Danishkadah Danishkadah Danishkadah
حضرت امام علی زین العابدین نے فرمایا، برزخ سے مراد قبر ہے جہاں اکثر لوگوں کی زندگی بڑی تنگی اور سختی میں ہوگی، بخدا قبر یا تو جنت کے باغات میں سے ایک باغ ہے یا جہنم کے گڑھوں میں سے ایک گڑھا ہے۔ بحارالانوار کتاب الروضۃ باب21 حدیث10

الباقیات الصالحات

مقدمہ

بِسْمِ اﷲِ ا لرَّحْمٰنِ الرَّحْیمِ الْحَمْدُ ﷲِ الَّذِی سَمَکَ السَّمَائَ وَنَدَبَ عِبَادَہُ إلَی الدُّعائِ

خدا کے نام سے ﴿شروع کرتا ہوں﴾جو بڑا مہربان نہایت رحم کرنے والا ہے حمد ہے اس خدا کیلئے جس نے آسمان کو بلند کیا اور اپنے

وَالصَّلاۃُ وَاَلسَّلاَمُ عَلَی مَنْ قَدَّمَہُ فِی الْاِصْطِفَائِ مُحَمَّدٍ خاتَمِ الْاِنبِیَائِ وَعَلَی آلِہِ

بندوں کو دعا کی طرف رغبت دلائی۔ درود و سلام ہو اس ذات پر جسے اس نے برگذیدوں کا پیشوا قرار دیا کہ وہ نبیوں کے خاتم محمد(ص) ہیں اور

الطَّاھِرِینَ مَصابِیحِ الدُّجی سِیَّما عَلَی قَائِمِھِمْ خاتَمِ الاَوْصِیائِ۔

ان کی پاک اولاد پر سلام ہو۔جو تاریکی کے چراغ ہیں خصوصاً ان میں سے قائم پرسلام ہو، جو آخری وصی ہیں .

اس کے بعد یہ روسیاہ، گناہگار، خدا کی بارگاہ میں کوتاہی کرنے والا عباس بن محمد رضا القمی ﴿خدا ان دونوں سے در گذر فرمائے﴾عرض کرتا ہے کہ میں نے اس کتاب میں دن اور رات کے اعمال، بعض منقول نمازیں، چند تعویذ، حرز، مختصر اذکار اور دعائیں بعض سورتوں اور آیتوں کے خواص اور تجہیز و تکفین کے مسائل جمع کرکے اسے مفاتیح الجنان کا ضمیمہ بنایا ہے تا کہ یہ کتاب ہر لحاظ سے مکمل اور مفید بن جائے۔ میں نے اس مختصر کتاب کا نام ’’باقیات الصالحات فی ادعیہ و صلوات قرار دیا ہے جب کہ خدا وندمتعال نے فرمایا ہے: وَالْبَاقِیَاتُ الصَّالِحَاتُ خَیْر’‘ عِنْدَ رَبِّکَ ثَوَاباً وَخَیْرٌ ٲَمَلاً

اور باقی رہنے والے نیک کام تمھارے ربّ کے ہاں ثواب میں بہتر اور آرزومیں عمدہ ہیں

میں نے اس کتاب کو چھ ابواب اور ایک خاتمہ پر مرتب کیا ہے ۔

﴿پہلا باب:﴾ دن رات کے مختصر اعمال۔

﴿دوسراباب:﴾ بعض مستحب نمازیں ۔

﴿تیسرا باب :﴾ بیماری اور درد کے تعویذات اور دعائیں

﴿چوتھا باب:﴾ کتاب کافی سے منتخب شدہ دعائیں

﴿پانچواں باب:﴾ مہج الدعوات سے منتخب احراز اور دعائیں

﴿چھٹا باب:﴾ چند سورتوں اور آیتوں کے خواص

﴿خاتمہ ﴾ اموات کے متعلق مختصر احکام کے بیان میں ہے ۔

برادران ایمانی و شیعیان حیدر کرار(ع) سے امید واثق ہے کہ مؤلف جو مجرم و عاصی ہے وہ اسے اسکی زندگی میں اور موت کے بعد بھی دعا و طلب مغفرت کے وقت فراموش نہ فرمائیں گے ۔

شیخ عباس قمی النجفی

پہلا باب --------------------- شب و روز کے اعمال

اس میں شب وروز کے مختصر اعمال کا ذکر ہے اسکی چند فصلیں ہیں۔

پہلی فصل:اعمال مابین طلوعین

اس فصل میں ان اعمال کا بیان ہے جو طلوع فجر سے طلوع آفتاب تک کے وقت سے تعلق رکھتے ہیں۔ جاننا چاہیے کہ طلوع فجر اور طلوع آفتاب کا درمیانی وقت اوقات شریفہ میں سے ہے۔ اس وقت کی فضیلت اور اس میں عبادت اور ذکر الٰہی کرنے کی ترغیب و تحریص میں اہل بیت(ع) سے بہت زیادہ رو ایات بیان ہوئی ہیں ، بعض اخبار میں اس وقت کو غفلت کی ساعت کانام دیا گیا ہے۔ جیسا کہ امام محمد (ع)باقر سے نقل ہوا ہے کہ ابلیس ملعون دو وقتوں میں اپنے لشکروں کوپوری دنیا میں پھیلاتاہے وہ طلوع آفتاب اور غروب آفتاب کے اوقات ہیں۔ لہذا تم ان دو وقتوں میں خدا کو بہت یاد کیا کرو ،ابلیس اور اس کے لشکروں کے شر سے پناہ طلب کرو اور ان اوقات میں اپنے بچّوں کو خدا کی امان میں قرار دیا کرو کہ یہ دونوں وقت غفلت کی ساعتیں ہیں یاد رکھو کہ ان دونوں وقتوں میں سونا مکروہ ہے۔ جیسا کہ امام باقر - ہی سے مروی ہے کہ صبح کے وقت سونا بدبختی اور نحوست ہے ، اس وقت کا سونا رزق کو روکتا اور بدن کی رنگت کو زرد کر دیتا ہے اس وقت میں سونا بدقسمی کا موجب ہے کیونکہ حق تعالیٰ طلوع فجر سے طلوع آفتاب تک رزق کی تقسیم فرماتا ہے پس ایسے وقت میں سونے سے پرہیز کرو۔ شیخ طوسی نے مصباح میں نقل فرمایا ہے کہ صبح صادق کے نمودار ہونے کے وقت یہ دُعا پڑھی جائے ۔

اَللَّھُمَّ ٲَنْتَ صاحِبُنا فَصَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ وَٲَفْضِلْ عَلَیْنا اَللّٰھُمَّ بِنِعْمَتِکَ تَتِمُّ الصَّالِحات

اے معبود تو ہمارا مالک ہے پس محمد اور اُن کی آل(ع) پر رحمت فرما اور ہمیں بخش دے اے معبود تیری نعمت سے نیکیوں کی تکمیل ہوتی ہے

ُ فَصَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِوَٲَتْمِمْھا عَلَیْنا عائِذاً بِاﷲِ مِن النَّارِ، عائِذاً بِاﷲِ مِنَ النَّارِعائِذاً

پس درود بھیج محمد (ص) اور ان کی آل(ع) پر ور ہمیں نعمتوں سے نواز،آتش جہنم سے خداکی پناہ ،آتش جہنم سے خدا کی پناہ، آتش جہنم سے خدا

بِاﷲِ مِنَ النَّارِ ۔پھر کہیں:یَا فالِقَہُ مِنْ حَیْثُ لاَ ٲَری، وَمُخْرِجَہُ مِنْ ٲَری، وَمُخْرِجَہُ مِنْ

کی پناہ ،اے صبح کی اس جگہ سے ایجاد کرنے والے جسے میں دیکھتا نہیں اور اس جگہ سے نکالنے والے جسے میں دیکھتا ہوں تو

حَیْثُ ٲَری صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ وَاجْعَلْ ٲَوَّلَ یَوْمِنا ھذَا صَلاحاً، وَٲَوْسَطَہُ فَلاحاً

رحمت فرما محمد(ص) اور ان کی آل(ع) پر اور آج کے دن کے پہلے حصے کو ہمارے لیے بہتری والادرمیانی کو فائدے والا اور آخری حصے کو

وَآخِرَہُ نَجاحاً۔اس کے بعد دس مرتبہ کہے: اَللّٰھُمَّ إنِّی ٲُشْھِدُکَ ٲَنّہَُ مَا ٲَصْبَحَ بِی مِنْ نِعْمَۃٍ

کامیابی والا بنا ۔اے معبود! میں تجھے گواہ بنا کر کہتا ہوں کہ مجھے صبح کے وقت دینی و دنیوی جو بھی نعمت و راحت ملتی ہے وہ تیری

َوْعافِیَۃٍ فِی دِینٍ ٲَوْ دُنْیا فَمِنْکَ وَحْدَکَ لاَ شَرِیکَ لَکَ، لَکَ الْحَمْدُ وَلَکَ

طرف سے ہے و یکتا ہے تیرا کوئی شریک نہیں ہر نعمت و راحت پر تیری حمد و شکر کرنا

الشُّکْرُ بِھا عَلَیَّ حَتَّی تَرْضَی وَبَعْدَالرِّضا۔علاوہ ازیں اس وقت کیلئے کئی ایک اذکار بیان

مجھ پر واجب ہے ، حتیٰ کہ تو راضی ہو جائے اور راضی رہے .

ہوئے ہیں ان میں بہتر ذکر یہ ہے: سُبْحانَ اﷲ وَالْحَمْدُ لِلّٰہِِ وَلاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ وَاﷲُ ٲَکْبَرُ،اوراس

پاک ہے اﷲ حمد خدا ہی کے لیے ہے نہیں کوئی معبود سواے اﷲ کے اور اﷲ بزرگ تر ہے ۔

ذکر کو باقیات الصالحات سے تعبیر کیا گیا ہے ۔ اس دعا کا پڑھنا بھی مناسب ہے ۔

لاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ وَحْدَھُ لاَ شَرِیکَ لَہُ لَہُ الْمُلْکُ وَلَہُ الْحَمْدُ یُحْیِ وَیُمِیتُ وَیُمِیتُ وَیُحْیِی

اﷲ کے سوا کوئی معبود نہیں وہ یکتا ہے کوئی اس کا شریک نہیں حکومت اور حمد اسی کے لیے ہے وہ زندہ کرتا اور موت دیتا ہے اور موت دیتا اورزندہ کرتا

وَھُوَ حَیٌّ لاَ یَمُوتُ، بِیَدِھِ الْخَیْرُوَھُوَ عَلَی کُلِّ شَیْئٍ قَدِْیرٌ۔ جب صبح کی اذان سُنیں تو کہیں:

ہے اور وہ ایسا زندہ ہے کہ جسے موت نہیں ہر نیکی اس کے اختیار میں ہے اور وہ ہر چیز پرقدرت رکھتا ہے ۔

اَللَّھُمَّ إنِّی ٲَسْٲَلُکَ بِ إقْبالِ نَہارِکَ وَ إدْبارِ لَیْلِکَ وَحُضُورِ صَلَواتِکَ وَٲَصْواتِ

اے معبود! میں تجھ سے سوال کرتا ہوں تیرے دن کے آنے، تیری رات کے جانے اورتیری نماز کا وقت ہونے

دُعائِکَ وَتَسْبِیحِ مَلائِکَتِکَ ٲَنْ تُصَلِّیَ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ وَٲَنْ تَتُوبَ عَلَیَّ

تجھے پکارنے والی آوازوں اور تیرے فرشتوں کی تسبیح کے واسطے سے کہ تو رحمت نازل فرما محمد(ص) اور ان کی آل(ع) پر اور یہ کہ میری توبہ قبول کر کہ بیشک تو ہی

إنَّکَ ٲَنْتَ التَّوَّابُ الرَّحِیمُ۔

توبہ قبول کرنے والا مہربان ہے .

آداب تخلی

جب نماز کی تیاری کرنے لگیں اور بیت الخلا میں جانے کی حاجت بھی ہو توپہلے بیت الخلا جائیں اور پہلے بایاں پاؤں اندر رکھیں ﴿بیت الخلا کے آداب بہت زیادہ ہیں جن میں چند ایک یہاں ذکر کئے جا رہے ہیں۔﴾ چنانچہ جب اپنا بایاں پاؤں اندر رکھیں تو یہ دُعا پڑھیں:

بِسْمِ اﷲ وَبِاﷲِ ٲَعُوذُ بِاﷲِ مِنَ الرِّجْسِ النَّجِسِ الْخَبِیثِ الْمُخْبِث الشَّیْطانِ الرَّجِیمِ۔

خدا کے نام اور خدا کی ذات کے ذریعے خدا کی پناہ لیتا ہوں ناپاک غلیظ، گندے اور گندہ کرنے والے راندے ہوئے شیطان سے ۔

جب اپنا کپڑا ہٹاے تو بسم اﷲ پڑھے، اس حالت میں بلکہ ہر حالت میں اپنی شرمگاہ کو ہر محترم ناظر سے چھپائے بیت الخلا میں قبلہ رخ و پشت بہ قبلہ بیٹھنا حرام ہے اور مستحب ہے کہ رفع حاجت کے وقت یہ پڑھیں:

اَللّٰھُمَّ ٲَطْعِمْنِی طَیِّباً فِی عافِیَۃٍ وَٲَخْرِجْہُ مِنِّی خَبِیثاً فِی عافِیَۃٍ۔ اور جب پاخانے پر نظر پڑے تو کہیں :

اے معبود !مجھے پاک غذا آسائش کیساتھ نصیب فرما اور جب وہ ناپاک ہو جائے تو بھی اسے آسائش سے باہر نکال دے

اَللّٰھُمَّ ارْزُقْنِی الْحَلالَ وَجَنِّبْنِی الْحَرَامَ استنجائ سے پہلے استبرا کریں اور جب وضو کیلئے پانی پر نظر پڑے تو کہیں

اے معبود! مجھے رزق حلال عطا فرما اور حرام سے بچائے رکھ۔

الْحَمْدُ لِلّٰہِِ الَّذِی جَعَلَ الْمائَ طَھُوراً وَلَمْ یَجْعَلْہُ نَجِساً۔ استنجا کرتے وقت یہ دعا پڑھیں:

حمد ہے خدا کے لیے جس نے پانی کو پاکیزہ بنایا اور اسے ناپاک نہیں بنایا

اَللَّھُمَّ حَصِّنْ فَرْجِی وَٲَعِفَّہُ وَاسْتُرْ عَوْرَتِی وَحَرِّمْنِی عَلَی النَّارِ۔ جب اٹھ کھڑے ہوں تو اپنا دایاں

خدایا میری شرم گاہ کو محفوظ اور بے عیب رکھ میری پردہ پوشی فرما اور میرے بدن کو جہنم پر حرام کردے

ہاتھ پیٹ پر پھیرتے ہوئے یہ کہیں:الْحَمْدُ لِلّٰہِ الَّذِی ٲَماطَ عَنِّی الْاَذیٰ وَھَنَّٲَنِی طَعامِی وَشَرابِی

حمد ہے خدا کیلئے جس نے آزار کو مجھ سے دور کیا میرے کھانے پینے کو میرے لیے خوشگوار بنایا

وَعافانِی مِنَ الْبَلْوٰی۔ جب بیت الخلائ سے باہر نکلے تو پہلے دایاں پاؤں باہر رکھے اور یہ دعا پڑھے :

اور مجھے تکلیفوں سے بچایا۔

الْحَمْدُ لِلّٰہِ الَّذِی عَرَّفَنِی لَذَّتَہُ وَٲَبْقَی فِی جَسَدِی قُوَّتَہُ وَٲَخْرَجَ عَنِّی ٲَذاھُ یَا لَہا نِعْمَۃً

حمد ہے خدا کیلئے کہ جس نے مجھے غذاکی لذت بخشی اس کی قوت میرے بدن میں باقی رکھی اور اس کے آزار کو مجھ سے دور کیا ،کیا خوب نعمت ہے

یَا لَہا نِعْمَۃً یَا لَہا نِعْمَۃً، لاَ یُقَدِّرُ الْقادِرُونَ قَدْرَھَا۔

کیا خوب نعمت ہے ،کیا خوب نعمت ہے کہ اندازہ لگانے والے اس کی خوبی کا اندازہ نہیں کرسکتے ۔

﴿آداب وضو ﴾ ﴿فضیلت مسواک ﴾

جب وضو کا ارادہ کرے تو پہلے مسواک کرے کہ اس سے منہ پاکیزہ اور خوشبودار ہو جاتا ہے ،بلغم خارج ہو جاتی ہے قوت حافظہ میں اضافہ ہوتا ہے نیکیاں بڑھ جاتی ہیں اور اللہ کی خوشنودی حاصل ہوتی ہے مسواک کے ساتھ ادا کی جانے والی دو رکعتیں مسواک کے بغیر پڑھی جانے والی ستر رکعتوں سے افضل ہیں اگر مسواک نہ مل سکے تو دانتوں کو انگلی سے صاف کرنا بھی کافی ہے بہتر ہے کہ وضو کرتے وقت قبلہ رخ ہوکر بیٹھے پانی کا برتن داہنی طرف رکھے اور جب پانی پر نگاہ پڑے تو یہ دعا پڑھے :

الْحَمْدُ لِلّٰہِ الَّذِی جَعَلَ الْمائَ طَھُوراً وَلَمْ یَجْعَلْہُ نَجِساً۔ پانی کے برتن کو ہاتھ لگانے سے پہلے ہاتھوں کو

حمد ہے خدا کے لیے جس نے پانی کو پاکیزہ بنایا اور اسے ناپاک نہیں بنایا۔

دھوئے اور یہ دعا پڑھے: بِسْمِ اﷲ وَبِاﷲِ اَللَّھُمَّ اجْعَلْنِی مِنَ التَّوَّابِینَ وَاجْعَلْنِی مِنَ الْمُتَطَہِّرِینَ۔

خدا کے نام سے اور اس کی ذات کے سہارے سے خدایا تو مجھے توبہ کرنے اور پاک وپاکیزہ رہنے والوں میں قرار دے۔

اب تین چلو پانی سے تین مرتبہ کلی کرے اور کہے:اَللّٰھُمَّ لَقِّنِی حُجَّتِی یَوْمَ ٲَلْقاکَ، وَٲَطْلِقْ لِسانِی بِذِکْراکَ

خدایا قیامت میں پیشی کے وقت مجھے میری حجت بتا دینا اور میری زبانکو اپنے ذکر میں رواں کر دینا۔

پھر تین مرتبہ ناک میں پانی ڈالے اور کہے:اَللّٰھُمَّ لاَ تُحَرِّمْ عَلَیَّ رِیحَ الْجَنَّۃِ وَاجْعَلْنِی مِمَّنْ یَشَمُّ

خدایا مجھ پر جنت کی خوشبو حرام نہ فرمااور مجھے ان لوگوں میں رکھ ،راحت اور ہوا جوجنت کی خوشبوسے

رِیحَھَا وَرَوْحَھَا وَطِیبَہا۔ منہ دھوئے اور کہے:اَللّٰھُمَّ بَیِّضْ وَجْھِی یَوْمَ تَسْوَدُّ الْوُجُوھُ وَلاَ بہرہ یاب ہوں گے۔

اے معبود میرے چہرے کو اس دن سفید کرنا جب چہرے سیاہ ہونگے اور میرے چہرے کو اس دن سیاہ نہ

تُسَوِّدْ وَجْھِی یَوْمَ تَبْیَضُّ الْوُجُوھُ۔

کرنا جب چہرے سفید ہونگے۔

پھر چلو میں پانی لیکر دائیں ہاتھ کو دھوئے اور اس وقت یہ کہے

اَللّٰھُمَّ ٲَعْطِنِی کِتَابِی بِیَمِینِی وَالْخُلْدَ فِی الْجِنانِ بِیَسارِی وَحاسِبْنِی حِساباً یَسِیراً۔

خدایا میرا نامہ اعمال میرے دائیں ہاتھ میں دینا مجھے ہمشہ جنت میں رہنے کا اختیار دینا اور میرا حساب سہولت کے ساتھ لینا۔

اب بائیں ہاتھ کو دھوئے اور یہ کہے : اَللَّھُمَّ لاَ تُعْطِنِی کِتَابِی بِشِمَالِی وَلاَ مِنْ وَرَائِ ظَھْرِی

خدایا میرا نامہ اعمال بائیں ہاتھ میں نہ دینا اور نہ پیٹھ پیچھے سے دینا اور نہ

وَلاَ تَجْعَلْہا مَغْلُولَۃً إلَی عُنُقِی وَٲَعُوذُ بِکَ مِنْ مُقَطَّعَاتِ النِّیرانِ۔ اسکے بعد دائیں ہاتھ کی

اس کو میرے گلے میں لٹکانا اور میں جہنم کے انگاروں سے تیری پناہ چاہتا ہوں ۔

تری سے سر کے اگلے حصے کا مسح کرے اور کہے:اَللّٰھُمَّ غَشِّنِی رَحْمَتَکَ وَبَرَکاتِکَ۔

خدایا مجھے اپنی رحمت اور برکتوں سے ڈھانپ دے

پھر دونوں پیروں کا مسح کرے اور یہ دعا پڑھے :اَللّٰھُمَّ ثَبِّتْنِی عَلَی الصِّراطِ یَوْمَ تَزِلُّ فِیْہِ الْاَقْدَامُ

خدایا اس دن مجھے صراط پر ثابت قدم رکھنا جب قدم پھسل رہے ہوں گے

وَاجْعَلْ سَعْیِی فِیما یُرْضِیکَ عَنِّی یَا ذَاالْجَلالِ وَالْاِکرام جب وضو کر چکے تو یہ کہے:الّھُمَّ

اور میری کوشش کو ان کاموں میں قرار دے جو تجھے پسند ہیں اے جلال واکرام کے مالک ۔

إنِّی ٲَسْٲَلُکَ تَمَامَ الْوُضُوئِ وَتَمَامَ ا لصَّلاۃِ وَتَمامَ رِضْوَانِکَ وَالْجَنَّۃَ۔ اسکے بعد کہے:

میں تجھ سے سوال کرتا ہوں کہ میرا وضو کامل ہو نماز مکمل ہو اور مجھے تیری خوشنودی اور جنت حاصل ہو ۔

الْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعالَمِینَ۔

حمد ہے خدا کے لیے جو جہانوں کا رب ہے۔

اور اسکے بعد تین مرتبہ ’’سورہ قدر‘‘ پڑھے وضو کے بعد خوشبو لگائے اور مسجد کی طرف سکون و وقار سے چل پڑے۔

مسجد میں جاتے وقت کی دعا

مسجد کیطرف چلتے ہوئے کہے: بِسْمِ اﷲ الَّذِی خَلَقَنِی فَھُوَ یَھْدِینِی

اس خدا کے نام سے جس نے مجھے پیدا کیا پس وہی ہدایت دیتا ہے

وَالَّذِی ھُوَ یُطْعِمُنِی وَیَسْقِینِی وَ إذا مَرِضْتُ فَھُوَ یَشْفِینِی وَالَّذِی یُمِیتُنِی ثُمَّ یُحْیِینِی

وہی مجھے کھلاتا پلاتا ہے اور بیمار ہو جاؤں تو مجھے شفا بخشتا ہے وہی مجھے موت دے گا پھر مجھے زندہ کرے گا اور اسی سے امید ہے کہ روز قیامت

