Danishkadah Danishkadah Danishkadah
حضرت امام علی نے فرمایا، جو شخص خدا کی اطاعت کو اپنا سرمایہ بنالیتا ہے، اُسے تجارت کے بغیر ہی ہر طرف سے منافع ملنے لگ جاتا ہے۔ غررالحکم حدیث3443

مفاتیح الجنان و باقیات الصالحات (اردو)

کاظمین کی مشترک زیارت

امام موسٰی کاظم اور امام محمد تقی کی مشترک زیارتیں دو ہیں ان میں سے ایک وہ ہے جو ان دونوں میں سے ہر امام کیلئے علیحدہ پڑھی جاتی ہے چنانچہ شیخ قولویہ قمی نے کامل الزیارات میں امام علی نقی سے روایت کی ہے کہ ان دونوں ائمہ میں سے ہر ایک کی زیارت اس طرح پڑھے:

پہلی زیارت

یہ بہت معتبر زیارت ہے جسے شیخ صدوق(رح)، شیخ کلینی(رح) اور شیخ طوسی(رح) نے بھی معمولی اختلاف کے ساتھ نقل کیا ہے جو اس طرح ہے:

اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا وَلِیَّ اللّهِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا حُجَّۃَ اللّهِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا نُورَ اللّهِ فِی

آپ پر سلام ہو اے ولی خدا آپ پر سلام ہو اے حجت خدا آپ پر سلام ہو اے زمین کی تاریکیوں

ظُلُماتِ الْاََرضِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا مَنْ بَدَا لِلّٰہِ فِی شَٲْنِہِ ٲَتَیْتُکَ زائِراً عارِفاً بِحَقِّکَ

میں خدا کے نور سلام ہوآپ پر اے وہ جن کی شان خدا نے ظاہر فرمائی آپ کی زیارت کو آیا ہوں آپ کے حق سے واقف آپ کے

مُعادِیاً لاََِعْدائِکَ مُوالِیاً لاََِوْلِیائِکَ فَاشْفَعْ لِی عِنْدَ رَبِّکَ یَا مَوْلایَ۔

دشمنوں کا دشمن آپ کے دوستوں کا دوست پس میری شفاعت کریں اپنے رب کے حضور اے میرے آقا۔

دوسری زیارت

یہ وہ زیارت ہے جس کے پڑھنے سے ہر دو ائمہ(ع) کی زیارت ہوجائیگی جیسا کہ شیخ مفید(رح) شہید(رح) اور محمد بن مشہدی نے فرمایا ہے کہ ضریح پاک کے سامنے کھڑے ہوکر ان دونوں بزرگواروں کی زیارت یوں پڑھے:

اَلسَّلَامُ عَلَیْکُما یَا وَلِیَّیِ اللّهِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکُما یَا حُجَّتَیِ اللّهِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکُما یَا نُورَیِ اللّهِ

سلام ہو آپ دونوں پر اے اولیا اﷲ سلام ہو آپ دونوں پر اے حجت خدا سلام ہو آپ دونوں پر کہ آپ زمین کی تاریکیوں میں

فِی ظُلُمَاتِ الْاََرْضِ ٲَشْھَدُ ٲَنَّکُما قَدْ بَلَّغْتُما عَنِ اللّهِ مَا حَمَّلَکُما وَحَفِظْتُما مَا اسْتُودِعْتُما

دو نور ہیں میں گواہی دیتا ہوں کہ آپ دونوں نے خدا کا پیغام پہنچایا جو آپکو ملا آپ نے حفاظت کی اسکی جو آپ کو دیا گیا آپ نے

وَحَلَّلْتُما حَلالَ اللّهِ، وَحَرَّمْتُما حَرامَ اللّهِ، وَٲَقَمْتُما حُدُودَ اللّهِ، وَتَلَوْتُما کِتابَ اللّهِ،

حلال خدا کو حلال بتایا حرام خدا کو حرام کہاآپ دونوں نے حدود خدا جاری کیں آپ دونوں قرآن کی تلاوت کرتے رہے

وَصَبَرْتُما عَلَی الْاََذیٰ فِی جَنْبِ اللّهِ مُحْتَسِبَیْنَ حَتَّی ٲَتَاکُمَا الْیَقِینُ، ٲَبْرَٲُ إلَی اللّهِ مِنْ

اور آپ دونوں نے خدا کی خاطر مصائب اور اذیت پر صبر کیا ہوشمندی سے یہاں تک کہ شہید ہوگئے میں خدا کے سامنے آپ کے

ٲَعْدائِکُما وَٲَتَقَرَّبُ إلَی اللّهِ بِوِلایَتِکُما ٲَتَیْتُکُما زائِراً، عارِفاً بِحَقِّکُما، مُوالِیاً

دشمنوں سے بیزاری کرتا ہوں اور آپ سے محبت کے ذریعے خداکا قرب چاہتاہوں ہوں آپکی زیارت کو آیا ہوں آپکے حق سے

لاََِوْلِیائِکُما، مُعادِیاً لاََِعْدائِکُما، مُسْتَبْصِراً بِالْھُدَیٰ الَّذِی ٲَنْتُما عَلَیْہِ، عارِفاً

واقف آپ دونوں کے دوستوں کا دوست آپ دونوں کے دشمنوں کا دشمن اس ہدایت کو سمجھتاہوں جس پر آپ دونوں قائم ہیں آپ

بِضَلالَۃِ مَنْ خالَفَکُما، فَاشْفَعا لِی عِنْدَ رَبِّکُما، فَ إنَّ لَکُما عِنْدَ اللّهِ جاہاً عَظِیماً،

دونوں کے مخالف کی گمراہی کو جانتا ہوں پس آپ دنوں میری شفاعت کریں اپنے رب سے کہ آپ دونوں کا خدا کے ہاں بڑا مرتبہ

وَمَقاماً مَحْمُوداً۔

اور بہترین مقام ہے۔

اس کے بعد ان قبور مبارکہ پر بوسہ دے۔ اپنا دایاں رخسار ان پر رکھے اور پھر سرہانے کی طرف جائے اور یہ پڑھے:

اَلسَّلَامُ عَلَیْکُما یَا حُجَّتَیِ اللّهِ فِی ٲَرْضِہِ وَسَمائِہِ، عَبْدُکُما وَوَلِیُّکُما زَائِرُکُما مُتَقَرِّباً إلَی

سلام ہو آپ دونوں پر اے حجت خدا اسکی زمین اور آسمان میں آپ دونوں کا غلام آپ کا محب آپ کا زائر جو آپ کی زیارت کے

اللّهِ بِزِیارَتِکُما۔ اَللّٰھُمَّ اجْعَلْ لِی لِسانَ صِدْقٍ فِی ٲَوْلِیائِکَ الْمُصْطَفَیْنَ، وَحَبِّبْ إلَیَّ

ذریعے خدا کا قرب چاہتا ہے اے معبود مجھے اپنے ان دونوں چنے ہوئے ولیوں کے بارے میں سچ کہنے والا بنادے مجھے انکے

مَشاھِدَھُمْ، وَاجْعَلْنِی مَعَھُمْ فِی الدُّنْیا وَالْاَخِرَۃِ یَا ٲَرْحَمَ الرَّاحِمِینَ۔

مزاروں کی محبت عطا فرما اور مجھ کو دنیا وآخرت میں ان کے ساتھ رکھ اے سب سے زیادہ رحم کرنے والے۔

اس کے بعد چار رکعت نماز ادا کرے یعنی دو رکعت امام موسیٰ کاظم کی زیارت کیلئے اور دو رکعت امام محمد تقی کی زیارت کیلئے پڑھے اور پھر خدائے تعالیٰ سے جو دعا چاہے مانگے۔

مؤلف کہتے ہیں : چونکہ ان دو ائمہ(ع) کے زمانے میں تقیہ کی ضرورت بہت زیادہ تھی لہذا انہوں نے اپنے پیروکاروں کو مختصر زیارت تعلیم فرمائی ہے۔ تاکہ شیعہ مؤمنین ظالم حکام کے ظلم سے محفوظ رہیں۔ لیکن آج کل اگر کوئی زائر طویل زیارت پڑھنا چاہے تو وہ زیارت جامعہ پڑھے کہ یہ انکی بہترین زیارت ہے خصوصاً وہ زیارت جو حدیث کی رو سے امام موسیٰ کاظم سے مختص ہے وہ زیارت جامعہ کے باب میں پہلی زیارت کے طور پر نقل کی جائے گی۔

جب زائر ان دو ائمہ(ع) کے شہر سے جانا چاہے تو اسے ان بزرگواروں سے دواع کرنا چاہیے اور جیسا کہ شیخ طوسی(رح) نے تہذیب الاحکام میں فرمایا ہے کہ جب امام موسی کاظم سے وداع کرنا چاہے تو قبر مبارک کے قریب کھڑے ہوکر یوں کہے:

اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا مَوْلایَ یَا ٲَبَا الْحَسَنِ وَرَحْمَۃُ اللّهِ وَبَرَکاتُہُ، ٲَسْتَوْدِعُکَ اللّهَ وَٲَقْرَٲُ

آپ پر سلام ہو اے میرے آقا اے ابو الحسن (ع)خد اکی رحمت ہو اور اسکی برکات ہوں آپ کو حوالہ خدا کرتا ہوں اور آپ کو سلام

