے غضب کو دور فرمایااے وہ جس نے زکریا(ع) کو یحیی(ع) کی بشارت دی

یَا مَنْ فَدا إسْماعِیلَ مِنَ الذَّبْحِ بِذِبْحٍ عَظِیمٍ یَا مَنْ قَبِلَ قُرْبانَ ہابِیلَ وَجَعَلَ اللَّعْنَۃَ

اے وہ جس نے اسما عیل(ع) کے ذبح ہونے کو ذبح عظیم میں بدلااے وہ جس نے ہا بیل(ع) کی قربانی قبول فرمائی اور قابیل پر لعنت مسلط کر

عَلی قابِیلَ، یَا ہازِمَ الْاَحْزابِ لِمُحَمَّدٍ صَلَّی اللّهُ عَلَیْہِ وَآلِہِ صَلِّ عَلی مُحَمَّدٍ وَآلِ

دی اے حضرت محمد کی خاطر کفار کے جتھو ں کو شکست دینے والے محمد(ص) و آل محمد(ص) پر

مُحَمَّدٍ وَعَلی جَمِیعِ الْمُرْسَلِینَ وَمَلائِکَتِکَ الْمُقَرَّبِینَ وَٲَھْلِ طَاعَتِکَ ٲَجْمَعِینَ وَٲَسْٲَلُکَ

رحمت نازل کر اپنے تمام رسولوں پر اور اپنے مقرب فرشتوں پر اور فرمانبردار بندوں پر رحمت نازل فرما اور میں سوال کرتا ہوں تجھ سے

بِکُلِّ مَسْٲَلَۃٍ سَٲَلَکَ بِہا ٲَحَدٌ مِمَّنْ رَضِیتَ عَنْہُ،فَحَتَمْتَ لَہ عَلیٰ الْاِجابَۃِ، یَا اللّهُ

ہر اس سوال کے واسطے سے جو تیرے ہر اس بندے نے کیا جس سے تو راضی و خوش ہے پھر تو نے اسکی دعا یقینا قبول فرمائی یااللہ

یَا اللّهُ یَا اللّهُ،یَا رَحْمنُ یَا رَحْمنُ یَا رَحْمنُ،یا رَحِیمُ یَا رَحِیمُ یَا رَحِیمُ، یَا ذَا

یااللہ یااﷲ یارحمن یارحمن یارحمن یارحیم یارحیم یارحیم اے جلالت

الْجَلالِ وَالْاِکْرامِ یَا ذَا الْجَلالِ وَالْاِکْرامِ یَا ذَا الْجَلالِ وَالْاِکْرامِ بِہِ بِہِ بِہِ بِہِ بِہِ بِہِ بِہِ

و بزرگی والے اے جلالت وبزرگی والے اے جلالت و بزرگی والے اسی کا واسطہ اسی کا اسی کا اسی کا اسی کا اسی کا اسی کا

ٲَسْٲَ لُکَ بِکُلِّ اسْمٍ سَمَّیْتَ بِہِ نَفْسَکَ، ٲَوْ ٲَنْزَلْتَہُ فِی شَیْئٍ مِنْ کُتُبِکَ، ٲَوِ اسْتَٲَثَرْتَ

میں سوال کرتا ہوں تیرے ہر اس نام کے واسطہ سے جس سے تو نے اپنی ذات کو پکارایا اپنے صحیفوں میں سے کسی میں اتارا یا اسے

بِہِ فِی عِلْمِ الْغَیْبِ عِنْدَکَ، وَبِمَعاقِدِ الْعِزِّ مِنْ عَرْشِکَ، وَبِمُنْتَھَی الرَّحْمَۃِ مِنْ کِتابِکَ

علم غیب میں اپنے لئے مقرر و خاص کیا ہے ان مقامات بلند کا واسطہ جو تیرے عرش میں ہیں اس انتہائی رحمت کا واسطہ

وَبِما لَوْ ٲَنَّ ما فِی الْاَرْضِ مِنْ شَجَرَۃٍ ٲَقْلامٌ وَالْبَحْرُ یَمُدُّھُ مِنْ بَعْدِھِ سَبْعَۃُ ٲَبْحُرٍ

جو تیری کتاب میں ہے اور اس آیت کا واسطہ کہ اگر زمین کے تمام درخت قلم اور سمندر روشنائی بن جائیں اسکے بعد سات سمندر

ما نَفِدَتْ کَلِماتُ اللّهِ إنَّ اللّهَ عَزِیزٌ حَکِیمٌ، وَٲَسْٲَ لُکَ بِٲَسْمائِکَ الْحُسْنَی

اور ہوں تو بھی خدا کے کلمات تمام نہیں ہوں گے بے شک اللہ غا لب ہے حکمت والا اور میں سوال کرتا ہوں تیرے پیارے ناموں

الَّتِی نَعَتَّہٰا فِی کِتابِکَ فَقُلْتَ وَلِلّٰہِ الْاَسْمائُ الْحُسْنی فَادْعُوھُ بِہا وَقُلْتَ ادْعُونِی

کیساتھ جنکی تو نے قرآن میں توصیف کی پس تو نے کہا اور اللہ کیلئے ہیں پیارے پیارے نام تو تم اسے انہی سے پکارو اور تو نے کہا

ٲَسْتَجِبْ لَکُمْ، وَقُلْتَ وَ إذا سَٲَلَکَ عِبادِی عَنِّی فَ إنِّی قَرِیبٌ ٲُجِیبُ دَعْوَۃَ

مجھے پکارو میں تمہاری دعا قبول کروں گا اور تونے کہا کہ جب میرے بندے مجھے پکاریں تو میں ان کے قریب ہی ہوتا ہوںمیں دعا

الدَّاعِ إذا دَعَانِ، وَقُلْتَ یا عِبادِیَ الَّذِینَ ٲَسْرَفُوا عَلی ٲَنْفُسِھِمْ لا تَقْنَطُوا مِنْ

کرنے والے کی دعا قبول کرتا ہوں جب وہ دعا کرے اور تو نے کہا اے میرے وہ بندو جنہوں نے اپنے اوپر ظلم کیا ہے کہ تم اللہ کی

رَحْمَۃِ اللّهِ إنَّ اللّهَ یَغْفِرُ الذُّنُوبَ جَمِیعاً إنَّہُ ھُوَ الْغَفُورُ الرَّحِیمُ وَٲَ نَا ٲَسْٲَ لُکَ یَا

رحمت سے ناامید نہ ہو جانا کہ بے شک اللہ تمام گناہ بخش دے گا یقینا وہ بہت بخشنے والا مہربان ہے اور میں سوال کرتا ہوں تجھ سے

إلھِی، وَٲَدْعُوکَ یَا رَبِّ، وَٲَرْجُوکَ یَا سَیِّدِی، وَٲَطْمَعُ فِی إجابَتِی

اے معبود تجھے پکارتا ہوں اے پروردگار اور تجھ سے امید رکھتا ہوں اے میرے آقامیںدعا کے قبول ہونے کی طمع رکھتا ہوں اے

یَا مَولایَ کَما وَعَدْتَنِی وَقَدْ دَعَوْتُکَ کَما ٲَمَرْتَنِی، فَافْعَلْ بِی ما ٲَ نْتَ ٲَھْلُہُ یَا کَرِیمُ،

میرے مولا جیسے تو نے وعدہ کیا اور میں نے تجھے پکارا جیسا کہ تو نے مجھے حکم دیا پس اے کریم ذات تو بھی مجھ سے وہ سلوک کر جسکا تو

وَالْحَمْدُ لِلّٰہِِ رَبِّ الْعالَمِینَ، وَصَلَّی اللّهُ عَلی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ ٲَجْمَعِینَ ۔

اہل ہے اور تعریف بس خدا کیلئے ہے جو عالمین کا رب ہے اور محمد(ص) اوراسکی تمام آل محمد(ص) پر اﷲ رحمت فرمائے۔

اسکے بعد اپنی حاجات طلب کریں کہ انشااللہ پوری ہوگی اور مہج الدعوات میں ہے کہ اس دعا کوباطہارت حالت ہی میں پڑھا جائے۔

دعائے یستشیر

سید ابن طاؤس نے مہج الدعوات میں امیر المومنین -سے روایت کی ہے، کہ آپ نے فرمایا: رسول اﷲ نے مجھے یہ دعا تعلیم فرمائی اور یہ حکم بھی دیا کہ میں تنگی و فراخی میں اس دعا کو پڑھتا رہوں اور اپنے جانشین کو اسکی تعلیم دوں اور تا دم آخر اسے ترک نہ کروںپھر فرمایا: کہ اے علی (ع) ہر مرد مؤمن صبح و شام یہ دعا پڑھے کیونکہ یہ عرش الٰہی کے خزانوں میں سے ایک خزانہ ہے، تب ابی بن کعب نے عرض کی کہ یا رسول اللہ اس دعا کی فضیلت بیان فرمائیں آنحضرت نے اسکا اجر وثواب اور بہت سے فضائل بیان فرمائے۔ پس جو شخص ان سے آگاہ ہونا چاہے وہ مہج الدعوات کی طرف رجوع کرے:

بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمنِ الرَّحِیمِ

خدا کے نام سے ﴿شروع﴾ جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے

الْحَمْدُ لِلّٰہِِ الَّذِی لاَ إلہَ إلاَّ ھُوَ الْمَلِکُ الْحَقُّ الْمُبِینُ، الْمُدَبِّرُ بِلا وَزِیرٍ، وَلاَ خَلْقٍ مِنْ

ساری تعریف خدا کیلئے ہے جسکے سوا کوئی معبود نہیں وہ بادشاہ حق ظاہر بظاہر ہے وہ بغیر وزیر کے اور مخلوق میں سے کسی کے مشورے

عِبادِھِ یَسْتَشِیرُ، الْاَوَّلُ غَیْرُ مَوْصُوفٍ، وَالْباقِی بَعْدَ فَنائِ الْخَلْقِ، الْعَظِیمُ الرُّبُوبِیَّۃِ،

کے بغیر نظم قائم کرنیوالا خدا ہے وہ ایسا اول ہے جسکا بیان نہیں ہوسکتا اور مخلوق کی فنائ کے بعد باقی رہنے والا ہے وہ ہے بڑا پالنے والا

نُورُ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرَضِینَ وَفاطِرُھُما وَمُبْتَدِعُھُما، بِغَیْرِ عَمَدٍ خَلَقَھُما وَفَتَقَھُما

آسمانوں اور زمینوں کو روشن کرنے والا انکا پیدا کرنیوالا اور انہیں بغیرستون کے بنانے والا ہے اس نے ان دونوں کو پیدا کیا اور

فَتْقاً، فَقامَتِ السَّمَاوَاتُ طایِعاتٍ بِٲَمْرِھِ، وَاسْتَقَرَّتِ الْأَرَضُونَ بِٲَوْتادِہا فَوْقَ

الگ الگ رکھا پس آسمان اسکی اطاعت کرتے ہوئے اسکے حکم پر کھڑے ہوگئے اور زمینیں اپنی میخوں کے سہارے پانی کے