وَالَّذِی ٲَطْمَعُ ٲَنْ یَغْفِرَلِی خَطِیئَتِی یَوْمَ الدِّینِ رَبِّ ھَبْ لِی حُکْماً وَٲَلْحِقْنِی بِالصَّالِحِینَ

میری خطائیں معاف کرے گا پالنے والے مجھے حکمت عطا فرما اور نیکو کاروں میں شامل کردے . بعد میں آنے والوں میں میرے حق میں سچ

وَاجْعَلْ لِی لِسانَ صِدْقٍ فِی الاَْخِرِینَ، وَاجْعَلْنِی مِنْ وَرَثَۃِ جَنَّۃِ النَّعِیمِ وَاغْفِرْ لاََِبِی۔

بولنے والی زبان قرار دے مجھے نعمتوں بھری جنت کے وارثوں میں شامل کر اور میرے والد کوبخش دے ۔

مسجد میں داخل ہوتے وقت کی دعا

جب مسجد میں داخل ہونے لگے تو اپنے جوتوں کے تلووں کو اچھی طرح دیکھ لے کہ ان پر نجاست نہ لگی ہو پھر پہلے دایاں پاؤں اندر رکھے اور یہ دعا پڑھے:

بِسْمِ اﷲِ وَبِاﷲِ وَمِنَ اﷲِ وَ إلَی اﷲُ وَخَیْرُ الْاَسْمائِ کُلِّہا لِلّٰہِ تَوَکَّلْتُ عَلَی اﷲِ وَلاَ حَوْلَ

خدا کے نام سے اور خدا کے سہارے سے، خدا کی طرف سے تمام بہترین نام خدا کے لیے ہیں میں خدا پر بھر وسہ کرتا ہوں نہیں کوئی حرکت و قوت

وَلاَ قُوَّۃَ إلاَّبِاﷲِ اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ وَافْتَحْ لِی ٲَبْوابَ رَحْمَتِکَ

مگر خدا ہی کیطرف سے ہے . اے معبود! رحمت فرما محمد(ص) و آل(ع) محمد پر میرے لیے اپنی رحمت اور توبہ کے

وَتَوْبَتِکَ وَٲَغْلِقْ عَنِّی ٲَبْوابَ مَعْصِیَتِکَ وَاجْعَلْنِی مِنْ زُوَّارِکَ وَعُمَّارِ مَساجِدِکَ،

دروازے کھول دے اورمیرے لیے نافرمانی کے دروازے بند کردے مجھے اپنے پاک گھر کے زائروں اور مسجدیں آباد کرنے

وَمِمَّنْ یُناجِیکَ فِی اللَّیْلِ وَالنَّہارِ، وَمِنَ الَّذِینَ ھُمْ فِی صَلاتِھِمْ خاشِعُون وَادْحَرْ عَنِّی

والوں میں رکھ اور ان میں جو رات دن تجھ سے دعا کرتے ہیں ان میں سے جو نماز میں عاجزی و خوف کا اظہار کرتے ہیں اور

الشَّیْطانَ الرَّجِیمَ وَجُنُودَ إبْلِیسَ ٲَجْمَعِینَ۔

راندے ہوئے شیطان اور اس کے تمام لشکروں کومجھ سے دور کر دے۔

آداب نماز

جب نماز کا ارادہ کرے تو کہے:

اَللَّھُمَّ إنِّی ٲُقَدِّمُ إلَیْک مُحَمَّداً صَلَّی اﷲُ عَلَیْہِ وَآلِہِ بَیْنَ یَدَیْ حاجَتِی وَ َٲَتَوَجَّہُ بِہِ إلَیْکَ

اے معبود! میں اپنی حاجات بیان کرنے سے پہلے حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو تیرے حضور پیش کرتا ہوں اور ان کے ذریعے حاضر ہوتا

فَاجْعَلْنِی بِہِ وَجِْیہاً عِنْدَکَ فِی الدُّنْیا وَالاَْخِرَۃِ وَمِنَ الْمُقَرَّبِینَ وَاجْعَلْ صَلاتِی بِہِ

ہوں پس ان کے واسطے مجھے اپنے حضور دنیا و آخرت میں باعزت اور مقربوں میں قرار دیاور ان کے وسیلے میری نماز

مَقْبُولَۃًوَذَنْبِی بِہِ مَغْفُوراًوَدُعائِی بِہِ مُسْتَجاباً إنَّکَ ٲَنْت الْغَفُورُ الرَّحِیمُ۔

کو قبول فرما ان کے واسطے میرے گناہ بخش دے ان کی خاطر میری دعا قبول کرلے بیشک تو بخشنے والا مہربان ہے.

اذان واقامت کے درمیان کی دعا

پھر نماز کیلئے اذان و اقامت کہے اور ان کے درمیان ایک سجدہ یا ایک نشست کا فاصلہ دے اور یہ دُعا پڑھے:

اَللّٰھُمَّ اجْعَلْ قَلْبِی بَارّاً وَعَیْشِی قَارّاً وَرِزْقِی دَارّاً وَاجْعَلْ لِی عِنْدَ قَبْرِ رَسُولِکَ صَلَّی

اے معبود! میرے دل کو نیک میریزندگی کو آسودہ اور میرے رزق کومسلسل کر دے اور میرے لیے اپنے رسول

اﷲُ عَلَیْہِ وَآلِہِ مُسْتَقَرّاً وَقَرَاراً۔

صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے روضہ پاک کے نزدیک ٹھکانا اور قرارگاہ بنا دے ۔

اس وقت خدا سے جو دُعا چاہے مانگے اور جو حاجت چاہے طلب کرے کیونکہ اذان و اقامت کے درمیان مانگی ہوئی دُعا رد نہیں ہوتی، اقامت کے بعد یہ کہے:

اَللَّھُمَّ إلَیْکَ تَوَجَّھْتُ وَمَرْضَاتَک طَلَبْتُ وَثَوابَکَ ابْتَغَیْتُ، وَبِکَ آمَنْتُ وَعَلَیْک

اے معبود !میں تیری طرف متوجہ ہوں تیری خوشنودی کاطالب تیرے ثواب کا خواہش مند تجھ پر ایمان رکھتا ہوں اور تجھ پر

تَوَکَّلْتُ۔ اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ وَافْتَحْ مَسَامِعَ قَلْبِی لِذِکْرِکَ وَثَبِّتْنِی

بھروسہ کرتا ہوں اے معبودمحمد(ص) و آل(ع) محمد(ص) پر رحمت فرما اور اپنے ذکر کیلئے میرے دل کے کان کھول دے اور مجھ کو اپنے اور

عَلَی دِینِکَ وَدِینِ نَبِیِّکَ وَلاَ تُزِغْ قَلْبِی بَعْدَ إذْ ھَدَیْتَنِی وَھَبْ لِی مِنْ لَدُنْکَ رَحْمَۃً

اپنے نبی(ص) کے دین پرقائم رکھ ہدایت کے بعد میرے دل میں کجی نہ آنے دے اور مجھ پر اپنی خاص رحمت فرماکہ بیشک تو

إنَّکَ ٲَنْتَ الْوَہَّابُ

بہت عطا کرنے والا ہے ۔

پس اب نماز کے لیے تیار ہوجائے، اپنے دل کو حاضر کرے، اپنی پستی اور اپنے مولا کی عظمت کو دل میں لائے کہ اس ذات کے سامنے مناجات کررہا ہے اپنے آپ کو اس کیفیت میں لائے کہ گویا اسکو دیکھ رہا ہے لہذا اس بات سے حیا کرے کہ کلام تو اس ذات سے کر رہا ہو لیکن اس کا دل کسی اور طرف متوجہ ہو پھر سنجیدگی اور خوف کے ساتھ کھڑا ہوجائے اور اپنے دونوں ہاتھ رانوں کے اوپر گھٹنوں کے مقابل رکھے اور دونوں پیروں کے درمیان کم از کم تین انگلیوں اور زیادہ سے زیادہ ایک بالشت کا فاصلہ ہو اور نگاہ مقام سجدہ پر ہو ۔ پھر فریضہ صبح کی نیت قربت الی اﷲ کرکے تکبیرۃ الاحرام کہے اور مستحب ہے کہ اس پر مزید چھ تکبیروں کا اضافہ بھی کرے۔ ہر تکبیر کے موقع پر ہاتھوں کو کانوں کی لؤ تک اسطرح اٹھائے کہ ہتھیلیوں کا رُخ قبلہ کی طرف ہو اور انگوٹھے کے سوا باقی تمام انگلیاں آپس میں ملی ہوئی ہوں۔

دعائے تکبیرات

اس دوران دعائے تکبیرات پڑھے اور وہ یوں کہ تیسری تکبیر کے بعد کہے:

اَللّٰھُمَّ ٲَنْتَ الْمَلِکُ الْحَقُّالْمُبینُ،لاَ إلہَ إلاَّ ٲَنْتَ سُبْحانَک إنِّی ظَلَمْتُ نَفْسِی فَاغْفِر

اے معبود ! تو ہی سچا اورآشکار بادشاہ ہے . نہیں کوئی معبود مگر تو ہے پاک وپاکیزہ بے شک میں نے خود پر ظلم کیا

ْ لِی ذَنْبِی إنَّہُ لاَ یَغْفِرُ الذُّنُوبَ إلاَّ ٲَنْتَ ۔

پس میرے گناہ بخش دے کہ تیرے سوا کوئی معاف نہیں کر سکتا۔مگر تیری ذات۔

پانچویں تکبیر کے بعد کہے:لَبَّیْکَ وَسَعْدَیْکَ وَالْخَیْرُفِی یَدَیْکَ وَالشَّرُّ لَیْسَ إلَیْکَ

خدایا میں حاضر ہوں ہماری بھلائی تیرے ہاتھ میں ہے شرکا تجھ سے کوئی تعلق نہیں

وَالْمَھْدِیُّ مَنْ ھَدَیْتَ عَبْدُکَ وَابْنُ عَبْدَیْکَ ذَلِیلٌ بَیْنَ یَدَیْکَ مِنْکَ وَبِکَ وَلَکَ

جسے تو ہدایت د ے وہ ہدایت یافتہ ہے تیرا بندہ اور تیرے بندے کا فرزند تیرے حضورپست تجھ سے تیرے ذریعے

وَ إلَیْکَ لاَمَلْجَٲَ وَلاَ مَنْجَی وَلاَ مَفَرَّ مِنْکَ إلاَّ إلَیْکَ سُبْحانَکَ وَحَنانَیْکَ تبَارَکْتَ

تیرے لیے اور تیری طرف اور تیرے سوا کوئی پناہ و نجات اورفرار کی جگہ نہیں تو پاک ہے مہربان ہے بلند ہے اور

وَتَعَالَیْتَ سُبْحانَکَ رَبَّ الْبَیْتِ الْحَرَامِ ساتویں تکبیر کے بعد یہ کہے:وَجَّھْتُ وَجْھِی لِلَّذِی

برتر ہے تو پاک ہے اور حرمت والے گھر کا مالک ہے ۔

فَطَرَ السَّمٰوَاتِ وَالْاَرْضَ عالِمِ الْغَیْبِ وَ الشَّہادَۃِ حَنِیفاً مُسْلِماً وَمَا ٲَنَا مِن الْمُشْرِکِینَ

کیا جو آسمانوں اور زمین کا خالق غائب و حاضر کا جاننے والا ہے باطل سے کٹا ہوافرمانبردار ہوں اورمشرکوں سے نہیں ہوں بے شک میری

إنَّ صَلوٰتِی وَنُسُکِی وَمَحْیَایَ وَمَمَاتِی لِلّٰہِِ رَبِّ الْعالَمِینَ لاَ شَرِیکَ لَہُ وَ بِذَلِکَ

نماز میری عبادت اور میری زندگی اور میری موت خدا کی لیے ہے جو جہانوں کا ربّ ہے اس کا کوئی ثانی نہیں

ٲُمِرْتُ وَٲَنَا مِنَ الْمُسْلِمِینَ۔

مجھے یہی حکم ملا اور میں فرمانبرداروں میں سے ہوں

نما ز بجالانے کے آداب

جب قرأت کا ارادہ کرے تو آہستہ ’’اعوذ باﷲ من الشیطان الرّجیم ‘‘ کہے اور اس کے بعد پورے آداب، حضور قلب اور معانی پر غور کرتے ہوئے سورہ فاتحہ کی تلاوت کرے، اسے مکمل کر کے ایک سانس کی مقدار خاموش رہنے کے بعد قرآن کریم کی کوئی سورت پڑھے لیکن بہتر ہے کہ سورہ عمّ،یا ھَل اَتیٰ یا لَا اُقسِمُ پڑھے پھر ایک سانس کی مقدار خاموش رہنے کے بعد قبل ازیں بتائے گئے طریقے سے ہاتھوں کو بلند کرکے تکبیر کہے۔ پھر رکوع میں جائے اور بائیں ہاتھ کو بائیں گھٹنے پر رکھنے سے پہلے دائیں ہاتھ کو دائیں گھٹنے پررکھے. جب کہ ہاتھوں کی انگلیوں کو گھٹنوں پر پھیلا کے رکھے کمر کو جھکاے رہے اور گردن کو لمبا کرکے کمر کے برابر اور نگاہیںقدموں کے درمیان رکھے اور کہے :سُبْحانَ رَبِّیَ الْعَظِیمِ وَبِحَمْدِھ ﴿پاک ہے میرا رب عظمت والا اور میں حمد کرتا ہوں ﴾ بہتر ہے کہ یہ ذکر تین یا پانچ یاسات مرتبہ کرے اور مناسب ہوگا کہ اس ذکر سے پہلے یہ دُعا پڑھے :

اَللّٰھُمَّ لَکَ رَکَعْتُ وَلَکَ ٲَسْلَمْتُ وَبِکَ آمَنْتُ وَعَلَیْکَ تَوَکَّلْتُ وَٲَنْتَ رَبِّی خَشَعَ

اے معبود میں نے تیرے لیے رکوع کیا . تیرے سامنے جھکا ہوں اور تجھ پر ایمان رکھتا ہوں تجھ پر بھروسہ کرتا ہوں اور تو میرا رب ہے میرے کان،

لَکَ سَمْعِی وَبَصَرِی وَشَعْرِی وَبَشَرِی وَلَحْمِی وَدَمِی وَمُخِّی وَعَصَبِی وَعِظَامِی وَمَا

میری آنکھیں، میرے بال،میری کھال،میرا گوشت، میرا خون، میرا مغز،میرے پٹھے، میری ہڈیاںاور میراسارا وجود تیرے آگے جھکا

ٲَقَلَّتْہُ قَدَمَایَ غَیْرَ مُسْتَنْکِفٍ وَلاَ مُسْتَکْبِرٍوَلاَ مُسْتَحْسِرٍ۔

ہے نہ مجھے اس سے انکار ہے نہ کوئی غرور اور نہ ہی تھکا وٹ ہے ۔

اب رکوع سے سر اٹھائے اور سیدھا کھڑے ہوکر کہے:سَمِعَ اﷲُ لِمَنْ حَمِدَھُ ﴿خدانے حمد کرنے والے کی حمد سنی۔﴾ پھر تکبیر کہہ کر کھلے ہاتھوں کے ساتھ نہایت عاجزی اور خوف سے ہتھیلیاں زمین پر رکھے اور پھر سجدے میں جائے ،پیشانی خاک کربلا سے بنے ہوئے سجدہ گاہ پر رکھے اور تین، پانچ یا سات مرتبہسُبحان رَبِّیَ الاَعلیٰ وَ بِحَمدِھِ کہے : بہتر ہے کہ اس ذکر سے پہلے یہ دعا پڑھے:

اَللّٰھُمَّ لَکَ سَجَدْتُ وَبِکَ آمَنْتُ وَلَکَ ٲَسْلَمْتُ، وَعَلَیْکَ تَوَکَّلْتُ وَٲَنْتَ رَبِّی

اے معبود میں نے تیرے لیے سجدہ کیا تجھ پر ایمان رکھتا ہوں تیرے حوالے ہوں اور تجھ پر بھروسہ کرتا ہوں تو میرا ربّ ہے

سَجَدَ وَجْھِی لِلَّذِی خَلَقَہُ وَشَقَّ سَمْعَہُ وَبَصَرَہُ اَلْحَمْدُ لِلَّہِ رَبِّ الْعالَمِینَ تَبارَکَ

میرے چہرے نے اسے سجدہ کیا جو اس کا خالق ہے جس نے اس کے کان اور آنکھیں کھولیں حمد ہے خدا کے لیے جوجہانوں کا رب ہے بابرکت

اﷲُ ٲَحْسَنُ الْخالِقِینَ

ہے خدا جو بہترین خالق ہے ۔

اب ذکر سجود کرے سر سجدہ سے اٹھائے، اور بیٹھنے کے بعد مستحب ہے کہ تکبیر کہے اور بیٹھنے کی مستحب کیفیت کے ساتھ بیٹھے ﴿جو فقہی کتب میں مذکور ہے﴾ اور کہے:

ٲَسْتَغْفِرُاﷲَ رَبِّی وَٲَتُوبُ إلَیْہاور نیز یہ کہے:اَللّٰھُمَّ اغْفِرْ لِی وَارْحَمْنِی وَاجْبُرْنِی وَادْفَعْ عَنِّی

میں اﷲ سے مغفرت مانگتا ہوں جو میرا رب ہے ، اور توبہ کرتا ہوںاے معبود مجھے بخش دے مجھ پررحم فرما میری ضرورتیں پوری کر، بلائیں دور رکھ

وَعافِنِی إنِّی لِمَاٲَنْزَلْتَ إلَیَّ مِنْ خَیْرٍفَقِیرٌ تَبَارَکَ اﷲُ رَبُّ الْعالَمِینَ۔

اور عافیت دے یقیناً میں تیری عطا کا محتاج ہوں جو تو کرتا ہے بابرکت ہے اﷲ جو جہانوں کا رب ہے

پھر تکبیر کہہ کر دوسرے سجدے میں جائے اور سابقہ طریقہ سے سجدہ بجالائے اسکے بعد تھوڑی دیر بیٹھے اور پھر قیام کیلئے کھڑا ہوتے ہوئے کہے :بِحَوْلِ اﷲ وَقُوَّتِہِ ٲَقُومُ وَٲَقْعُدُ۔﴿میں خدا کی دی ہوئی قوّت سے ہی اُٹھتا بیٹھتا ہوں .﴾ جب سیدھا کھڑا ہو جائے تو سورہ حمد کے ساتھ کوئی دوسری سورت پڑھے لیکن بہتر ہے کہ سورہ توحید﴿قل ھو اﷲ﴾ پڑھے۔ مستحب ہے کہ سورہ توحید پڑھنے کے بعد تین مرتبہ کہے:کَذلِکَ اﷲُ رَبِّی ﴿اﷲ ایسا ہی ہے جو میرا ربّ ہے ۔﴾ اسکے بعد تکبیر کہے اور قنوت پڑھنے کیلئے دونوں ہاتھ اُٹھا کر منہ کے سامنے لائے ہتھیلیوں کا رُخ آسمان کی طرف کرے اور انگوٹھوں کے سوا ہاتھوں کی انگلیوں کو باہم ملائے رکھے بہتر ہے کہ قنوت میں کلمات فرج ﴿لاَ اِلٰہَ اِلّا اﷲُ الحَلیمُ الکَریم ُ﴾ پڑھے اور اسکے بعد کہے :

اَللّٰھُمَّ اغْفِرْ لَناوَارْحَمْنَاوَعافِناوَاعْفُ عَنَّافِی الدُّنْیاوَالْآخِرَۃِ إنَّکَ عَلَی کُلِّ شَیْئٍ قَدِیرٌ۔

اے معبود! ہمیں بخش دے،ہم پر رحم فرما، بلاؤں سے بچا اور دُنیا وآخرت میں ہم سے درگزر فرما بیشک تو ہر چیز پر قدرت رکھتا ہے۔

اسکے ساتھ ہی یہ دُعا پڑھے :اَللّٰھُمَّ مَنْ کانَ ٲَصْبَحَ وَلَہُ ثِقَۃٌ ٲَوْ رَجائٌ غَیْرُکَ فَٲَنْتَ ثِقَتِی

اے معبود! اگر کوئی صبح کرے جب کہ اس کا بھر وسہ اور امید تیرے غیر سے ہے تب بھی میرابھر وسہ اور امید تجھ سے ہے اے وہ

وَرَجائِی یَا ٲَجْوَدَ مَنْ سُئِلَ، وَیَا ٲَرْحَمَ مَنِ اسْتُرْحِمَ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ

بہترین سخی جس سے مانگا جاتا ہے اور اے وہ رحیم جس سے رحم کا سوال ہوتا ہے تومحمد و آل(ع) محمد پر درود بھیج اور میری

وَارْحَمْ ضَعْفِی وَمَسْکَنَتِی وَقِلَّۃَحِیلَتِی، وَامْنُنْ عَلَیَّ بِالْجَنَّۃِ طَوْلاً مِنْک وَفُکَّ رَقَبَتِی

کمزوری اور میری عاجزی اور بے چارگی پر رحم فرما مجھے اپنے احسان و کرم سے جنت عطا کرمجھے

مِنَ النَّارِوعاَفنِی نَفْسِی وَفِی جَمِیع امُورِی بِرَحْمَتِکَ یَا ٲَرْحَمَ الرَّاحِمِینَ۔

جہنم سے آزاد کر دے اپنی خاص رحمت سے مجھے میرے معاملات میں تحفظ دے اے سب سے زیادہ رحم کرنیوالے۔

بہتر یہ ہے کہ قنوت کو طول دیا جائے۔ کیونکہ قنوت میں پڑھی جانے والی دعائیں بہت ہیں۔ قنوت کے بعد تکبیر کہے اور پہلے کی طرح رکوع و سجود بجا لائے اور دونوں سجدوں سے فارغ ہوکرتشہد و سلام کے لیے بیٹھے ﴿جیسے فقہی کتب میں مذکور ہے﴾ اور تشہد سے پہلے کہے :بِسْمِ اﷲِ، وَبِاﷲِ وَالْحَمْدُ ﷲِ، وَخَیْرُالْاَسْمائِ ﷲِ، ٲَشْھَدُ ٲَنْ لاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ۔

خدا کے نام اور اس کی ذات کے ساتھ خدا کے لیے ہے حمد اور اچھے اچھے نام میں گواہ ہوں کہ خدا کے سوا کوئی معبود نہیں