عَلَیْکَ السَّلامَ، آمَنَّا بِاللّهِ وَبِالرَّسُولِ وَبِما جِئْتَ بِہِ وَدَلَلْتَ عَلَیْہِ، اَللّٰھُمَّ اکْتُبْنا مَعَ

پیش کرتا ہوں ایمان رکھتا ہوں خدا ورسول (ص) پر اور اس پر جو آپ لائے اور جسکی طرف راہنمائی فرمائی اے معبود ہمیں یہ گواہی دینے

الشَّاھِدِینَ۔امام محمد تقی سے وداع کرتے ہوئے یہ کہے: اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا مَوْلایَ یَابْنَ رَسُولِ

والوں میں لکھ دے آپ پر سلام ہو اے میرے آقا اے رسول(ص) خدا کے فرزند

اﷲ وَرَحْمَۃُ اﷲ وَبَرَکاتُہُ، ٲَسْتَوْدِعُکَ اللّهَ وَٲَقْرَٲُ عَلَیْکَ السَّلامَ، آمَنَّا بِاللّهِ وَبِرَسُولِہِ

اور خدا کی رحمت ہو اور اسکی برکات ہوں میں آپکو حوالہ خدا کرتا ہوں اور آپکو سلام پیش کرتا ہوں ایمان رکھتا ہوں خدا اور اسکے رسول(ص)

وَبِما جِئْتَ بِہِ وَدَلَلْتَ عَلَیْہِ، اَللّٰھُمَّ اکْتُبْنا مَعَ الشَّاھِدِینَ۔

پراور اس پر جو آپ لائے اور اس کی طرف راہنمائی کی ہے اے معبود ہمیں یہ گواہی دینے والوں میں لکھ دے۔

اس کے بعد حق تعالیٰ سے دعامانگے کہ یہ کاظمین میں اس کا آخری وداع نہ ہو اور وہ اسے دوبارہ یہاں آکر زیارت کرنے کی توفیق عطا فرمائے پھر ہر دوائمہ کی قبور پر بوسہ دے اور باری باری اپنے دونوں رخساران سے مس کرے۔