الْمائِ، ثُمَّ عَلا رَبُّنا فِی السَّمَاوَاتِ الْعُلی، الرَّحْمنُ عَلَی الْعَرْشِ اسْتَوی، لَہُ ما فِی

اوپر ٹھہرگئی پھر ہمارا پروردگار اونچے آسمانوں پر مسلط ہوگیا وہی رحمن ہر بلندی پر حاوی ہوگیا جو کچھ

السَّمَاوَاتِ وَما فِی الْاَرْضِ وَما بَیْنَھُما وَما تَحْتَ الثَّری، فَٲَ نَا ٲَشْھَدُ بِٲَ نَّکَ ٲَنْتَ

آسمانوں میں اور جو کچھ زمین میں ہے جو کچھ انکے درمیان اور جو کچھ زیر زمین موجود ہے اسی کا ہے پس میں گواہی دیتا ہوں کہ تو ہی

اللّهُ لاَ رافِعَ لِما وَضَعْتَ، وَلاَ واضِعَ لِما رَفَعْتَ، وَلاَ مُعِزَّ

اللہ ہے جسے تو بلند کرے اسے کوئی پست کرنے والا نہیں ہے جسے تو پست کرے اسے کوئی بلند کرنے والا نہیں ہے اور جسے تو عزت

لِمَنْ ٲَذْ لَلْتَ، وَلاَ مُذِلَّ لِمَنْ ٲَعْزَزْتَ، وَلاَ مانِعَ لِما

دے اسے کوئی ذلیل کرنے والا نہیں جسے تو ذلیل کرے اسے کوئی عزت دینے والا نہیں ہے اور جس سے تو روک لے اس کو کوئی عطا

ٲَعْطَیْتَ، وَلاَ مُعْطِیَ لِما مَنَعْتَ، وَٲَنْتَ اللّهُ لاَ إلہَ إلاَّ ٲَنْتَ کُنْتَ

کرنے والا نہیں ہے جسے تو عطا کرے اس سے کوئی روکنے والا نہیں ہے اور تو ہی اللہ ہے تیرے سوا کوئی معبود نہیں ہے تو موجود تھا

إذْ لَمْ تَکُنْ سَمائٌ مَبْنِیَّۃٌ، وَلاَ ٲَرْضٌ مَدْحِیَّۃٌ، وَلاَ شَمْسٌ مُضِیئَۃٌ، وَلاَ لَیْلٌ مُظْلِمٌ، وَلاَ نَہارٌ

جب آسمان بلند نہیں کیا گیا تھا اور نہ زمین بچھائی گئی تھی اور نہ سورج چمکایا گیا تھا نہ تاریک رات اور نہ روشن

مُضِیئٌ، وَلاَ بَحْرٌ لُجِّیٌّ، وَلاَ جَبَلٌ راسٍ، وَلاَ نَجْمٌ سارٍ، وَلاَ قَمَرٌ مُنِیرٌ، وَلاَ رِیحٌ تَھُبُّ،

دن پیدا ہوا تھا نہ سمندر موجزن تھا نہ کوئی اونچا پہاڑ تھا نہ چلتا ہوا ستارہ تھا اور نہ چمکتا ہواچاند اور نہ چلتی ہوئی ہوا تھی

وَلاَ سَحَابٌ یَسْکُبُ، وَلاَ بَرْقٌ یَلْمَعُ، وَلاَ رَعْدٌ یُسَبِّحُ، وَلاَ رُوحٌ تَنَفَّسُ، وَلاَ طَائِرٌ یَطِیرُ،

نہ ہی برسنے والا بادل تھا نہ چمکنے والی بجلی اور نہ کڑکنے والے بادل نہ سانس لینے والی روح اور نہ اڑنے والا پرندہ تھا

وَلاَ نَارٌ تَتَوَقَّدُ، وَلاَ مائٌ یَطَّرِدُ، کُنْتَ قَبْلَ کُلِّ شَیْئٍ وَکَوَّنْتَ کُلَّ شَیْئٍ، وَقَدَرْتَ عَلی

نہ جلتی ہوئی آگ اور نہ بہتا ہوا پانی پس توہر چیز سے پہلے تھا اور تو نے ہر چیز کو بنایا توہی ہر شیئ پر قادر

کُلِّ شَیْئٍ، وَابْتَدَعْتَ کُلَّ شَیْئٍ، وَٲَغْنَیْتَ وَٲَ فْقَرْتَ، وَٲَمَتَّ وَٲَحْیَیْتَ، وَٲَضْحَکْتَ

و قدیر ہے تو نے ہر چیز کو ایجاد کیا اور انہیں بے حاجت اور محتاج بناتا ہے انہیں موت اور حیات دیتا ہے ہے ہنساتا ہے

وَٲَبْکَیْتَ، وَعَلَی الْعَرْشِ اسْتَوَیْتَ، فَتَبارَکْتَ یَا اللّهُ وَتَعالَیْتَ، ٲَنْتَ اللّهُ الَّذِی لاَ إلہَ إلاَّ

اور رلاتا ہے اور تو عرش پر حاوی ہے پس تو بابرکت ہے اے اللہ تو بلند ہے تو وہ اللہ ہے کہ تیرے سوا کوئی معبود نہیں

ٲَنْتَ الْخَلاَّقُ الْمُعِینُ، ٲَمْرُکَ غالِبٌ وَعِلْمُکَ نافِذٌ، وَکَیْدُکَ غَرِیبٌ، وَوَعْدُکَ

تو پیدا کرنے والا مدد دینے والا ہے تیرا حکم غالب تیرا علم گہرا اور تیری تدبیر عجیب ہے تیرا وعدہ

صَادِقٌ، وَقَوْلُکَ حَقٌّ، وَحُکْمُکَ عَدْلٌ، وَکَلامُکَ ھُدیً وَوَحْیُکَ نُورٌ،

سچا اور تیرا قول حق ہے اور تیرا فیصلہ عادلانہ اور تیرا کلام ہدایت والا ہے تیری وحی نور

وَرَحْمَتُکَ واسِعَۃٌ وَعَفْوُکَ عَظِیمٌ، وَفَضْلُکَ کَثِیرٌ، وَعَطاؤُکَ جَزِیلٌ، وَحَبْلُکَ

اور تیری رحمت وسیع ہے تیری بخشش عظیم تیرا فضل کثیر اور تیری عطا بہت بڑی ہے تیری رسی

مَتِینٌ وَ إمْکانُکَ عَتِیدٌ، وَجَارُکَ عَزِیزٌ، وَبَٲسُکَ شَدِیدٌ، وَمَکْرُکَ مَکِیدٌ، ٲَ نْتَ

مظبوط اور تیری قدرت آمادہ ہے تیری پناہ لینے والا قوی تیرا حملہ سخت اور تیری تجویز پیچ دار ہے اے پروردگار

یَا رَبِّ مَوْضِعُ کُلِّ شَکْوی، وَحاضِرُ کُلِّ مَلاَئٍ، وَشاھِدُ کُلِّ نَجْوی، مُنْتَہی کُلِّ حاجَۃٍ،

تو ہر شکایت کے پہنچنے کی جگہ ہر جماعت میں موجود اور ہر سرگوشی کا گواہ ہے تو ہر حاجت کی پناہ

مُفَرِّجُ کُلِّ حُزْنٍ، غِنیٰ کُلِّ مِسْکِینٍ، حِصْنُ کُلِّ ھَارِبٍ، ٲَمانُ کُلِّ خَائِفٍ، حِرْزُ

ہر غم کو دور کرنے والا ہر بے چارے کا سرمایہ ہر بھاگنے والے کیلئے قلعہ ہر ڈرنے والے کیلئے جائے امن کمزوروں کی

الضُّعَفائِ، کَنْزُ الْفُقَرَائِ، مُفَرِّجُ الْغَمَّائِ، مُعِینُ الصَّالِحِینَ، ذلِکَ اللّهُ رَبُّنا لاَ إلہَ إلاَّ ھُوَ،

ڈھال فقیروں کا خزانہ غموں کو مٹانے والا اور نیکوکاروں کا مددگار ہے یہی اللہ ہمارا رب ہے جسکے سوا کوئی معبود نہیں

تَکْفِی مِنْ عِبادِکَ مَنْ تَوَکَّلَ عَلَیْکَ، وَٲَ نْتَ جَارُ مَنْ لاذَ بِکَ وَتَضَرَّعَ إلَیْکَ،

تو اپنے ان بندوں کیلئے کافی ہے جو تجھ پر بھروسہ کرتے ہیں تو اسکی پناہ ہے جو تیری پناہ چاہے اورجو تجھ سے فریاد کرے

عِصْمَۃُ مَنِ اعْتَصَمَ بِکَ، ناصِرُ مَنِ انْتَصَرَ بِکَ، تَغْفِرُ الذُّنُوبَ لِمَنِ اسْتَغْفَرَکَ

اسکا مددگار جو تجھ سے مدد مانگے اسکا ناصر ہے جو تیری نصرت چاہے تو اسکے گناہ بخش دیتا ہے جو تجھ سے بخشش طلب کرے

جَبَّارُ الْجَبَابِرَۃِ عَظِیمُ الْعُظَمَائِ کَبِیرُ الْکُبَرائِ سَیِّدُ السَّادَاتِ مَوْلَی الْمَوَالِی صَرِیخُ

اسے معاف کر دیتا ہیتو جابروں پر غالب بزرگوں کا بزرگ بڑوں کا بڑا سرداروں کا سردار آقاؤں کا آقا دادخواہوں

المُسْتَصْرِخِینَ مُنَفِّسٌ عَنِ الْمَکْرُوبِینَ، مُجِیبُ دَعْوَۃِ الْمُضْطَرِّینَ،ٲَسْمَعُ السَّامِعِینَ،

کا دادرس مصیبت زدوں کا غمگسار بے قراروں کی دعا قبول کرنے والا سننے والوں میں زیادہ سننے والا

ٲَبْصَرُ النَّاظِرِینَ، ٲَحْکَمُ الْحَاکِمِینَ، ٲَسْرَعُ الْحَاسِبِینَ، ٲَرْحَمُ الرَّاحِمِینَ، خَیْرُ الْغَافِرِینَ،

دیکھنے والوں میں زیادہ دیکھنے والا حاکموں میں زیادہ حکم کرنیوالا جلد حساب کرنے والا رحم کرنے والوں میں زیادہ رحم والا بخشنے والوں میں

قَاضِی حَوائِجِ الْمُؤْمِنِینَ، مُغِیثُ الصَّالِحِینَ، ٲَ نْتَ اللّهُ لاَ إلہَ إلاَّ ٲَنْتَ رَبُّ الْعالَمِینَ،

سب سے بہتر مومنوں کی حاجات برلانے والا نیکوکاروں کا فریاد رس تیرے سوا کوئی معبود نہیں تو عالموں کا رب ہے

ٲَنْتَ الْخالِقُ وَٲَ نَا الْمَخْلُوقُ، وَٲَ نْتَ الْمَالِکُ وَٲَنَا الْمَمْلُوکُ، وَٲَ نْتَ الرَّبُّ وَٲَ نَا

تو خالق ہے اور میں مخلوق ہوں تو مالک ہے اور میں مملوک ہوں تو پروردگار ہے اور میں تیرا