فضائل تعقیبات

"جب نماز سے فارغ ہو تو تعقیبات میں مشغول ہو جائے کیونکہ اس بارے میں بہت تاکید کی گئی ہے جیسا حق تعالیٰ کا ارشاد ہے ۔فَ إذا فَرَغْتَ فَانْصَبْ وَ إلی رَبِّکَ فَارْغَبْ ﴿پس نماز کے بعد کمر ہمّت باندھ کے خدا کی یاد میں لگ جا﴾ اس آیت کی تفسیرمیں مذکور ہے کہ جب تم نماز سے فارغ ہو جاؤ تو اپنے آپ کو پابند کرو اور اپنے پروردگار کی طرف متوجہ ہوجاؤ اس سے اپنی حاجت طلب کرو اس کے علاوہ ہر ایک سے امیدیں منقطع کرلو حضرت امیر المومنین- سے منقول ہے کہ تم میں سے جو شخص نماز سے فارغ ہو ، وہ اپنے ہاتھ آسمان کی طرف بلند کرے اور دعا مانگتے مانگتے اپنے آپ کو تھکا دے . روایات سے معلوم ہوتا ہے کہ نماز کی تعقیبات رزق میں اضافے کا سبب بنتی ہیں اور مومن اس وقت تک حالت نماز ہی میں شمار ہوتا ہے جب تک کہ ذکر و دُعا میں لگا رہے . نیز اس حال میں وہ نماز ہی کے ثواب کا حامل ہوتا ہے . واجب نماز کے بعد مانگی جانے والی دُعا مستحب نماز کے بعد مانگی جانے والی دُعا سے بہتر ہوتی ہے۔ علّامہ مجلسی(رح) فرماتے ہیں. ظاہر یہ ہے کہ تلاوت، ذکر اور دُعا جو عرف میں نماز کے ساتھ متصل ہوں وہ "تعقیبات نماز" کہلاتے ہیں لیکن افضل یہ ہے کہ با وضو ہو کرقبلہ رُخ بیٹھ کر اور بہتر ہے کہ تشہد کے انداز میں بیٹھ کر تعقیبات بجا لائے اور تعقیبات کے دوران خصوصاً نماز عشائ کی تعقیبات کے دوران کسی سے بات نہ کرے۔بعض بزرگان کا یہ ارشاد بھی ہے کہ تعقیبات میں بھی تمام شرائط نماز کو پیش نظر رکھے .نماز کے بعد خواہ چلتے ہوئے ہی قرآن، ذکر اور دعا میں مشغول رہے اس کو تعقیبات کا ثواب مل جائے گا۔مؤلف کہتے ہیں: آئمہ اطہار سے تعقیبات نماز کے ضمن میں دین و دنیا سے متعلق بہت سی دُعائیں منقول ہیں۔ کیونکہ بدنی عبادات میں سب سے زیادہ باشرف عبادت نماز ہے اور تعقیبات ماثورہ تکمیل نماز میں بہت زیادہ دخل رکھتی ہیں، ان کے ذریعے حاجات بر آتی ہیں اور درجات بلند ہوتے ہیں۔ دُعاگو مؤلف کے دل میں یہ بات آئی ہے کہ ان تعقیبات میں سے بعض کا ذکر اس رسالے میں کرے چنانچہ یہ تعقیبات علامہ مجلسی(رح) کی کتاب ’’بحار الانوار ‘‘اور ’’مقیاس‘‘ سے نقل کی جا رہی ہیں۔عرض تعقیبات کی دو قسمیں ہیں مشترکہ اور مختصر"

﴿مشترکہ تعقیبات﴾

مشترکہ تعقیبات وہ ہیں جو ہر نماز کے بعد پڑھی جاتی ہیں اور ان کی تعداد بہت زیادہ ہے . یہاں ہم ان سے چند ایک کے ذکر پر اکتفا کرتے ہیں . چنانچہ ان میں سے سب سے اوّل، تسبیح فاطمہ زہرا = ہے۔

1۔ تسبیح فاطمہ زہرا (س)

اس کی فضیلت میں بے حدّ و حساب احادیث وارد ہوئی ہیں حضرت امام جعفر صادق - فرماتے ہیں ہم اپنے بچوں کو حضرت زہرا(ع) کی تسبیح کا حکم بھی ویسے ہی دیتے ہیں جسطرح نماز کا حکم دیتے ہیں لہذا اسے کسی حال میں بھی ترک نہ کرو۔ جو شخص پابندی کیساتھ جناب زہرا(ع) کی تسبیح پڑھتا ہے وہ کبھی بدبخت اور شقی نہیں ہوگا۔ معتبر روایات میں واردہوا ہے کہ قرآن مجید میں خداوند عالم نے جس ’’ذکرکثیر‘‘کا حکم دیا ہے وہ تسبیح حضرت زہرا(ع) ہے۔ چنانچہ جو شخص ہر نماز کے بعد حضرت زہرا(ع) کی تسبیح پڑھتا ہے وہ ذکر کثیر کرتا اور خدا کو بہت یاد کرتا ہے۔ گویا وہ اس آیتِ مجیدہ میں موجود حکم ﴿وَاذْکُرُوا اﷲَ ذِکْراً کَثِیراً﴾﴿’’اﷲ تعالیٰ کو بہت یاد کیا کرو‘‘﴾پر عمل پیرا ہوتا ہے معتبر سند کے ساتھ امام محمد باقر - سے مروی ہے کہ جو شخص حضرت فاطمہ زہرا(ع) کی تسبیح پڑھنے کے بعد استغفار کریگا تواﷲ تعالیٰ اسے بخش دے گا۔ زبان پر تو اس تسبیح کے سوالفاظ لانا ہوتے ہیں لیکن میزان عمل میں ہزار کے برابر ہیں اسی سے شیطان دور ہوتا ہے اور رحمان راضی ہوتا ہے ۔امام جعفر صادق - سے صحیح اسناد کے ساتھ مروی ہے کہ جو شخص نماز کے بعد اپنے پاؤں کو نماز کی کیفیت سے ہٹانے سے پہلے حضرت فاطمہ زہرا(ع) کی تسبیح پڑھے تو اس کے گناہ معاف ہوجاتے ہیں اور جنّت اس کیلئے واجب ہوجاتی ہے ایک اور معتبر حدیث میں فرماتے ہیں کہ میرے نزدیک ہر نماز کے بعد حضرت فاطمہ زہرا(ع) کی تسبیح پڑھنا، روزانہ ہزار رکعت نماز پڑھنے سے بہتر ہے ۔

معتبر روایات کے مطابق حضرت امام محمد باقر -سے مروی ہے کہ جناب زہرا = کی تسبیح سے بہتر کوئی اور تسبیح و تمجید نہیں ہے ، جس سے عبادت الٰہی کی جائے . کیونکہ اگر اس سے بہتر کوئی اور چیز ہوتی تو رسول(ص) خدا حضرت فاطمہ زہرا(ع) کو وہی عطا فرماتے . اس کی فضیلت میں اتنی زیادہ احادیث منقول ہیں کہ ان سب کو اس مختصر سے رسالہ میں ذکر نہیں کیا جا سکتا . اس تسبیح کی کیفیت کے متعلق احادیث میں اختلاف ہے، لیکن ان میں سے زیادہ مشہور اور ظاہر یہ ہے کہ چونتیس مرتبہ:﴿ اﷲ اکبر﴾ ﴿اللہ بزرگ تر ہے﴾ تینتیس مرتبہ: ﴿الحمد ﷲ﴾ ﴿حمد اللہ کے لئے ہے﴾ تینتیس مرتبہ: ﴿سُبْحَانَ اﷲ﴾ ﴿خدا پاک ومنزہ ہے﴾ بعض روایات میں ’’سُبحانَ اﷲ‘‘ کو ’’الحَمدُاﷲ‘‘ سے پہلے ذکر کیا گیا ہے جب کہ بعض علمائ نے ان دونوں طریقوں کو اس طرح جمع کیا ہے کہ نماز کے بعد پہلے طریقہ کے مطابق پڑھے اور سونے کے وقت دوسرے طریقہ کے مطابق پڑھے اور ظاہراً دونوں صورتوں میں پہلا طریقہ ہی مشہور اور اولیٰ ہے اور سنت ہے کہ تسبیح مکمل کرنے کے بعد ایک مرتبہ کہے: ’’لآ الٰہ اَلَّاا ﷲ‘‘ چنانچہ امام جعفر صادق - فرماتے ہیں کہ جو شخص ہر نماز کے بعد حضرت فاطمہ زہرا(ع) کی تسبیح پڑھے اور اس کے آخر میں لَا اِلٰہَ اِلّا اﷲ کہے تو خدا اسے بخش دے گا۔

خاک شفاء کی تسبیح بہتر یہ ہے کہ خاک شفا کی تسبیح کے دانوں پر اس تعداد کو شمار کرے تمام ذکر واذکار میں خاک شفا کی تسبیح کا استعمال سنت ہے اور خاک شفا کی تسبیح ہر وقت اپنے پاس رکھنا مستحب ہے یہ تمام بلاؤں کا حرز ہے اور بے انتہا ثواب کا موجب ہے . منقول ہے کہ ابتدائ میں حضرت فاطمہ زہرا(ع) نے پشم کے دھاگوں پر گانٹھیں لگائی ہوئی تھیں اور وہ انہی پر یہ تسبیح پڑھا کرتی تھیں جب جناب حمزہ بن عبد المطلب شہید ہو گئے تو حضرت زہرا =نے اس شھید بزرگوار کی قبر کی مٹی سے تسبیح بنائی اور اس پر پڑھا کرتی تھیں تب دوسرے لوگوں نے بھی اس طریقے کو اختیار کر لیا لیکن جب سید الشہدائ حضرت امام حسین- شھید کر دیئے گے تو سنت قرار پایا کہ اس شہید مظلوم(ع) کی قبر کی مٹی ﴿خاک شفا﴾ سے تسبیح تیار کرکے اس کے ذریعے ذکر واذکار پڑھا جائے۔ امام زمانہ ﴿عج﴾ فرماتے ہیں کہ جس شخص کے ہاتھ میں خاک شفا کی تسبیح ہو اور وہ ذکر پڑھنا فراموش کر بیٹھے تو بھی اس کیلئے ذکر کا ثواب لکھا جائے گاامام جعفر صادق - فرماتے ہیں کہ خاک شفا کی تسبیح خود بخود ذکر اور تسبیح پڑھتی رہتی ہے خواہ آدمی نہ بھی پڑھے، یہ بھی فرمایا کہ ایک ذکر یا استغفار جو اس تسبیح سے انجام پائے وہ دوسری تسبیحوں کے ساتھ انجام پانے والے ستر ذکر اور استغفار کے برابر ہے۔ اگر کوئی کسی ذکر کے بغیر بھی اس کے دانوں کو پھراتا رہے تو بھی اس کیلئے ہر دانہ کے بدلے سات تسبیحوں کا ثواب لکھا جاتا ہے ایک دوسری روایت کے مطابق ذکر کے ساتھ پھرائے جانے والے ہر دانے کا ثواب چالیس نیکیاں لکھی جاتی ہیں ایک روایت میں ہے کہ حوران جنّت جب کسی فرشتے کو زمین پر آتے دیکھتی ہیں تو اس سے التماس کرتی ہیں کہ وہ ان کے لیے تربت سید الشہدائ﴿خاک شفا﴾ کی تسبیح لیتا آئے حدیث صحیح میں امام موسیٰ کاظم - فرماتے ہیں کہ مومن کو پانچ چیزوں سے خالی نہیں ہونا چاہیئے مسواک، کنگھی، جائے نماز، عقیق کی انگوٹھی اور چونتیس دانوں کی تسبیح اس سلسلے میں خام اور پختہ دونوں بہتر ہیں لیکن خام زیادہ بہتر ہے ۔ امام جعفر صادق - فرماتے ہیں کہ جو شخص خاک شفا سے ایک تسبیح پڑھتا ہے اﷲ اس کیلئے چار سونیکیاں لکھ دیتا ہے، چار سوگناہ مٹا دیتا ہے چار سو حاجات پوری کرتا ہے اور چار سو درجات بلند کرتا ہے . روایت میں یہ بھی ہے کہ اس تسبیح کا دھاگا نیلے رنگ کا ہونا چاہیئے۔ بعض روایات سے معلوم ہوتا ہے کہ عورتوں کیلئے اپنی انگلیوں پر تسبیح پڑھنا فضیلت رکھتا ہے لیکن خاک شفا کی فضیلت والی احادیث مطلقاً زیادہ اور قوی ہیں ۔

2۔ مستحب ہے کہ فریضہ نماز کے بعد ہاتھوں کو تین مرتبہ اُٹھا کر چہرے کے سامنے کانوں کی لوؤں تک لے جائے اور پھررانوں پر ہاتھ رکھے اور ہر مرتبہ ’’اﷲُ اَکبَرُ‘‘ کہے چنانچہ علی بن ابراہیم، سیّد ابن طاوس اور ابن بابویہ نے معتبر اسناد کیساتھ روایت کی ہے کہ مفضل بن عمر نے امام جعفر صادق - سے پوچھا کہ نمازی کس بنا پر نماز کے بعدتین مرتبہ تکبیر کہتا ہے تو آنجناب(ع) نے فرمایا: اس لیے کہ جب آنحضرت(ص) نے مکّہ کو فتح کیا تو حجر اسود کے پاس اپنے ساتھیوں سمیت نماز ظہر ادا کی اور جب نماز کا سلام کہہ چکے تو تین مرتبہ تکبیر کہی اور ہاتھوں کے اٹھانے کے وقت کہا:

لاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ وَحْدَھُ وَحْدَھُ وَحْدَھُ ٲَنْجَزَ وَعْدَھُ وَنَصَرَ عَبْدَھُ وَٲَعَزَّ جُنْدَھُ وَغَلَبَ

نہیں کوئی معبود مگر اﷲ، وہ دیکتاہے، یکتا ہے ،یکتا ہے اس نے وعدہ پورا کیا اپنے بندے کی مدد کی اپنے لشکرکو عزت دی اور گروہوں پرغالب

الْاَحْزابَ وَحْدَھُ، فَلَہُ الْمُلْکُ وَلَہُ الْحَمْدُ یُحْیِی وَیُمِیتُ وَھُوَعَلَی کُلِّ شَیْئٍ قَدِیرٌ۔

آیا وہ یکتا ہے حکومت اسی کی اور حمد اسی کے لیے ہے وہ زندہ کرتا ہے اور موت دیتا ہے اور وہی ہر چیز پر قدرت رکھتا ہے۔

پھر آنحضرت(ص) نے اپنا رُخ اصحاب کی طرف کیا اور فرمایا: اس تکبیر اور اس دُعا کو ہر فریضہ نماز کے بعد دہراتے رہنا اور اسے ترک نہ کرنا ،جو شخص یہ عمل کرے گا وہ اسلام اور لشکر اسلام کی تقویت پر خدا کے حضور اس نعمت کا شکر ادا کرے گا . صحیح حدیث میں منقول ہے کہ جب حضرت صادق آل(ع) محمد(ص) نماز سے فارغ ہوتے تو اپنے ہاتھوں کو سر مبارک تک بلند کرکے دعا مانگتے تھے۔ امام محمد باقر - سے مروی ہے کہ جب کوئی بندہ اپنے ہاتھ خدا کی طرف بلند کر کے دُعا مانگتا ہے تو خدا کو اس امر سے حیا آجاتی ہے کہ اسے خالی ہاتھ پلٹائے اس لیے دُعا مانگو، ہاتھوں کو نیچے کرتے وقت انہیں اپنے سر اور چہرے پر پھیر لو۔

3۔ شیخ کلینی(رح)نے معتبر سند کے ساتھ حضرت امام محمدباقر - سے روایت کی ہے کہ جو شخص فریضہ نماز کے بعد پاؤں کو پلٹا نے سے پہلے تین مرتبہ یہ دُعا پڑھے تو خداوند اس کے تمام گناہ معاف کر دیگا خواہ وہ گناہ کثرت میں سمندر کی جھاگ کے برابر ہی کیوں نہ ہوں اور وہ دُعا یہ ہے :

ٲَسْتَغْفِرُ اﷲَ الَّذِی لاَ إلہَ إلاَّ ھُوَ الْحَیُّ الْقَیُّوْمُ ذُوالْجَلالِ وَالْاِکْرامِ وَٲَتُوبُ إلَیْہِ

اس خدا سے بخشش چاہتا ہوں کہ جس کے سوا کوئی معبود نہیں وہ زندہ پائندہ عزت و دبدبے والا ہے اور اس کے حضور توبہ کرتا ہوں .

ایک روایت کے مطابق جو شخص ہر روز یہ دعائے استغفار پڑھے تو خدا اس کے چالیس گناہ کبیرہ معاف کر دیگا۔

ہر فریضہ نماز کے بعد کی دعا

4۔ شیخ کلینی معتبر سند کے ساتھ امام جعفر صادق - سے روایت کرتے ہیں کہ فرمایا: اس دعاکو ہر فریضہ کے بعد پڑھو اور ہرگز ترک نہ کرو:

ٲُعِیذُ نَفْسِی وَما رَزَقَنِی رَبِّی بِالِلّٰہِ الْواحِدِ الصَّمَدِ الَّذِی لَمْ یَلِدْ وَلَمْ یُولَدوَلَمْ یَکُنْ لَہُ

میں نے اپنی جان اورخدا سے ملی نعمتوں کو پناہ خدا میں دیا وہ واحد و بے نیازجس نے نہ کسی کو جنا نہ وہ جنا گیا اور نہ کوئی

کُفُواً ٲَحَدٌوَٲُعِیذُ نَفْسِی وَمَارَزَقَنِی رَبِّی بِرَبِّ الْفَلَقِ مِنْ شَرِّ مَا خَلَقَ وَمِنْ شَرِّغَاسِقٍ إذَا

اس کا ہم پلا ہے میں نے اپنی جان اور خدا سے ملی نعمتوں کوصبح کرنے والے ربّ کی پناہ میں دیا اس کی مخلوق کیشر سے اور تاریکی کے شر سے جب وہ

وَقَبَ وَمِنْ شَرِّ النَّفَّثٰتِ فِی الْعُقَدِ وَمِنْ شَرِّحاسِدٍ إذا حَسَدَ وَٲُعِیذُ نَفْسِی وَمَا رَزَقَنِی رَبِّی

چھاجائے گانٹھوں پر پھونکنے والیوں کے شر سے حاسدکے شرسے جب وہ حسد کرے میں نے اپنی جان اور خدا سے ملی نعمتوں کو انسانوں کے ربّ کی

بِرَبِّ النَّاسِ مَلِکِ النَّاسِ إلہ النَّاسِ مِنْ شَرِّالْوَسْوَاسِ الْخَنَّاسِ الَّذِی یُوَسْوِسُ فِی

پناہ میں دیا جو انسانوں کا بادشاہ اور معبود ہے . گھات لگانے وسوسے ڈالنے والے کے شرسے جو انسانوں کے دلوں میں وسوسے ڈالتاہے وہ

صُدُورِ النَّاسِ مِن َالْجِنَّۃِ وَالنَّاسِ

جنوں سے یا انسانوں سے ہو۔

دنیا و آخرت کی بھلائی کی دعا

5۔ شیخ کلینی(رح) نے معتبر سند کے ساتھ علی بن مہزیار سے روایت کی ہے کہ محمد بن ابراہیم نے امام علی نقی - کی خدمت میں تحریر کیا کہ مولا اگر آپ مناسب سمجھیں تو مجھے ایک ایسی دعا تعلیم فرمائیں جو میں ہر نماز کے بعد پڑھوں اور اس سے مجھے دُنیا و آخرت کی بھلائی حاصل ہو جائے اس کے جواب میں امام نے تحریر فرمایا کہ تم ہر نماز کے بعد یہ دُعا پڑھا کرو :

ٲَعُوْذُ بِوَجْھِکَ الْکَرِیمِ وَعِزَّتِکَ الَّتِی لاَتُرَام وَقُدْرَتِکَ الَّتِی لاَ یَمْتَنِع ُمِنْہا شَیْئٌ مِنْ

پناہ لیتا ہوں تیری ذات کریم اورتیری عزت کی جس کا کوئی قصد نہیںکر سکتا ُتیری قدرت کی پناہ جس سے کوئی چیز انکار نہیں کر سکتی ۔ دنیا اور

شَرِّالدُّنْیا وَالاَْخِرَۃِ وَمِن ْشَرِّالْاَوْجاعِ کُلِّہا وَلاَحَوْلَ وَلاَ قُوَّۃَ إلاَّ بِاللّہِ الْعَلِیِّ الْعَظِیمِ۔

آخرت کے شر سے اور ہر قسم کے دکھوں دردوں سے اور نہیں اور بعض روایات میں یہ بھی ہے کوئی حرکت اور قوت مگر جو بلند و بزرگ خداسے ملتی ہے ۔

نماز واجبہ کے بعد دعا

6۔ کلینی(رح) اور ابن بابویہ(رح) نے صحیح و غیر صحیح اسناد کے ساتھ امام محمد باقرو امام جعفر صادق + سے روایت کی ہے کہ نماز واجبہ کے بعد کم سے کم دُعا جو کافی ہو سکتی ہے وہ یہ ہے :

اَللّٰھُمَّ إنِّی ٲَسْٲَلُکَ مِنْ کُلِّ خَیْرٍ ٲَحَاطَ بِہِ عِلْمُکَ، وَٲَعُوذُ بِکَ مِنْ کُلِّ شَرٍّ ٲَحَاطَ بِہِ

اے معبود! میں تجھ سے ہرخیر کا سوال کرتا ہوں جوتیرے علم کے احاطے میں ہے اور ہر شر سے تیری پناہ لیتا ہوں

عِلْمُکَ اَللّٰھُمَّ إنِّی ٲَسْٲَلُکَ عَافِیَتَکَ فِی ٲُمُورِی کُلِّہا وَٲَعُوذُ بِکَ مِنْ خِزْیِ الدُّنْیا وَ

جو تیرے علم کے احاطے میں ہے اے معبود! میں اپنے تمام امور میں تجھ سے سہولت کا سوال کرتا ہوں اور دُنیا و آخرت کی ہر رسوائی سے تیری

عَذابِ الاَْخِرَۃِ۔

پناہ طلب کرتا ہوں ۔

ابن بابویہ(رح) کی روایت کے مطابق یہ دُعایوں ہے:

اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ اَللّٰھُمَّ إنِّی ٲَسْٲَلُکَ

اے معبود!درود بھیج محمد(ص) وآل محمد(ص) پر اے معبود میں تجھ سے سوال کرتا ہوں ..تا آخر دعا

نماز کے بعد طلب بہشت اور ترک دوزخ کی دعا

7۔ سنت ہے کہ جب نماز سے فارغ ہو جائے تو کہے:

اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ وَٲَجِرْنِی مِنَ النَّارِ وَٲَدْخِلْنِی الْجَنَّۃَ وَزَوِّجْنِی الْحُوْرَ الْعِینَ

اے معبود! درود بھیج محمد(ص) و آل محمد(ص) پر اور مجھے جہنم کی آگ سے بچااور جنّت میں داخل فرما اور حورالعین سے میری تزویج کر دے۔

جیسا کہ امیر المومنین- سے روایت ہے کہ جب کوئی بندہ نماز سے فارغ ہو جائے تو خدا تعالیٰ سے بہشت کی دُعا کرے دوزخ سے خدا کی پناہ مانگے اور حور العین کے ساتھ تزویج کی درخواست کرے۔

نماز کے بعد آیات اور سور کی فضیلت

8۔ موثق سند کے ساتھ امام محمد باقر - سے روایت ہے کہ جب حق تعالیٰ نے درج ذیل آیات کے زمین پر نازل کرنے کا حکم دیا تو ان آیات نے عرش الٰہی کے ساتھ لگ کر کہا: پروردگارا تو ہمیں گناہکاروں اور خطا کاروں کی طرف بھیج رہا ہے تب ذاتِ حق نے ان کی طرف وحی فرمائی کہ تم روئے زمین پر چلی جاؤ ، مجھے اپنی عزت و جلال کی قسم! تمہیں آل محمد(ص) اور انکے شیعوں میں سے جو بھی تلاوت کرے گا میں اس پر ہر روز پوشیدگی میں ستر مرتبہ نظر رحمت کروں گا اور ہر نظر میں اس کی ستر حاجتیں پوری کروں گا چاہے اس نے بہت سے گناہ بھی کئے ہوں۔ ایک اور روایت میں ہے کہ جو شخص ہر نماز کے بعد ان آیات کو پڑھے تو میں اسے حظیرہ قدس میں ٹھہراؤں گا، خواہ وہ کتنا ہی گناہ گار کیوں نہ ہو اگر اُسے حظیرہ قدس میں نہ ٹھہراؤں تو بھی ہر روز ستّر مرتبہ اس پر اپنی خاص نظر رحمت کروں گا اگر یہ نہ کروں تو پھر ہر روز اس کی ستّر حاجتیں پوری کروں گا کہ جن میں کم سے کم یہ ہے کہ اس کے گناہ معاف کروں گا . اگر یہ نہ کروں تو اسے شر شیطان اور ہر دشمن کے شر سے اپنی پناہ میں رکھوں گا اور اسے ان پر غلبہ عطا کروں گا اور موت کے علاوہ کوئی چیز اس کو جنت میں جانے سے نہ روک سکے اور وہ آیات یہ ہیں :

سورہ فاتحہ کی تمام آیات آیۃ الکرسی ھم فیہا خالدون تک ، نیز آیت شہادت اور آیت ملک۔

آیت شہادت

شَھِدَ اﷲُ ٲَنَّہُ لاَ إلہَ إلاَّ ھُوَ وَالْمَلائِکَۃُ وَٲُولُوا الْعِلْمِ قَائِماً بِالْقِسْطِ لا إلہَ إلاَّ ھُوَ الْعَزِیزُ

خدا نے گواہی دی کہ نہیں کوئی معبود مگر وہ ہے نیز ملائکہ اور صاحبان علم نے گواہی دی کہ وہ عدل قائم کیے ہوئے ہے اس کے سوا کوئی معبود نہیں

الْحَکِیمُ إنَّ الدِّینَ عِنْدَ اﷲِ الْاِسْلامُ وَمَا اخْتَلَفَ الَّذِینَ ٲُوتُوا الْکِتَابَ إلاَّ مِنْ بَعْدِ مَا

وہ غالب و حکیم ہے یقیناً اﷲ کے نزدیک دین فقط اسلام ہی ہے اہل کتاب نے اختلاف نہیں کیا مگر اس کے بعد جب ان کے پاس علم آگیا انہوں

جائَھُمُ الْعِلْمُ بَغْیاً بَیْنَھُمْ وَمَنْ یَکْفُرْ بِآیاتِ اﷲِ فَ إنَّ اﷲَ سَرِیعُ الْحِسَاب

نے باہم اختلاف و نزاع کھڑا کیا اور جو شخص آیات الٰہی کا انکار کرے تو یقیناً اﷲ جلد حساب لینے والا ہے .