حاجی علی بغدادی کا واقعہ

مؤلف کہتے ہیں: ان زیارتوں کی مناسبت سے یہاں سعید ،صالح،برگزیدہ،اور متقی حاجی علی بغدادی کے واقعہ کا ذکر کردینا مفید ہوگا جیسے میرے استاد مرحوم نے اپنی دو کتابوں جنۃ الماوی ونجم الثاقب میں تحریر فرمایا ہے چنانچہ انہوں نے نجم الثاقب میں لکھا ہے اگر اس کتاب میں دیگر واقعات درج نہ کئے جاتے اور صرف یہی واقعہ مذکور ہوتا جو ھنوز تازہ ہے اورصحیح ہے نیز اس میں بہت سے فوائد بھی ہیں تو اس کتاب کی قدرو قیمت کیلئے اس میں صرف یہی کافی تھا اس تمہید کے بعد فرمایا کہ حاجی علی بغدادی کہ خدا ان کی تائید کرے انہوں نے ذکر کیا ہے کہ میرے ذمے(80) اسی تومان مال امام تھا کہ( جو ایک ایرانی سکہ ہے )میں نجف اشرف گیا اور اسی تو مان میں سے بیس تومان علم الہدی شیخ مرتضی اعلی اﷲ مقامہ کی خدمت میں بیس تو مان شیخ محمد حسین مجتہد کاظمینی اور بیس تومان شیخ محمد حسن شروقی کی خدمت میں پیش کیے اور بقایا بیس تومان جو میرے ذمہ رہ گئے ان کے بارے میں یہ خیال تھا کہ بغداد واپس پہنچ کر یہ رقم شیخ محمد حسن کاظمینی آل (ع) یاسین کی خدمت میں پیش کروں گا اور میری خواہش تھی کہ اس کام میں ہر ممکن عجلت سے کام لوں پھر جمعرات کے روز میں نے امامین کاظمین (ع) کی زیارت کا قصد کیا اور زیارت سے مشرف ہونے کے بعد میں جناب شیخ سلمہ کے پاس گیا اور ان بیس تومان میں سے کچھ ان کی خدمت میں پیش کیے اور جو باقی رہ گئے ان کے بارے میں عرض کی کہ یہ میرے پاس رہنے دیں یہ میں بعض اجناس کی فروخت کے بعد آپ کی ہدایت کے مطابق حقداروں تک پہنچادوں گا۔ ان کے ہاں سے فارغ ہوکر میں نے اسی روز عصر کے وقت بغداد واپس جانے کا ارادہ ظاہر کیا تو شیخ موصوف نے فرمایا کہ آج یہیں قیام کریں! میں نے عرض کی آج جاکر مجھے کارخانے کے مزدوروں کی اجرت ادا کرنا ہے کیونکہ ہمارے ہاں ہفتہ بھر کی مزدوری جمعرات کی عصر کے وقت ادا کی جاتی تھی پس میں وہاں سے چل پڑا اور ابھی میں نے ایک تہائی سفر طے کیا ہوگا کہ میری نظر ایک سید جلیل پر پڑی جو بغداد سے آرہے تھے ۔ جب وہ میرے قریب پہنچے تو سلام کیا اور مصافحہ کے لیے ہاتھ بڑھایا خوش آمدید کہا اور مجھے سینے سے لگا کر معانقہ کیا پھر ہم نے رواج عرب کے مطابق ایک دوسرے کا بوسہ لیا‘ ان کے سرمبارک پر سبز عمامہ تھا اور رخسار پر بڑاسا سیاہ تل تھا انہوں نے فرمایا حاجی علی! آپ کا کیا حال ہے اور آپ کہاں جارہے ہیں؟ میں نے عرض کی کاظمین کی زیارت کرکے واپس بغداد جارہاہوں۔ انہوں نے فرمایا کہ آج شب جمعہ ہے لہذا آپ زیارت کاظمین کے لیے واپس ہوچلیں ‘ میں نے عرض کی کہ میرے سردار میں ایسا نہیں کرسکتا! انہوں نے فرمایا کہ نہیں آپ ایسا کرسکتے ہیں۔ واپس چلیں تاکہ میں گواہ بنوں کہ آپ میرے جد بزرگوارامیر المؤمنین کے موالیوں اور میرے محبوں میں سے ہیں نیز شیخ بھی اس بات کی گواہی دیں کیونکہ حق تعالی نے فرمایا ہے کہ اپنے لیے گواہ وشاہد بناؤ۔ ان کی اس بات میں در اصل ایک اشارہ اس خیال کی طرف تھا کہ جو میرے دل میں تھا اور وہ یہ کہ شیخ مکرم ومحترم سے درخواست کروں کہ وہ مجھے ایک تحریر لکھ دیں جس میں یہ ذکر ہو کہ میں امیر المؤمنین کے محبوں میں سے ہوں اور پھر اس تحریر کو کفن میں اپنے ساتھ رکھوں۔ میں نے کہا کہ آپ کو یہ کیسے معلوم ہوا اور آپ میرے لیے کس طرح کی شہادت دیں گے؟ انہوں نے فرمایا کہ جو شخص کسی کا حق اس تک پہنچاتا ہے تو حق وصول کرنے والے کو اس کے متعلق کیوں علم نہ ہو گا‘ میں نے عرض کیا کہ کونسا حق؟ انہوں نے فرمایا وہ جو آپ نے میرے وکیل کو دیا ہے میں نے کہا آپ کے کونسے وکیل کو؟ انہوں نے فرمایا وہی شیخ محمد حسن میں نے کہا کہ وہ آپ کے وکیل ہیں تو انہوں نے فرمایا ہاں وہ میرے وکیل ہیں اور جناب سید محمد بھی میرے وکیل ہیں میرے دل میں یہ بات آئی کہ ان سید جلیل نے مجھے میرے نام سے پکارا ہے حالانکہ وہ مجھے پہنچاتے نہیں ہیں پھر خیال آیا کہ وہ مجھے جانتے ہوں گے لیکن مجھے اس کی خبر نہ ہوئی ہوگی۔ پھر خیال آیا کہ یہ سید بزرگوار مجھ سے حق سادات میں سے کچھ لینا چاہتے ہیں اور چاہتے ہوں کہ انہیں مال امام میں سے کچھ دوں پس میں نے عرض کی کہ اے بزرگوار! آپ کے حق میں سے میرے پاس کچھ سہم امام موجود ہے اور میں نے آقا شیخ محمد حسن سے اجازت بھی لی ہوئی ہے تو کیا وہ آپ کو دے دوں؟ انہوں نے مسکراتے ہوئے فرمایا کہ آپ نے ہمارے حق میں سے کچھ نجف اشرف میں وکیلوں کو دے دیا ہے۔ میں نے عرض کی کہ جو کچھ میں ادا کرچکا ہوں کیا وہ قبول ہے؟ انہوں نے کہا ہاں قبول ہے‘ میرے دل میں آیا کہ یہ بزرگوار علمائے کرام کو اپنا وکیل بتا رہے ہیں اور یہ بات مجھے کچھ اچھی معلوم نہ ہوئی تب میں نے پوچھا کہ کیا علمائے کرام سہم سادات وصول کرنے میں وکیل ہوسکتے ہیں؟ اس کے بعد مجھ پر غفلت سی طاری ہوگئی اور میں اس سوال کا جواب دریافت نہ کرسکا۔ اس اثنا میں انہوں نے فرمایا کہ میرے جد بزرگوار کی زیارت کے لیے واپس چلے چلیں پس میں زیارت کیلئے ان کے ساتھ واپس پلٹا اور وہ میرا ہاتھ اپنے دائیں ہاتھ میں لے کر چل پڑے میں نے راہ چلتے میں دیکھا کہ ایک نہر ہے جس میں صاف شفاف پانی جاری ہے اور لیموں نارنگی اور انگور کے درخت اور بیلیں موجود ہیں جن کا موسم نہیں ہے میں نے ان سے پوچھا کہ یہ نہر اور دخت کیسے ہیں؟ انہوں نے فرمایا کہ ہمارے محبوں میں سے جو شخص ہمارے جد بزرگوار کی اور ہماری زیارت کے لئے جائے یہ ان کے لیے ہیں۔ اس پر میں نے عرض کی کہ میں کچھ پوچھنا چاہتا ہوں۔ انہوں نے فرمایا کہ ہاں پوچھیں میں نے کہا کہ شیخ عبد الرزاق مرحوم ایک عالم ومدرس تھے ایک دن میں ان کے پاس گیا تو سنا وہ فرمارہے تھے! کہ جو شخص زندگی بھر راتوں کو عبادت کرتا رہے اور دنوں میں روزے رکھے چالیس حج وعمرہ بجالا ئے اور صفاو مروہ کے درمیان فوت ہوجائے لیکن اگر وہ امیرالمؤمنین کے محبوں میں سے نہ ہو تو اسے ان عبادتوں کا کچھ بھی اجر نہیں ملے گا۔ آپ نے فرمایا کہ ہاں قسم بخدا اسے کچھ نہیں ملے گا‘ پھر میں نے اپنے عزیزوں میں سے ایک کے بارے میں پوچھا کہ کیا وہ امیر المؤمنین کے محبوں میں سے ہیں؟ آپ نے فرمایا ہاں اور وہ بھی جو آپ کے متعلقین میں سے ہیں میں نے کہا کہ میرے سردار ایک مسئلہ پوچھتاہوں آپ نے فرمایا پوچھیں تب میں نے عرض کی کہ امام حسین کی روضہ خوانی کرنے والے بیان کرتے ہیں کہ ایک شخص سلیمان اعمش کے پاس آیا اور اس نے امام حسین کی زیارت کے متعلق پوچھا تو اس نے جواب دیا کہ یہ بدعت ہے ۔ اس نے خواب میں زمین وآسمان کے درمیان ایک ہودج ) نور کی عماری )دیکھا تو پوچھا کہ اس میں کون ہے؟ اسے بتایا گیا کہ اس میں بی بی فاطمہ زہرا (س)اور بی بی خدیجۃ الکبری(س) ہیں اس نے پوچھا کہ یہ کہاں جارہی ہیں؟ جواب ملا کہ آج شب جمعہ ہے تو یہ اپنے فرزند امام حسین کی زیارت کرنے جارہی ہیں پھر اس نے دیکھا کہ ہودج (نور کی عماری)میں سے بہت سے کاغذ گر رہے ہیں جن پر تحریر ہے کہ شب جمعہ میں امام حسین کی زیارت کرنے والے کے لیے قیامت کے روز آگ سے امان ہے تو کیا یہ حدیث صحیح ہے؟ انہوں نے فرمایا ہاں یہ بالکل صحیح ہے میں نے عرض کی میرے آقا کیا یہ صحیح ہے کہ جو شخص شب جمعہ میں امام حسین کی زیارت کرے اس کیلئے آگ سے امان ہے انہوں نے فرمایا ہاں قسم بخدا یہ بالکل صحیح ہے میں نے دیکھا کہ اس وقت ان کی آنکھوں سے آنسو جاری ہیں اور وہ گر یہ کر رہے ہیں میں نے کہا مجھے کچھ اور بھی پوچھنا ہے تو انہوں نے فرمایا ہاں پوچھیں میں نے کہا کہ ہم نے 1269ھ میں امام علی رضا کی زیارت کی تو مقام درود پر ایک عرب سے ہماری ملاقات ہوئی جو نجف اشرف کی مشرقی جانب کے دیہاتیوںمیں سے تھا۔ ہم نے اسے اپنا مہمان بنایا اور دوران گفتگو اس سے پوچھا کہ امام علی رضا کا ملک کیسا ہے؟ اسنے کہا کہ یہ توجنت ہے مجھے یہاں رہتے ہوئے آج پندرہ دن ہو رہے ہیں اور میں حضرت کے مہمان خانے سے کھانا کھا رہا ہوں تو منکر نکیر کی کیا جرات ہے کہ وہ میری قبر میں آئیں جب کہ میرا گوشت پوست امام علی رضا کے مہمان خانے کے کھانے سے پرورش پا چکا ہے۔ کیا یہ صحیح ہے کہ امام علی رضا اس کے پاس قبر میں تشریف لا کر اس کو منکر نکیر سے چھڑا لیں گے؟ انہوں نے فرمایا ہاں قسم بخدا کہ میرے جد اس شخص کے ضامن ہیں‘ میں نے کہا ایک چھوٹا سا سوال اور بھی ہے انہوں نے کہا کہ پوچھیں میں نے عرض کی کہ میری وہ زیارت امام علی رضا قبول ہے تو فرمایا کہ قبول ہے انشا اللہ! میں نے کہا اے میرے مولا ایک اور سوال ہے تو فرمایا بسم اللہ پوچھیں‘ میں نے عرض کی کہ حاجی محمد حسین بزاز باشی ولد حاجی احمد بزاز باشی مرحوم جو اس زیارت میں میرے ہمراہی اور ہم خرچ تھے کیا ان کی زیارت قبول ہے یا نہیں انہوں نے فرمایا ہاں اس عبد صالح کی زیارت بھی قبول ہے ۔ میں نے پوچھا کہ بغداد کا فلاں شخص جو ہمارا ہمسفر تھا کیا اس کی زیارت قبول ہے یا نہیں تو وہ خاموش ہو گئے میں نے دوبارہ پوچھا کہ اس کی زیارت قبول ہے یا نہیں تو بھی انہوں نے کچھ جواب نہ دیا‘ حاجی علی بغدادی کا بیان ہے کہ وہ شخص بغداد کے مالدار افراد میں سے ایک تھا جو سفر زیارت میں کھیل تفریح کے کاموں میں مصروف رہتا تھا اور میں نے جس کے بارے میں سوال کیا تھا اس نے اپنی ماں کو قتل بھی کیا ہوا تھا۔ اس کے بعد ہم ایک کھلی سڑک پر پہنچے جس کے دونوں طرف باغات ہیں اور یہ کاظمین کے قریب وہ جگہ ہے جہاں بغداد کے باغات ان باغوں کے ساتھ ملے ہوئے ہیں وہ جگہ ایک یتیم سید کی تھی جس کو حکومت نے سڑک میں شامل کر لیا تھا اور کاظمین کے متقی و پرہیزگار لوگ سڑک کے اس حصے پر نہیں چلتے تھے۔ لیکن میں نے دیکھا کہ وہ بزرگ اس جگہ پر چل رہے تھے میں نے عرض کی کہ اے میرے آقا یہ ایک یتیم سید کی جگہ ہے جسے استعمال کرنا درست نہیں ہے تو انہوں نے فرمایا کہ یہ جگہ میرے جد امیر المومنین کی ان کی اولاد اور ہماری اولاد کی ہے لہذا ہمارے محبوں کے لیے اس کا استعمال حلال ہے۔ اس جگہ کے نزدیک حاجی میرزا ہادی کا ایک باغ تھا جو عجم کے معروف مالداروں میں سے ہیں اور آجکل بغداد میں سکونت پذیر ہیں ‘ میں نے اس باغ کے بارے میں پوچھا کہ مشہور ہے کہ یہ امام موسیٰ کاظم کا ہے کیا یہ درست ہے؟ انہوں نے فرمایا آپ کو اس سے کیا غرض اور اس بارے میں مزید کچھ نہ کہا‘ اتنے میں ہم دجلہ کے اس مقام پر پہنچ گئے جہاں سے باغوں اور کھیتوں کے لیے پانی لیا جاتا ہے۔ وہاں سے دو راستے شہر کاظمین کو جاتے ہیں کہ ایک سلطانی اور دوسرا سادات کے نام سے مشہور ہے‘ انہوں نے سادات کے راستے پر چلنا شروع کیا تو میں نے کہا سلطانی راستے سے چلیں اس پر انہوں نے فرمایا کہ ہم اسی راستے سے جائیں گے‘ تھوڑا سا راستہ ہی چلے تھے کہ ہم صحن مبارک میں جہاں جوتے اتارے جاتے ہیں اس کے پاس پہنچ گئے جب کہ ہم کسی کوچہ و بازار سے نہ گزرے تھے۔ ہم مشرق کی جانب واقع باب المراد سے ایوان مبارک میں داخل ہوئے‘ وہ بزرگ رواق میں نہیں ٹھہرے اور اذن دخول بھی نہیں پڑھا بلکہ سیدھے حرم میں داخل ہوگئے‘ اور مجھ سے فرمایا کہ زیارت پڑھیں میں نے عرض کی کہ میں پڑھا ہوا نہیں تو انہوں نے فرمایا کہ میں آپ کو زیارت پڑھاؤں؟ میں نے کہا ہاں پڑھایئے تب آپ نے فرمایا:

ئَ أَدْخُلُ یَااللّهُ اَلسَّلاَمُ عَلَیْکَ یَا رَسُوْلَ اللّهِ اَلسَّلاَمُ عَلَیْکَ یَا اَمِیْرَالْمُؤْمِنِیْنَ۔