الْعَبْدُ، وَٲَ نْتَ الرَّازِقُ وَٲَ نَا الْمَرْزُوقُ، وَٲَ نْتَ الْمُعْطِی وَٲَ نَا السَّائِلُ، وَٲَ نْتَ الْجَوادُ وَٲَ نَا

بندہ ہوں تو رازق ہے اور میں رزق پانے والا ہوںتو عطا کرنے والا اور میں مانگنے والا ہوں تو سخاوت کرنیوالا اور میں

الْبَخِیلُ، وَٲَ نْتَ الْقَوِیُّ وَٲَ نَا الضَّعِیفُ، وَٲَ نْتَ الْعَزِیزُ وَٲَ نَا الذَّلِیلُ، وَٲَ نْتَ الْغَنِیُّ و ٲَ نَا

کنجوس ہوں توقوت والا ہے اور میں کمزور ہوں تو عزت والا ہے اور میں ذلیل ہوں تو بے حاجت ہے اور میں

الْفَقِیرُ وَٲَ نْتَ السَّیِّدُ وَٲَ نَا الْعَبْدُ وَٲَ نْتَ الْغافِرُ وَٲَ نَا الْمُسِیئُ وَٲَ نْتَ الْعَالِمُ وَٲَ نَا الْجَاھِلُ

محتاج ہوں تو آقا ہے اور میں غلام ہوں تو بخشنے والا ہے اور میں گنہگار ہوں تو علم والا ہے اور میں نادان ہوں

وَٲَ نْتَ الْحَلِیمُ وَٲَ نَا الْعَجُولُ وَٲَ نْتَ الرَّحْمنُ وَٲَنَا الْمَرْحُومُ وَٲَ نْتَ الْمُعافِی وَٲَ نَا الْمُبْتَلی

تو بردبار ہے اور میں جلد باز ہوں تو رحم کرنے والا ہے اور میں رحم کیا ہوا تو عافیت دینے والا اور میں پھنسا ہوا ہوں

وَٲَ نْتَ الْمُجِیبُ وَٲَ نَا الْمُضْطَرُّ، وَٲَ نَا ٲَشْھَدُ بِٲَ نَّکَ ٲَ نْتَ اللّهُ لاَ إلہَ إلاَّ ٲَ نْتَ، الْمُعْطِی

تو دعا قبول کرنیوالا اور میں بے قرار ہوں اور میں گواہی دیتا ہوں کہ بے شک توہی معبود ہے تو جو اپنے بندوں

عِبادَکَ بِلا سُؤالٍ، وَٲَشْھَدُ بِٲَ نَّکَ ٲَ نْتَ اللّهُ الْواحِدُ الْاَحَدُ الْمُتَفَرِّدُ الصَّمَدُ الْفَرْدُ

کو بن مانگے عطا کرتا ہے اور میں گواہی دیتا ہوں کہ یقینا توہی خدائے یگانہ یکتا بے مثل بے نیاز بے مثال ہے

وَ إلَیْکَ الْمَصِیرُ، وَصَلَّی اللّهُ عَلی مُحَمَّدٍ وَٲَھْلِ بَیْتِہِ الطَّیِّبِینَ الطَّاھِرِینَ، وَاغْفِرْ لِی

اور تیری ہی طرف واپسی ہے اور خدا حضرت محمد(ص) پر اور انکے اہلبیت(ع) پر رحمت فرمائے جو پاک و پاکیزہ ہیں اور میرے گناہ

ذُ نُوبِی، وَاسْتُرْ عَلَیَّ عُیُوبِی، وَافْتَحْ لِی مِنْ لَدُنْکَ رَحْمَۃً وَرِزْقاً وَاسِعاً

معاف فرما دے اور میرے عیبوں کو چھپائے رکھ اور میرے لیے اپنی طرف سے در رحمت اور کشادہ اور رزق کے دروازے کھول

یَا ٲَرْحَمَ الرَّاحِمِینَ، وَالْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعالَمِینَ، وَحَسْبُنَا اللّهُ

دے اے سب سے زیادہ رحم کرنے والے اور سب تعریفیں اللہ ہی کیلئے ہیں جو عالمین کا رب ہے اور کا فی ہے ہمارے لیے ایک اللہ

وَنِعْمَ الْوَکِیلُ، وَلاَ حَوْلَ وَلاَ قُوَّۃَ إلاَّ بِاللّهِ الْعَلِیِّ الْعَظِیمِ ۔

جوبہترین کا رساز ہے اور نہیں کوئی طاقت و قوت مگر وہ جو خدائے بلند و برتر سے ملتی ہے۔

دعائے مجیر

یہ حضرت رسول خدا (ص) سے منقول بڑی شان والی دعا ہے اور روایت ہے کہ یہ دعا حضرت جبرائیل (ع)نے حضرت رسول(ص) کو اس وقت پہنچائی جب آپ مقام ابراہیم(ع) میں نماز ادا کررہے تھے۔ کفعمی نے بلد الامین اور مصباح میں اس دعا کو درج کیا ہے اور حاشیے میں اسکی فضیلت بھی ذکر کی ہے۔ وہ لکھتے ہیں کہ جو شخص اس دعا کو ماہ رمضان کے ایام بیض میں پڑھے تواسکے گناہ معاف ہوجائیں گے چاہے وہ بارش کے قطروں درختوں کے پتوں اور صحر اکی ریت کے ذروں کے برابر ہی کیوں نہ ہوں ۔ نیز یہ دعا مرض سے شفائ، ادائے قرض ،فراخی و توانگری اور غم کے دور ہونے کے کیلئے بھی مفید ہے۔

بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمنِ الرَّحِیمِ

خدا کے نام سے شروع جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے

سُبْحانَکَ یَا اللّهُ، تَعالَیْتَ یَا رَحْمنُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا رَحِیمُ

تو پاک ہے اے اللہ تو بلندتر ہے اے رحم کرنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے مہربان

تَعالَیْتَ یَا کَرِیمُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیر ۔ سُبْحانَکَ یَا مَلِکُ، تَعالَیْتَ یَا مالِکُ

تو بلندتر ہے اے کریم ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے بادشاہ تو بلندتر ہے اے آقا

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ، سُبْحانَکَ یَا قُدُّوسُ، تَعالَیْتَ یَا سَلامُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے پاک ترین تو بلندتر ہے اے سلامتی دینے والے ہمیں آگ سے پناہ دے

یَا مُجِیرُ سُبْحانَکَ یَا مُؤْمِنُ، تَعالَیْتَ یَا مُھَیْمِنُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ، سُبْحانَکَ

اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے امن دینے والے تو بلندتر ہے اے نگہبان ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے

یَا عَزِیزُ، تَعالَیْتَ یَا جَبَّارُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا مُتَکَبِّرُ، تَعالَیْتَ

اے صاحب عزت تو بلندتر ہے اے زبردست ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے بڑائی والے تو بلندتر ہے

یَا مُتَجَبِّرُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا خالِقُ، تَعالَیْتَ یَا بارِیَُ

اے بڑائی کے مالک ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے پیدا کرنیوالے تو بلندتر ہے اے بنانے والے

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا مُصَوِّرُ، تَعالَیْتَ یَا مُقَدِّرُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے صورت گر تو بلند ہے اے اندازہ ٹھہرانے والے ہمیں آگ سے پناہ دے

یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا ہادِی، تَعالَیْتَ یَا باقِی، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔

اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے ہدایت دینے والے تو بلندتر ہے اے باقی رہنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا وَہَّابُ، تَعالَیْتَ یَا تَوَّابُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ

تو پاک ہے اے بہت دینے والے تو بلندتر ہے اے توبہ قبول کرنیوالے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے

یَا فَتَّاحُ، تَعالَیْتَ یَا مُرْتاحُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا سَیِّدِی، تَعالَیْتَ

اے کھولنے والے تو بلندتر ہے اے صاحب راحت پناہ دے ہمیںآگ سے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے میرے سردار تو بلندتر ہے

یَا مَوْلایَ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ، سُبْحانَکَ یَا قَرِیبُ، تَعالَیْتَ یَا رَقِیبُ، ٲَجِرْنا مِنَ

اے میرے مولا ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے نزدیک تر تو بلندتر ہے اے نگہدار ہمیں آگ سے پناہ

النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا مُبْدِیَُ، تَعالَیْتَ یَا مُعِیدُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔

دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے ابتدائ کرنے والے تو بلندتر ہے اے لوٹا نے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا حَمِیدُ، تَعالَیْتَ یَا مَجِیدُ، ٲَجِرْنا مِنَ النّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا قَدِیمُ،

تو پاک ہے اے حمد کے لائق تو بلندتر ہے اے شان والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے توپاک ہے اے سب سے پہلے

تَعالَیْتَ یَا عَظِیمُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ، سُبْحانَکَ یَا غَفُورُ، تَعالَیْتَ یَا شَکُورُ،

تو بلند ترہے اے بزرگتر ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے بہت بخشنے والے تو بلندتر ہے اے لائق شکر

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا شَاھِدُ، تَعالَیْتَ یَا شَھِیدُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے گواہی دینے والے تو بلندتر ہے اے حاضر و موجود ہمیں آگ سے پناہ دے

یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا حَنَّانُ، تَعالَیْتَ یَا مَنَّانُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔

اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے محبت والے تو بلندتر ہے اے احسان کرنیوالے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا بَاعِثُ، تَعالَیْتَ یَا وَارِثُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا مُحْیِی،

تو پاک ہے اے اٹھانے والے تو بلندتر ہے اے سچے وارث ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے زندہ کرنے والے

تَعالَیْتَ یَا مُمِیتُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا شَفِیقُ، تَعالَیْتَ

تو بلندتر ہے اے موت دینے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے مہربانی کرنے والے تو بلندتر ہے

یَا رَفِیقُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا ٲَنِیسُ، تَعالَیْتَ یَا مُؤْنِسُ، ٲَجِرْنا

اے ساتھ دینے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے رفیق تو بلندتر ہے اے ہمدم و یاور ہمیں آگ

مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا جَلِیلُ، تَعالَیْتَ یَا جَمِیلُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔

سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے جلالت والے تو بلندتر ہے اے صاحب حسن ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا خَبِیرُ، تَعالَیْتَ یَا بَصِیرُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا حَفِیُّ،

تو پاک ہے اے خبر رکھنے والے تو بلندتر ہے اے دیکھنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے صاحب عقل

تَعالَیْتَ یَا مَلِیُّ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا مَعْبُودُ، تَعالَیْتَ یَا مَوْجُودُ،

تو بلندتر ہے اے مراد برلانے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے معبود تو بلندتر ہے اے موجود حقیقی

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا غَفَّارُ، تَعَالَیْتَ یَا قَہَّارُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ،

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے بخشنے والے تو بلندتر ہے اے زبردست ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا مَذْکُورُ، تَعالَیْتَ یَا مَشْکُورُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا جَوادُ

تو پاک ہے اے یاد کئے ہوئے تو بلندتر ہے اے شکر کیے گئے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے بہت زیادہ سخی