﴿آیت ملک﴾

قُلِ اَللّٰھُمَّ مالِکَ الْمُلْکِ تُؤْتِی الْمُلْکَ مَنْ تَشَائُ وَ تَنْزِعُ الْمُلْکَ مِمَّنْ تَشَائُ وَتُعِزُّ

کہو اے اﷲ ! اے حکومت کے مالک تو جسے چاہے حکومت دے اور جس سے چاہے حکومت واپس لے لے تو جسے چاہے عزت

مَنْ تَشَائُ َوَتُذِلُّ مَنْ تَشَائُ بِیَدِکَ الْخَیْرُ إنَّکَ عَلَی کُلِّ شَیْئٍ قَدِیرٌ تُولِجُ اللَّیْلَ فِی

دے اور جسے چاہے ذلت دے بھلائی تیرے ہاتھ میں ہے یقیناً تو ہر چیز پرقدرت رکھتا ہے تورات کو دن

النَّہارِ وَتُولِجُ النَّہارَ فِی اللَّیْلِ وَتُخْرِجُ الْحَیَّ مِنَ الْمَیِّتِ و َتُخْرِجُ الْمیِّتَ مِنَ الْحَیِّ وَ

میں داخل کرتا ہے اور دن کو رات میں داخل کرتا ہے تو مردہ میں سے زندہ کو نکالتا ہے اور زندہ میں سے مردہ کو نکالتا ہے

تَرْزُقُ مَنْ تَشَآئُ بِغَےْرِ حِسَابٍ

اور جسے چاہے بغیر حساب کے روزی دیتا ہے ۔

﴿آیت الکرسی کے فضائل﴾

معتبر سند کے ساتھ امام موسیٰ کاظم - سے منقول ہے کہ جو شخص ہر فریضہ نماز کے بعد آیۃ الکرسی پڑھے تو کوئی کاٹنے والی چیز اسے ضرر نہیں پہنچا سکے گی . ایک اور معتبر حدیث میں فرماتے ہیں کہ رسول اﷲ نے فرمایا: یاعلی(ع) تمہارے لیے ہر فریضہ نماز کے بعد آیۃالکرسی تلاوت کرنا ضروری ہے کیونکہ پیغمبر یا صدیق یا شہید کے علاوہ کوئی اس عمل کو ہمیشہ جاری نہیں رکھ سکتا رسول اﷲ سے منقول ہے کہ جو شخص ہر فریضہ نماز کے بعد آیۃ الکرسی کی تلاوت کرے تو سوائے موت کے کوئی چیز اسے بہشت میں جانے سے نہیں روک سکے گی ایک اور حدیث میں ہے کہ جو شخص ہر فریضہ نماز کے بعد آیۃ الکرسی کی تلاوت کرے تو اسکی نماز قبول ہوگی وہ خدا کی پناہ میں رہیگا اور خدا اسے گناہوں اور بلاؤں سے محفوظ رکھے گا۔

جو زیادہ اعمال بجا نہ لا سکتا ہو وہ یہ دعا پڑھے

9۔ شیخ کلینی(رح) ،ابن بابویہ(رح) اور دیگر محدّثین نے معتبر اسناد کے ساتھ امام محمد باقر - سے روایت کی ہے کہ شیبہ ہذلی نے رسول اﷲ(ص) کی خدمت میں عرض کیا: یارسول (ص)اﷲ! میں بوڑھا ہو چکا ہوں، میرے اعضا اب ان اعمال کے بجا لانے سے عاجز ہو گئے جن کا میں پہلے سے عادی تھا، یعنی نماز، روزہ، حج اور جہاد و غیرہ تو اب آپ مجھے ایسا کلام تعلیم فرمائیں جو میرے لیے آسان ہو اور مفید بھی ہو اس پر آنحضرت(ص) نے فرمایا کہ پھر کہو تم کیا کہنا چاہتے ہو؟ تب اس نے اپنے الفاظ کو دوتین مرتبہ دہرایا، یہ سُن کر حضور نے فرمایا تیر ے سا تھ ہمدردی کے لئے اردگرد کے تمام درخت اور مٹی کے ڈھیلے روپڑے ہیں۔ پس جب تم نماز فجر سے فارغ ہو جاؤ تو دس مرتبہ کہو:

سُبْحانَ اﷲ العَظِیمِ وَبِحَمْدِھِ وَلاَحَوْلَ وَ لاَ قُوَّۃَ إلاَّ بِا ﷲِ الْعَلِیِّ الْعَظِیمِ

پاک ہے بزرگ تر اﷲ اور حمد اسی کے لیے ہے نہیں کوئی طاقت و قوت مگر وہی جو خدائے بلند و بزرگ سے ہے ۔

اس کلام کی برکت سے خدا تم کو اندھے پن، دیوانگی، برص، جذام، پریشانی اور فضول گوئی سے نجات دے گا ۔ شیبہ نے کہا یا رسول اﷲ ! یہ تو میری دُنیا کے لیے ہے، میری آخرت کے لیے بھی تو کچھ فرمائیں تب حضور اکرم(ص) نے فرمایا کہ ہر نماز کے بعد یہ کہا کرو:

اَللّٰھُمَّ اھْدِنِی مِنْ عِنْدِک وَٲَفِضْ عَلَیَّ مِن فَضْلِکَ وَانْشُرْ عَلَیَّ مِنْ رَحْمَتِکَ وَٲَنْزِلْ

اے معبود! تو مجھے اپنی طرف سے ہدایت دے مجھ پر اپنا فضل و کرم جاری رکھ مجھ پر اپنی رحمت کی چادر تان دے

عَلَیَّ مِنْ بَرَکاتِکَ

اور مجھ پر اپنی برکتیں نازل فرما۔

آنحضرت نے یہ بھی فرمایا کہ اگر کوئی شخص اس دُعا کو پا بندی کے ساتھ پڑھتا رہے اور مرتے دم تک اسے جان بوجھ کر ترک نہ کرے تو جب وہ میدان حشر میں آئے گا تو اس کیلئے بہشت کے آٹھوں دروازے کھول دیئے جائیں گے اور اسے یہ اختیار دیا جائے گا کہ وہ جس دروازے سے چاہے داخل ہوجائے یہ آخری دُعا دیگر معتبر اسناد کیساتھ بھی روایت کی گئی ہے

10۔ فضیلت تسبیحات اربعہ﴾

شیخ طوسی(رح)، ابن بابویہ(رح) اور حمیری نے صحیح اسناد کے ساتھ امام جعفر صادق - سے روایت کی ہے کہ ایک دن حضرت رسول اﷲ نے اپنے اصحاب سے فرمایا: اگر تم اپنے تمام مال و اسباب اور اشیائ و ظروف میں سے ہر ایک کو دوسرے پر رکھتے چلے جاؤ تو کیا وہ آسمان تک پہنچ جائیں گے؟انہوں نے جواب دیا: نہیں آپ(ص) نے فرمایا:آیا تم چاہیتے ہو کہ میں تمہیں ایسی چیز تعلیم کروں کہ جس کی جڑیں زمین اور شاخیں آسمان تک گئی ہوں؟سب نے عرض کیا: ضرور! یارسول(ص) اﷲ! اس وقت آپ(ص) نے فرمایاکہ ہر نماز کے بعد تیس مرتبہ کہو:

سُبْحانَ اﷲِ وَالْحَمْدُ لِلّٰہِ وَلاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ وَاﷲُ ٲَکْبَرُ

اﷲ پاک ہے حمد اﷲ ہی کیلئے ہے اﷲ کے سوا کوئی معبود نہیں اور اﷲ بزرگ ہے ۔

ہاں یہ وہ کلام ہے کہ جسکی جڑیں زمین میں اور شاخیں آسمان تک پہنچی ہوئی ہیں۔ یہ انسان کو چھت تلے دبنے، پانی میں ڈوبنے، کنوئیں میں گرنے درندوں کے چیرنے پھاڑنے، بدتر موت اور آسمان سے آنے والی بلاؤں سے بچاتا ہے یہی ان باقیات الصالحات میں ہے جن کا ذکر قرآن مجید میں ہے ۔دیگر صحیح اسناد کے ساتھ امام جعفر صادق - سے منقول ہے کہ جو شخص ہر فریضہ نماز کے بعد اپنی جگہ چھوڑنے سے پہلے ان تسبیحات اربعہ کو چالیس مرتبہ پڑھے تو وہ خدا سے جو کچھ مانگے وہ اسے عطا فرمائے گا صحیح سند کے ساتھ امام جعفر صادق -سے منقول ہے کہ جو شخص فریضہ نماز کے بعد تیس مرتبہ سُبْحانَ اﷲ کہے تو اس کے بدن پر موجود ہر گناہ ساقط ہو جائے گا . ایک اور صحیح حدیث میں آنجناب ہی سے منقول ہے کہ خدا نے قرآن مجید میں جس ’’ذکر کثیر‘‘ کا ذکر فرمایا ہے اور اس کی ستائش کی ہے وہ یہ ہے کہ ہر نماز کے بعد تیسں مرتبہ سُبْحانَ اﷲ کہا جائے ۔

قطب راوندی نے روایت کی ہے کہ امیر المومنین- نے برائ بن عاذب سے فرمایا: آیا چاہتے ہو کہ میں تمہیں ایسی بات بتاؤں کہ جسے بجالانے سے تم خدا کے پکے اور سچّے دوست بن جاؤ؟ اس نے کہا کہ ضرور فرمائیے!آپ نے فرمایا کہ ہر نماز کے بعد دس مرتبہ تسبیحات اربعہ پڑھ لیا کرو!جب تم ایسا کرو گے تو دنیا میں تم سے ایک ہزار بلائیں دور ہوں گی جن میں سے ایک مرتد ہونا بھی ہے نیز تمہارے لیے آخرت میں ہزار مرتبے ذخیرہ کر دیئے جائیں گے جن میں سے ایک مرتبہ یہ بھی ہے کہ تم نبی کریم(ص) کی ہمسائیگی میں ہوگے۔

﴿حاجت ملنے کی دعا﴾

11۔ شیخ کلینی(رح) نے سند حسن کے ساتھ امام جعفر صادق - سے روایت کی ہے کہ جو شخص فریضہ نماز کے بعد تین مرتبہ کہے :

یَا مَنْ یَفْعَلُ مَا یَشائُ وَلاَ یَفْعَلُ مَا یَشائُ ٲَحَدٌ غَیْرُھُ

اے وہ کہ جو چاہے کرتا ہے اور اس کے علاوہ کوئی بھی جو چاہے نہیں کر پاتا

یہ دعا پڑھنے والا خدا سے جو کچھ بھی مانگے مِل جائے گا۔

﴿گناہوں سے معافی کی دعا﴾

12۔ شیخ برقی نے موثق سند کیساتھ امام جعفر صادق - سے روایت کی ہے کہ نماز سے فارغ ہو کر اپنے زانوؤں کو حرکت دینے سے پہلے جو بھی شخص اس تہلیل کو دس مرتبہ پڑھے تو حق تعالیٰ اس کے چار کروڑ گناہوں کو مٹادے گا اور اس کے لیے چار کروڑ نیکیاں لکھ دے گا۔ اس کے پڑھنے کا اتنا ثواب ہے کہ گویا اس شخص نے بارہ مرتبہ قرآن مجیدختم کیا ہے پھر فرمایا کہ میں تو سو مرتبہ پڑھتا ہوں . لیکن تمہارے لیے اس کا دس مرتبہ پڑھنا ہی کافی ہے . اور وہ تحلیل یہ ہے :

ٲَشْھَدُ ٲَنْ لاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ وَحْدَھُ لاَ شَرِیکَ لَہُ إلہاً وَاحِداً ٲَحَداً صَمَداً لَمْ یَتَّخِذْ صاحِبَۃً وَلاَ وَلَداً

میںگواہ ہوں کہ اﷲ کے سوا کوئی معبود نہیں ،وہ یکتا ہے اسکا کوئی شریک نہیں وہ معبود تنہا ،اکیلا اور بے نیازہے نہ اس نے کوئی بیوی کی نہ کسی کو بیٹا بنایا.

اس تہلیل کی فضیلت میں بہت کچھ بیان کیا گیا ہے خصوصاً اسے صبح و شام کی نمازوں کی تعقیبات میں اور طلوع و غروب کے وقت پڑھنا چاہیئے۔

﴿ہر نماز کے بعد کی دعا﴾

13۔ شیخ کلینی(رح)، ابن بابویہ(رح) اور دیگر علما نے صحیح اسناد کے ساتھ امام جعفر صادق - سے روایت کی ہے کہ جبرائیل(ع) زندان میں حضرت یوسف- کے پاس آئے اور کہا: ہر نماز کے بعد یہ دُعا پڑھا کریں :

اَللّٰھُمَّ اجْعَلْ لِی فَرَجاً وَمَخْرَجاً وَارْزُقْنِی مِنْ حَیْثُ ٲَحْتَسِبُ وَمِنْ حَیْثُ لاَ ٲَحْتَسِبُ۔

اے معبود! میرے لیے کشائش اور بچ نکلنے کا سامان پیدا کر اور مجھے روزی دے جہاں سے مجھے توقع ہے. اور جہاں سے توقع نہیں ہے .

﴿قیامت میں رو سفیدی کی دعا﴾

14۔ بلد الامین میں رسول اﷲ سے روایت ہوئی ہے کہ جو یہ چاہتا ہے کہ قیامت میں خداوند عالم کسی کو اس کے برے اعمال پر مطلع نہ ہونے دے اور اس کے گناہوں کی فہرست کسی کے سامنے نہ کھولے تو اسے ہر نماز کے بعد یہ کلام پڑھنا چاہیئے:

اَللَّھُمَّ اِنَّ مَغْفِرَتِکَ ٲَرْجَی مِنْ عَمَلِی وَ إنَّ رَحْمَتَکَ ٲَوْسَعُ مِنْ ذَنْبِی اَللّٰھُمَّ إنْ کانَ ذَنْبِی

اے معبود! تیری بخشش میرے اعمال سے زیادہ امید افزا ہے اور تیری رحمت میرے گناہوں سے زیادہ وسیع ہے اے معبود! اگر

عِنْدَکَ عَظِیماً فَعَفْوُکَ ٲَعْظَمُ مِنْ ذَنْبِی اَللّٰھُمَّ إنْ لَمْ ٲَکُنْ ٲَھْلاً ٲَنْ تَرْحَمَنِی فَرَحْمَتُکَ

میرے گناہ تیرے نزدیک بڑے ہیں تو تیری درگزر میرے گناہوں سے بہت بڑی ہے اے معبود! اگر میں تیری رحمت کے لائق نہیں تو تیری رحمت

ٲَھْلٌ ٲَنْ تَبْلُغَنِی وَتَسَعَنِی لاََِنَّہا وَسِعَتْ کُلَّ شَیْئٍ بِرَحْمَتِکَ یَا ٲَرْحَمَ الرَّاحِمِینَ

اس لائق ہے کہ مجھ تک پہنچ جائے اور مجھے گھیر لے کیونکہ وہ ہر چیز پر چھائی ہوئی ہے تیری رحمت کا واسطہ اے سب سے زیادہ رحم کرنے والے۔

بیمار اور تنگدستی کیلئے دعا

15۔ کفعمی(رح) نے حضرت رسول اﷲ سے روایت کی ہے کہ ایک شخص نے آنحضرت(ص) کی خدمت میں اپنی بیماری اور تنگدستی کی شکایت کی تو آپ(ص) نے اس سے فرمایاکہ ہر فریضہ نماز کے بعد یہ دُعا پڑھا کرو :

تَوَکَّلْتُ عَلَی الْحَیِّ الَّذِی لاَ یَمُوتُ وَالْحَمْدُ لِلّٰہِِ الَّذِی لَمْ یَتَّخِذْ صاحِبَۃً وَلاَ

میں نے اس پر بھر وسہ کیا جو زندہ ہے اسے موت نہیں حمد ہے خدا کے لیے جس نے نہ کوئی بیوی بنائی اور نہ کوئی

وَلَداً وَلَمْ یَکُنْ لَہُ شَرِیکٌ فِی الْمُلْکِ وَلَمْ یَکُنْ لَہُ وَلِیٌّ مِنَ الذُّلِّ وَکَبِّرْھُ تَکْبِیراً

بیٹا نہ بادشاہت میں کوئی اس کاشریک ہے نہ بوجہ کمزوری کوئی اس کا مددگار ہے اور اسکی بہت زیادہ بڑائی کرو ۔

ایک اور روایت کے مطابق آنحضرت(ص) نے فرمایا: جب بھی مجھے کوئی مشکل امر درپیش ہوتا تو جبرائیل(ع) میرے پاس آتے اور کہتے کہ اس ﴿مذکورہ بالا﴾دعا کو پڑھیں. معتبر احادیث میں آیا ہے کہ دل کے وسوسوں، قرض، پریشانی اور بیماری دور کرنے کیلئے یہ دُعا بار بار پڑھی جائے بعض روایات میں ہے کہ اس کے شروع میں لاَ حَوْلَ وَلاَ قُوَّۃَ إلاَّ بِاﷲِ بھی پڑھا جائے .

ہر نماز کے بعد دعا

16۔ شیخ مفید(رح) نے مقنعہ میں تعقیبات نماز کے سلسلے میں لکھا ہے کہ ہر نماز کے بعد یہ دُعا پڑھے:

اَللّٰھُمَّ انْفَعْنا بالْعِلْمِ وَزَیِّنَابِالْحِلْمِ وَجَمِّلْنا بِالْعافِیَۃِ وَاَکَرِّمْنَا بِالتَّقْوی إنَّ وَلِیِّیَ اﷲُ الَّذِی

اے معبود !ہمیں علم کے ذریعے فائدہ دے ،حلم سے مزین فرما ،عافیت کی زیبائی بخش اور تقویٰ کے ذریعے معزز فرما یقیناً میرا مددگار وہ

نَزَّل َالْکِتابَ وَھُوَ یَتَوَلَّی الصَّالِحِینَ۔

اﷲ ہے جس نے کتاب نازل فرمائی اور وہ نیکوکاروں کی مدد کرتا ہے

﴿پنجگانہ نماز کے بعد کی دعا﴾

ابن بابویہ(رح)، شیخ طوسی(رح)، اور دیگر علمائ نے معتبر اسناد کے ساتھ امیر المومنین- سے روایت کی ہے کہ جو شخص یہ چاہتا ہے کہ وہ دنیا سے اس حال میں رخصت ہو کہ گناہوں سے اسطرح پاک ہو جیسے سونا کندن بنا ہوا ہو اور وہ یہ بھی چاہتا ہو کہ قیامت والے دن کوئی شخص اس سے ظلم کی دادخواہی نہ کرے تو اسے چاہیے کہ پنجگانہ نمازوں کے بعد سورہ قُل ھوَ اﷲ اَحَد بارہ مرتبہ پڑھے اورپھر اپنے ہاتھ آسمان کی طرف بلند کر کے درج ذیل دُعا پڑھے:اور حضرت نے فرمایا کہ یہ دعا اس پوشیدہ رازوں میں سے ہے کہ جسے رسول اللہ نے مجھے تعلیم دی اور مجھے حکم دیا کہ حسن(ع) اور حسین (ع) کو تعلم دوں اور وہ دعا یہ ہے ۔

اَللّٰھُمَّ إنِّی ٲَسْٲَلُکَ بِاسْمِکَ الْمَکْنُونِ الْمَخْزُونِ الطَّاھِرِ الطُّھْرِ الْمُبارَکِ وَٲَسْٲَلُکَ

اے معبود ! میں تجھ سے سوال کرتا ہوں بواسطہ تیرے اس نام کے جو پوشیدہ محفوظ پاک و پاکیزہ اور برکت والاہے . میں تجھ سے

ِباسْمِکَ الْعَظِیمِ وَسُلْطانِکَ الْقَدِیمِ یَا واھِبَ الْعَطایَا یَامُطْلِقَ الْاُسَارَیٰ یَافَکَّاکَ

سوال کرتا ہوں بابواسطہ تیرے عظیم نام اور تیری قدیم حکومت کے اے عطیہ دینے والے اے قیدیوں کو رہائی دینے والے اے

الرِّقَابِ مِنَ النَّارِ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وآلَ مُحَمَّد وَفُکَّ رَقَبَتِی مِن النَّارِ وَٲَخْرِجْنِی

لوگوں کو جہنم سے آزاد کرنے والے درود بھیج محمد(ص) وآل محمد(ص) پرمیری گردن جہنم سے آزاد کر دے مجھے دُنیا سے امان

مِنَ الدُّنْیاآمِناً وَٲَدْخِلْنِی الْجَنَّۃَ سالِماً وَاجْعَلْ دُعائِی ٲَوَّلَہُ فَلاحاً وَٲَوْسَطَہُ نَجاحاً وَآخِرَہ

کے ساتھ اٹھانا اور جنت میں سلامتی کے ساتھ داخل کرنا میرے دعا کو اول کے فلاح بنا دے اس کے وسط کو نجات بنا اور اس کے

صَلاحاً إنَّکَ ٲَنْتَ عَلاَّمُ الْغُیُوبِ۔بعض معتبر نسخوں میں یہ دعایوں درج ہے : یَا فَکَّاکَ الرِّقابِ