کیا میں داخل ہوجاؤں اے اللہ آپ پر سلام ہو اے خدا کے رسول (ص)آپ پر سلام ہو اے مومنوں کے امیر۔

اسی طرح انہوں نے ائمہ میں سے ہر امام کا نام لے کر انہیں سلام کیا یہاں تک کہ امام حسن عسکری کی نوبت آئی تو فرمایا:

اَلسَّلاَمُ عَلَیْکَ یَا اَبَا مُحَمَّدِ الْحَسَنَ الْعَسْکَرِی۔

آپ پر سلام ہو اے ابو محمد حسن العسکری(ع)۔

پھر مجھ سے کہا کہ آیا آپ اپنے زمانے کے امام کو پہنچاتے ہو؟ میں نے کہا کیوں نہ پہچانوں گا انہوں نے فرمایاامام زمان (عج)کو سلام پیش کریں چنانچہ میں نے کہا:

اَلسَّلاَمُ عَلَیْکَ یَا حُجَّۃَ اللّهِ یَا صَاحِبَ الزَّمَانِ یَا بْنَ الْحَسَنِ

آپ پر سلام ہو اے حجت خدا اے صاحب زمان اے حسن (ع) کے فرزند۔

اس پر وہ بزرگ مسکرائے اور فرمایا:عَلَیْکَ اَلسَّلاَمُ وَرَحْمَۃُ اللّهِ وَبَرَکَاتُہ،

تم پر بھی سلام ہو خدا کی رحمت ہو اور اس کی برکات ہوں۔

اس کے بعد ہم حرم مطہر میں داخل ہوگئے ضریح مقدس کو سینے سے لگایا اور اس پر بوسہ دیا‘ ان بزرگ نے مجھ سے کہا کہ زیارت پڑھیں میں نے کہا میں پڑھا ہوا نہیں ہوں‘ انہوں نے فرمایا کہ میں آپ کو زیارت پڑھاؤں؟ میں نے عرض کی ہاں! انہوں نے فرمایا کہ آپ کونسی زیارت پڑھنا چاہتے ہیں؟ میں نے کہا کہ جو زیارت افضل ہے مجھے وہی پڑھوائیں‘ انہوں نے فرمایا کہ زیارت امین اﷲ افضل ہے اور پھر زیارت پڑھنے میں مشغول ہوگئے اور فرمایا:

اَلسََّلاَمُ عَلَیْکُمَا یَااَمِیْنَیِ اللّهِ فِیْ اَرْضِہٰ وَحُجَّتَیْہ عَلَیٰ عِبَادِہِ ۔۔۔الخ

سلام ہو آپ دونوں پر اے خدا کی زمین میں اس کے امانتدارو اور اس کے بندوں پر اس کی حجت۔

تاآخر زیات امین اﷲ پڑھی اور عین اسی وقت حرم شریف کے چراغ جلادئے گئے میں دیکھ رہا تھا کہ شمعیں روشن ہیں لیکن حرم مطہر کسی اور نور سے جگمگا رہا تھا۔ جو سورج کی روشنی کی مانند تھا کہ جو شمعیں جل رہی تھیں وہ یوں لگتی تھیں جیسے سورج کے سامنے چراغ جلایا گیا ہو‘ لیکن مجھ پر اتنی غفلت چھائی ہوئی تھی کہ میں ان علامات کی طرف متوجہ نہ ہو رہا تھا۔ جب وہ بزرگ زیارت سے فارغ ہوئے تو پائینتی کی جانب مشرق کی سمت کھڑے ہوئے اور فرمایا کہ آپ میرے جد بزرگوار امام حسین کی زیارت کرنا چاہتے ہیں میں نے کہا شب جمعہ ہے لہذا میں حضرت کی زیارت کرنا چاہتا ہوں تب آپ نے زیارت وارث پڑھی اور اس اثنا میں مؤذن مغرب کی اذان دے چکے تھے آپ نے مجھ سے فرمایا کہ جائیں اور جماعت کے ساتھ نماز مغرب ادا کریں‘ وہ اس وقت اس مسجد میں آئے جو روضہ مبارک کے سرہانے کی طرف ہے وہاں جماعت ہورہی تھی اور انہوں نے امام کے دائیں پہلو ہوکر فرادیٰ نماز پڑھی ۔ میں پہلی صف میں جماعت کے ساتھ شامل ہوگیا جب میں نماز سے فارغ ہوا تو ان کو وہاں نہیں دیکھا میں مسجد سے نکلا اور حرم مبارک میں انہیں ڈھونڈنے لگا لیکن انہیں نہ پایا جب کہ میرا خیال تھا ان سے مل کر انہیں کچھ رقم دوں اور رات کو انہیں اپنے پاس ٹھہراؤں تاہم اس وقت میری آنکھوں سے غفلت کا پردہ ہٹا اور میں ان بزرگوار کے سبھی معجزوں کی طرف توجہ کرنے لگا کہ کیسے میں ان کی اطاعت کرتے ہوئے اپنا کام چھوڑ کر بغداد سے واپس آیا‘ ان کا مجھے نام لے کر پکارنااپنے محبوں کی شہادت دینا اس نہر اور درختوں پر بے موسم کے میوؤں کا دیکھاجانا وغیرہ کہ جن کے باعث مجھے یقین ہوگیا کہ وہ میرے امام مہدی(عج) تھے پھر اذن دخول میں امام حسن عسکری کے بعد ان کا مجھ سے پوچھنا کہ اپنے زمانے کے امام کو جانتے ہو؟ اور یہ فرمانا کہ ان کو سلام کرو اور میرے سلام پیش کرنے کے بعد ان کا مسکرانا اور جواب میں وَعَلَیْکَ السَّلاَمُ کہنا وغیرہ تمام علامات میرے امام العصر (عج)ہی کی تھیں میں جوتے رکھنے کی جگہ پر آیا اور ان لوگوں سے پوچھا تو انہوں نے بتایا کہ وہ باہر چلے گئے ہیں اور پوچھا کہ کیا وہ بزرگوار سید آپ کے ہمراہی تھے؟ میں نے کہ ہاں۔ اس کے بعد میں نے وہ شب اپنے سابق میزبان کے ہاں آکر گزاری اور صبح ہوئی تو میں شیخ محمد حسن قبلہ کی خدمت میں پہنچا اور جو واقعات گزرے تھے وہ سب ان کے گوش گزار کیے تو انہوں نے اپنے منہ پر ہاتھ رکھ کر مجھے اس قصہ اور اس راز کو اظہار کرنے سے منع فرمایا اور کہا کہ خدا آپ کو توفیق دے۔ چنانچہ اس واقعہ کے ایک ماہ بعد تک میں نے اس واقعہ سے کسی کو مطلع نہیں کیا تھا لیکن ایک روز جب میں حرم کاظمین میں دوبارہ گیا تو وہاں ایک سید بزرگوار کو دیکھا اور انہوں نے مجھ سے دریافت فرمایا کہ فلاں دن کیا واقعہ ہوا تھا؟ میں نے عرض کی کہ میں نے تو اس روز کوئی چیز نہیں دیکھی تھی‘ انہوں نے پھر پوچھا تو بھی میں نے واضح طور پر انکار کیا تب وہ میری نگاہوں سے اوجھل ہوگئے اور اس کے بعد میں نے انہیں کہیں نہیں دیکھا۔

دوسرا مطلب

مسجد براثا میں جانا اور وہاں نمازپڑھنا

واضح ہو کہ مسجد براثا ایک مشہور اور بابرکت مسجد ہے جو بغداد اور کاظمین کے درمیان زائرین کے راستے میں واقع ہے لیکن اکثر زائرین اس کے فیض وبرکت سے محروم رہ جاتے ہیں حالانکہ اس کے بہت سے فضائل وخصائص نقل ہوئے ہیں 600 ھ کے مورخین میں سے حموی نے معجم البلدان میں لکھا ہے کہ براثا بغداد کا ایک محلہ تھا جوباب محول کے جنوب میں واقع تھااور محلہ کرخ سے قبلہ کی جانب تھا۔ اس میں شیعوں کی ایک مسجد تھی جس میں وہ نما زپنجگانہ ادا کرتے تھے تا ہم بعد میں وہی مسجد غیر آباد ہو گئی عباسی خلیفہ راضی باللہ کے زمانے سے پہلے شیعہ یہاں جمع ہو تے اور تبرا کرتے تھے یہاں تک کہ راضی باللہ کے حکم سے فوجی اس مسجد پر چڑھ دوڑے اور جسے وہاں پایا گرفتار کرلیا اور قید میں ڈال دیا اورمسجد کو گراکر زمین کے برابر کردیا شیعوں نے اس واقعہ سے بغداد کے حاکم حکم ماکانی کو مطلع کیا تو اس نے حکم دیا کہ اس مسجد کو وسیع ومضبوط شکل میں دوبارہ تعمیر کیا جائے چنانچہ مسجد تعمیر ہوگئی اور اس نے اس کے صدر دروازے پر خلفیہ راضی باللہ کا نام نقش کرادیا‘ اس وقت سے لے کر 450ھ تک یہ مسجد آباد رہی اور اس میں نماز با جماعت ادا کی جاتی تھی لیکن 450ھ کے بعدیہ مسجد پھر مسمار وغیر آباد ہوگئی آجکل یہ مسجدعالیشان عمارت کے ساتھ دوبارہ تعمیر ہوچکی ہے شیعہ مسلمانوں نے اسے بطریق احسن آباد کیا ہوا ہے اور بہت سے زائروہاں جاکر اعمال بجالاتے ہیں )