تَعالَیْتَ یَا مَعاذُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا جَمالُ، تَعالَیْتَ یَا جَلالُ،

تو بلندتر ہے اے جائے پناہ ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے حسن والے تو بلندتر ہے اے بزرگی والے

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا سَابِقُ، تَعالَیْتَ یَا رَازِقُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے سب سے اول تو بلندتر ہے اے رزق دینے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا صَادِقُ، تَعالَیْتَ یَا فَالِقُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا سَمِیعُ،

تو پاک ہے اے صاحب صدق تو بلندتر ہے اے شگافتہ کرنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے سننے والے

تَعالَیْتَ یَا سَرِیعُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا رَفِیعُ، تَعالَیْتَ یَا بَدِیعُ،

تو بلندتر ہے اے تیزتر ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے بلندی والے تو بلندتر ہے اے جدت والے

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا فَعَّالُ، تَعالَیْتَ یَا مُتَعالٍ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے بڑے فاعل تو بلندتر ہے اے عالی تر ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا قَاضِی، تَعالَیْتَ یَا رَاضِی، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا قَاھِرُ،

تو پاک ہے اے فی صلہ کرنے والے تو بلندتر ہے اے راضی ہو جانے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے زبردست

تَعالَیْتَ یَا طَاھِرُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا عَالِمُ، تَعالَیْتَ یَا حَاکِمُ،

تو بلندتر ہے اے پاکیزگی والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے صاحب علم تو بلندتر ہے اے صاحب حکم

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا دائِمُ، تَعالَیْتَ یَا قائِمُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے توپاک ہے اے ہمیشہ رہنے والے تو بلندتر ہے اے موجود ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا عَاصِمُ، تَعالَیْتَ یَا قاسِمُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ، سُبْحانَکَ یَا غَنِیُّ،

تو پاک ہے اے حفاظت کرنیوالے تو بلندتر ہے اے تقسیم کرنیوالے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے تونگر

تَعالَیْتَ یَا مُغْنِی، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا وَفِیُّ، تَعالَیْتَ یَا قَوِیُّ،

تو بلندتر ہے اے تونگر کرنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے وفا والے تو بلندتر ہے اے قوت والے

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا کَافِی، تَعالَیْتَ یَا شَافِی، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے، اے کفایت کرنے والے تو بلندتر ہے اے شفا دینے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا مُقَدِّمُ، تَعالَیْتَ یَا مُؤَخِّرُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ

تو پاک ہے اے سب سے پہلے تو بلندتر ہے اے سب سے آخر رہنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے

یَا ٲَوَّلُ، تَعالَیْتَ یَا آخِرُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا ظَاھِرُ، تَعالَیْتَ یَا بَاطِنُ،

اے سب سے اول تو بلندتر ہے اے سب سے آخر موجود ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے آشکار تو بلندتر ہے اے پوشیدہ

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا رَجَائُ، تَعالَیْتَ یَا مُرْتَجیٰ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے امیدگاہ تو بلندتر ہے اے امید کیے ہوئے ہمیں آگ سے پناہ دے

یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا ذَا الْمَنِّ، تَعالَیْتَ یَا ذَا الطَّوْلِ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔

اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے صاحب احسان تو بلندتر ہے اے صاحب بخشش ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا حَیُّ، تَعالَیْتَ یَا قَیُّومُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا واحِدُ

تو پاک ہے اے زندہ تو بلندتر ہے اے نگہبان ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے یگانہ

تَعالَیْتَ یَا ٲَحَدُ ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ، سُبْحانَکَ یَا سَیِّدُ، تَعالَیْتَ یَا صَمَدُ، ٲَجِرْنا مِنَ

تو بلندتر ہے اے یکتا ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے آقا تو بلندتر ہے اے بے نیاز ہمیں آگ سے

النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا قَدِیرُ، تَعالَیْتَ یَا کَبِیرُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔

پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے صاحب قدرت تو بلندتر ہے اے صاحب کبر ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا وَالِی، تَعالَیْتَ یَا عَالِی، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا عَلِیُّ،

توپاک ہے اے حاکم تو بلندتر ہے اے ذات عالی ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے بلند

تَعالَیْتَ یَا ٲَعْلیٰ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا وَ لِیُّ، تَعالَیْتَ یَا مَوْلیٰ،

تو بلندتر ہے اے سب سے بلند ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے سرپرست تو بلندتر ہے اے مالک

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا ذارِیَُ، تَعالَیْتَ یَا بَارِیَُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے ہوا چلانے والے تو بلندتر ہے اے پیدا کرنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے

یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا خَافِضُ، تَعالَیْتَ یَا رَافِعُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔

اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے پست کرنے والے تو بلندتر ہے اے بلند کرنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا مُقْسِطُ، تَعالَیْتَ یَا جَامِعُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ، سُبْحانَکَ

تو پاک ہے اے پراگندہ کرنے والے تو بلندتر ہے اے اکٹھا کرنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے

یَا مُعِزُّ، تَعالَیْتَ یَا مُذِلُّ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا حَافِظُ،

اے عزت دینے والے تو بلندتر ہے اے ذلت دینے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے حفاظت کرنے والے

تَعالَیْتَ یَا حَفِیظُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا قادِرُ، تَعالَیْتَ یَا مُقْتَدِرُ،

تو بلندتر ہے اے نگہبان ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے قدرت والے تو بلندتر ہے اے اقتدار والے

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا عَلِیمُ، تَعالَیْتَ یَا حَلِیمُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یا مُجِیرُ ۔

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے علم والے تو بلندتر ہے اے حلم والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا حَکَمُ، تَعالَیْتَ یَا حَکِیمُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا مُعْطِی،

تو پاک ہے اے فیصلہ کرنے والے توبلندتر ہے اے حکمت والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے عطا کرنے والے

تَعالَیْتَ یَا مانِعُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا ضَارُّ، تَعالَیْتَ

تو بلندتر ہے اے روک لینے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے نقصان دینے والے تو بلندتر ہے

یَا نَافِعُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا مُجِیبُ، تَعالَیْتَ یَا حَسِیبُ،

اے نفع دینے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے دعا قبول کرنے والے تو بلندتر ہے اے حساب کرنے والے

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ۔ سُبْحانَکَ یَا عادِلُ، تَعالَیْتَ یَا فاصِلُ، ٲَجِرْنا مِنَ

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے عدل کرنے والے تو بلند تر ہے اے جدا کرنے والے ہمیں آگ

النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا لَطِیفُ، تَعالَیْتَ یَا شَرِیفُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔

سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے لطف کرنے والے تو بلندتر ہے اے عزت والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا رَبُّ، تَعالَیْتَ یَا حَقُّ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ، سُبْحانَکَ یَا مَاجِدُ،

تو پاک ہے اے پالنے والے تو بلندتر ہے اے برحق ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے بزرگی والے

تَعالَیْتَ یَا وَاحِدُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا عَفُوُّ ۔ تَعالَیْتَ یَا مُنْتَقِمُ،

تو بلندتر ہے اے یکتا ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے معاف کرنے والے تو بلندتر ہے اے بدلہ لینے والے

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا واسِعُ تَعالَیْتَ یَا مُوَسِّعُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے کشادگی والے تو بلندتر ہے اے کشادگی دینے والے ہمیں آگ سے پناہ دے

یَا مُجِیرُ، سُبْحانَکَ یَا رَؤُوفُ، تَعالَیْتَ یَا عَطُوفُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ

اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے مہربانی کرنے والے تو بلندتر ہے اے نرمی کرنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا فَرْدُ تَعالَیْتَ یَا وِتْرُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا مُقِیتُ تَعالَیْتَ

تو پاک ہے اے بے مثل تو بلندتر ہے اے تنہا ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے نگاہ رکھنے والے تو بلندتر ہے

یَا مُحِیطُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا وَکِیلُ، تَعالَیْتَ یَا عَدْلُ،

اے احاطہ کرنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے کارساز تو بلندتر ہے اے انصاف کرنے والے

ٲَجِرْنا مِنَ النّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا مُبِینُ، تَعالَیْتَ یَا مَتِینُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے روشن تر تو بلندتر ہے اے محکم ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا بَرُّ، تَعالَیْتَ یَا وَدُودُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ، سُبْحانَکَ یَا رَشِیدُ،

تو پاک ہے اے نیکوتر تو بلندتر ہے اے محبت والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے ہدایت والے

تَعالَیْتَ یَا مُرْشِدُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یا مُجِیرُ، سُبْحانَکَ یَا نُورُ، تَعالَیْتَ یَا مُنَوِّرُ،

تو بلندتر ہے اے ہدایت دینے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے نور تو بلندتر ہے اے نور دینے والے

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ سُبْحانَکَ یَا نَصِیرُ، تَعالَیْتَ یَا نَاصِرُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے مدد کرنے والے تو بلندتر ہے اے مددگار ہمیں آگ سے پناہ دے

یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا صَبُورُ، تَعالَیْتَ یَا صَابِرُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔

اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے برداشت کرنے والے تو بلندتر ہے اے صبر کرنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے

سُبْحانَکَ یَا مُحْصِی، تَعالَیْتَ یَا مُنْشِیَُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحَانَکَ

تو پاک ہے اے جمع کرنے والے تو بلندتر ہے اے پیدا کرنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے

یَا سُبْحَانُ، تَعالَیْتَ یَا دَیَّانُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا مُغِیثُ، تَعالَیْتَ

اے پاک و پاکیزہ تو بلند تر ہے اے جزا دینے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے فریادرس تو بلندتر ہے

یَا غِیاثُ، ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ ۔ سُبْحانَکَ یَا فَاطِرُ، تَعالَیْتَ یَا حَاضِرُ،

اے فریاد کو پہنچنے والے ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے پیدا کرنے والے تو بلندتر ہے اے موجود

ٲَجِرْنا مِنَ النَّارِ یَا مُجِیرُ سُبْحانَکَ یَا ذَا الْعِزِّ وَالْجَمَالِ تَبارَکْتَ یَا ذَا الْجَبَرُوتِ وَالْجَلاَلِ

ہمیں آگ سے پناہ دے اے پناہ دینے والے تو پاک ہے اے بڑائی اور حسن والے تو بابرکت ہے اے صاحب اقتدار اور جلالت والے

سُبْحانَکَ لاَ إلہَ إلاَّ ٲَ نْتَ، سُبْحانَکَ إنِّی کُنْتُ مِنَ الظَّالِمِینَ فَاسْتَجَبْنا لَہُ وَنَجَّیْناھُ مِنَ

تو پاک ہے سوائے تیرے کوئی معبودنہیں ہے تو پاک ہے بے شک میں خطا کاروں میں ہوں سے پس ہم نے اس کی دعا قبول کی اور ہم نے اس کو