آخر کو بہتری قرار دے بے شک تو ہر غیب کا جاننے والا ہے ۔

مِنَ النَّارِ ٲَسْٲَلُکَ ٲَنْ تُصَلِّیَ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ وَٲَنْ تُعْتِقَ رَقَبَتِی مِنَ النَّارِ وَٲَن

والے میں سوال کرتا ہوں کہ تو محمد(ص) و آل(ع) محمد(ص) پر رحمت فرما میری گردن کو جہنم کی آگ سے آزاد کر

ْ تُخْرِجَنِی مِنَ الدُّنْیا سالِماً وَتُدْخِلَنِی الْجَنَّۃَ آمِناً وَٲَنْ تَجْعَلَ دُعائِی ٲَوَّلَہُ فلاحاً وَاَوْسَطُہُ

دے مجھے دنیا سے سلامتی کے ساتھ اٹھانا جنت میں امن کے ساتھ داخل کرنا نیز میری دعا کے اول کو فلاح قرار دے وسط کو نجات بنا اور آخر کو

نَجَاحا وَ آخِرَہُ صَلاحاً إنَّکَ ٲَنْتَ عَلاَّمُ الْغُیُوبِ

بہتر بنا دے بے شک تو ہر غائب کا جاننے والا ہے۔

ہر نماز کے بعد سور توحید کی تلاوت

شیخ کلینی(رح) نے معتبر سند کے ساتھ امام جعفر صادق - سے روایت کی ہے کہ جو شخص خدااور روز قیامت پر ایمان رکھتا ہے اسے ہر فریضہ نماز کے بعد سورہ ’’قُل ھُو اﷲُ اَحَدُ‘‘کا پڑھنا ترک نہیں کرنا چاہیئے. کیونکہ جو شخص اس سورہ کی تلاوت کرے گا تو اﷲ تعالیٰ اس کے لیے دنیا و آخرت کی بھلائی جمع کر دے گا پس وہ اس کو ،اس کے والدین کو اور اسکے رشتہ داروں کوبخش دیگا ایک اور حدیث میں ہے کہ جو شخص ہر فریضہ نماز کے بعدسورہ’’قُلْ ھُوَاﷲُ اَحَد‘‘ پڑھے گا اللہ تعالیٰ اس کی تزویج سیاہ چشم حور کے ساتھ کریگا سید ابن طاووس نے رسول خدا سے روایت کی ہے کہ جو شخص ہر نماز کے بعد سورہ ’’قُلْ ھُوَاﷲُ اَحَد‘‘ پڑھے گا آسمان سے اس پر رحمت نازل ہوگی اور اسے تسکین حاصل ہوگی اور اﷲ تعالیٰ اس کی طرف نظر رحمت فرمائے گا نیز وہ اس کے گناہ معاف کردے گا اور جو بھی حاجت طلب کریگا خدا اسے پوری کرے گا۔

﴿گناہوں سے بخشش کی دعا﴾

18۔ شیخ کلینی(رح) اور دیگر علما نے معتبر سند کیساتھ اہلب(ع)یت سے روایت کی ہے کہ جو شخص ہر نماز کے بعد اپنے دائیں ہاتھ سے اپنی داڑھی پکڑے ہوئے بائیں ہاتھ کو آسمان کی طرف بلند کر کے تین مرتبہ کہے:

یَا ذَا الْجَلالِ وَالْاِکْرامِ ارْحَمْنِی مِنَ النَّارِ اور پھر تین مرتبہ کہے :أَجِرْنِی من ْ الْعَذابِ الْاَلِیمِ

اے دبدبہ و عزت کے مالک آگ کے مقابل مجھ پر رحم فرما

اسکے بعد دائیں ہاتھ کو داڑھی سے ہٹا کر دونوں ہاتھ آسمان کی طرف پھیلا کر تین مرتبہ کہے :یَا عَزِیزُیَا کَرِیمُ یَا

اے غالب اے سخی اے رحم والے

رَحْمٰنُ یَا غَفُورُ یَا رَحِیمُ پھر ہاتھوں کو پلٹا کر یعنی ہتھیلیاں نیچے کی طرف کر کے ہاتھ آسمان کی طرف

اے بخشنے والے اے مہربان ۔

بلندکر کے تین مرتبہ کہے:ٲَجِرْنِی مِنَ العَذابِ الْاَلِیمِ۔اور پھر یہ کہے :وَصَلَّی اﷲُ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ

مجھ کو دردناک عذاب سے بچالے ۔

وَالْمَلائِکَۃُ وَ الرُّوْحُ

اور فرشتوں اور روح پر بھی

پھر فرمایا کہ جو شخص اس دعا کو مذکورہ طریقے سے پڑھے گا اﷲ تعالیٰ اس کے تمام گناہ بخش د ے گا اور اس سے خوشنود ہوگا، جن و انس کے علاوہ دیگر مخلوقات بھی اسکی موت تک اس کیلئے استغفار کرتے رہیں گے ۔

رنماز کے بعد گناہوں سے بخشش کی دعا

19۔ شیخ مفید(رح) نے کتاب ’’مجالس‘‘میں جناب محمد بن حنفیہ سے روایت کی ہے کہ انہوں نے فرمایا:ایک دن میرے والد گرامی امیر المومنین- خانہ کعبہ کا طواف کر رہے تھے کہ اچانک ایک شخص کو دیکھا کہ جو غلاف کعبہ کو پکڑ کر یہ دُعا پڑھ رہا تھا . امیر المومنین- نے اس سے پوچھا: یہی تمہاری دعا تھی اس نے کہا : جی ہاں ! کیا وہ دُعا آپ(ع) نے سُن لی ہے ؟آپ(ع) نے فرمایا :ہاں! اس نے کہا اس دعا کو ہر نماز کے بعد پڑھا کریں ، قسم بخدا کہ جو بھی مومن نماز کے بعد یہ دُعا پڑھے گا ، اﷲ تعالیٰ اس کے تمام گناہ بخش دے گا خواہ وہ تعداد میں آسمان کے ستاروں ، بارش کے قطروں، ریت کے ذرّوں اور غبار خاک کے مانند ہی کیوں نہ ہوں حضرت امیر المومنین- نے فرمایا: میں اس دعا کو جانتا ہوں، یقیناً حق تعالیٰ کی بخشش بڑی وسیع ہے اور وہ بڑاہی کریم ہے . تب اس شخص نے کہا :اے امیر المومنین(ع) ! آپ(ع) نے سچ فرمایا اور ہر عالم سے بڑھ کر ایک عالم ہوتا ہے وہ مرد حضرت خضر - ﴿بات کرنے والا شخص خود حضرت خضر- ﴾ تھے کفعمی نے بلد الامین میں اسی دعاکو ذکر کیا ہے جو یہ ہے :

یَا مَنْ لاَ یَشْغَلُہُ سَمْعٌ عَنْ سَمْعٍ، یَا مَنْ لاَ یُغَلِّطُہُ السَّائِلُونَ وَیَا مَنْ لاَ یُبْرِمُہُ إلْحَاحُ

اے وہ جسے ایک آواز دوسری سے غافل نہیں کرتی، اے وہ سوالی جسے مغالطہ میں نہیں ڈالتے اے وہ جسے فریادیوں کی

الْمُلِحِّینَ ٲَذِقْنِی بَرْدَ عَفْوِکَ وَمَغْفِرَتِکَ وَحَلاوَۃَ رَحْمَتِکَ

فریادیں تھکاتی نہیں مجھے اپنے عفو اور بخشش کی ٹھنڈک اوراپنی رحمت کی مٹھاس نصیب فرما۔

گذشتہ دن کا ضائع ثواب حاصل کرنے کی دعا

20۔ دیلمی(رح) نے اعلام الدین میں ابن عباس سے روایت کی ہے کہ رسول پاک نے فرمایا:جو شخص مغرب کی نماز کے بعد ان آیات کو تین مرتبہ پڑھے تو وہ گذشتہ دن کا ضائع ہو جانے والا ثواب حاصل کر لے گا . اس کی نماز قبول ہو گی اگر ہر فریضہ اور سنتی نماز کے بعد پڑھے تو اس کے لیے آسمان کے ستاروں، بارش کے قطروں، درختوں کے پتوں اور زمین کے ذرّوں کی تعداد کے مطابق نیکیاں لکھی جائیں گی جب وہ مرے گا تو قبر میں اسے ہر نیکی کے عوض دس نیکیاں مزید عطا ہوں گی۔ وہ آیات یہ ہیں

فَسُبْحانَ اﷲ حِینَ تُمْسُون وَحِینَ تُصْبِحُونَ وَلَہ الْحَمْدُ فِی السَّمٰوَاتِ وَالْاَرْضِ

اﷲ پاک ہے جب تم شام کرتے ہو اور جب صبح کرتے ہو اس کے لیے حمد ہے آسمانوں اورزمین میں اور رات میں بھی ہے

وَعَشِیَّاً وَحِینَ تُظْھِرُون یُخْرِج الْحَیَّ مِنَ الْمَیِّتِ وَیُخْرِجُ الْمَیِّتَ مِنَ الْحَیِّ وَیُحْیِی

اور جب تم ظہر کرتے ہو وہ مردہ میں سے زندہ کواور زندہ میں سے مردہ کو باہرنکالتا ہے وہ زمین کو اس کے مردہ

الْاَرْضَ بَعْدَ مَوْتِہا وَکَذلِکَ تُخْرَجُونَ سُبْحانَ رَبِّکَ رَبِّ الْعِزَّۃِ ان عَمَّا یَصِفُونَ

ہونے کے بعد زندہ کرتا ہے اور اسی طرح تم بھی نکالے جاؤ گے پاک ہے تیرا صاحب عزّت رب باتوںسے جودہ اس کے لیے کہتے

وَسَلامٌ عَلَی الْمُرْسَلِینَ وَالْحَمْد لِلّٰہِ رَبِّ الْعالَمِینَ

ہیں اور سلام ہے سب نبیوں پر اور حمد بس خدا کیلئے ہے جو جہانوں کا رب ہے

لمبی عمر کیلئے دعا

21۔ سید ابن طاؤس(رح) نے معتبر سند کے ساتھ جمیل بن دراج سے روایت کی ہے کہ ایک شخص امام جعفر صادق - کی خدمت میں حاضر ہوا اور عرض کیا: مولا! میری عمر زیادہ ہوگئی ہے میرے رشتہ دار مر چکے ہیں کوئی مونس اور ہمدم نہیں ملتا مجھے ڈر ہے کہ میں خود بھی مر جاؤں گا حضرت نے فرمایا: اپنے رشتہ داروں کی نسبت صالح مومن بھائی اُنس کیلئے بہتر ہیں اگر تم اپنی اور عزیز و اقارب اور دوستوں کی لمبی عمر چاہتے ہو تو ہر نماز کے بعد اس دُعا کو پڑھا کرو:

اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ۔اَللّٰھُمَّ إنَّ رَسُولَکَ الصَّادِقَ الْمُصَدَّقَ صَلَوٰتُکَ

اے معبود رحمت فرما محمد (ص) وآل محمد(ص) پر، اے معبودبے شک تیرے سچّے اور سچا قرار دیئے ہوئے رسول تیری رحمتیں ہوں ان پر اور ان کی آل(ع) پر نے فرمایا

عَلَیْہ وَآلِہِ قالَ إنَّکَ قُلْتَ مَا تَرَدَّدْتُ فِی شَیْئٍ ٲَنَا فاعِلُہُ کَتَرَدُّدِی فِی قَبْضِ رُوحِ

کہ یقیناً تو نے ارشاد کیا کہ میں جو کچھ کرنا چاہوں اس میں کوئی تردد نہیں ہوتا مگر اس وقت جب میں کسی ایسے مومن کی روح قبض

عَبْدِیَ الْمُؤْمِنِ یَکْرَھُ الْمَوْتَ وَٲَکْرَھُ مَسائَتَہُ اَللّٰھُمَّ فَصَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ

کرنے لگوں جو موت کو پسند نہ کرے اور میں اس کی ناراضگی کو پسند نہیں کرتا اور اے معبود درود بھیج محمد(ص) و آل(ع) محمد(ص) پر اور اپنے آخری ولی

وَعَجِّلْ لِوَلِیِّکَ الْفَرَجَ وَالْعافِیَۃَ وَالنَّصْرَ وَلاَ تَسُؤْنِی فِی نَفْسِی وَلاَ فِی ٲَحَدٍ مِنْ ٲَحِبَّتِی۔

کی کشائش میں جلدی کر انہیں محفوظ رکھ کامیابی عطا فرما اور مجھے اپنے اور اپنے دوستوں کے بارے میں کسی برائی سے دوچار نہ کرنا۔

اگر چاہو تو اپنے ایک ایک دوست کا نام لو اور کہو :نہ فلاں کے بارے میں نہ فلاں کے بارے میں برائی سے دو چار نہ کرنا، راوی کہتا ہے کہ جب میں نے یہ دُعا پابندی کے ساتھ پڑھنا شروع کی تو مجھے اس قدر زندگی نصیب ہوئی کہ میں اس سے اکتا گیا۔ یہ دُعا نہایت ہی معتبر ہے اور دعاؤں کی تمام کتابوں میں منقول ہے۔

تعقیبات مختصر

ہر نماز کی مخصوص تعقیبات

نماز فجر کی مخصوص تعقیبات:

جاننا چاہیے کہ نماز فجر کی تعقیبات دیگر تمام نمازوں کی بہ نسبت زیادہ ہیں اور اس نماز کی خصوصی فضیلت کے بارے میں بہت سی احادیث وارد ہوئی ہیں . حضرت امیر المومنین - سے منقول ہے کہ تلاش رزق میں روئے زمین پر سفر کرنے کے مقابل نماز فجر کے بعد طلوع آفتاب تک ذکر الٰہی میں مشغول رہنا زیادہ کامل ہے حضرت رسول اکرم(ص) سے منقول ہے کہ جو شخص طلوع فجر سے طلوع آفتاب تک اپنے مصلّے پر بیٹھ کر تعقیبات میں مشغول رہے تو خدا اسے آتش جہنم سے محفوظ رکھے گا۔ امام محمد باقر - سے منقول ہے کہ شیطان اپنے دن کے لشکر کو طلوع صبح صادق سے طلوع آفتاب تک اور اپنے رات کے لشکر کو غروب آفتاب سے سرخی زائل ہونے تک زمین پر پھیلا دیتا ہے لہذا ان دو ساعتوں میں خدا کو بہت یاد کرو کہ ان دو وقتوں میں شیطان انسانوں کو غافل کر دیتا ہے، صحیح سند کے ساتھ منقول ہے کہ خراسان میں امام رضا- جب نماز فجر پڑھتے تو طلوع آفتاب تک اپنے مصلّے پر بیٹھ کر تعقیبات میں مشغول رہتے تھے اس کے بعد ایک تھیلی آپ(ع) کے پاس لائی جاتی جس میں مسواک ہوتے اور ان میں سے ایک ایک مسواک استعمال فرماتے تھے . پھر آپ(ع) تھوڑا ساکندر چباتے اور اس کے بعد قرآن مجید لے کر تلاوت میں لگ جاتے . حضرت رسول(ص) خدا سے منقول ہے کہ جو شخص طلوع فجر سے طلوع آفتاب تک تعقیبات میں مشغول رہے تو خداے تعالیٰ اس کیلئے حج کا ثواب لکھ دیتا ہے . حدیث قدسی میں ہے کہ حق تعالیٰ فرماتا ہے : اے فرزند آدم! تو مجھے صبح کے بعدایک ساعت اور عصر کے بعدایک ساعت تک یاد کیا کر تاکہ میں تیری تمام مشکلیں آسان اور حاجتیں پوری کردوں نماز فجر کی بعض مخصوص تعقیبات یہ ہیں ۔

گناہوں سے بخشش کی دعا

﴿۱﴾ ابن بابویہ(رح) نے معتبر سند کے ساتھ امام محمد باقر علیہ السلام سے روایت کی ہے کہ جو شخص نماز فجر کے بعد ستر مرتبہاَسْتَغْفِرُ اﷲَ رَبِّی وَاَتُوْبُ اِلِیْہِ﴿ اپنے رب اللہ سے بخشش مانگتا اور توبہ کرتا ہوں﴾کہے تو اﷲ تعالیٰ اس کے ستر ہزار گناہ معاف کر دیتا ہے ، ایک اور روایت کے مطابق سات سو گناہ معاف کر دیتا ہے ۔

شیطان کے چال سے بچانے کی دعا

﴿۲﴾ ابن بابویہ(رح) نے صحیح اور معتبر اسناد کے ساتھ حضرت امیر المومنین (ع) سے روایت کی ہے کہ جو شخص نماز فجر کے بعد گیارہ مرتبہ سورہ قُلْ ھُوَ اﷲُ اَحَد پڑھے تو شیطان کی چاہت کے برخلاف اس دن میں اس کا کوئی گناہ نہیں لکھا جائے گا . بلد الامین میں حضرت رسول(ص) خدا سے روایت ہے کہ جوشخص روزانہ دس مرتبہ سورہ قُلْ ھُوَ اﷲُ اَحَد پڑھے تو اس دن اس کے گناہ نہیں لکھے جائیں گے ہر چند کہ شیطان اس بارے میں کتنی ہی کوشش کرے۔

ناگوار امر سے بچانے والی دعا

﴿۳﴾شیخ کلینی(رح) نے صحیح سند کے ساتھ امام جعفر صادق(ع) سے روایت کی ہے کہ جو شخص نماز فجر کے بعد ایک سو مرتبہ مَا شَائَ اﷲ کَانَ لاَ حَوْلَ وَ لاَ قُوَّۃَ إلاَّ بِاللَّہِ العَلِیِّ العَظِیمِ ﴿جو خدا چاہے وہی ہوتا ہے نہیں کوئی طاقت و قوت مگر وہ خداے بلند و بزرگ سے ہے ﴾کہے تو اس روز اسے کوئی ناگوار امر در پیش نہیں ہوگا ،شیخ طوسی(رح) اور دیگر علما نے بھی دعاؤں کی کتابوں میں اس کا ذکر کیا ہے۔

بہت زیادہ اہمیت والی دعا

﴿۴﴾ کفعمی(رح) اور دیگر علما نے امام محمد باقر(ع) سے روایت کی ہے کہ جو شخص نماز فجر کے بعد زوال آفتاب کے وقت اور بعد از عصردس دس مرتبہ سورہ اِنّا اَنْزَلْناھُ فِیْ لَیْلَۃِ القَدْر پڑھے تو اس کا ثواب لکھنے والے تیس سال تک مشقت میں پڑے رہیں گے نیز آنجناب(ع) ہی سے مروی ہے کہ جو شخص اس سورہ کو طلوع فجر کے بعد سات مرتبہ پڑھے تو اس کے لیے فرشتوں کی ستر صفیں ستر مرتبہ صلوات پڑھتی ہیں اور ستر مرتبہ اس کے لیے رحمت طلب کرتی ہیں۔ امام محمد تقی(ع) سے اس شخص کے لیے بہت زیادہ ثواب منقول ہے جو دن رات میں چھہتر مرتبہ سورہ اِنّا اَنْزَلْناھُ فِیْ لَیْلَۃِ القَدْر پڑھے اور اس کی ترتیب یوں ہے: طلوع فجر کے بعد اور نماز فجر سے پہلے سات مرتبہ، نماز فجر کے بعد دس مرتبہ زوال آفتاب کے بعد اور نافلہ ظہر سے پہلے دس مرتبہ ، نافلہ ظہر کے بعد اکیس مرتبہ،نماز عصر کے بعد دس مرتبہ، نماز عشائ کے بعد سات مرتبہ اور سونے کے وقت گیارہ مرتبہ. اس کے جملہ ثواب میں سے یہ بھی ہے کہ اﷲ تعالیٰ ایک ہزار فرشتے خلق فرماتا ہے جو اس شخص کے لیے چھتیس ہزار سال تک اس عمل کا ثواب لکھتے رہتے ہیں۔

دعائے عافیت

﴿۵﴾ ابن بابویہ(رح) اور دیگر علمائ نے معتبر سند کے ساتھ امام محمد باقر(ع) سے روایت کی ہے کہ جو شخص ہر روز نماز فجر کے بعد دس مرتبہ سُبْحانَ اﷲ الْعَظِیمِ وَبِحَمْدِھِ وَلاَ حَوْل وَلاَ قُوَّۃَ إلاَّ بِالِلّٰہِ َ پاک ہے بزرگ اﷲ اسی کیلئے حمدہے اور نہیں کوئی طا قت و قوت مگر جو بلند و بزرگ تر خدا سے ہے . کہے تو حق تعالیٰ اس کو عافیت عطا فرمائے گا یعنی اسے دیوانگی، برص، جذام، پریشانی، چھت تلے دبنے اور بڑھا پے کی فضول گوئی سے بچائے گا۔

تین مصیبتوں سے بچانے والی دعا

﴿۶﴾بلد الامین میں حضرت امیر المومنین(ع) سے مروی ہے کہ رسول(ص) خدا نے فرمایا :جو شخص یہ چاہتا ہے کہ اﷲ تعالیٰ اس کی موت میں ڈھیل دے دشمنوں پر غلبہ عطا کرے اور بدتر موت سے بچائے تو اسے صبح و شام پابندی کیساتھ یہ دعا پڑھنا چاہیئے اور وہ اس طرح کہ تین مرتبہ کہے :

سُبْحانَ اﷲِ مِلْئَ الْمِیزانِ وَمُنْتَھَی الْعِلْمِ وَمَبْلَغَ الرِّضاوَزِنَۃَ الْعَرْشِ وَسَعَۃَ الْکُرْسِیِّ۔

اﷲ پاک ہے جو بہترین وزن کرنے والا، علم و دانش کامرکز ،رضاؤں کی حد عرش کا وزن اور کرسی کی وسعت ہے ۔

اورتین مرتبہ کہے:الْحَمْدُ لِلّٰہِ مِلْئَ الْمِیزانِ وَمُنْتَھَی الْعِلْمِ وَمَبْلَغَ الرِّضا وَزِنَۃَ الْعَرْشِ وَسَعَۃَ

حمد ہے اﷲ کیلئے جو بہترین وزن کرنے والا، علم و دانش کا مرکز ،رضاؤں کی حد عرش کا وزن اور کرسی کی

الْکُرْسِیِّ۔اورتین مرتبہ کہے :لاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ مِلْئَ الْمِیزَانِ وَمُنْتَھَی الْعِلْمِ وَمَبْلَغَ الرِّضا وَزِنَۃَ

وسعت ہے ۔

الْعَرْشِ،وَسَعَۃَ الْکُرْسِیِّ۔اورتین مرتبہ کہے :اﷲُ اَکْبَرُ مِلْئَ الْمِیزَانِ وَمُنْتَھَی الْعِلْمِ وَمَبْلَغَ

عرش کا وزن اور کرسی کی وسعت ہے ۔

الرِّضَا وَزِنَۃَ الْعَرْشِ وَسَعَۃَ الْکُرْسِیِّ۔

مرکز، رضاؤں کی حد عرش کاوزن اور کرسی کی وسعت ہے ۔

شر شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا

﴿۷﴾سید ابن طاؤس(رح) نے معتبر سند کے ساتھ امام علی رضا(ع) سے روایت کی ہے کہ جو شخص نماز فجر کے بعد سو مرتبہ یہ پڑھے:

بِسْمِ اﷲِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیمِ لاَ حَوْلَ وَلاَقُوَّۃَ إلاَّ بِاﷲِ الْعَلِیِّ الْعَظِیمِ