براثا، شہر بغداد کے آباد ہونے سے پہلے ایک گاؤں تھا جس کے بارے میں لوگوں کا گمان ہے کہ خوارج سے جنگ کیلئے نہروان جاتے ہوئے امیر المؤمنین یہاں سے گزرے اور آپ نے اس مسجد میں نماز ادا فرمائی نیز اس آبادی کے حمام میں آپ نے غسل بھی کیا تھا۔ مقام براثا ابو شعیب براثی سے منسوب ہے جو ایک عابد وزاہد شخص تھے اور وہی پہلے شخص ہیں جو براثا میں ایک جھونپڑی ڈال کر یہاں سکونت پذیر ہوئے اور اپنے وقت آخر تک یہاں عبادت کرتے رہے۔ ایک بہت ہی دولت مند شخص کی بیٹی جو عالیشان محلوں میں پلی بڑھی تھی‘ وہ اس جھونپڑی کے پاس سے گزری تو اسے ابو شعیب کی یہ حالت وکیفیت بڑی پسند آئی اور ان کی محبت اس کے دل میں جاگزیں ہوئی کہ وہ ان کی محبت کی اسیر ہوکر ان کے قریب آبیٹھی اور کہنے لگی کہ میں آپ کی خدمت میں رہنا چاہتی ہوں انہوں نے کہا میں تجھے اس شرط پر قبول کرتا ہوں کہ اپنی اس موجودہ شان وشوکت کو ترک کردے پس اس نیک بخت خاتون نے اس بات کو منظور کرتے ہوئے عبادت گزاروں کا لباس اختیار کیا تب ابو شعیب نے اس سے نکاح کرلیا جب وہ خاتون جھونپڑی میں داخل ہوئی تو دیکھا کہ ابو شعیب نے نمی کے اثر سے بچنے کے لیے نیچے ایک چٹائی بچھا رکھی ہے وہ کہنے لگی کہ اگر آپ نے اس چٹائی کو اپنے نیچے سے ہٹا کر باہر نہ پھینکا تو میں آپ کے ساتھ نہیں رہوں گی کیونکہ میں نے آپ ہی کی زبانی سن رکھا ہے کہ زمین کہتی ہے اے آدم کے بیٹے! تو میرے اور اپنے درمیان پردہ وحجاب ڈالتا ہے جب کہ کل کو تو میرے ہی پیٹ میں آنے والا ہے پس ابو شعیب نے وہ چٹائی اٹھا کر باہر پھینک دی اور پھر اپنی وفات تک اس نیک دل خاتون کے ساتھ بسر کرتے رہے جب کہ اس عرصے میں وہ دونوں بہترین طریقے سے خدا کی عبادت کرتے رہے۔ یہاں تک کہ دونوں کی وفات ہو گئی ۔

مؤلف کہتے ہیں: ہم نے ہدیۃ الزائرین میں اس مسجد کے فضائل میں بہت سی روایتیں نقل کی ہیں اور یہ بھی لکھا ہے کہ ان اخبار وروایات سے اس مسجد کی ایسی بہت سی فضیلتیں معلوم ہوتی ہیں کہ اگر کسی مسجد میں یہ فضلیتیں پائی جائیں تو وہ اس لائق ہوجاتی ہے کہ انسان دور دراز کی مسافتیں طے کرکے اس مسجد میں نماز ودعا سے فیض یاب ہو اور یہ مسجد براثا درج ذیل بہت سی فضیلتیں رکھتی ہے۔

(1) خدا کی طرف سے یہ مقرر کیا گیا ہے کہ سوائے پیغمبر اور وصی پیغمبر کے کوئی اور بادشاہ لشکر کے ہمراہ اس سرزمین پر نہیں اترے گا۔

(2)حضرت مریم صدیقہ سلام اللہ علیہا کے گھر کا اس جگہ واقع ہونا۔

(3)یہ حضرت عیسی ٰ کی سرزمین ہے۔

(4)یہ وہی جگہ ہے جہاں بی بی مریم سلام اللہ علیہا کیلئے چشمہ ظاہر ہوا۔

(5)اس چشمے کو امیر المؤمنین کا دوبارہ ظاہر کرنا۔

(6) یہاں ایک بابرکت سفید پتھر کا ہونا جس پر حضرت مریم سلام اللہ علیہا نے حضرت عیسیٰ کو لٹایا تھا۔

(7) اسی پتھر کا امیر المؤمنین کے معجزے سے دوبارہ نکالنا آپ کا اسے قبلہ کی سمت نصب کرنا اور اس کی طرف رخ کرکے نماز پڑھنا۔

(8) امیر المؤمنین اور آپ کے دو فرزند ان امام حسن وامام حسین (ع) کا اس مسجد میں نماز ادا کرنا ۔

(9)اس مقام کی بزرگی وتقدس کے پیش نظر امیر المؤمنین کا یہاں چار دن تک ٹھہرنا۔

(10)پیغمبروں کا یہاں نماز ادا کرنا اور خصوصا حضرت ابراہیم کا اس مسجد میں نماز پڑھنا۔

(11)یہاں ایک پیغمبر کی قبر کا واقع ہونا اور شاید وہ حضرت یوشع کی قبر ہے کیونکہ شیخ مرحوم کا ارشاد ہے کہ آپ کی قبر کاظمین کے باہر براثا کے سامنے ہے۔

(12)اسی مقام پر حضرت امیرالمؤمنین کیلئے سورج پلٹا اس مسجد کی اتنی فضیلتوں اور یہاں خدا کی اتنی نشانیوں کے ظہور اور اس مقام پر امیر المؤمنین سے اس قدر معجزوں کے ظاہرہونے کے باوجودمعلوم نہیں کہ ہزاروں زائرین میں سے کوئی ایک اس مسجد میں جاتا ہو حالانکہ یہ ان کے راستے میں ہے اور وہ آنے جانے میں دو مرتبہ اس مسجد کے پاس سے گزرتے ہیں۔ اگر کوئی زائر اس مسجد سے فیض حاصل کرنے وہاں چلا جائے اور وہاں جاکر دروازہ مسجد کو بند پائے تو دروازہ کھلوانے کیلئے تھوڑی سی رقم خرچ کرنے سے کتراتا ہے اور خود کو بہت سے فیوض وبرکات سے محروم رکھتا ہے لیکن بغداد اور اس میں واقع ظالموں کی بنائی ہوئی عمارتوں کی سیر کرنے اور نجس وناپاک لوگوں سے فضول چیزیں خرید نے کو اپنے سفر زیارت کا حصہ تصور کرتا ہے اور ان کا موں میں بے باکی سے مال خرچ کرتا ہے اللہ ہی نیکیوں کی توفیق دینے والا ہے۔

تیسرا مطلب

نوابِ اربعہ کی زیارت

امام العصر (عج ) کے چار خاص نمائندے و نائب ہیں انہیں نواب اربعہ کہا جاتا ہے اور وہ ابو عمر عثمان بن سعید اسدی‘ ابو جعفر محمد بن عثمان اسدی‘ ابو القاسم حسین بن روح نوبختی اور شیخ ابوالحسن علی بن محمد سمری ہیں۔ زائرین جب تک کاظمین شریفین کے حرم میں رہیں ان پر امام العصر کے ان نواب اربعہ کی زیارت کے لیے بغداد جانا ضروری ہے کیونکہ ان میں سے ہر نائب خاص اگر دور کے شہروں میں سے کسی شہر میں دفن ہوتا تو بھی سفر کی تکالیف اٹھا کر ان کی زیارت سے فیض خاص کرنے کے لیے وہاں جانا چاہئے تھا۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ آئمہ کے خاص صحابہ میں سے کوئی بھی ان کی بزرگی اور مرتبے کو نہیں پہنچ سکتا کیونکہ تقریباستر سال کی مدت تک یہ نیابت و سفارت کے مقام پر فائز رہ کر امام اور مومنین کے درمیان واسطہ بنے رہے اور ان کے ہاتھوں بہت سی کرامات ظاہر ہوئیں یہاں تک کہ بعض علمائے کرام ان نائبین خاص کی عصمت کے بھی قائل ہو گئے ہیں۔ یہ بات مخفی نہ رہے کہ جب یہ بزرگان اپنی دنیاوی زندگی میں امام العصر (عج) اور ان کی رعایا کے دمیان واسطہ و وسیلہ تھے اور ان کے ذریعے لوگوں کے عریضے اور حاجت سرکار کے سامنے پیش ہوتے تھے تو اب موت کے بعد بھی وہ اس اعلیٰ منصب پر فائزہیں اور انہیں وہی مقام حاصل ہے لہذا اب بھی حاجات و مشکلات کے بارے میں مومنوں کے خطوط و عرائض امام الزمان تک پہنچا سکتے ہیں اور یہ چیز اپنے مقام پر مسلم و ثابت ہے۔ المختصر ان کے فضائل اور مناقب بہت زیادہ اور قابل ذکر ہیں لیکن زائرین محترم کو ان کی زیارت کی طرف رغبت دلانے کے لئے اتنی مقدار کافی ہے جس کا ہم نے ذکر کیا ہے ۔