الْغَمِّ وَکَذلِکَ نُنْجِی الْمُؤْمِنِینَ، وَصَلَّی اللّهُ عَلی سَیِّدِنا مُحَمَّدٍ وَآلِہِ ٲَجْمَعِینَ وَالْحَمْدُ

رنج سے نجات دی اور ہم مومنوں کو اسی طرح نجات دیتے ہیں اور خدا ہمارے سردار حضرت محمد(ص) پر اور انکی ساری آل(ع) پر رحمت فرمائے اور ساری تعریف

لِلّٰہِِ رَبِّ الْعالَمِینَ ۔ وَحَسْبُنا اللّهُ وَنِعْمَ الْوَکِیلُ، وَلاَ حَوْلَ وَلاَ قُوَّۃَ إلاَّ بِاللّهِ الْعَلِیِّ الْعَظِیمِ

اللہ ہی کیلئے ہے جو عالمین کا رب ہے اور اللہ ہمارے لیے کافی ہے اور کارساز اور نہیں کوئی طاقت و قوت مگروہی جو بلند و برتر خدا سے ملتی ہے

دعائے عدیلہ

بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمنِ الرَّحِیمِ

خدا کے نام سے شروع جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے

شَھِدَ اللّهُ ٲَنَّہُ لاَ إلہَ إلاَّ ھُوَ وَالْمَلائِکَۃُ وَٲُولُوا الْعِلْمِ قَائِماً بِالْقِسْطِ لاَ إلہَ إلاَّ

خدا گواہ ہے کہ سوائے اسکے کوئی معبود نہیں نیز ملائکہ اور با انصاف صاحبان علم بھی اس پر گواہی دے رہے ہیںکہ سوائے اسکے کوئی معبود نہیں

ھُوَ الْعَزِیزُ الْحَکِیمُ، إنَّ الدِّینَ عِنْدَ اللّهِ الْاِسْلامُ، وَٲَ نَا الْعَبْدُ الضَّعِیفُ الْمُذْنِبُ الْعاصِی

جو صاحب عزت حکمت والا ہے یقینا خدا کاپسندیدہ دین اسلام ہی ہے اور میں جو ایک ناتواں گنہگار خطاکار

الْمُحْتاجُ الْحَقِیرُ، ٲَشْھَدُ لِمُنْعِمِی وَخالِقِی وَرازِقِی وَمُکْرِمِی کَما شَھِدَ لِذاتِہِ،

حاجت مند اور بے مایہ بندہ ہوں میں اپنے منعم ، خالق ، رازق اور اپنے کرم فرما خدا کی گواہی دیتا ہوں، جیسے اس نے اپنی ذات کی گواہی دی ہے

وَشَھِدَتْ لَہُ الْمَلائِکَۃُ وَٲُولُوا الْعِلْمِ مِنْ عِبادِھِ، بِٲَنَّہُ لاَ إلہَ إلاَّ ھُوَ ذُو النِّعَمِ وَالْاِحْسانِ،

نیز ملائکہ اور صاحب علم بندوں نے بھی اسکی گواہی دی ہے کہ سوائے اسکے کوئی معبود نہیں جو نعمت، احسان

وَالْکَرَمِ وَالْاِمْتِنانِ، قادِرٌ ٲَزَلِیٌّ، عالِمٌ ٲَبَدِیٌّ، حَیٌّ ٲَحَدِیٌّ، مَوْجُودٌ سَرْمَدِیٌّ، سَمِیعٌ بَصِیرٌ

و کرم اور عطا کا مالک ہے اور وہ ہمیشہ سے صاحب قدرت اور دائمی صاحب علم ،زندہ ،یکتا اور ہمیشگی والاموجود ہے سننے والا دیکھنے والا

مُرِیدٌ کارِہٌ، مُدْرِکٌ صَمَدِیٌّ، یَسْتَحِقُّ ھَذِھِ الصِّفاتِ وَھُوَ عَلَی ما ھُوَ عَلَیْہِ فِی عِزِّ

ارادے والا ناپسند کرنے والا پا لینے والا بے نیاز ہے وہ ان صفات کا صحیح حقدار ہے اور وہ دیگر صفات کا بھی

صِفاتِہِ، کَانَ قَوِیّاً قَبْلَ وُجُودِ الْقُدْرَۃِ وَالْقُوَّۃِ، وَکانَ عَلِیماً قَبْلَ إیجادِ الْعِلْمِ وَالْعِلَّۃِ، لَمْ

مالک ہے جو بہت بڑی صفات ہیں کہ قدرت اور قوت کے وجود میں آنے سے قبل وہ صاحب قوت تھا اور وہ صاحب علم تھا علم اور

یَزَلْ سُلْطاناً إذْ لاَ مَمْلَکَۃَ وَلاَ مالَ، وَلَمْ یَزَلْ سُبْحَاناً عَلی جَمِیعِ الْاَحْوالِ، وُجُودُھُ قَبْلَ

دلیل کی ایجاد سے پہلے وہ مستقل سلطان تھا جب نہ کوئی ملک تھا اور نہ مال ، وہ لا زوال پاکیزہ تھا ہر ہر حال میں کہ اس کا وجود قبل سے

الْقَبْلِ فِی ٲَزَلِ الاَْزالِ، وَبَقاؤُھُ بَعْدَ الْبَعْدِ مِنْ غَیْرِ انْتِقالٍ وَلاَ زَوالٍ، غَنِیٌّ فِی الْاَوَّلِ

قبل اور ازلوں کے ازل سے ہے اور اس کی بقا بعد سے بعد ہے کہ جسمیں نہ تبدیلی ہے نہ زوال وہ اول و آخر سے

وَالاَْخِرِ، مُسْتَغْنٍ فِی الْباطِنِ وَالظَّاھِرِ، لاَ جَوْرَ فِی قَضِیَّتِہِ، ولاَ مَیْلَ فِی مَشِیئَتِہِ، وَلاَ ظُلْمَ

بے نیاز اور ظاہر و باطن میں بے پرواہ ہے اسکے فیصلے میں ظلم نہیں اور اسکی مرضی میں طرفداری نہیں ہے اسکی تقدیر میں

فِی تَقْدِیرِھِ وَلاَ مَھْرَبَ مِنْ حُکُومَتِہِ وَلاَ مَلْجَٲَ مِنْ سَطَواتِہِ وَلاَ مَنْجیً مِنْ نَقِماتِہِ، سَبَقَتْ

ستم نہیں اور اسکی حکومت سے فرار ممکن نہیں اسکا قہر آئے تو کوئی پناہ نہیں اور وہ عذاب کرے تو نجات نہیں اسکی

رَحْمَتُہُ غَضَبَہُ وَلاَ یَفُوتُہُ ٲَحَدٌ إذا طَلَبَہُ، ٲَزاحَ الْعِلَلَ فِی التَّکْلِیفِ، وَسَوَّی التَّوْفِیقَ بَیْنَ

رحمت ،غضب سے پہلے ہے جسے وہ طلب کرے وہ فرار نہیں کرسکتا اس نے فریضوں میں اضداد دور کر دیں اور توفیق دینے میں

الضَّعِیفِ وَالشَّرِیفِ، مَکَّنَ ٲَدائَ الْمَٲْمُورِ، وَسَہَّلَ سَبِیلَ اجْتِنابِ الْمَحْظُورِ، لَمْ یُکَلِّفِ

ادنیٰ و اعلیٰ میں برابری رکھی ہے حکم کردہ باتوں پر عمل کو ممکن اور گناہ سے بچنے کا راستہ آسان کردیا ہے اس نے وسعت

الطَّاعَۃَ إلاَّ دُونَ الْوُسْعِ وَالطَّاقَۃِ سُبْحانَہُ مَا ٲَبْیَنَ کَرَمَہُ وَٲَعْلَی شَٲْنَہُ سُبْحانَہُ مَا ٲَجَلَّ نَیْلَہُ

و طاقت سے کمتر فریضے عائد کیئے ہیں پاک ہے وہ جسکا کرم کتنا واضح اور شان کتنی بلند ہے پاک ہے وہ کہ جسکا نام کتنا عمدہ

وَٲَعْظَمَ إحْسانَہُ بَعَثَ الْاَنْبِیائَ لِیُبَیِّنَ عَدْلَہُ، وَنَصَبَ الْاَوْصِیائَ لِیُظْھِرَ طَوْلَہُ وَفَضْلَہُ،

اور احسان کتنا بڑا ہے اس نے اپنے عدل کی تشریح کیلئے انبیائ بھیجے اور اپنے فضل و کرم کے اظہار کی خاطر اوصیائ کو مامور فرمایا

وَجَعَلَنا مِنْ ٲُمَّۃِ سَیِّدِ الْاَنْبِیائِ وَخَیْرِ الْاَوْ لِیائِ وَٲَفْضَلِ الْاَصْفِیائِ وَٲَعْلَی الْاَزْکِیائِ مُحَمَّدٍ

اور ہمیں نبیوں کے سردار ولیوں میں بہتر برگزیدوں میں سب سے افضل اور پاکبازوں میں سب سے بلند حضرت محمد(ص)

صَلَّی اللّهُ عَلَیْہِ وَ آلِہِ وَسَلَّمَ، آمَنَّا بِہِ وَبِما دَعانا إلَیْہِ، وَبِالْقُرْآنِ الَّذِی ٲَنْزَلَہُ عَلَیْہِ وَبِوَصِیِّہِ

کی امت میں قرار دیا ہم ان پر ایمان لائے اور انکے پیغام پر اور قرآن پر جو ان پر نازل ہوا اور انکے جانشین پر

الَّذِی نَصَبَہُ یَوْمَ الْغَدِیرِ وَٲَشارَ بِقَوْلِہِ ہذا عَلِیٌّ إلَیْہِ، وَٲَشْھَدُ ٲَنَّ الْاَئِمَّۃَ الْاَ بْرارَ وَالْخُلَفائَ

جسے انہوں نے یوم غدیر مقرر کیا اور اپنی زبان سے فرمایا کہ یہ ہے علی(ع) جو میرا وصی ہے اور میں گواہی دیتا ہوں کہ حضرت رسول(ص) کے بعد

الْاَخْیارَ بَعْدَ الرَّسُولِ الْمُخْتارِ عَلِیٌّ قامِعُ الْکُفّارِ وَمِنْ بَعْدِھِ سَیِّدُ ٲَوْلادِھِ الْحَسَنُ بْنُ عَلِیٍّ

نیکوکار امام(ع) اور بہترین جانشین ہیں جن میں علی(ع) ہی کافروں کو ختم کرنے والے ہیں اور انکے بعد انکی اولاد کے سردار حسن(ع) بن علی(ع)

ثُمَّ ٲَخُوھُ السِّبْطُ التَّابِعُ لِمَرْضاۃِ اللّهِ الْحُسَیْنُ ثُمَّ الْعابِدُ عَلِیٌّ ثُمَّ الْباقِرُ مُحَمَّدٌ ثُمَّ الصّادِقُ

پھر انکے بھائی نواسہ رسول(ص)، اللہ کی رضاؤں کے طلبگار حسین(ع) ہیں پھر علی(ع) بن الحسین(ع) پھر محمد باقر(ع)پھر جعفر