خدا کے نام سے جو بڑارحم کرنے والامہربان ہے نہیں کوئی طاقت و قوت مگر جو خدائے بلند و بزرگ سے ہے

تو اﷲ تعالیٰ کے اسم اعظم کے اتناقریب پہنچ جائے گا کہ آنکھ کی سیاہی اس کی سفیدی کے اتنی قریب نہیں ہے . معتبر اسناد کے ساتھ امام جعفر صادق(ع) اور امام موسیٰ کاظم(ع) سے منقول ہے کہ جو شخص فجر اور مغرب کی نماز کے بعد کسی سے بات کرنے اور اپنی جگہ سے حرکت سے پہلے یہ دعا سات مرتبہ پڑھے تو ستر قسم کی بلائیں اس سے دور ہوجائیں گی جن میںکم سے کم یہ ہے کہ وہ برص، جذام ، شر شیطان اور شر حاکم سے محفوظ رہے گا بعض روایات میں اسے پڑھنے کی تعداد تین مرتبہ اور بعض میں دس مرتبہ بتائی گئی ہے گویا کم از کم تعداد تین مرتبہ اور زیادہ سے زیادہ سو مرتبہ ہے تا ہم جتنا زیادہ مرتبہ پڑھے اتنا ہی زیادہ ثواب حاصل کرے گا۔

رزق میں برکت کی دعا

﴿۸﴾شیخ احمد بن فہد اور دیگر علما نے روایت کی ہے کہ ایک شخص امام موسیٰ کاظم(ع) کی خدمت میں آیا اور شکایت کی کہ میرا کاروبار بند ہوچکا ہے جدھر کا رُخ کرتا ہوں ناکام رہتا ہوں اورجو حاجت پیش آتی ہے وہ پوری نہیں ہوتی . اس پر حضرت نے فرمایا کہ نماز فجر کے بعد دس مرتبہ یہ پڑھے:

سُبْحانَ اﷲِ الْعَظِیمِ وَبِحَمْدِھِ ٲَسْتَغْفِرُ اﷲ وَٲَسْٲَلُہُ مِنْ فَضْلِہ

پاک ہے خدائے بزرگ و برتر اپنی حمد کے ساتھ خدا سے بخشش ما نگتا ہوں اور اس کا فضل چاہتا ہوں۔

راوی کہتا ہے کہ میں نے تھوڑے ہی عرصہ تک یہ دُعا پابندی کے ساتھ پڑھی تھی کہ کچھ لوگ کسی گاؤں سے آئے اور کہنے لگے کہ تمہارا ایک رشتہ دار فوت ہو گیا ہے اور سوائے تمہارے اس کا کوئی وارث نہیں ہے . پس اس طرح مجھ کو بہت سامال وزر مل گیا . اور اب میں کسی کا محتاج نہیں ہوں کتاب کافی اور مکارم میں روایت ہوئی ہے کہ ہلقام نامی ایک شخص حضرت کی خدمت میں حاضر ہوا اورعرض کیا مجھے کوئی ایسی دعا تعلیم فرمائیں جو میری دنیا اور آخر ت کے لئے جامع و یکساں مفید ہو اور آسان بھی ہو . حضرت نے اسے یہی مذکورہ بالا دُعا تعلیم فرمائی اور کہا کہ اسے نماز فجر کے بعد طلوع آفتاب تک پڑھا کرو ، اس نے یہ دعا پابندی کے ساتھ پڑھنا شروع کردی تو اس کے حالات بہتر ہوگئے۔

قرضوں کی ادائیگی کی دعا

﴿۹﴾ عیاشی نے عبداﷲ بن سنان سے روایت کی ہے کہ میں امام جعفر صادق - کی خدمت میں حاضر ہوا تو حضرت نے فرمایا :آیا میں ایسی دعا تعلیم کروں کہ جب تم اسے پڑھو تو اﷲ تمہارے قرضے ادا کرے اور تمہارے حالات بہتر ہو جائیں ؟میں نے عرض کیا: مجھے تو اس دعا کی سخت ضرورت ہے، تب آپ(ع) نے فرمایا کہ نماز فجر کے بعد یہ پڑھا کرو :

تَوَکَّلْتُ عَلَی الْحَیِّ الْقَیُّومِ الَّذِی لاَ یَمُوتُ وَالْحَمْدُ لِلّٰہِِ الَّذِی لَمْ یَتَّخِذْ وَلَداً وَلَمْ یَکُنْ

میں اس زندہ و پائندہ پر بھر وسا کرتا ہوں جس کو موت نہیں حمد اﷲ ہی کیلئے ہے جس نے کسی کو بیٹا نہیں بنایا نہ حکومت میں کوئی اسکا

لَہ ُشَرِیکٌ فِی الْمُلْکِ وَلَم ْیَکُنْ لَہُ وَلِیٌّ مِنَ الذُّلِّ وَکَبِّرْھُ تَکْبِیراً اَللّٰھُمَّ إنِّی ٲَعُوذُ بِکَ

شریک ہے اور نہ وہ کمزور ہے کہ کوئی اس کامددگار ہو اس کی بہت بڑی بڑائی کرو اے معبود میں تیری پناہ لیتا ہوں

مِنَ الْبُؤْسِ وَالْفَقْرِ وَمِنْ غَلَبَۃِ الدَّیْنِ وَالسُّقْمِ وَٲَسْٲَلُکَ ٲَنْ تُعِینَنِی عَلَی ٲَدائِ حَقِّکَ

تنگدستی بے مائیگی قرض کی زیادتی اور مرض و بیماری سے اورسوال کرتا ہوں کہ تو اپنے حق کی ادائیگی میں میری مدد فرما جو

إلَیْکَ وَ إلَی النَّاسِ شیخ طوسی(رح) اور دیگر علماء کی روایت کے مطابق دعایوں ہے : وَمِنْ غَلَبَۃِ الدَّیْنِ فَصَلِّ

تیرے اور لوگوں کیلئے ہے۔

عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ وَٲَعِنِّی عَلَی ٲَدائِ حَقِّک إلَیْکَ وَ إلَی النَّاسِ

فرما محمد(ص) اور ان کی آل(ع) پر اور اپنے حق کی ادائیگی میں میری مدد فرما جو تیرے اور لوگوں کے لیے ہے ۔

تنگدستی اور بیماری سے دوری کی دعا

﴿10﴾ کفعمی(رح) نے روایت کی ہے کہ ایک شخص نے رسول اﷲ سے تنگدستی پریشانی اور بیماری کی شکایت کی تو آنحضرت(ص) نے فرمایا :یہ دُعا صبح و شام دس مرتبہ پڑھا کرو چنانچہ اس نے تین روز تک باقاعدگی سے یہ دعا پڑھی تو اس کے تمام حالات سدھر گئے شیخ طوسی(رح) اوردیگر علما نے یہ دُعا فجر کی تعقیبات میں ذکر کی ہے اور وہ دُعا یہ ہے :

لاَ حَوْلَ وَلاَ قُوَّۃَ إلاَّ بِاﷲِ تَوَکَّلْتُ عَلَی الْحَیِّ الَّذِی لاَ یَمُوتُ وَالْحَمْدُ لِلّٰہِِ الَّذِی لَمْ یَتَّخِذْ

کوئی طاقت وقوت نہیں مگر جو اﷲ سے ہے میں اس زندہ پر بھر وسا کرتا ہوں جسے موت نہیںحمد اﷲ کیلئے ہے جس نے

صَاحِبۃً وَلاَوَلَداً وَلَمْ یَکُنْ لَہُ شَرِیکٌ فِی الْمُلْکِ وَلَمْ یَکُنْ لَہُ وَلِیٌّ مِنَ الذُّلِّ وَکَبِّرْھُ تَکْبِیراً

کسی کو بیٹا نہیں بنایا نہ حکومت میں کوئی اس کا شریک ہے نہ وہ کمزور ہے کہ اس کاکوئی مددگار ہو اور اس کی بہت بڑائی کرو ۔

خدا سے عہد کی دعا

﴿۱۱﴾ شیخ طوسی(رح) ،کفعمی(رح) اور دیگر علما نے حضرت رسول(ص) خدا سے روایت کی ہے آنحضرت(ص) نے اپنے اصحاب سے فرمایا :آیا تم اس بات سے عاجز ہوکہ ہر صبح و شام خداے تعالیٰ سے عہد لے لو؟انہوں نے عرض کیا کہ ہم کس طرح عہد لیں؟آپ(ص) نے فرمایا کہ یہ دُعا پڑھا کرو کیونکہ جو شخص یہ دعا پڑھے تو اس پر مہر لگادی جاتی ہے اور اسے عرش الٰہی کے نیچے رکھ دیا جاتا ہے . پس جب قیامت کا دن ہوگا تو ایک منادی آواز دے گا کہ کہاں ہیں وہ لوگ جنہوں نے خدا سے عہد لیا ہے تا کہ وہ عہد انہیں دیا جائے اور اسی کے ساتھ وہ جنت میں داخل ہوں گے۔ شیخ طوسی(رح) نے یہ دعا نماز فجر کی تعقیبات میں ذکر کی ہے اور وہ دعا یہ ہے:

اَللّٰھُمَّ فاطِرَ السَّمَواتِ وَالْاَرْضِ عالِمَ الْغَیْبِ وَالشَّہادَۃِ الرَّحْمٰنَ الرَّحِیمَ ٲَعْھَدُ إلَیْکَ

اے معبود! اے آسمانوںاور زمین کے خالق، اے نہاں و عیاں کے جاننے والے بڑے رحم والے مہربان میں اس دنیا میں

فِی ہذِھِ الدُّنْیَا ٲَنَّکَ ٲَنْتَلاَ اﷲُ إلہَ إلاَّ ٲَنْتَ وَحْدَکَ لاَ شَرِیکَ لَکَ وَٲَنَّ مُحَمَّداً صلی

تیرے ساتھ عہد کرتا ہوں یقیناً تو وہ اﷲ ہے کہ تیرے سوا کوئی معبود نہیں تو یکتا ہے تیرا کوئی شریک نہیں اور حضرت محمد صلی

اﷲ علیہ وآلہ وسلم عَبْدُکَ وَرَسُولُکَ اَللّٰھُمَّ فَصَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ وَلاَ تَکِلْنِی إلَی

اﷲ علیہ وآلہ وسلم تیرے بندے اور رسول ہیں پس اے معبود رحمت نازل فرما محمد(ص) اور ان کی آل(ع) پر اور تو مجھے پلک جھپکنے تک بھی کبھی میرے

نَفْسِی طَرْفَۃَ عَیْنٍ ٲَبَداً وَلاَ إلی ٲَحَدٍ مِنْ خَلْقِکَ فَ إنَّکَ إنْ وَکَلْتَنِی إلَیْہا تُباعِدْنِی مِنَ

نفس کے حوالے نہ کراور نہ مخلوق میںسے کسی کے سپرد کر پس اگر تو نے مجھے ان کے حوالے کیا تو مجھے خیر ونیکی سے دور اور شرو بدی کے قریب

الْخَیْروَتُقَرِّبْنِی مِنَ الشَّرِّٲَیْ رَبِّ لاَ ٲَثِقُ إلاَّبِرَحْمَتِکَ فَصَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ طَیِّبِیْنَ

کر دے گا . اے پروردگار تیری رحمت کے سوا مجھے کسی پر بھر وسا نہیں پس رحمت فرما محمد(ص) اور ان کی پاک اولاد (ع)پر اور میرا

وَاجْعَلْلِی عِنْدَکَ عَھْداً تُؤَدِّیہ إلَیَّ یَوْمََ الْقِیامَۃِ إنَّکَ لا تُخْلِفُ الْمِیعادَ۔

عہد اپنے پاس رکھ جوتو روز قیامت مجھے واپس کرے بے شک تو وعدے کے خلاف نہیں کرتا ۔

جہنم کی آگ سے بچنے کی دعا

﴿12﴾عدّۃ الدّاعی میں امام جعفر صادق(ع) سے روایت ہے کہ جو شخص نماز فجر کے بعد کسی سے بات کرنے سے پہلے یہ کہے :رَبِّ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍوآل محمد و َٲَھْلِ بَیْت محمد ﴿پروردگارا !محمد(ص) اور ان کے اہل بیت پر رحمت فرما ۔﴾تو حق تعالیٰ اس کے چہرے کو آتش جہنم سے دور رکھے گا ۔ابن بابویہ(رح)نے معتبر سند کے ساتھ ثواب الاعمال میں روایت کی ہے کہ نماز فجر کے بعد سو مرتبہ کہا کرو:اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ ﴿اے معبود! محمد(ص) و آل(ع) محمد(ص) پر رحمت نازل فرما !﴾ تا کہ خدا تعالیٰ تمہیں جہنم سے محفوظ رکھے۔ ایک اور روایت کے مطابق کسی سے بات کرنے سے پہلے سو مرتبہ کہو:یَارَبِّ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍوَٲَعْتِقْ رَقَبَتِی مِنَ النَّارِ ﴿اے پروردگار! محمد(ص) و آل(ع) محمد(ص) پر رحمت نازل فرما اورمیری گردن جہنم سے آزاد کر دے . ﴾

﴿سجدہ شکر ﴾

جب تعقیبات نماز سے فارغ ہوتو سجدہ شکر بجالائے، اس بات پر علمائ شیعہ کا اجماع ہے کہ سجدہ شکر کسی نعمت کے حاصل ہونے یا کسی مصیبت کے دور ہونے کے وقت بجالایا جائے اور اس کی بہترین قسم نماز کے بعد ادائے نماز کی یہ توفیق ملنے پر سجدہ شکر کی ادائیگی ہے . امام محمد باقر(ص) بہ سند معتبر ارشاد فرماتے ہیں کہ میرے والد بزرگوار امام زین العابدین(ع) جب بھی خدا کی کسی نعمت کو یاد کرتے تو اس کے شکرانے میں سجدہ شکر بجالاتے ، جو بھی آیہ سجدہ تلاوت فرماتے تو سجدہ بجالاتے ، کسی شر سے خوف کھاتے اور خدا اسے دور کر دیتا تو بھی سجدہ شکر ادا فرماتے ، جب بھی واجب نماز سے فارغ ہوتے تو سجدہ بجالاتے اور جب دو آدمیوں میں صلح کر واتے تو اس کے لیے بھی سجدہ شکر ادا کرتے . آنجناب(ع) کے تمام اعضائے سجدہ پر سجدے کے نشان موجود تھے ، اسی لیے آپ(ع) کو ’’سجاد‘‘کہا جاتا ہے . صحیح سند کے ساتھ امام جعفر صادق(ع) سے روایت ہے کہ جو شخص علاوہ نماز کے کسی نعمت کے ملنے پر خدا کے لیے سجدہ شکر بجالائے تو اﷲ تعالیٰ اس کے نام دس نیکیاں لکھ دیتا ہے، دس برائیاں مٹا دیتا ہے اور بہشت میں اس کے دس درجے بلند کر دیتا ہے دیگر بہت سی معتبر اسناد کے ساتھ آنجناب(ع) ہی سے منقول ہے کہ بندے کا خدا سے نزدیک تر مقام اس وقت ہوتا ہے جب وہ حالت سجدہ میں ہو اور گریہ کررہا ہو۔ ایک اور صحیح حدیث میں فرماتے ہیں کہ سجدہ شکر ہر مسلمان پر واجب ہے اور اس سے نماز مکمل ہوتی ہے ، پروردگار عالم راضی ہوتا ہے اور ملائکہ کو ایسی عبادت پرتعجب ہوتا ہے . اس لیے کہ جب بندہ نماز ادا کر لیتاہے اور اس کے بعد سجدہ شکر بجالاتا ہے تو خداوند عالم اس کے اور فرشتوں کے درمیان سے پردے ہٹا دیتا ہے، پھر کہتا ہے کہ اے میرے فرشتو! میرے بندے کی طرف نگاہ کرو کہ اس نے میرا فرض ادا کر دیا ہے میرے عہد کو پورا کر دیا ہے. اس کے بعد اس بات پر میرے لیے سجدہ شکر اداکیا ہے کہ میں نے اسے اس نعمت سے نوازا ہے اے میرے فرشتو! اب تم ہی بتاؤ کہ اسے کیا انعام دیا جاے؟ وہ کہتے ہیں خداوندا! اپنی رحمت ،پھر فرماتا ہے اور کیا دوں؟ وہ عرض کرتے ہیں اپنی جنت پھر پوچھتا ہے اسے اور کیا دوں ؟وہ عرض کرتے ہیں: اس کے مشکل امور کی کفایت اور حاجات کی برآوری ۔ اسی طرح خداے تعالیٰ سوال کرتاجاتا ہے اور ملائکہ جواب دیتے جاتے ہیں یہاں تک کہ ملائکہ تھک جاتے ہیں اور کہتے ہیں: پروردگارا! ہمیں اب کچھ معلوم نہیں اس پر خالق اکبر فرماتا ہے :میں بھی اس کا اسی طرح شکریہ ادا کرتاہوں جس طرح اس نے میرا شکر ادا کیا ہے اور میں روز قیامت اپنے فضل اور عظیم رحمت کے ساتھ اس کی طرف نظر کروں گا صحیح سند کے ساتھ امام جعفر صادق(ع) سے منقول ہے کہ اﷲ تعالیٰ نے حضرت ابراہیم(ع) کو اس لیے اپنا خلیل بنایا کہ وہ زمین پر بہت زیادہ سجدے کیا کرتے تھے، ایک اور معتبر حدیث میں فرماتے ہیں :جب بھی تم خدا کی کسی نعمت کو یاد کرو اور تم ایسی جگہ ہو کہ جہاں مخالفین تمھیں دیکھ نہ رہے ہوں تو اپنا رخسار زمین پر رکھ کر اس کی نعمت کا شکر ادا کرو۔ اگر مخالفین وہاں موجود ہوں اور تم سجدہ نہیں کر سکتے تو اپنا ہاتھ پیٹ کے نچلے حصّے پر رکھ کر تواضع کے طور پر جھک جاؤ تا کہ مخالفین یہ سمجھیں کہ تمہیں درد شکم ہوگیا ہے . بہت سی روایات میں وارد ہے کہ اﷲ تعالےٰ نے حضرت موسیٰ(ع) سے فرمایا:جانتے ہو کہ میں نے تمہیں کس لیے منتخب کیا اور ساری مخلوق میں سے کلیم بنایا ہے ؟موسیٰ(ع) نے عرض کیا: پروردگارا! میں نہیں جانتا !اﷲ تعالیٰ نے فرمایا: اس لیے کہ میں نے اپنی ساری مخلوقات کے حالات دیکھے اور تم سے بڑھ کر کسی کو نہیں پایا کہ جس کا نفس میرے سامنے تمہارے نفس سے زیادہ عاجز و درماندہ ہو کیونکہ جب تم نماز سے فارغ ہوتے ہو تو اپنے دونوں رخساخاک پر رکھ دیتے ہو . سند موثق کے ساتھ امام علی رضا(ع) سے منقول ہے کہ واجب نماز کے بعد سجدہ شکر اس امر پر خدا کے شکر کی ادائیگی ہے کہ اس نے اپنے بندے کو یہ توفیق دی ہے کہ وہ اس کا عائد کردہ فرض ادا کر سکے . اس سجدے میں کم از کم ذکر یہ ہے کہ تین مرتبہ ’’شکراً لِلّٰہِ‘‘کہا جائے۔ راوی نے پوچھا کہ ’’شکراً لِلّٰہِ‘‘ کے کیا معنی ہیں ؟ امام(ع) نے فرمایا اس کے معنی یہ ہیںکہ میں یہ سجدہ اس لیے کر رہا ہوں کہ اﷲ نے مجھے اس عمل کی توفیق دی ہے کہ میں اس کے لیے کھڑا ہوا اور اپنا فرض ادا کیا، میں یہ سجدہ اسی بات کے شکرانے کے طور پر کر رہا ہوں . خدا کا شکر مزید نعمت اور اطاعت کی توفیق کا موجب ہوتا ہے اور اگر نماز میں کوئی ایسی خامی رہ گئی ہو جو نافلہ کے ذریعے پوری نہ ہو پائی ہو تو وہ اس سجدے کے ذریعے پوری ہوجاتی ہے۔

﴿سجدہ شکر کی کیفیت﴾

سجدہ شکر کی کیفیت یہ ہے کہ اسے جس طرح بھی بجالایا جائے ، ادا ہو جاتا ہے اور احوط یہ ہے کہ انسان زمین پر ہو اور نماز کے سجدے کی مانند سات اعضا پر سجدہ کرے . نیز اپنی پیشانی اس چیز پر رکھے جس پر نماز میں پیشانی رکھنا صحیح ہوتا ہے، لیکن افضل یہ ہے کہ سجدہ نماز کے بر عکس ہاتھوں کو زمین پر دراز کر دے اور پیٹ کو زمین سے ملادے اور سنت ہے کہ پہلے پیشانی کو زمین پر رکھے پھر دائیں رخسار کو اس کے بعد بائیں رخسار کو زمین پر رکھے، پھر پیشانی کو دوبارہ زمین پر رکھے اور یہی وجہ ہے کہ اس سجدے کو شکر کے دو سجدے کہا جاتا ہے بظاہر یہ سجدہ ذکر کے بغیر بھی ادا ہو جاتا ہے لیکن سنت ہے کہ ذکر بھی کرے اور بہتر ہے کہ ان اذکار اور دعاؤں کے ذریعے ذکر کیا جائے جو بعد میں نقل کی جائیں گی اور مستحب ہے کہ اس سجدے کو طول دیا جائے . چنانچہ منقول ہے کہ امام موسیٰ کاظم(ع) طلوع آفتاب کے بعد سجدے کو اس قدر طول دیتے کہ زوال آفتاب ہوجاتا اور عصر کے بعد سجدے کو اس قدر طول دیتے کہ مغرب کا وقت ہوجاتا ایک اور حدیث میں ہے کہ آنجناب(ع) دس سال تک روزانہ طلوع آفتاب سے زوال آفتاب تک سجدے میں رہا کرتے تھے . صحیح سند کے ساتھ منقول ہے کہ امام علی رضا (ع) اتنی اتنی دیر تک سجدے میں پڑے رہتے کہ مسجد کے سنگریزے آپ(ع) کے پسینے سے تر ہوجاتے . اور آپ(ع) اپنے دونوں رخسار زمین پر رکھے رہتے . رجال کشی میں مذکور ہے کہ فضل بن شاذان، ابن ابی عمیر کے پاس آئے تو وہ حالت سجدہ میں تھے اور انہوں نے اسے بہت طول دیا ، جب انہوں نے سجدے سے سر اٹھا یا تو ان کے اس سجدے کے طولانی ہونے کا ذکر کیا گیا تو ابن ابی عمیر نے کہا:اگر تم لوگ جمیل بن دراج کے سجود کو دیکھتے تو میرے سجدے کو طولانی نہ سمجھتے ، اس کے بعد کہا: ایک روز میں جمیل بن دراج کے پاس گیا تو انہوں نے بہت ہی طویل سجدہ کیا، جب انہوں نے سجدے سے سر اٹھایا تو میں نے کہا: آپ نے تو بہت ہی طویل سجدہ کیا ہے انہوں نے جواب دیا: اگر تم معروف بن خرتوذ کے سجدے کو دیکھتے تو میرے اس سجدے کو مختصر ہی سمجھتے. فضل بن شاذان ہی روایت کرتے ہیں کہ حسن بن علی بن فضال عبادت کے لیے صحرا میں چلے جاتے اور اپنے سجدے کو اتنا طول دیتے ہیں کہ صحرا کے پرندے کپڑا سمجھ کران کی پشت پر آن بیٹھتے، وحشی جانوران کے اردگرد چلتے پھرتے رہتے اور ان سے کسی قسم کی وحشت محسوس نہ کرتے . نیز روایت ہوئی ہے کہ علی بن مہزیار طلوع آفتاب کے ساتھ ہی سجدہ الٰہی میں چلے جاتے اور جب تک اپنے ایک ہزار ﴿مومن﴾بھائیوں کے لیے دعا نہ کر لیتے سجدے سے سر نہ اٹھاتے اور طویل سجدوں کی وجہ سے ان کی پیشانی پریوں محراب پڑچکے تھے جیسے اونٹ کے زانوؤں پر ہوتے ہیں . روایت ہوئی ہے کہ ابن ابی عمیر نماز فجر کے بعد سجدہ شکر میں سر رکھتے اور ظہر تک نہیں اٹھاتے تھے . افضل یہ ہے کہ سجدہ شکر تمام تعقیبات کے بعد اور نوافل سے پہلے کیا جائے ۔ اکثر علمائ کہتے ہیں کہ سجدہ شکر نماز مغرب کے نوافل کے بعد بجالایا جائے اور بعض دیگر علمائ کہتے ہیں کہ سجدہ شکر نوافل سے پہلے کیا جائے. ظاہراً دونوں صورتیں بہترہیں اور اس کا نوافل سے پہلے بجالانا افضل ہے . البتہ حمیری(رح) نے امام زمانہ عجل اﷲفرجہ سے روایت کی ہے کہ اگر دونوں طرح سے ادا کیا جائے تو شاید زیادہ بہتر ہو . اب رہ گئیں سجدہ شکر میں پڑھی جانے والی دعائیں تو وہ بہت زیادہ ہیں . ان میں سے چند ایک آسان ترین ہیں اور وہ یہ ہیں ۔