نواب اربعہ کی زیارت کا طریقہ

جیسا کہ شیخ طوسی(رح) نے تہذیب اور سید بن طاؤس(رح) نے مصباح الزائر میں تحریر فرمایا ہے اور انہوں نے نواب اربعہ کی زیارت کے اس طریقے کی نسبت ابوالقاسم حسین بن روح کی طرف دی ہے کہ انہوں نے فرمایا: ان نائبین کی زیارت میں سب سے پہلے رسول اللہ (ص) پر سلام بھیجے اور اسکے بعد امیر المومنین بی بی خدیجہ الکبریٰ ،بی بی فاطمہ زہرا، امام حسن و امام حسین پر اور پھر ہر امام پر سلام بھیجے یہاں تک کہ امام العصر پر سلام بھیجے پھر آپ کے چار نائبین پر سلام بھیجے کہے السلام علیک یا فلان بن فلان اور فلان بن فلاں کی بجائے ہر نائب کا نام اور اسکے والد کا نام لے اور پھر کہے:

السَّلام ُعَلَیْکَ یَا فُلانَ بْنَ فُلانٍ ٲَشْھَدُ ٲَنَّکَ بَابُ الْمَوْلَی، ٲَدَّیْتَ عَنْہُ وَٲَدَّیْتَ إلَیْہِ، مَا

سلام ہو فلان بن فلان میں گواہی دیتا ہوں کہ آپ مولا کا دروازہ ہیں آپ نے ان کا فرمان پہنچایا اور ان تک بات پہنچائی آپ نے

خَالَفْتَہُ وَلاَ خَالَفْتَ عَلَیْہِ، قُمْتَ خاصّاً، وَانْصَرَفْتَ سابِقاً، جِئْتُکَ عارِفاً بِالْحَقِّ الَّذِی

انکی مخالفت نہ کی اور انکے نام پر غلط بات نہ کہی آپ نیابت خاصہ پر قائم ہوئے اور رہبرو رہنما بنے آپکے ہاں آیا ہوں اس حق کو

ٲَنْتَ عَلَیْہِ وَٲَنَّکَ مَا خُنْتَ فِی التَّٲْدِیَۃِ وَالسَّفارَۃِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ مِنْ بابٍ مَا ٲَوْسَعَکَ

پہنچانتے ہوئے جس پر آپ تھے اور بے شک آپ نے کمی نہ کی پیغام رسانی و نمائندگی میں آپ پر سلام ہو اے وسیع و کشادہ باب

وَمِنْ سَفِیرٍ مَا آمَنَکَ، وَمِنْ ثِقَۃٍ مَا ٲَمْکَنَکَ، ٲَشْھَدُ ٲَنَّ اللّهَ اخْتَصَّکَ بِنُورِھِ حَتَّی

اور وہ نمائندے جو امانتدارو بااعتبار ہیں ثابت قدم ہیں میں گواہی دیتا ہوں کہ خدا نے آپ کو خاص نور دیا جس سے

عَایَنْتَ الشَّخْصَ فَٲَدَّیْتَ عَنْہُ وَٲَدَّیْتَ إلَیْہِ۔پھر حضرت رسول(ص) سے امام العصر (عج) تک دوبارہ

آپ نے امام کو دیکھا پس ان کی طرف سے بات پہنچائی اور ان تک غرضیں پہنچائیں

سلام بھیجے اور کہے:جِئْتُکَ مُخْلِصاً بِتَوْحِیدِ اللّهِ، وَمُوالاۃِ ٲَوْلِیَائِہِ، وَالْبَرَائَۃِ مِنْ ٲَعْدَائِہِ وَمِنَ

آپکے ہاں آیا ہوں جب خدا کی توحید پر خالص ایمان ہے اسکے دوستوں سے سچی دوستی ان کے دشمنوں سے بیزاری اور آپ

الَّذِینَ خالَفُوکَ، یَا حُجَّۃَ الْمَوْلیٰ وَبِکَ إلَیْھِمْ تَوَجُّھِی، وَبِھِمْ إلَی اللّهِ تَوَسُّلِی۔

کے مخالفوں سے دوری رکھتا ہوں اے مولا کی حجت میں آپکے ذریعے ان کی طرف مڑا ہوں اور ان کو خدا کے حضور وسیلہ بنایا ہے۔

اس کے بعد دعا مانگے اور جو حاجت بھی رکھتا ہو خدا سے طلب کرے کہ انشا اللہ پوری ہوگی۔

مؤلف کہتے ہیں: بہت ضروری اور مناسب ہے کہ بغداد میں شیخ اجل ثقۃ الاسلام محمد بن یعقوب کلینی(رح) )خدا ان کی قبر کو معطر کرے) کی زیارت بھی کی جائے کہ یہ شیعوں کے وہ عالی مرتبہ محدث ہیں جن کو شیخ اور رئیس الشیعہ کہا جاتا ہے‘ وہ مقام روایت میں بہت معتبر اور پختہ ہیں۔ انہوں نے بیس برس کی طویل محنت کر کے کتب اصول کافی و فروع کافی تالیف کیں جو شیعہ مسلمانوں کے لیے نور بصارت کی حیثیت رکھتی ہیں‘ یقینا ان بزرگوار نے شیعہ افراد اور خاص کر شیعہ علما پر بہت بڑا احسان کیا ہے۔ ہم نے اپنی کتاب ہدیۃ الزائرین میں ان بہت سارے علما کا ذکر کیا ہے جو ائمہ طاہرین کے روضہ ہائے مبارکہ کے جوار میں مدفون ہیں پس جو حضرات ان کے اسمائے گرامی سے واقفیت حاصل کرنا چاہتے ہوں وہ مذکورہ کتاب کا مطالعہ کریں۔

چوتھا مطلب

حضرت سلمان فارسی کی زیارت

جاننا چاہئے کہ جو زائرین کاظمین جائیں انہیں وہاں سے مدائن جا کر خدا کے نیک و صالح بندے جناب سلمان محمدی کی زیارت کرنا چاہئے جو چار ارکان میں سے پہلے اور صاحب عظمت و بزرگی ہیں جن کے حق میں حضرت رسول اللہ (ص)نے فرمایا کہ سلمان(رض) ہم اہل بیت (ع)نبوت میں سے ہیں۔ اور مسلک اہل بیت و نبوت سے وابستہ ہیں آپ کی فضیلت میں نبی اکرم(ص) نے یہ بھی فرمایا سلمان (علم کا) ایک سمندر ہے جو خشک نہ ہو گا اور وہ (علم و ایمان کا) ایک خزانہ ہے جو ختم ہونے والا نہیں ہے یعنی سلمان ہم اہل بیت (ع)میں سے ہیں وہ علم و حکمت بانٹتے اور لوگوں کو دلیل و برہان سے آشنا کرتے ہیں۔ امیر المومنین نے ان کو لقمان حکیم قرار دیا ہے بلکہ امام جعفر صادق نے انہیں لقمان حکیم سے افضل شمار فرمایا اور امام محمد باقر نے ان کو متوسمین یعنی ایمان و جنت کے لیے نشان زدہ افراد میں شامل بتایا ہے‘ روایات سے ظاہر ہوتا ہے کہ حضرت سلمان اسم اعظم کے حامل اور ان بزرگ ہستیوں میں سے تھے جن کے ساتھ فرشتے ہمکلام ہوتے ہیں نیز وہ ایمان کے دس درجوں میں دسویں درجے پر فائز تھے بلکہ انہیں غیب کی باتوں اور موت آنے کے اوقات کو جاننے میں بھی قدرت تھی۔ جناب سلمان نے اسی دنیا میں جنت کے میوے تناول کیے‘ جنت ان کی عاشق اور مشتاق تھی۔ حضرت رسول(ص) ان کو بہت عزیز رکھتے تھے اور آنحضرت(ص) کوجن چار انسانوں سے محبت رکھنے کا حکم ملا تھا جناب سلمان(ص) ان چار میں سے ایک مردتھے‘ قرآن پاک کی بہت سی آیات ان کی تعریف و توصیف میں نازل ہوئیں‘ جبریل(ع) جب بھی حضرت رسول (ص) اللہ کی خدمت میں آتے تو ان سے عرض کرتے کہ سلمان کو خدائے رحمن کا سلام پہنچائیں انہیں موت آنے کے اوقات اور سختیوں کی آمد کا علم عطا فرمائیں۔ بعض راتیں ایسی ہوتیں جن میں آپ حضرت رسول(ص) کے ساتھ خلوت میں رہا کرتے‘ حضرت رسول (ص) اور امیر المومنین نے انہیں ایسے اسرار الٰہی کی تعلیم دی تھی جن کو ان کے علاوہ کوئی سنبھال نہ سکتا تھا‘ وہ اس بلند تر درجے پر پہنچ گئے تھے کہ انکے متعلق امام جعفر صادق نے فرمایا کہ سلمان پاکنے علم اول و آخر حاصل کر لیا ہے اور وہ ایک ایسا سمندر ہے جو کبھی خشک نہ ہو گا اور یہ کہ وہ ہم اہل بیت (ع)میں سے ہے یہاں ہم نے حضرت سلمان کے جو تھوڑے سے فضائل نقل کیے ہیں وہ اہل ایمان کو ان کی زیارت کا شوق دلانے کے لیے کافی ہیں‘ تمام صحابہ کرام میں ان کو ایک خاص امتیاز ملا ہے کہ امیر المومنین ان کے غسل و کفن کے لیے معجزانہ طور پر مدینہ منورہ سے مدائن تشریف لے گئے اوراپنے مبارک ہاتھوں سے انہیں غسل و کفن دیا ان کی نماز جنازہ پڑھائی جب کہ فرشتوں کی ان گنت صفیں آپ کے پیچھے کھڑی تھیں جبکہ اسی شب آپ واپس مدینہ لوٹ آئے ان کی محمد(ص) و آل محمد(ع) کے ساتھ محبت و مودت اور ان کے اقوال و افعال کی سچی پیروی کا ثمرہ دیکھیں کہ حضرت سلمان (رض) کو کتنا بلند و بالا مرتبہ حاصل ہو گیا۔