جَعْفَرٌ، ثُمَّ الْکَاظِمُ مُوسی، ثُمَّ الرِّضا عَلِیٌّ، ثُمَّ التَّقِیُّ مُحَمَّدٌ، ثُمَّ النَّقِیُّ عَلِیٌّ، ثُمَّ الزَّکِیُّ

صادق(ع) پھر موسیٰ کاظم(ع) پھر علی رضا(ع) پھر محمد تقی(ع) ہیں انکے بعد علی نقی(ع) ہیں پھر حسن عسکری

الْعَسْکَرِیُّ الْحَسَنُ، ثُمَّ الْحُجَّۃُ الْخَلَفُ الْقائِمُ الْمُنْتَظَرُ الْمَھْدِیُّ الْمُرْجَی الَّذِی بِبَقائِہِ

زکی(ع) ہیں پھر حضرت حجت خلف قائم المنتظر مہدی(ع) امیدگاہ خلق ہیں جنکی بقائ سے

بَقِیَتِ الدُّنْیا، وَبِیُمْنِہِ رُزِقَ الْوَری، وَبِوُجُودِھِ ثَبَتَتِ الْاَرْضُ وَالسَّمائُ، وَبِہِ یَمْلاُئ

دنیا قائم ہے اور انکی برکت سے مخلوق کو روزی ملتی ہے اور انکے وجود سے زمین و آسمان کھڑے ہیں اور انکے ذریعے اﷲ تعالیٰ

اللّهُ الْاَرْضَ قِسْطاً وَعَدْلاً بَعْدَما مُلِئَتْ ظُلْماً وَجَوْراً وَٲَشْھَدُ ٲَنَّ ٲَقْوالَھُمْ حُجَّۃٌ وَامْتِثالَھُمْ

زمین کو عدل وانصاف سے بھر دیگا جب کہ وہ ظلم و جور سے بھر چکی ہوگی میں گواہی دیتا ہوں کہ ان آئمہ کے اقوال حجت، ان پر عمل کرنا

فَرِیضَۃٌ وَطاعَتَھُمْ مَفْرُوضَۃٌ وَمَوَدَّتَھُمْ لازِمَۃٌ مَقْضِیَّۃٌ وَالْاِقْتِدائَ بِھِمْ مُنْجِیَۃٌ وَمُخالَفَتَھُمْ

واجب اور انکی پیروی فرض ہے اور ان سے محبت رکھنا ضروری و لازم ہے انکی اطاعت باعث نجات اور ان سے مخالفت

مُرْدِیَۃٌ، وَھُمْ سَاداتُ ٲَھْلِ الْجَنَّۃِ ٲَجْمَعِینَ، وَشُفَعائُ یَوْمِ الدِّینِ، وَٲَئِمَّۃُ ٲَھْلِ الْاَرْضِ عَلَی

وجہ تباہی ہے اور وہ سب کے سب اہل جنت کے سردار ہیں قیامت میں شفاعت کرنے والے اور یقینی طور پر اہل زمین کے امام(ع)

الْیَقِینِ وَٲَ فْضَلُ الْاَوْصِیائِ الْمَرْضِیِّینَ وَٲَشْھَدُ ٲَنَّ الْمَوْتَ حَقٌّ وَمُسائَلَۃَ الْقَبْرِ حَقٌّ وَالْبَعْثَ

ہیں وہ پسندیدہ اوصیائ میں سے افضل ہیں اور میں گواہی دیتا ہوں کہ موت حق ہے قبر میں سوال و جواب حق ہیں دوبارہ اٹھنا

حَقٌّ، وَالنُّشُورَ حَقٌّ، وَالصِّراطَ حَقٌّ، وَالْمِیزانَ حَقٌّ، وَالْحِسابَ حَقٌّ، وَالْکِتابَ حَقٌّ،

حق ہے قیامت میں حاضری حق ہے صراط سے گزرنا حق ہے میزان عمل حق ہے حساب حق ہے اور کتاب حق ہے

وَالْجَنَّۃَ حَقٌّ وَالنَّارَ حَقٌّ، وَٲَنَّ السَّاعَۃَ آتِیَۃٌ لاَ رَیْبَ فِیہا، وَٲَنَّ اللّهَ یَبْعَثُ مَنْ فِی الْقُبُورِ ۔

اسی طرح جنت حق ہے اور جہنم حق ہے نیز قیامت آنے والی ہے اس میں کوئی شک نہیں اور اللہ انہیں ضرور اٹھائے گا جو قبروں میں ہیں

اَللّٰھُمَّ فَضْلُکَ رَجَائِی، وَکَرَمُکَ وَرَحْمَتُکَ ٲَمَلِی، لاَ عَمَلَ لِی ٲَسْتَحِقُّ بِہِ الْجَنَّۃَ، وَلاَ

اے معبود! تیرا فضل میرا سہارا اور تیری رحمت و بخشش میری امید ہے میرا کوئی ایسا عمل نہیں جس سے میں جنت کا حقدا ر بنوں اور نہ

طاعَۃَ لِی ٲَسْتَوْجِبُ بِھَا الرِّضْوانَ إلاَّ ٲَنِّی اعْتَقَدْتُ تَوْحِیدَکَ وَعَدْلَکَ، وَارْتَجَیْتُ

عبادت ہے کہ جو تیری خوشنودی کا باعث ہو سوائے اسکے کہ میں تیری توحید و عدل پر اعتقاد رکھتا ہوںاور تیرے فضل و

إحْسانَکَ وَفَضْلَکَ وَتَشَفَّعْتُ إلَیْکَ بِالنَّبِیِّ وَآلِہِ مِنْ ٲَحِبَّتِکَ وَٲَنْتَ ٲَکْرَمُ الاَْکْرَمِینَ

احسان کی امید رکھتا ہوں اور تیرے حضور تیرے نبی(ص) اور انکی آل(ع) کی شفاعت لایا ہوں جو تیرے محبوب ہیں اور تو سب سے زیادہ کرم کرنے والا

وَٲَرْحَمُ الرَّاحِمِینَ، وَصَلَّی اللّهُ عَلی نَبِیِّنا مُحَمَّدٍ وَآلِہِ ٲَجْمَعِینَ الطَّیِّبِینَ الطَّاھِرِینَ وَسَلَّمَ

اور سب سے زیادہ رحم کرنے والا ہے اور ہمارے نبی محمد(ص) پر اور انکی ساری آل(ع) پر خدا کی رحمت ہو جو پاک و پاکیزہ ہیں اور ان پر سلام ہو

تَسْلِیماً کَثِیراً کَثِیراً، وَلاَ حَوْلَ وَلاَ قُوَّۃَ إلاَّ بِاللّهِ الْعَلِیِّ الْعَظِیمِ اَللّٰھُمَّ یَا ٲَرْحَمَ الرَّاحِمِینَ

سلام ِخاص زیادہ بہت زیادہ اور نہیں کوئی طاقت و قوت مگر وہ جو بلند وبرتر خدا سے ملتی ہے اے معبود اے سب سے زیادہ رحم کرنے والے

إنِّی ٲَوْدَعْتُکَ یَقِینِی ہذَا وَثَباتَ دِینِی وَٲَ نْتَ خَیْرُ مُسْتَوْدَعٍ، وَقَدْ ٲَمَرْتَنا بِحِفْظِ

بے شک میں اپنا یہ عقیدہ اوردین میں ثابت قدمی تیرے سپرد کرتا ہوں اور تو بہترین امانتدار ہے اور تو نے ہمیں امانتوں کی حفاظت کا حکم دیا ہے

الْوَدائِعِ فَرُدَّھُ عَلَیَّ وَقْتَ حُضُورِ مَوْتِی بِرَحْمَتِکَ یَا ٲَرْحَمَ الرَّاحِمِینَ۔

پس اپنی رحمت سے میرا یہ عقیدہ بوقت مرگ مجھے یاد دلادینا واسطہ تجھے تیری رحمت کا اے سب سے زیادہ رحم کرنے والے

مؤلف کہتے ہیں اسکے ساتھ معصومین سے یہ الفاظ بھی مروی ہیں:

اَلَّھُمَّ اِنِّیْ اَعُوْذُبِکَ مِنَ الْعَدِیْلَۃِ عِنْدَ الْمَوْتِ

اے معبود وقت مرگ اس عقیدے سے پلٹنے سے، میں تیری پناہ طلب کرتا ہوں

عدیلہ موت سے مراد موت کے وقت حق سے باطل کیطرف پھر جانا ہے، اسکی صورت یہ ہے کہ جان کنی کے وقت شیطان شک میں ڈال کر گمراہ کردیتا ہے اور یوں انسان ایمان چھوڑ بیٹھتا ہے یہی وجہ ہے کہ دعاؤں میں ایسی صورت حال سے پناہ طلب کی گئی ہے۔ فخر المحققین نے فرمایا ہے کہ جو شخص موت کے وقت اس خطرے سے محفوظ رہنا چاہتا ہے اسے ایمان اور اصول دین کی دلیلیں ذہن نشین کیے رکھنا چاہئیں اور پھر انکو بطور امانت خدا کی بارگاہ میں پیش کردینا چاہیئے تاکہ موت کی گھڑی میں یہ امانت اسے واپس مل جائے۔ اسکا طریقہ یہ ہے کہ عقائد حقّہ کو دہرانے کے بعد کہیں:

اَللّٰھُمَّ یَا ٲَرْحَمَ الرَّاحِمِینَ، إنِّی قَدْ ٲَوْدَعْتُکَ یَقِینِی ہذَا وَثَباتَ دِینِی وَٲَ نْتَ خَیْرُ

اے معبوداے سب سے زیادہ رحم کرنے والے بے شک میں اپنا یہ عقیدہ اور دین میں اپنی ثابت قدمی تیرے سپرد کرتا ہوںاور تو

مُسْتَوْدَعٍ، وَقَدْ ٲَمَرْتَنا بِحِفْظِ الْوَدائِعِ، فَرُدَّھُ عَلَیَّ وَقْتَ حُضُورِ مَوْتِی ۔

بہترین امانتدار ہے اور تو نے ہمیں امانتوں کی حفاظت کا حکم دیا ہے پس اپنی رحمت سے میرا یہ عقیدہ وقت مرگ مجھے یاد دلادینا۔

پس ان بزرگوار کے فرمان کے مطابق اس دعا عدیلہ کا پڑھنا اور اسکے مطالب کو وقتِ مرگ دل میں رکھنا، حق سے پھرجانے کے خطرے کو روکنا ہے۔ اب رہی یہ بات کہ آیا یہ دعا منقول ہے یا خود علمائے کرام نے اسے مرتب کیا ہے؟ اس بارے میں عرض ہے کہ علم حدیث کے ماہر اور اخبار ائمہ کے جمع کرنے والے اجل عالم، محدث ناقد و بابصیرت اور ہمارے استاد محدث اعظم الحاج مولانا میرزا حسین نوری ﴿ہ خدا انکے مرقد کو روشن کرے۔﴾ کا فرمان ہے کہ معروف دعائ عدیلہ بعض علمائ کی وضع کردہ ہے، یہ کسی امام (ع) سے نقل نہیں ہوئی اور نہ ہی یہ حدیث کی کتابوں میں پائی جائی ہے۔ لیکن واضح رہے کہ شیخ طوسی(رح) نے محمد بن سلیمان دیلمی سے روایت کی ہے کہ میں نے امام جعفر صادق -کی خدمت میں عرض کیا کہ بعض شیعہ بھائیوں کا کہنا ہے کہ ایمان کی دو قسمیں ہیں، یعنی ایک محکم و ثابت اور دوسرا عارضی و امانتی جو زائل ہوسکتا ہے۔ پس آپ مجھے کوئی ایسی دعا تعلیم فرمائیں کہ جسکے پڑھنے سے میرا ایمان قائم و ثابت رہے اور زائل نہ ہونے پائے۔ اس پر آپ (ع)نے فرمایا کہ ہر واجب نماز کے بعد یہ دعا پڑھا کرو۔