﴿۱﴾ معتبر سند کے ساتھ امام علی رضا (ع) سے منقول ہے کہ اگر تم چاہو تو سو مرتبہ کہا کرو شکراً شکراً اور چاہو تو سو مرتبہ کہا کرو عفواً عفواً اور عیون اخبار الرضا میں رجائ بن ابی ضحاک روایت کرتے ہیں کہ امام علی رضا (ع) خراسان میں جب نماز ظہر کی تعقیبات سے فارغ ہوتے تو سر سجدے میں رکھ کر سو مرتبہ کہے:شکراً ﷲ۔﴿خدا کا شکر ہے۔﴾اور جب عصر کی تعقیبات سے فارغ ہوتے تو سجدے میں سو مرتبہ کہے:حمداً ﷲ۔﴿خدا کی حمد ہے ﴾

﴿۲﴾ شیخ کلینی(رح) معتبر سند کے ساتھ امام جعفر صادق - سے روایت کرتے ہیں کہ بندہ اس وقت اپنے خدا کے زیادہ نزدیک ہوتا ہے جب وہ حالت سجدہ میں ہواور اسے پکارے پس جب سجدہ شکر میں جائے تو کہے :

یَارَبَّ الْاَرْبابِ، وَیَا مَلِکَ الْمُلُوکِ وَیَا سَیِّدَالسَّاداتِ وَیَا جَبَّارالْجَبابِرَۃِ وَیَا إلہَ الاَْلِھَۃِ

اے پروردگاروں کے پروردگار! اے بادشاہوں کے بادشاہ !اے سرداروں کے سردار!اے جابروں کے جابراور اے معبودوں کے معبود! تو

صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ

سرکار محمد(ص)و آل(ع) محمد(ص) پر رحمت فرما .

اب اپنی حاجات طلب کرے اور کہے :فَ إنِّی عَبْدُکَ ناصِیَتِی فِی قَبْضَتِکَ۔﴿بے شک میں تیرا بندہ ہوں میری مہار تیرے ہاتھ میں ہے .﴾ پھر جو دعا چاہے مانگے کہ خداعطا کرنے والا ہے اور کوئی بھی حاجت پوری کرنا اس کیلئے مشکل نہیں۔

﴿۳﴾ شیخ کلینی(رح) نے موثق سند کے ساتھ امام جعفر صادق - سے روایت کی ہے کہ آپ(ع) نے فرمایا کہ ایک رات میں نے سنا کہ میرے والد گرامی مسجد میں حالت سجدہ میں روتے ہوئے یہ دعا پڑھ رہے تھے:

سُبْحانَکَ اَللّٰھُمَّ ٲَنْت رَبِّی حَقّاً حَقّاً سَجَدْتُ لَکَ یَارَبِّ تَعَبُّداً وَرِقّاً اَللّٰھُمَّ إنَّ عَمَلِی ضَعِیفٌ

اے معبود تو پاک ہے تو میرا پکا سچا رب ہے یا رب میں نے تجھے عبادت وبندگی کیلئے سجدہ کیا ہے اے معبود بیشک میرا عمل کمزور ہے اے معبود اس

فَضاعِفْہُ لِی اَللّٰھُمَّ قِنِی عَذابَکَ یَوْمَ تَبْعَثُ عِبادَکَ، وَتُبْ عَلَیَّ إنَّکَ ٲَنْتَ التَّوَّابُ الرَّحِیمُ

دن اسے میرے لیے دگنا کردے مجھے اپنے عذاب سے بچانا جب تو لوگوں کو زندہ کریگااورمیری توبہ قبول فرما کہ بیشک تو بہت توبہ قبول کرنے والا مہربان ہے .

﴿۴﴾شیخ کلینی(رح)نے معتبر سند کیساتھ امام موسیٰ کاظم(ع) سے روایت کی ہے کہ آنجناب(ع) سجدے میں یہ دعا پڑھتے تھے۔

ٲَعُوذُ بِکَ مِنْ نَارٍ حَرُّھَالاَ یُطْفیٰ وَٲَعُوذُ بِکَ مِنْ نارٍ جَدِیدُہا لاَ یَبْلی وَٲَعُوذُ بِکَ

خدایا اس آگ سے تیری پناہ لیتا ہوں جو بجھے گی نہیں تیری پناہ لیتا ہوں اس آگ سے جو ہمیشہ نئی ہے پرانی نہ ہوگی تیری پناہ لیتا ہوں اس

مِنْ نارٍ عَطْشانُہا لاَ یُرْوی وَٲَعُوذُ بِکَ ٍ مِنْ نَارٍ مَسْلُوْبُھَا لَا ےُکْسیٰ

آگ سے جس میں پیا سے کبھی سیراب نہ ہونگے اور تیری پناہ لیتا ہوںاس آگ سے جس میں برہنوں کو لباس نہ ملے گا .

﴿۵﴾شیخ کلینی(رح)نے معتبر سند کے ساتھ روایت کی ہے کہ ایک شخص اما م جعفر صادق(ع) خدمت میں حاضر ہوا اور یہ شکایت کی کہ میری ایک ام ولد لونڈی ہے جو بیماررہتی ہے. حضرت نے فرمایا: اس سے کہو کہ ہر واجب نماز کے بعد سجدہ شکر میں یہ کہا کرے:

یَا رَؤُوفُ یَا رَحِیمُ یَارَبِّ یَا سَیِّدِی﴿اے مہربان اے رحم والے اے رب اے میرے سردار . ﴾پھر اپنی حاجات طلب کرے

﴿۶﴾بہت ہی معتبر روایات میں منقول ہے کہ امام جعفر صادق(ع) اور امام موسیٰ کاظم(ع) سجدہ شکر میں بکثرت یہ کہا کرتے تھے ۔

ٲَسْٲَلُکَ الرَّاحَۃَ عِنْدَ الْمَوْتِ وَالْعَفْوَ عِنْدَ الْحِسابِ۔

خدایا میں تجھ سے موت کے وقت راحت اور حساب کے وقت درگزر کاسوالی ہوں .

﴿۷﴾صحیح سند کیساتھ منقول ہے کہ امام جعفر صادق(ع) سجدہ شکر میں یہ کہا کرتے تھے۔

سَجَدَ وَجْھِیَ اللَّئِیمُ لِوَجْہِ رَبِّیَ الْکَرِیمِ۔

میرے پست چہرے نے تیری کریم ذات کو سجدہ کیا ہے

﴿۸﴾ بعض معتبر کتابوں میں امیر المومنین- سے مروی ہے کہ اﷲ کے نزدیک بہترین کلام یہ ہے کہ سجدے میں تین مرتبہ کہیں:

إنِّی ظَلَمْتُ نَفْسِی فَاغْفِرْ لِی۔

یقیناً میں نے خود پر ظلم کیا ہے پس مجھے بخش دے .

﴿۹﴾ جعفریات ﴿مجموعہ اقوال حضرت امام جعفر صادق -﴾ میں صحیح سند کے ساتھ مروی ہے کہ رسول (ص)خدا جب سجدے میں سر رکھتے تو یہ دعا پڑھتے تھے:

اَللّٰھُمَّ مَغْفِرَتُکَ ٲَوْسَعُ مِنْ ذُنُوبِی وَرَحْمَتُکَ ٲَرْجَی عِنْدِی مِنْ عَمَلِی فَاغْفِرْ لِی

اے معبود! تیری بخشش میرے گناہوں سے زیادہ وسیع ہے اور تیری رحمت میرے عمل کی نسبت زیادہ امید افزا ہے پس میرے

ذُنُوبِی یَا حَیّاً لاَ یَمُوتُ۔

گناہ بخش دے اے وہ زندہ جو مرے گا نہیں

﴿۰۱﴾ قطب راوندی نے امام جعفر صادق - سے روایت کی ہے کہ جب تمہیں کوئی سخت مصیبت درپیش ہویا انتہائی غم و اندوہ لاحق ہوتو زمین پر سجدے میں جاکر کہو :

یَا مُذِلَّ کُلِّ جَبَّارٍ یَا مُعِزَّکُلِّ ذَلِیلٍ، قَدْ وَحَقِّکَ بَلَغَ مَجْھُودِی فَصَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ

اے ہر جبار کو ذلیل کرنے والے ہرذلیل کو عزت دینے والے تیرے حق کی قسم کہ میں بے بس ہوگیا پس تومحمد(ص) و آل(ع)

مُحَمَّدوَفَرِّجْ عَنِّی۔

محمد(ص) پر رحمت نازل فرما اور مجھے کشادگی عطا فرما .

عدۃ الداعی میں آپ(ع) ہی سے روایت ہے کہ جب کسی شخص کو کوئی مصیبت آپڑے یا کوئی مشکل پیش آجائے یا کوئی رنج و غم پریشان کرنے لگے تو وہ اپنے گھٹنوں تک اور کہنیوں تک کپڑا ہٹائے اور ان کو زمین پر لگادے اپنا سینہ زمین سے لگا دے اور خدا سے اپنی حاجات طلب کرے۔

﴿۱۱﴾ ابن بابویہ(رح) نے معتبر سند کے ساتھ امام جعفر صادق(ع) سے روایت کی ہے کہ جب بندہ سجدے میں تین مرتبہ یہ کہے :

یَا اﷲُ یَا رَبّاھُ یَا سَیِّداھُ﴿اے اﷲ اے پروردگار اے سردار ﴾ تو خدا تعالیٰ جواب میں کہتا ہے لبیک ﴿ہاں﴾ اے میرے بندے مجھ سے اپنی حاجات بیان کر ۔مکارم الاخلاق میں ہے کہ جب کوئی شخص سجدے میں ۔یَا رَبَّاھُ یَا سَیِّداھُ ﴿اے پروردگار اے سردار .﴾ کہتا ہے یہاں تک کہ اس کی سانس رک جائے تو خدا فرماتا ہے کہ اے بندے اپنی حاجات بیان کر ۔

﴿12﴾مکارم الاخلاق میں امام جعفر صادق - سے روایت ہے کہ رسول خدا کا گزر ایک شخص کے پاس سے ہوا جو سجدے میں کہہ رہا تھا۔

یَارَبِّ مَاذا عَلَیْکَ ٲَنْ تُرْضِیَ عَنِّی کُلَّ مَنْ کانَ لَہُ عِنْدِی تَبِعَۃٌ، وَٲَنْ تَغْفِرَ لِی ذُنُوبِی

اے پروردگارتجھے کیا فرق پڑے گاکہ تو ہر ایسے شخص کو مجھ سے راضی کردے جس کا کوئی حق میرے ذمہ ہے اور یہ کہ تو میرے گناہ معاف کر

وَٲَنْ تُدْخِلَنِی الْجَنَّۃَ بِرَحْمَتِکَ فَ إنَّمَا عَفْوُکَ عَنِ الظَّالِمِینَ، وَٲَنَا مِنَ الظَّالِمِینَ،

دے اور اپنی رحمت سے مجھ کو جنت میں داخل کر دے کیونکہ یقینا تو ظالموں کو معاف کرتا ہے اور میں بھی ظالموںمیں سے ہوں تو تیریرحمت مجھ

فَلْتَسَعْنِی رَحْمَتُکَ یَا ٲَرْحَمَ الرَّاحِمِینَ۔

پر چھا جائے اے سب سے زیادہ رحم کرنے والے ۔

اس وقت آنحضرت(ص) نے اس شخص سے فرمایا کہ اپنا سر اٹھا لو کہ تمہاری دعا قبول ہو گئی ہے، اس کی وجہ یہ ہے کہ تم نے اس پیغمبر(ص) کی دعا پڑھی ہے جو قوم عاد میں آئے تھے . مؤلف کہتے ہیں :ہم نے مسجد کوفہ اور مسجد زید کے اعمال میں بعض دعائیں نقل کی ہیں جو سجدے میں پڑھی جاتی ہیں۔ شیخ طوسی(رح) نے مصباح المتہجد میں سجدہ شکر کے بیان میں ذکر کیا ہے، مستحب ہے کہ انسان اپنے بھائیوں کے لیے سجدے میں یہ دعا پڑھے:

اَللّٰھُمَّ رَبَّ الْفَجْرِوَاللَّیَالِی الْعَشْرِ وَالشَّفْعِ وَالْوَتْرِ وَاللَّیْلِ إذا یَسْرِ وَرَبَّ کُلِّ شَیْئٍ وَ إلہَ

اے معبود ! ایک فجر،دس راتوں شفع، وتر اور رات کے پروردگار جب وہ گزر جائے اے ہر چیز کے پروردگار، اے ہر

کُلِّ شَیْئٍ وَخَالِقَ کُلِّ شَیْئٍ، وَمَلِکَ کُلِّ شَیْئٍ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ، وَافْعَلْ بِی و

چیز کے معبود اے ہر چیز کے پیدا کرنے والے اور اے ہر چیز کے مالک!سرکار محمد(ص) و آل(ع) محمد(ص) پررحمت نازل فرما اور میرے ساتھ اور

َبِفُلانٍ وَفُلانٍ مَا ٲَنْتَ ٲَھْلُہُ وَلاَ تَفْعَلْ بِنَا مَا نَحْنُ ٲَھْلُہُ فَ إنَّکَ ٲَھْلُ التَّقْوَی وَٲَھْلُ الْمَغْفِرَۃِ

فلاں فلاں کے ساتھ وہ برتاؤ کر جس کا تو اہل ہے اور ہمارے ساتھ وہ برتاؤ نہ کر جس کے ہم اہل ہیں کیونکہ یقیناً تو بچانے اور بخش دینے کا اہل ہے ۔

جب سر سجدے سے اٹھاے تو اپنے ہاتھوں کو مقام سجدہ سے مس کرے اور پھر انہیں اپنے چہرے کے بائیں طرف پھیرے ، پھر پیشانی پر اور پھر چہرے کی دائیں طرف تین مرتبہ پھیرے اور ہر بار یہ دعا پڑھے :

اَللّٰھُمَّ لَکَ الْحَمْدُ لاَ إلہَ إلاَّ ٲَنْتَ، عَالِمُ الْغَیْب وَالشَّہادَۃِ الرَّحْمنُ الرَّحِیمُ اَللّٰھُمَّ

اے معبود حمد تیرے ہی لیے ہے تیرے سوا کوئی معبود نہیں تو ہی حاضر و غائب کا جاننے والا بڑے رحم والا مہربان ہے

ٲَذْھِبْ عَنِّی الھَمَّ وَالْحَزَنَ وَالْغِیَرَ وَالْفِتَنَ مَا ظَھَرَ مِنْہا وَمَا بَطَنَ۔

اے معبود! مجھ سے ہر طرح کی ایذا یعنی غم تکلیفیں اوربلائیں دور کر دے خوہ وہ ظاہر یا ہیں باطن ہیں .

﴿دوسری فصل ﴾: طلوع و غروب آفتاب کے درمیان کے اعمال

جب سورج طلوع ہونے کے قریب ہوتو اس وقت وہ دعائیں پڑھی جائیں جو انشائ اﷲ پانچویں فصل میںذکر ہوں گی اور بہتر ہے کہ دن کا آغاز صدقے سے کیا جائے چاہے وہ کوئی تھوڑی سی چیز ہی کیوں نہ ہو، پھر ظہر سے پہلے قیلولہ ﴿دوپہر کا سونا﴾ کر لیا جائے اور اس کے بعد نماز ظہر کی تیاری شروع کردی جائے۔ دو پہر کا سونا ﴿قیلولہ﴾ رات کی عبادت اور دن میں روزے کے لیے مفید ہے . اس بات کی کوشش کرے کہ ظہر کے وقت نیند سے بیدار ہوجائے اور وضو کر کے مسجد کی طرف چل پڑے۔ مسجد میں جاکر نماز تحیہ مسجد پڑھنا چاہیئے اگر نماز کا وقت نہیں ہوا تو اس کا انتظار کیا جائے اور مستحب ہے کہ نماز اس کے اول وقت میں ادا کی جائے۔ جب یقینی طور پر وقت زوال داخل ہو جائے تو ہر کام سے پہلے یہ دعا پڑھی جائے ۔

سُبْحانَ اﷲ وَلاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ، وَالْحَمْدُ لِلّٰہِِ الَّذِی لَمْ یَتَّخِذْ صَاحِبَۃً وَلاَ وَلَداً وَلَمْ یَکُنْ لَہُ

اﷲ پاک ہے اﷲ کے سوا کوئی معبود نہیں حمد خدا کے لیے ہے جس نے نہ کوئی بیوی کی نہ کوئی بیٹا بنایا نہ اس کی بادشاہت

شَرِیکٌ فِی الْمُلْکِ، وَلَمْ یَکُنْ لَہُ وَلِیٌّ مِنَ الذُّلِّ وَکَبِّرْھُ تَکْبِیراً۔

میں کوئی اس کا شریک ہے نہ وہ کمزور ہے کہ کوئی اس کا مددگار ہو اور اس کیبہت بڑائی کرو .

ایک روایت میں ہے کہ امام محمدباقر (ع)نے محمد بن مسلم سے فرمایا: اس دعا کی ایسے حفاظت کرو جیسے اپنی آنکھوں کی حفاظت کرتے ہو اگر یہ دعا پڑھنے تک وضو نہ کیا ہو تو اب جلدی سے وضو کر لیا جائے اور وضو کے جو آداب پہلے ذکر ہو چکے ہیں انہیں ملحوظ رکھا جائے .اسکے بعد ظہر کے نوافل پڑھے جائیں اور وہ آٹھ رکعت ہیں پہلے دو رکعت کی نیت کر کے مذکورہ طریقے سے سات تکبیریں کہتے ہوئے انکے ساتھ مذکورہ دعائیں پڑھی جائیں پھر ’’اَعُوذُ بِاﷲِ مِنَ الشَّیْطانِ الرَّجِیمِْ‘‘ کہہ کر پہلی رکعت میں سورہ حمد و سورہ قُلْ ھُوَاﷲُ اَحَدْ اور دوسری رکعت میں سورہ حمد و سورہ کافروں پڑھی جائیں ان دو رکعتوں سے فارغ ہونے کے بعد تین تکبیریں کہی جائیں جیسے پہلے بیان ہو چکا ہے اسکے بعد تسبیح جناب زہرا(ع) اور پھر یہ دعا پڑھی جائے ۔

اَللّٰھُمَّ إنِّی ضَعِیفٌ فَقَوِّ فِی رِضاکَ ضَعْفِی وَخُذْ إلَی الْخَیْرِ بِنَاصِیَتِی وَاجْعَلِ الْاِیمانَ

اے معبود! میں کمزور ہوں پس تو میری کمزوری کو اپنی رضا کیلئے قوت میں بدل دے میری مہار پکڑ کر مجھے نیکی کی طرف لے جا ایمان کو میری رضا

مُنْتَہی رِضائِی وَبَارِکْ لِی فِیَما قَسَمْتَ لِی وَبَلِّغْنِی بِرَحْمَتِکَ کُلَّ الَّذِی ٲَرْجُو مِنْکَ

کا مقصود بنا دے تو نے جو حصہ مجھے دیاہے اس میں برکت عطا فرما اپنی رحمت سے مجھے ہر مراد تک پہنچا جسکی تجھ

وَاجْعَلْ لِی وُدّاً وَسُرُوراً لِلْمُؤْمِنِینَ وَعَھْداً عِنْدَکَ

سے امید رکھتا ہوں مجھے مومنوں کیلئے محبت و مسرت کا مرکز بنا اور اپنے حضور میرے لیے عہد قرار دے .

اس کے بعد دوسری دو رکعتیں مذکورہ طریقے سے پڑھے. البتہ شروع کی چھ تکبیریں نہ کہے، پھر کھڑے ہو کر دو رکعت ادا کرے اور حسب سابق تسبیح اور دعا پڑھے ، اس کے بعد د و رکعت نماز اذان اور اقامت کے درمیان بجا لائے اور اقامت کے بعد یہ دعا پڑھے :

اَللّٰھُمَّ رَبَّ ھذِھِ الدَّعْوَۃِ التَّامَّۃِ وَالصَّلاۃِ الْقَائِمَۃِ بَلِّغْ مُحَمَّداً صَلَّی اﷲُ عَلَیْہِ وَآلِہِ

اے معبود! اے اس دعوت کامل کے رب اور قائم ہونے والی نماز کے رب تو حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو درجہ، وسیلہ،

الدَّرَجَۃَ وََالْوَسِیلَۃَ وَالْفَضْلَ وََالْفَضِیلَۃَ بِاﷲِ ٲَسْتَفْتِحُ وَبِاﷲِ ٲَسْتَنْجِحُ وَبِمُحَمَّدٍ صَلَّی اﷲُ

فضل اور فضیلت تک پہنچا دے خدا کے نام سے نماز کا آغاز اور خدا ہی سے کامیابی کا طالب ہوں محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم

عَلَیْہِ وَآلِہِ ٲَتَوَجَّہُ اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ وَ َاجْعَلْنِی بِھِمْ عِنْدَکَ وَجِیہاً

کے ذریعے توجہ کررہا ہوںاے معبود محمد(ص) و آل(ع) محمد(ص) پر رحمت فرما اور ان کے صدقے میں اپنے ہاں مجھے دنیا اور آخرت

فِی الدُّنْیا وَالاَْخِرَۃِ وَمِنَ الْمُقَرَّبِینَ

میں آبرومند اور مقربین میں قرار دے

﴿نماز ظہر و عصر کے آداب﴾

پس اب نماز ظہر ادا کرنے میں مشغول ہو جائے اور جن باتوں کو نماز فجر میں ملحوظ رکھا تھا ، اس نماز میں بھی ان کا لحاظ رکھے البتہ’’بِسْمِ اﷲِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیمِ‘‘کے علاوہ باقی سب چیزیں آہستہ سے پڑھے۔ بہتر یہ ہے کہ پہلی رکعت میں سورہ حمد کے بعد سورہ قدر اور دوسری رکعت میں سورہ حمد کے بعد سورہ توحید پڑھے، جب دوسری رکعت کا تشہد پڑھ چکے تو صلوات کے بعد کہے :

وَتَقَبَّلْ شَفاعَتَہُ

تو پیغمبر(ص) کی شفاعت قبول فرما اور

وَارْفَعْ دَرَجَتَہُ۔

انہیں بلند درجے دے .