کیفیت زیارت سلمان فارسی

سید بن طاؤس(رح) نے مصباح الزائر میں حضرت سلمان کی چار زیارتیں نقل کی ہیں ‘ یہاں ہم ان بزگوار کے لیے ان میں سے پہلی زیارت نقل کر رہے ہیں اور ہم نے ہدیہ میں چوتھی زیارت نقل کی ہے جس کو شیخ نے تہذیب میں نقل کیا ہے پس جب اس مقدس صحابی کی زیارت کرنا چاہے تو ان کی قبر شریف کے قریب قبلہ رخ کھڑے ہو کر یہ زیارت پڑھے:

اَلسَّلَامُ عَلَی رَسُولِ اللّهِ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِاللّهِ خَاتَمِ النَّبِیِّینَ، اَلسَّلَامُ عَلَی ٲَمِیرِ الْمُؤْمِنِینَ

سلام ہو خدا کے رسول (ص) حضرت محمد بن عبداللہ پر جو خاتم الانبیا ہیں سلام ہو مومنوں کے امیر پر جو

سَیِّدِ الْوَصِیِّینَ، اَلسَّلَامُ عَلَی الْاََئِمَّۃِ الْمَعْصُومِینَ الرَّاشِدِینَ، اَلسَّلَامُ عَلَی الْمَلائِکَۃِ

اوصیا کے سردار ہیں سلام ہو معصوم اماموں پر جو ہدایت دینے والے ہیں سلام ہو خدا کے مقرب

الْمُقَرَّبِینَ، اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا صَاحِبَ رَسُولِ اللّهِ الْاََمِینِ، اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا وَلِیَّ ٲَمِیرِ

فرشتوں پر سلام ہو آپ پر اے خدا کے امین رسول(ص) کے صحابی و ساتھی آپ پر سلام ہو اے امیر المومنین(ع) کے

الْمُؤْمِنِینَ، اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا مُودَعَ ٲَسْرَارِ السَّادَۃِ الْمَیامِینِ، اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا بَقِیَّۃَ اللّهِ

دوست آپ پر سلام ہوکہ جن کو بابرکت آقاؤں نے صاحب اسرار بنایا سلام ہو آپ پر کہ زمانہ ماضی کے نیکور کاروں میں سے

مِنَ الْبَرَرَۃِ الْمَاضِینَ، اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا ٲَبا عَبْدِاللّهِ وَرَحْمَۃُ اللّهِ وَبَرَکاتُہُ، ٲَشْھَدُ ٲَنَّکَ

خدا کے مخصوص ہیں آپ پر سلام ہو اے ابو عبداﷲ(ع) خدا کی رحمت ہو اور اس کی برکات ہوں میں گواہی دیتا ہوں کہ آپ نے خدا کی

ٲَطَعْتَ اللّهَ کَما ٲَمَرَکَ، وَاتَّبَعْتَ الرَّسُولَ کَمَا نَدَبَکَ، وَتَوَلَّیْتَ خَلِیفَتَہُ کَما ٲَلْزَمَکَ،

اطاعت کی جیسے اس نے حکم فرمایا آپ نے رسول(ص) کی ایسی پیروی کی جیسی چاہیے تھی آپ نے خلیفہ رسول(ص)کی ولایت قبول کی جو لازم تھی

وَدَعَوْتَ إلَی الاھْتِمامِ بِذُرِّیَّتِہِ کَمَا وَقَفَکَ وَعَلِمْتَ الْحَقَّ یَقِیناً وَاعْتَمَدْتَہُ کَمَا ٲَمَرَکَ

آپ نے اولاد رسول (ص) کا مقام بیان کیا جو انہوں نے آپکو بتایا تھا آپ نے حق کویقین کیساتھ سمجھا اور اس پر بھروسہ کیا جیسے آپکو حکم ہوا تھا

وٲَشْھَدُ ٲَنَّکَ بابُ وَصِیِّ الْمُصْطَفیٰ وَطَرِیقُ حُجَّۃِ اللّهِ الْمُرْتَضیٰ وَٲَمِینُ اللّهِ فِیمَا

میں گواہی دیتا ہوں کہ آپ وصی مصطفی سے تعلق کا ذریعہ ہیں خدا کی پسندیدہ حجت تک پہنچنے کا راستہ ہیں اور آپ خدا کے امانتدار ہیں

اسْتُوْدِعْتَ مِنْ عُلُومِ الْاََصْفِیَائِ ٲَشْھَدُ ٲَنَّکَ مِنْ ٲَھْلِ بَیْتِ النَّبِیِّ النُّجَبَائِ الْمُخْتَارِینَ

پاکبازوں کے علوم میں جو آپ کے سپرد ہوئے میں گواہی دیتا ہوں کہ آپ نبی(ص) کے ان اہل بیت میں سے ہیں جو نسل واصل میں بلند اور وصی رسول (ص)کی

لِنُصْرَۃِ الْوَصِیِّ ، ٲَشْھَدُ ٲَنَّکَ صاحِبُ الْعاشِرَۃِ ، وَالْبَراھِینِ وَالدَّلایِلِ الْقاھِرَۃِ،

نصرت کیلئے چنے گئے ہیں میں گواہی دیتا ہوں کہ آپ ایمان کے دس درجوں کے مالک اور اسکی قوی دلیلوں اور ثبوتوں کے حامل ہیں

وَٲَقَمْتَ الصَّلاۃَ ، وَآتَیْتَ الزَّکَاۃَ، وَٲَمَرْتَ بِالْمَعْرُوفِ، وَنَھَیْتَ عَنِ الْمُنْکَرِ وَٲَدَّیْتَ

آپ نے نماز قائم کی اور زکوٰۃ دی آپ نے نیکی کا حکم دیا اور برائی سے منع کیا آپ نے امانت

الْاََمانَۃَ، وَنَصَحْتَ لِلّٰہِ وَلِرَسُولِہِ، وَصَبَرْتَ عَلَی الْاََذیٰ فِی جَنْبِہِ حَتَّی ٲَتَاکَ

ادا کی آپ نے خدا اور اسکے رسول (ص) کیلئے خیر اندیشی کی اور انکی خاطر تکلیفوں پر صبرکرتے رہے یہاں تک کہ آپ کی

الْیَقِینُ لَعَنَ اللّهُ مَنْ جَحَدَکَ حَقَّکَ وَحَطَّ مِنْ قَدْرِکَ لَعَنَ اللّهُ مَنْ آذاکَ

وفات ہو گئی خدا کی لعنت اس پر جس نے آپکے حق کا انکار کیا اور آپکی شان کم تصور کی خدا لعنت کرے اس پر جس نے آپکے دوستوں

فِی مَوالِیکَ لَعَنَ اللّهُ مَنْ ٲَعْنَتَکَ فِی ٲَھْلِ بَیْتِکَ، لَعَنَ اللّهُ مَنْ لامَکَ فِی

کے بارے میں آپ کو ایذا دی خدا لعنت کرے اس پرجس نے آپ کے خاندان کے متعلق آپ کو رنجیدہ کیا خدا لعنت کرے اس پر

سَادَاتِکَ، لَعَنَ اللّهُ عَدُوَّ آلِ مُحَمَّدٍ مِنَ الْجِنِّ وَالْاِنْسِ مِنَ

جس نے آپکے سرداروں کے بارے میں آپکو طعنہ دیا خدالعنت کرے آل (ع) محمد کے دشمن پر جو جنوں اور انسانوں میں سے ہیں اور

الْاََوَّلِینَ وَالْاَخِرِینَ وَضاعَفَ عَلَیْھِمُ الْعَذابَ الْاََلِیمَ۔ صَلَّی اللّهُ عَلَیْکَ یَا ٲَبا عَبْدِاللّهِ،

اولین و آخرین میں سے ہیں اور دگنا کرے ان پر دردناک عذاب کو آپ پر خدا رحمت کرے اے ابو عبداللہ آپ پر

صَلَّی اللّهُ عَلَیْکَ یَا صاحِبَ رَسُولِ اللّهِ وَعَلَیْکَ یَا مَوْلی ٲَمِیرِ الْمُؤْمِنِینَ،

خدا رحمت کرے اے خدا کے رسول(ص) کے ساتھی ان پر خدا رحمت کرے اور انکی آل(ع) پر خدا رحمت کرے اے امیر المومنین(ع) کے دوست

وَصَلَّی اللّهُ عَلَی رُوحِکَ الطَّیِّبَۃِ، وَجَسَدِکَ الطَّاھِرِ، وَٲَلْحَقَنا بِمَنِّہِ

اور آپکی شفاف روح پر خدا رحمت کرے اور آپکے پاکیزہ بدن پر خدا رحمت کرے اور اپنے احسان و کرم سے ہمیں آپ سے ملا دے

وَرَٲْفَتِہِ إذا تَوَفَّانا بِکَ وَبِمَحَلِّ السَّادَۃِ الْمَیامِینِ وَجَمَعَنا مَعَھُمْ بِجِوارِھِمْ فِی جَنَّاتِ