رَضِیتُ بِاللّهِ رَبّاً وَبِمُحَمَّدٍ صَلَّی اللّهُ عَلَیْہِ وَآلِہِ نَبِیّاً وَبِالْاِسْلامِ دِیناً، وَبِالْقُرْآنِ کِتاباً

میں راضی ہوں اس پر کہ اﷲ میرا رب اور حضرت محمد میرے نبی ہیں اسلام میرادین ہے قرآن میری کتاب ہے

وَبِالْکَعْبَۃِ قِبْلَۃً وَبِعَلِیٍّ وَ لِیّاً وَ إماماً وَبِالْحَسَنِ والحسین و علی ابن الحسین و محمد بن ِ

کعبہ میرا قبلہ ہے اور راضی ہوں اس پر کہ علی علیہ السلام میرے مولا اور امام ہیں نیز حسن (ع) و حسین (ع)، علی (ع) ابن حسین (ع) ، محمد(ع) ابن

علی و جعفر ابن محمد وَمُوسَی بْنِ جَعْفَرٍ وَعَلِیِّ بْنِ مُوسی وَمُحَمَّدبْنِ عَلِیٍّ وَعلی بن

علی (ع)، جعفر (ع) ابن محمد(ع) ، موسیٰ (ع) ابن جعفر(ع) ، علی (ع) ابن موسیٰ (ع)، محمد (ع) ابن علی(ع) ، علی (ع) ابن محمد(ع) ،

مُحَمَّدِ وَالْحَسَنِ بْنِ عَلِیٍّ وَالْحُجَّۃِ بْنِ الْحَسَنِ صَلَواتُ اللّهِ عَلَیْھِمْ ٲَئِمَّۃً اَللّٰھُمَّ إنِّی

حسن (ع) ابن علی (ع)، اور حجت(ع) بن حسن(ع) کہ ان پر اللہ کی رحمتیں ہوں میرے امام ہیں اے معبود میں راضی ہوں

رَضِیتُ بِھِمْ ٲَئِمَّۃً فَارْضَنِی لَھُمْ إنَّکَ عَلی کُلِّ شَیْئٍ قَدِیرٌ ۔

کہ وہ میرے امام (ع) ہیں پس انہیں مجھ سے راضی فرمادے بے شک توہر چیز پرقادر ہے

 

 

 

فہرست مفاتیح الجنان

فہرست سورہ قرآنی

تعقیبات, دعائیں، مناجات

جمعرات اور جمعہ کے فضائل

جمعرات اور جمعہ کے فضائل
شب جمعہ کے اعمال
روز جمعہ کے اعمال
نماز رسول خدا ﷺ
نماز حضرت امیرالمومنین
نماز حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا
بی بی کی ایک اور نماز
نماز امام حسن
نماز امام حسین
نماز امام زین العابدین
نماز امام محمد باقر
نماز امام جعفر صادق
نماز امام موسیٰ کاظم
نماز امام علی رضا
نماز امام محمد تقی
نماز حضرت امام علی نقی
نماز امام حسن عسکری
نماز حضرت امام زمانہ (عج)
نماز حضرت جعفر طیار
زوال روز جمعہ کے اعمال
عصر روز جمعہ کے اعمال

تعین ایام ہفتہ برائے معصومین

بعض مشہور دعائیں

قرآنی آیات اور دعائیں

مناجات خمسہ عشرہ

ماہ رجب کی فضیلت اور اعمال

ماہ شعبان کی فضیلت واعمال

ماہ رمضان کے فضائل و اعمال

ماہ رمضان کے فضائل و اعمال
(پہلا مطلب)
ماہ رمضان کے مشترکہ اعمال
(پہلی قسم )
اعمال شب و روز ماہ رمضان
(دوسری قسم)
رمضان کی راتوں کے اعمال
دعائے افتتاح
(ادامہ دوسری قسم)
رمضان کی راتوں کے اعمال
(تیسری قسم )
رمضان میں سحری کے اعمال
دعائے ابو حمزہ ثمالی
دعا سحر یا عُدَتِیْ
دعا سحر یا مفزعی عند کربتی
(چوتھی قسم )
اعمال روزانہ ماہ رمضان
(دوسرا مطلب)
ماہ رمضان میں شب و روز کے مخصوص اعمال
اعمال شب اول ماہ رمضان
اعمال روز اول ماہ رمضان
اعمال شب ١٣ و ١٥ رمضان
فضیلت شب ١٧ رمضان
اعمال مشترکہ شب ہای قدر
اعمال مخصوص لیلۃ القدر
اکیسویں رمضان کی رات
رمضان کی ٢٣ ویں رات کی دعائے
رمضان کی ٢٧ویں رات کی دعا
رمضان کی٣٠ویں رات کی دعا

(خاتمہ )

رمضان کی راتوں کی نمازیں
رمضان کے دنوں کی دعائیں

ماہ شوال کے اعمال

ماہ ذیقعدہ کے اعمال

ماہ ذی الحجہ کے اعمال

اعمال ماہ محرم

دیگر ماہ کے اعمال

نوروز اور رومی مہینوں کے اعمال

باب زیارت اور مدینہ کی زیارات

مقدمہ آداب سفر
زیارت آئمہ کے آداب
حرم مطہر آئمہ کا اذن دخول
مدینہ منورہ کی زیارات
کیفیت زیارت رسول خدا ۖ
زیارت رسول خدا ۖ
کیفیت زیارت حضرت فاطمہ سلام اللہ علیہا
زیارت حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا
زیارت رسول خدا ۖ دور سے
وداع رسول خدا ۖ
زیارت معصومین روز جمعہ
صلواة رسول خدا بزبان حضرت علی
زیارت آئمہ بقیع
قصیدہ ازریہ
زیارت ابراہیم بن رسول خدا ۖ
زیارت فاطمہ بنت اسد
زیارت حضرت حمزہ
زیارت شہداء احد
تذکرہ مساجد مدینہ منورہ
زیارت وداع رسول خدا ۖ
وظائف زوار مدینہ

امیرالمومنین کی زیارت

فضیلت زیارت علی ـ
کیفیت زیارت علی
پہلی زیارت مطلقہ
نماز و زیارت آدم و نوح
حرم امیر المومنین میں ہر نماز کے بعد کی دعا
حرم امیر المومنین میں زیارت امام حسین ـ
زیارت امام حسین مسجد حنانہ
دوسری زیارت مطلقہ (امین اللہ)
تیسری زیارت مطلقہ
چوتھی زیارت مطلقہ
پانچویں زیارت مطلقہ
چھٹی زیارت مطلقہ
ساتویں زیارت مطلقہ
مسجد کوفہ میں امام سجاد کی نماز
امام سجاد اور زیارت امیر ـ
ذکر وداع امیرالمؤمنین
زیارات مخصوصہ امیرالمومنین
زیارت امیر ـ روز عید غدیر
دعائے بعد از زیارت امیر
زیارت امیر المومنین ـ یوم ولادت پیغمبر
امیر المومنین ـ نفس پیغمبر
ابیات قصیدہ ازریہ
زیارت امیر المومنین ـ شب و روز مبعث

کوفہ کی مساجد

امام حسین کی زیارت

فضیلت زیارت امام حسین
آداب زیارت امام حسین
اعمال حرم امام حسین
زیارت امام حسین و حضرت عباس
(پہلا مطلب )
زیارات مطلقہ امام حسین
پہلی زیارت مطلقہ
دوسری زیارت مطلقہ
تیسری زیارت مطلقہ
چوتھی زیارت مطلقہ
پانچویں زیارت مطلقہ
چھٹی زیارت مطلقہ
ساتویں زیارت مطلقہ
زیارت وارث کے زائد جملے
کتب حدیث میں نااہلوں کا تصرف
دوسرا مطلب
زیارت حضرت عباس
فضائل حضرت عباس
(تیسرا مطلب )
زیارات مخصوص امام حسین
پہلی زیارت یکم ، ١٥ رجب و ١٥شعبان
دوسری زیارت پندرہ رجب
تیسری زیارت ١٥ شعبان
چوتھی زیارت لیالی قدر
پانچویں زیارت عید الفطر و عید قربان
چھٹی زیارت روز عرفہ
کیفیت زیارت روز عرفہ
فضیلت زیارت یوم عاشورا
ساتویں زیارت یوم عاشورا
زیارت عاشورا کے بعد دعا علقمہ
فوائد زیارت عاشورا
دوسری زیارت عاشورہ (غیر معروفہ )
آٹھویں زیارت یوم اربعین
اوقات زیارت امام حسین
فوائد تربت امام حسین

کاظمین کی زیارت

زیارت امام رضا

سامرہ کی زیارت

زیارات جامعہ

چودہ معصومین پر صلوات

دیگر زیارات

ملحقات اول

ملحقات دوم

باقیات الصالحات

مقدمہ
شب وروز کے اعمال
شب وروز کے اعمال
اعمال مابین طلوعین
آداب بیت الخلاء
آداب وضو اور فضیلت مسواک
مسجد میں جاتے وقت کی دعا
مسجد میں داخل ہوتے وقت کی دعا
آداب نماز
آذان اقامت کے درمیان کی دعا
دعا تکبیرات
نماز بجا لانے کے آداب
فضائل تعقیبات
مشترکہ تعقیبات
فضیلت تسبیح بی بی زہرا
خاک شفاء کی تسبیح
ہر فریضہ نماز کے بعد دعا
دنیا وآخرت کی بھلائی کی دعا
نماز واجبہ کے بعد دعا
طلب بہشت اور ترک دوزخ کی دعا
نماز کے بعد آیات اور سور کی فضیلت
سور حمد، آیة الکرسی، آیة شہادت اورآیة ملک
فضیلت آیة الکرسی بعد از نماز
جو زیادہ اعمال بجا نہ لا سکتا ہو وہ یہ دعا پڑھے
فضیلت تسبیحات اربعہ
حاجت ملنے کی دعا
گناہوں سے معافی کی دعا
ہر نماز کے بعد دعا
قیامت میں رو سفید ہونے کی دعا
بیمار اور تنگدستی کیلئے دعا
ہر نماز کے بعد دعا
پنجگانہ نماز کے بعد دعا
ہر نماز کے بعد سور توحید کی تلاوت
گناہوں سے بخشش کی دعا
ہرنماز کے بعد گناہوں سے بخشش کی دعا
گذشتہ دن کا ضائع ثواب حاصل کرنے کی دعا
لمبی عمر کیلئے دعا
(تعقیبات مختصر)
نماز فجر کی مخصوص تعقیبات
گناہوں سے بخشش کی دعا
شیطان کے چال سے بچانے کی دعا
ناگوار امر سے بچانے والی دعا
بہت زیادہ اہمیت والی دعا
دعائے عافیت
تین مصیبتوں سے بچانے والی دعا
شر شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا
رزق میں برکت کی دعا
قرضوں کی ادائیگی کی دعا
تنگدستی اور بیماری سے دوری کی دعا
خدا سے عہد کی دعا
جہنم کی آگ سے بچنے کی دعا
سجدہ شکر
کیفیت سجدہ شکر
طلوع غروب آفتاب کے درمیان کے اعمال
نماز ظہر وعصر کے آداب
غروب آفتاب سے سونے کے وقت تک
آداب نماز مغرب وعشاء
تعقیبات نماز مغرب وعشاء
سونے کے آداب
نیند سے بیداری اور نماز تہجد کی فضیلت
نماز تہجد کے بعددعائیں اور اذکار