پھر کھڑے ہو کر درج ذیل تسبیحات اربعہ پڑھے:

سُبْحَانَ اﷲِ وَالْحَمْد

اﷲ پاک ہے حمد اﷲ کے لیے ہے

ﷲِ وَلاَ إلہَ إلاَّ اﷲُ

نہیں کوئی معبود سوائے اﷲ کے اور

وَاﷲُ ٲَکْبَرُ

اﷲ بزرگ تر ہے ۔

انہیں تین مرتبہ پڑھے اور اگر قصد قربت سے استغفار کا اضافہ بھی کرے تو بہت ہی بہتر ہے. اس کے بعد رکوع و سجود انہی آداب کیساتھ بجالائے جو ذکر ہو چکے ہیں۔ تیسری رکعت کے بعد چوتھی رکعت بھی اسی کے مطابق پوری کرے اور تشہد و سلام پڑھ کر نماز کو تمام کرے . نماز کے بعد تعقیبات پڑھے اور وہ تین تکبیریں کہے جو تعقیبات میں مذکور ہیں پھر لآ اِلٰہَ الّا اﷲُ اِلہاً واحِداً ..تا آخر پڑھے: بعد میں تسبیح حضرت زہرا(ع) اور تعقیبات مشترکہ جو ذکر ہو چکے ہیں ان میں سے دعائیں پڑھے . اس کے بعد نماز ظہر کی مختص تعقیبات پڑھے اور ظہر کی تعقیبات بہت زیادہ ہیں، ان میں سے بعض کو ہم نے کتاب ہدیہ اور مفاتیح الجنان میں ذکر کیا ہے اور اس مختصر رسالے میں انہیں بیان کرنے کی گنجائش نہیں ہے۔ تعقیبات کے بعد سجدہ شکر بجالاے اور اس کے ساتھ ہی نماز عصر کے لیے تیاری کرے اور سب سے پہلے آٹھ رکعت نماز نافلہ عصر بجالائے اور اس کے بعد فریضہ عصر مذکورہ آداب کے ساتھ ادا کرے . بہتر ہوگا کہ پہلی رکعت میںسورہ حمد کے بعدسورہ نصر یا سورہ تکاثر یا ایسی ہی کوئی سورت پڑھے . دوسری رکعت میں سورہ حمد کے بعد سورہ توحید پڑھے اور پھر نماز ظہر کی طرح عصر کی چار رکعتیں پوری کرے۔ ادائے نماز کے بعد تعقیبات مشترکہ اور نماز عصر کی مختصر تعقیبات بھی پڑھے کہ جن میں ایک یہ بھی ہے کہ ستر مرتبہ استغفار پڑھے دس مرتبہ سورہ قدر پڑھے اور پھر سجدہ شکر بجا لائے جب مسجد سے باہر نکلنا چاہے تو یہ دعا پڑھے:

اَللّٰھُمَّ دَعَوْتَنِی فَٲَجَبْتُ

اے معبود! تو نے مجھے بلایا

دَعْوَتَکَ،وَصَلَّیْتُ

تو میں نے اس پر لبیک کہا

مَکْتُوبَتَک وَانْتَشَرْتُ

میں نے تیری فرض شدہ نماز

فِی ٲَرْضِکَ کَمَا

پڑھی اور زمین پر چلنے

ٲَمَرْتَنِی فَٲَسْٲَلُکَ

پھر نے لگاہوں جیسے تو نے حکم دیا

مِنْ فَضْلِک َالْعَمَلَ

ہے . پس تیرا فضل چاہتا ہوں کہ تیری

بِطَاعَتِکَ وَاجْتِنَابَ

فرمانبرداری میں عمل انجام دوں

مَعْصِیَتِکَ وَالْکَفَافَ

نافرمانی سے پرہیز کروں اور تیری

مِنَ الرِّزْقِ بِرَحْمَتِکَ

رحمت سے اتنا ملے جو کافی ہو.

 

 

فہرست مفاتیح الجنان

فہرست سورہ قرآنی

تعقیبات, دعائیں، مناجات

جمعرات اور جمعہ کے فضائل

جمعرات اور جمعہ کے فضائل
شب جمعہ کے اعمال
روز جمعہ کے اعمال
نماز رسول خدا ﷺ
نماز حضرت امیرالمومنین
نماز حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا
بی بی کی ایک اور نماز
نماز امام حسن
نماز امام حسین
نماز امام زین العابدین
نماز امام محمد باقر
نماز امام جعفر صادق
نماز امام موسیٰ کاظم
نماز امام علی رضا
نماز امام محمد تقی
نماز حضرت امام علی نقی
نماز امام حسن عسکری
نماز حضرت امام زمانہ (عج)
نماز حضرت جعفر طیار
زوال روز جمعہ کے اعمال
عصر روز جمعہ کے اعمال

تعین ایام ہفتہ برائے معصومین

بعض مشہور دعائیں

قرآنی آیات اور دعائیں

مناجات خمسہ عشرہ

ماہ رجب کی فضیلت اور اعمال

ماہ شعبان کی فضیلت واعمال

ماہ رمضان کے فضائل و اعمال

ماہ رمضان کے فضائل و اعمال
(پہلا مطلب)
ماہ رمضان کے مشترکہ اعمال
(پہلی قسم )
اعمال شب و روز ماہ رمضان
(دوسری قسم)
رمضان کی راتوں کے اعمال
دعائے افتتاح
(ادامہ دوسری قسم)
رمضان کی راتوں کے اعمال
(تیسری قسم )
رمضان میں سحری کے اعمال
دعائے ابو حمزہ ثمالی
دعا سحر یا عُدَتِیْ
دعا سحر یا مفزعی عند کربتی
(چوتھی قسم )
اعمال روزانہ ماہ رمضان
(دوسرا مطلب)
ماہ رمضان میں شب و روز کے مخصوص اعمال
اعمال شب اول ماہ رمضان
اعمال روز اول ماہ رمضان
اعمال شب ١٣ و ١٥ رمضان
فضیلت شب ١٧ رمضان
اعمال مشترکہ شب ہای قدر
اعمال مخصوص لیلۃ القدر
اکیسویں رمضان کی رات
رمضان کی ٢٣ ویں رات کی دعائے
رمضان کی ٢٧ویں رات کی دعا
رمضان کی٣٠ویں رات کی دعا

(خاتمہ )

رمضان کی راتوں کی نمازیں
رمضان کے دنوں کی دعائیں

ماہ شوال کے اعمال

ماہ ذیقعدہ کے اعمال

ماہ ذی الحجہ کے اعمال

اعمال ماہ محرم

دیگر ماہ کے اعمال

نوروز اور رومی مہینوں کے اعمال

باب زیارت اور مدینہ کی زیارات

مقدمہ آداب سفر
زیارت آئمہ کے آداب
حرم مطہر آئمہ کا اذن دخول
مدینہ منورہ کی زیارات
کیفیت زیارت رسول خدا ۖ
زیارت رسول خدا ۖ
کیفیت زیارت حضرت فاطمہ سلام اللہ علیہا
زیارت حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا
زیارت رسول خدا ۖ دور سے
وداع رسول خدا ۖ
زیارت معصومین روز جمعہ
صلواة رسول خدا بزبان حضرت علی
زیارت آئمہ بقیع
قصیدہ ازریہ
زیارت ابراہیم بن رسول خدا ۖ
زیارت فاطمہ بنت اسد
زیارت حضرت حمزہ
زیارت شہداء احد
تذکرہ مساجد مدینہ منورہ
زیارت وداع رسول خدا ۖ
وظائف زوار مدینہ

امیرالمومنین کی زیارت

فضیلت زیارت علی ـ
کیفیت زیارت علی
پہلی زیارت مطلقہ
نماز و زیارت آدم و نوح
حرم امیر المومنین میں ہر نماز کے بعد کی دعا
حرم امیر المومنین میں زیارت امام حسین ـ
زیارت امام حسین مسجد حنانہ
دوسری زیارت مطلقہ (امین اللہ)
تیسری زیارت مطلقہ
چوتھی زیارت مطلقہ
پانچویں زیارت مطلقہ
چھٹی زیارت مطلقہ
ساتویں زیارت مطلقہ
مسجد کوفہ میں امام سجاد کی نماز
امام سجاد اور زیارت امیر ـ
ذکر وداع امیرالمؤمنین
زیارات مخصوصہ امیرالمومنین
زیارت امیر ـ روز عید غدیر
دعائے بعد از زیارت امیر
زیارت امیر المومنین ـ یوم ولادت پیغمبر
امیر المومنین ـ نفس پیغمبر
ابیات قصیدہ ازریہ
زیارت امیر المومنین ـ شب و روز مبعث

کوفہ کی مساجد

امام حسین کی زیارت

فضیلت زیارت امام حسین
آداب زیارت امام حسین
اعمال حرم امام حسین
زیارت امام حسین و حضرت عباس
(پہلا مطلب )
زیارات مطلقہ امام حسین
پہلی زیارت مطلقہ
دوسری زیارت مطلقہ
تیسری زیارت مطلقہ
چوتھی زیارت مطلقہ
پانچویں زیارت مطلقہ
چھٹی زیارت مطلقہ
ساتویں زیارت مطلقہ
زیارت وارث کے زائد جملے
کتب حدیث میں نااہلوں کا تصرف
دوسرا مطلب
زیارت حضرت عباس
فضائل حضرت عباس
(تیسرا مطلب )
زیارات مخصوص امام حسین
پہلی زیارت یکم ، ١٥ رجب و ١٥شعبان
دوسری زیارت پندرہ رجب
تیسری زیارت ١٥ شعبان
چوتھی زیارت لیالی قدر
پانچویں زیارت عید الفطر و عید قربان
چھٹی زیارت روز عرفہ
کیفیت زیارت روز عرفہ
فضیلت زیارت یوم عاشورا
ساتویں زیارت یوم عاشورا
زیارت عاشورا کے بعد دعا علقمہ
فوائد زیارت عاشورا
دوسری زیارت عاشورہ (غیر معروفہ )
آٹھویں زیارت یوم اربعین
اوقات زیارت امام حسین
فوائد تربت امام حسین

کاظمین کی زیارت

زیارت امام رضا

سامرہ کی زیارت

زیارات جامعہ

چودہ معصومین پر صلوات

دیگر زیارات

ملحقات اول

ملحقات دوم

باقیات الصالحات

مقدمہ
شب وروز کے اعمال
شب وروز کے اعمال
اعمال مابین طلوعین
آداب بیت الخلاء
آداب وضو اور فضیلت مسواک
مسجد میں جاتے وقت کی دعا
مسجد میں داخل ہوتے وقت کی دعا
آداب نماز
آذان اقامت کے درمیان کی دعا
دعا تکبیرات
نماز بجا لانے کے آداب
فضائل تعقیبات
مشترکہ تعقیبات
فضیلت تسبیح بی بی زہرا
خاک شفاء کی تسبیح
ہر فریضہ نماز کے بعد دعا
دنیا وآخرت کی بھلائی کی دعا
نماز واجبہ کے بعد دعا
طلب بہشت اور ترک دوزخ کی دعا
نماز کے بعد آیات اور سور کی فضیلت
سور حمد، آیة الکرسی، آیة شہادت اورآیة ملک
فضیلت آیة الکرسی بعد از نماز
جو زیادہ اعمال بجا نہ لا سکتا ہو وہ یہ دعا پڑھے
فضیلت تسبیحات اربعہ
حاجت ملنے کی دعا
گناہوں سے معافی کی دعا
ہر نماز کے بعد دعا
قیامت میں رو سفید ہونے کی دعا
بیمار اور تنگدستی کیلئے دعا
ہر نماز کے بعد دعا
پنجگانہ نماز کے بعد دعا
ہر نماز کے بعد سور توحید کی تلاوت
گناہوں سے بخشش کی دعا
ہرنماز کے بعد گناہوں سے بخشش کی دعا
گذشتہ دن کا ضائع ثواب حاصل کرنے کی دعا
لمبی عمر کیلئے دعا
(تعقیبات مختصر)
نماز فجر کی مخصوص تعقیبات
گناہوں سے بخشش کی دعا
شیطان کے چال سے بچانے کی دعا
ناگوار امر سے بچانے والی دعا
بہت زیادہ اہمیت والی دعا
دعائے عافیت
تین مصیبتوں سے بچانے والی دعا
شر شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا
رزق میں برکت کی دعا
قرضوں کی ادائیگی کی دعا
تنگدستی اور بیماری سے دوری کی دعا
خدا سے عہد کی دعا
جہنم کی آگ سے بچنے کی دعا
سجدہ شکر
کیفیت سجدہ شکر
طلوع غروب آفتاب کے درمیان کے اعمال
نماز ظہر وعصر کے آداب
غروب آفتاب سے سونے کے وقت تک
آداب نماز مغرب وعشاء
تعقیبات نماز مغرب وعشاء
سونے کے آداب
نیند سے بیداری اور نماز تہجد کی فضیلت
نماز تہجد کے بعددعائیں اور اذکار

صبح و شام کے اذکار و دعائیں

صبح و شام کے اذکار و دعائیں
طلوع آفتاب سے پہلے
طلوع وغروب آفتاب سے پہلے
شام کے وقت سو مرتبہ اﷲاکبر کہنے کی فضیلت
فضیلت تسبیحات اربعہ صبح شام
صبح شام یا شام کے بعد اس آیة کی فضیلت
ہر صبح شام میں پڑھنے والا ذکر
بیماری اور تنگدستی سے بچنے کیلئے دعا
طلوع وغروب آفتاب کے موقعہ پر دعا
صبح شام کی دعا
صبح شام بہت اہمیت والا ذکر
ہر صبح چار نعمتوں کو یاد کرنا
ستر بلائیں دور ہونے کی دعا
صبح کے وقت کی دعا
صبح صادق کے وقت کی دعا
مصیبتوں سے حفاظت کی دعا
اﷲ کا شکر بجا لانے کی دعا
شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا
دن رات امان میں رہنے کی دعا
صبح شام کو پڑھنی کی دعا
بلاؤں سے محفوظ رہنے کی دعا
اہم حاجات بر لانے کی دعا

دن کی بعض ساعتوں میں دعائیں

پہلی ساعت
دوسری ساعت
تیسری ساعت
چوتھی ساعت
پانچویں ساعت
چھٹی ساعت
ساتویں ساعت
آٹھویں ساعت
نویں ساعت
دسویں ساعت
گیارہویں ساعت
بارہویں ساعت
ہر روز وشب کی دعا
جہنم سے بچانے والی دعا
گذشتہ اور آیندہ نعمتوں کا شکر بجا لانے کی دعا
نیکیوں کی کثرت اور گناہوں سے بخشش کی دعا
ستر قسم کی بلاؤں سے دوری کی دعا
فقر وغربت اور وحشت قبر سے امان کی دعا
اہم حاجات بر لانے والی دعا
خدا کی نعمتوں کا شکر ادا کرنے والی دعا
دعاؤں سے پاکیزگی کی دعا
فقر وفاقہ سے بچانے والی دعا
چار ہزار گناہ کیبرہ معاف ہو جانے کی دعا
کثرت سے نیکیاں ملنے اور شر شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا
نگاہ رحمت الہی حاصل ہونے کی دعا
بہت زیادہ اجر ثواب کی دعا
عبادت اور خلوص نیت
کثرت علم ومال کی دعا
دنیاوی اور آخروی امور خدا کے سپرد کرنے کی دعا
بہشت میں اپنے مقام دیکھنے کی دعا

دیگر مستحبی نمازیں

نماز اعرابی
نماز ہدیہ
نماز وحشت
دوسری نماز وحشت
والدین کیلئے فرزند کی نماز
نماز گرسنہ
نماز حدیث نفس
نماز استخارہ ذات الرقاع
نماز ادا قرض وکفایت از ظلم حاکم
نماز حاجت
نماز حل مہمات
نماز رفع عسرت(پریشانی)
نماز اضافہ رزق
نماز دیگر اضافہ رزق
نماز دیگر اضافہ رزق
نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
نماز استغاثہ
نماز استغاثہ بی بی فاطمہ
نماز حضرت حجت(عج)
دیگر نماز حضرت حجت(عج)
نماز خوف از ظالم
تیزی ذہن اور قوت حافظہ کی نماز
گناہوں سے بخشش کی نماز
نماز دیگر
نماز وصیت
نماز عفو
(ایام ہفتہ کی نمازیں)
ہفتہ کے دن کی نماز
اتوار کے دن کی نماز
پیر کے دن کی نماز
منگل کے دن کی نماز
بدھ کے دن کی نماز
جمعرات کے دن کی نماز
جمعہ کے دن کی نماز

بیماریوں کی دعائیں اور تعویذات

بیماریوں کی دعائیں اور تعویذات
دعائے عافیت
رفع مرض کی دعا
رفع مرض کی ایک اوردعا
سر اور کان درد کا تعویذ
سر درد کا تعویذ
درد شقیقہ کا تعویذ
بہرے پن کا تعویذ
منہ کے درد کا تعویذ
دانتوں کے درد کا تعویذ
دانتوں کے درد کا تعویذ
دانتوں کے درد کا ایک مجرب تعویذ
دانتوں کے درد کا ایک اور تعویذ
درد سینے کا تعویذ
پیٹ درد کا تعویذ
درد قولنج کا تعویذ
پیٹ اور قولنج کے درد کا تعویذ
دھدر کا تعویذ
بدن کے ورم و سوجن کا تعویذ
وضع حمل میں آسانی کا تعویذ
جماع نہ کر سکنے والے کا تعویذ
بخار کا تعویذ
پیچش دور کرنے کی دعا
پیٹ کی ہوا کیلئے دعا
برص کیلئے دعا
بادی وخونی خارش اور پھوڑوں کا تعویذ
شرمگاہ کے درد کی دعا
پاؤں کے درد کا تعویذ
گھٹنے کے درد
پنڈلی کے درد
آنکھ کے درد
نکسیر کا پھوٹن
جادو کے توڑ کا تعویذ
مرگی کا تعویذ
تعویذسنگ باری جنات
جنات کے شر سے بچاؤ
نظر بد کا تعویذ
نظر بد کا ایک اور تعویذ
نظر بد سے بچنے کا تعویذ
جانوروں کا نظر بد سے بچاؤ
شیطانی وسوسے دور کرنے کا تعویذ
چور سے بچنے کا تعویذ
بچھو سے بچنے کا تعویذ
سانپ اور بچھو سے بچنے کا تعویذ
بچھو سے بچنے کا تعویذ

کتاب الکافی سے منتخب دعائیں

سونے اور جاگنے کی دعائیں

گھر سے نکلتے وقت کی دعائیں

نماز سے پہلے اور بعد کی دعائیں

وسعت رزق کیلئے بعض دعائیں

ادائے قرض کیلئے دعائیں

غم ،اندیشہ و خوف کے لیے دعائیں

بیماریوں کیلئے چند دعائیں

چند حرز و تعویذات کا ذکر

دنیا وآخرت کی حاجات کیلئے دعائیں

بعض حرز اور مختصر دعائیں

حاجات طلب کرنے کی مناجاتیں

بعض سورتوں اور آیتوں کے خواص

خواص با سور قرآنی
خواص بعض آیات سورہ بقرہ وآیة الکرسی
خواص سورہ قدر
خواص سورہ اخلاص وکافرون
خواص آیة الکرسی اورتوحید
خواص سورہ توحید
خواص سورہ تکاثر
خواص سورہ حمد
خواص سورہ فلق و ناس اور سو مرتبہ سورہ توحید
خواص بسم اﷲ اور سورہ توحید
آگ میں جلنے اور پانی میں ڈوبنے سے محفوظ رہنے کی دعا
سرکش گھوڑے کے رام کی دعا
درندوں کی سر زمین میں ان سے محفوظ رہنے کی دعا
تلاش گمشدہ کا دستور العمل
غلام کی واپسی کیلئے دعا
چور سے بچنے کیلئے دعا
خواص سورہ زلزال
خواص سورہ ملک
خواص آیہ الا الی اﷲ تصیر الامور
رمضان کی دوسرے عشرے میں اعمال قرآن
خواب میں اولیاء الہی اور رشتے داروں سے ملاقات کا دستور العمل
اپنے اندر سے غمزدہ حالت کو دور کرنے کا دستور العمل
اپنے مدعا کو خواب میں دیکھنے کا دستور العمل
سونے کے وقت کے اعمال
دعا مطالعہ
ادائے قرض کا دستور العمل
تنگی نفس اور کھانسی دور کرنے کا دستور العمل
رفع زردی صورت اور ورم کیلئے دستور العمل
صاحب بلا ومصیبت کو دیکھتے وقت کا ذکر
زوجہ کے حاملہ ہونے کے وقت بیٹے کی تمنا کیلئے عمل
دعا عقیقہ
آداب عقیقہ
دعائے ختنہ
استخارہ قرآن مجید اور تسبیح کا دستور العمل
یہودی عیسائی اور مجوسی کو دیکھتے وقت کی دعا
انیس کلمات دعا جو مصیبتوں سے دور ہونے کا سبب ہیں
بسم اﷲ کو دروزے پر لکھنے کی فضیلت
صبح شام بلا وں سے تحفظ کی دعا
دعائے زمانہ غیبت امام العصر(عج)
سونے سے پہلے کی دعا
پوشیدہ چیز کی حفاظت کیلئے دستور العمل
پتھر توڑنے کا قرآنی عمل
سوتے اور بیداری کے وقت سورہ توحید کی تلاوت خواص
زراعت کی حفاظت کیلئے دستور العمل
عقیق کی انگوٹھی کی فضیلت
نیسان کے دور ہونے جانے کی دعا
نماز میں بہت زیادہ نیسان ہونے کی دعا
قوت حافظہ کی دوا اور دعا
دعاء تمجید اور ثناء پرودرگار

موت کے آداب اور چند دعائیں

ملحقات باقیات الصالحات

ملحقات باقیات الصالحات
دعائے مختصراورمفید
دعائے دوری ہر رنج وخوف
بیماری اور تکلیفوں کو دور کرنے کی دعا
بدن پر نکلنے والے چھالے دور کرنے کی دعا
خنازیر (ہجیروں )کو ختم کرنے کیلئے ورد
کمر درد دور کرنے کیلئے دعا
درد ناف دور کرنے کیلئے دعا
ہر درد دور کرنے کا تعویذ
درد مقعد دور کرنے کا عمل
درد شکم قولنج اور دوسرے دردوں کیلئے دعا
رنج وغم میں گھیرے ہوے شخص کا دستور العمل
دعائے خلاصی قید وزندان
دعائے فرج
نماز وتر کی دعا
دعائے حزین
زیادتی علم وفہم کی دعا
قرب الہی کی دعا
دعاء اسرار قدسیہ
شب زفاف کی نماز اور دعا
دعائے رہبہ (خوف خدا)
دعائے توبہ منقول از امام سجاد