صبح و شام کے اذکار و دعائیں

صبح و شام کے اذکار و دعائیں
طلوع آفتاب سے پہلے
طلوع وغروب آفتاب سے پہلے
شام کے وقت سو مرتبہ اﷲاکبر کہنے کی فضیلت
فضیلت تسبیحات اربعہ صبح شام
صبح شام یا شام کے بعد اس آیة کی فضیلت
ہر صبح شام میں پڑھنے والا ذکر
بیماری اور تنگدستی سے بچنے کیلئے دعا
طلوع وغروب آفتاب کے موقعہ پر دعا
صبح شام کی دعا
صبح شام بہت اہمیت والا ذکر
ہر صبح چار نعمتوں کو یاد کرنا
ستر بلائیں دور ہونے کی دعا
صبح کے وقت کی دعا
صبح صادق کے وقت کی دعا
مصیبتوں سے حفاظت کی دعا
اﷲ کا شکر بجا لانے کی دعا
شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا
دن رات امان میں رہنے کی دعا
صبح شام کو پڑھنی کی دعا
بلاؤں سے محفوظ رہنے کی دعا
اہم حاجات بر لانے کی دعا

دن کی بعض ساعتوں میں دعائیں

پہلی ساعت
دوسری ساعت
تیسری ساعت
چوتھی ساعت
پانچویں ساعت
چھٹی ساعت
ساتویں ساعت
آٹھویں ساعت
نویں ساعت
دسویں ساعت
گیارہویں ساعت
بارہویں ساعت
ہر روز وشب کی دعا
جہنم سے بچانے والی دعا
گذشتہ اور آیندہ نعمتوں کا شکر بجا لانے کی دعا
نیکیوں کی کثرت اور گناہوں سے بخشش کی دعا
ستر قسم کی بلاؤں سے دوری کی دعا
فقر وغربت اور وحشت قبر سے امان کی دعا
اہم حاجات بر لانے والی دعا
خدا کی نعمتوں کا شکر ادا کرنے والی دعا
دعاؤں سے پاکیزگی کی دعا
فقر وفاقہ سے بچانے والی دعا
چار ہزار گناہ کیبرہ معاف ہو جانے کی دعا
کثرت سے نیکیاں ملنے اور شر شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا
نگاہ رحمت الہی حاصل ہونے کی دعا
بہت زیادہ اجر ثواب کی دعا
عبادت اور خلوص نیت
کثرت علم ومال کی دعا
دنیاوی اور آخروی امور خدا کے سپرد کرنے کی دعا
بہشت میں اپنے مقام دیکھنے کی دعا

دیگر مستحبی نمازیں

نماز اعرابی
نماز ہدیہ
نماز وحشت
دوسری نماز وحشت
والدین کیلئے فرزند کی نماز
نماز گرسنہ
نماز حدیث نفس
نماز استخارہ ذات الرقاع
نماز ادا قرض وکفایت از ظلم حاکم
نماز حاجت
نماز حل مہمات
نماز رفع عسرت(پریشانی)
نماز اضافہ رزق
نماز دیگر اضافہ رزق
نماز دیگر اضافہ رزق
نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
نماز استغاثہ
نماز استغاثہ بی بی فاطمہ
نماز حضرت حجت(عج)
دیگر نماز حضرت حجت(عج)
نماز خوف از ظالم
تیزی ذہن اور قوت حافظہ کی نماز
گناہوں سے بخشش کی نماز
نماز دیگر
نماز وصیت
نماز عفو
(ایام ہفتہ کی نمازیں)
ہفتہ کے دن کی نماز
اتوار کے دن کی نماز
پیر کے دن کی نماز
منگل کے دن کی نماز
بدھ کے دن کی نماز
جمعرات کے دن کی نماز
جمعہ کے دن کی نماز

بیماریوں کی دعائیں اور تعویذات

بیماریوں کی دعائیں اور تعویذات
دعائے عافیت
رفع مرض کی دعا
رفع مرض کی ایک اوردعا
سر اور کان درد کا تعویذ
سر درد کا تعویذ
درد شقیقہ کا تعویذ
بہرے پن کا تعویذ
منہ کے درد کا تعویذ
دانتوں کے درد کا تعویذ
دانتوں کے درد کا تعویذ
دانتوں کے درد کا ایک مجرب تعویذ
دانتوں کے درد کا ایک اور تعویذ
درد سینے کا تعویذ
پیٹ درد کا تعویذ
درد قولنج کا تعویذ
پیٹ اور قولنج کے درد کا تعویذ
دھدر کا تعویذ
بدن کے ورم و سوجن کا تعویذ
وضع حمل میں آسانی کا تعویذ
جماع نہ کر سکنے والے کا تعویذ
بخار کا تعویذ
پیچش دور کرنے کی دعا
پیٹ کی ہوا کیلئے دعا
برص کیلئے دعا
بادی وخونی خارش اور پھوڑوں کا تعویذ
شرمگاہ کے درد کی دعا
پاؤں کے درد کا تعویذ
گھٹنے کے درد
پنڈلی کے درد
آنکھ کے درد
نکسیر کا پھوٹن
جادو کے توڑ کا تعویذ
مرگی کا تعویذ
تعویذسنگ باری جنات
جنات کے شر سے بچاؤ
نظر بد کا تعویذ
نظر بد کا ایک اور تعویذ
نظر بد سے بچنے کا تعویذ
جانوروں کا نظر بد سے بچاؤ
شیطانی وسوسے دور کرنے کا تعویذ
چور سے بچنے کا تعویذ
بچھو سے بچنے کا تعویذ
سانپ اور بچھو سے بچنے کا تعویذ
بچھو سے بچنے کا تعویذ

کتاب الکافی سے منتخب دعائیں

سونے اور جاگنے کی دعائیں

گھر سے نکلتے وقت کی دعائیں

نماز سے پہلے اور بعد کی دعائیں

وسعت رزق کیلئے بعض دعائیں

ادائے قرض کیلئے دعائیں

غم ،اندیشہ و خوف کے لیے دعائیں

بیماریوں کیلئے چند دعائیں

چند حرز و تعویذات کا ذکر

دنیا وآخرت کی حاجات کیلئے دعائیں

بعض حرز اور مختصر دعائیں

حاجات طلب کرنے کی مناجاتیں

بعض سورتوں اور آیتوں کے خواص

خواص با سور قرآنی
خواص بعض آیات سورہ بقرہ وآیة الکرسی
خواص سورہ قدر
خواص سورہ اخلاص وکافرون
خواص آیة الکرسی اورتوحید
خواص سورہ توحید
خواص سورہ تکاثر
خواص سورہ حمد
خواص سورہ فلق و ناس اور سو مرتبہ سورہ توحید
خواص بسم اﷲ اور سورہ توحید
آگ میں جلنے اور پانی میں ڈوبنے سے محفوظ رہنے کی دعا
سرکش گھوڑے کے رام کی دعا
درندوں کی سر زمین میں ان سے محفوظ رہنے کی دعا
تلاش گمشدہ کا دستور العمل
غلام کی واپسی کیلئے دعا
چور سے بچنے کیلئے دعا
خواص سورہ زلزال
خواص سورہ ملک
خواص آیہ الا الی اﷲ تصیر الامور
رمضان کی دوسرے عشرے میں اعمال قرآن
خواب میں اولیاء الہی اور رشتے داروں سے ملاقات کا دستور العمل
اپنے اندر سے غمزدہ حالت کو دور کرنے کا دستور العمل
اپنے مدعا کو خواب میں دیکھنے کا دستور العمل
سونے کے وقت کے اعمال
دعا مطالعہ
ادائے قرض کا دستور العمل
تنگی نفس اور کھانسی دور کرنے کا دستور العمل
رفع زردی صورت اور ورم کیلئے دستور العمل
صاحب بلا ومصیبت کو دیکھتے وقت کا ذکر
زوجہ کے حاملہ ہونے کے وقت بیٹے کی تمنا کیلئے عمل
دعا عقیقہ
آداب عقیقہ
دعائے ختنہ
استخارہ قرآن مجید اور تسبیح کا دستور العمل
یہودی عیسائی اور مجوسی کو دیکھتے وقت کی دعا
انیس کلمات دعا جو مصیبتوں سے دور ہونے کا سبب ہیں
بسم اﷲ کو دروزے پر لکھنے کی فضیلت
صبح شام بلا وں سے تحفظ کی دعا
دعائے زمانہ غیبت امام العصر(عج)
سونے سے پہلے کی دعا
پوشیدہ چیز کی حفاظت کیلئے دستور العمل
پتھر توڑنے کا قرآنی عمل
سوتے اور بیداری کے وقت سورہ توحید کی تلاوت خواص
زراعت کی حفاظت کیلئے دستور العمل
عقیق کی انگوٹھی کی فضیلت
نیسان کے دور ہونے جانے کی دعا
نماز میں بہت زیادہ نیسان ہونے کی دعا
قوت حافظہ کی دوا اور دعا
دعاء تمجید اور ثناء پرودرگار

موت کے آداب اور چند دعائیں

ملحقات باقیات الصالحات

ملحقات باقیات الصالحات
دعائے مختصراورمفید
دعائے دوری ہر رنج وخوف
بیماری اور تکلیفوں کو دور کرنے کی دعا
بدن پر نکلنے والے چھالے دور کرنے کی دعا
خنازیر (ہجیروں )کو ختم کرنے کیلئے ورد
کمر درد دور کرنے کیلئے دعا
درد ناف دور کرنے کیلئے دعا
ہر درد دور کرنے کا تعویذ
درد مقعد دور کرنے کا عمل
درد شکم قولنج اور دوسرے دردوں کیلئے دعا
رنج وغم میں گھیرے ہوے شخص کا دستور العمل
دعائے خلاصی قید وزندان
دعائے فرج
نماز وتر کی دعا
دعائے حزین
زیادتی علم وفہم کی دعا
قرب الہی کی دعا
دعاء اسرار قدسیہ
شب زفاف کی نماز اور دعا
دعائے رہبہ (خوف خدا)
دعائے توبہ منقول از امام سجاد