دے جب ہم مریں اور ہمیں برکت والے آقاؤں کے مکان میں پہنچائے ہمیں ان کے ساتھ ان کے قریب نعمتوں والی جنت میں

النَّعِیمِ۔ صَلَّی اللّهُ عَلَیْکَ یَا ٲَبا عَبْدِاللّهِ، وَصَلَّی اللّهُ عَلَی إخْوانِکَ الشِّیعَۃِ الْبَرَرَۃِ مِنَ

ملا دے آپ پر خدا رحمت کرے اے ابو عبداللہ اور آپ کے نیک اطوار شیعہ بھائیوں پر خدا رحمت کرے جو پہلے والے بابرکت

السَّلَفِ الْمَیامِینِ، وَٲَدْخَلَ الرَّوْحَ وَالرِّضْوانَ عَلَی الْخَلَفِ مِنَ الْمُؤْمِنِینَ، وَٲَلْحَقَنا

لوگوں میں سے ہیں اور خدا مسرت و خوشنودی نصیب کرے بعد میں آنے والے مومنوں کو اور ہمیں

وَ إیَّاھُمْ بِمَنْ تَوَلاَّھُ مِنَ الْعِتْرَۃِ الطَّاھِرِینَ وَعَلَیْکَ وَعَلَیْھِمُ اَلسَّلَامُ وَرَحْمَۃُ اللّهِ وَبَرَکاتُہُ۔

اور انہیں ان تک پہنچائے جو پاکیزہ عزت میں اسکے پیارے ہیں پس آپ پر اور ان پر سلام ہو خدا کی رحمت اور اسکی برکات ہوں۔

اس کے بعد سات مرتبہ سورہ قدر پڑھے اور جس قدر چاہے مستحب نمازیں بجا لائے:

مؤلف کہتے ہیں: جب حضرت سلمان کے مزار سے واپس جانا چاہے تو قبر مبارک کے قریب جائے اور وداع کرتے ہوئے وہ دعائے وداع پڑھے جسے سید نے زیارت چہارم کے آخر میں لکھا ہے وہ یہ ہے :

اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا ٲَبا عَبْدِاللّهِ، ٲَنْتَ بابُ اللّهِ الْمُؤْتیٰ مِنْہُ وَالْمَٲْخُوذُ عَنْہُ، ٲَشْھَدُ ٲَنَّکَ

آپ پر سلام ہو اے ابو عبداللہ آپ وہ دروازہ ہیں جس سے خدا دیتا ہے اور وہاں سے لیا جاتاہے میں گواہی دیتا ہوں کہ آپ نے حق

قُلْتَ حَقّاً، وَنَطَقْتَ صِدْقاً، وَدَعَوْتَ إلی مَوْلایَ وَمَوْلاکَ عَلانِیَۃً وَسِرّاً، ٲَتَیْتُکَ زائِراً

بیان کیا آپ نے ہمیشہ سچ بولا اور میرے اور اپنے مولا کیطرف بلاتے رہے ظاہرا و پوشیدہ طور پر میں آیا ہوں آپکی زیارت کرنے

وَحَاجَاتِی لَکَ مُسْتَوْدِعاً، وَھَاٲَنَاذَا مُوَدِّعُکَ، ٲَسْتَوْدِعُکَ دِینِی وَٲَمانَتِی وَخَواتِیمَ

اور اپنی حاجات آپ کے سپرد کرنے کیلئے اب میں آپ سے وداع ہوتا ہوں آپ کے سپرد کیا میں نے اپنا دین اپنی امانت اپنے

عَمَلِی وَجَوَامِعَ ٲَمَلِی إلی مُنْتَہیٰ ٲَجَلِی، وَاَلسَّلَامُ عَلَیْکَ وَرَحْمَۃُاللّهِ وَبَرَکاتُہُ، وَصَلَّی

عمل کا انجام اور اپنی سب آرزوئیں یہاں تک کہ مجھے موت آجائے آپ پر سلام ہوخدا کی رحمت ہو اور اسکی برکات ہوں اور محمد(ص) پر

اللّهُ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ الْاََخْیَارِ۔

اور ان کی نیک آل (ع) پر خدا رحمت فرمائے ۔

اس کے بعد خدا کے حضور بہت دعا کرے اور پھر وہاں سے لوٹ آئے:

امیرالمؤمنین کا ایوان کسریٰ جانا

مؤلف کہتے ہیں: یاد رہے کہ جب زائر مدائن آئے اور حضرت سلمان فارسی کی زیارت کر چکے تو وہاں اسے دو اور کام بھی کرنا چاہیں اور وہ یہ ہیں ایوان کسریٰ میں جانا اور حضرت حذیفہ یمانی  کی زیارت کرنا۔ پس ہر زائر کیلئے ضروری ہے کہ وہ ایوان کسریٰ میں جائے اور وہاں دو رکعت یا اس سے زیادہ نماز ادا کرے کیونکہ اس جگہ امیرالمؤمنین نے نماز پڑھی تھی۔

عمار ساباطی سے روایت ہے کہ امیر المؤمنین مدائن تشریف لائے اور ایوان کسریٰ میں گئے اور دلف بن بحیر آپ کے ہمراہ تھے‘ یہاں آپ نے نماز ادا کی اور دلف بن بحیر سے فرمایا کہ میرے ساتھ چلو اور آپ بھی چل پڑے۔ جب کہ اہلِ ساباط میں سے ایک گروہ آپ کے ساتھ تھا۔ آپ کسریٰ کے محل میں داخل ہوئے اور دلف بن بحیر سے فرماتے جا رہے تھے کہ یہاں کسریٰ کی فلاں چیز اور وہاں فلاں چیز ہوتی تھی‘ دلف کہتے تھے قسم بخدا کہ جو کچھ آپ فرما رہے ہیں وہ درست اور سچ ہے۔ آپ اس گروہ کے ساتھ کسریٰ کے محل میں چلنے پھرنے کے دوران اس کے بارے میں حقائق بیان کرتے جاتے تھے‘ دلف کہتے تھے کہ اے میرے مولا! آپ تو اس محل کی ہر خاص بات کو جانتے ہیں گویا کہ آپ نے اس کی ہر چیز کو اپنے ہاتھ سے رکھا ہے۔

روایت ہے کہ اس وقت آپ مدائن پر نگاہ ڈالتے ہوئے کسریٰ کے برباد شدہ محل اور اس کے آثار کو ملاحظہ فرما رہے تھے ایسے میں آپ کے ساتھیوں میں سے کسی ایک نے عبرت کے لیے یہ شعر پڑھا:

جَرَتِ الرِّیاحُ عَلَیٰ رُسُومِ دِیارِھِمْ

فَکَٲَنَّھُمْ کانُوا عَلیٰ مِیعادِ

ان کے ویران محلوں پر ہوائیں خاک اڑاتی ہیں

اس کا مطلب یہ ہے کہ ان کا وقت مقرر تھا جو گزر گیا۔

حضرت نے اس شخص سے فرمایا کہ یہاں تم یہ آیات کیوں نہیں پڑھتے:

کَمْ تَرَکُوا مِنْ جَنَّاتٍ وَعُیُونٍ وَزُرُوعٍ وَمَقَامٍ کَرِیمٍ وَنَعْمَۃٍ کَانُوا فِیہا فَاکِھِینَ کَذَلِکَ

وہ کتنے ہی باغات چھوڑ گئے چشمے کھیتیاں اور اونچے مرتبے اور وہ نعمتیں جن میں خوش تھے اسی طرح ہم

وَٲَوْرَثْناہا قَوْماً آخَرِینَ فَمَا بَکَتْ عَلَیْھِمُ السَّمائُ وَالْاََرْضُ وَمَا کَانُوا مُنْظَرِین۔اسکے بعد

نے وہ چیزیں بعد والوں کو دے دیں پس ان پر آسمان رویا اور نہ زمین اور نہ ان کو مہلت ملی

آپ نے فرمایا: إنَّ ھَؤُلائِ کانُوا وَارِثِینَ فَٲَصْبَحُوا مَوْرُوثِینَ، لَمْ یَشْکُرُوا النِّعْمَۃَ فَسُلِبُوا

بے شک یہ وارث ہوئے پھروراثت چھوڑ گئے انہوں نے نعمتوں پر شکر نہ کیاان کی دنیا چھن گئی،

دُنْیاھُمْ بِالْمَعْصِیَۃِ، إیَّاکُمْ وَکُفْرَ النِّعَمِ لاَ تَحُلُّ بِکُمُ النِّقَمُ۔

نافرمانی کی وجہ سے اس لیے کہ تم نعمتوں پر ناشکری نہ کرو اور تم پر سختی نہ آئے۔

اس واقعہ کوحکیم خاقانی نے ان اشعار میں بیان فرمایا ہے:

ہان ای دل عبرت بین ازدیدہ نظر کن ہان

ایوان مدائن را آئینہ عبرت دان

پرویز کہ بنہادی برخوان ترہ زرین

زرین ترہ کو برخوان؟ روکم تر کوبر خوان

اے عبرت پکڑنے والے دل! مدائن کے اجڑے محل پر نظر کر اور عبرت کا ذریعہ سمجھ کہ پرویز جو اپنے دستر خوان پر سنہری پارچہ ڈالتا تھا اب اس کا وہ دستر خوان کہاں ہے؟ اس کے حال پر آیہ ’’کَمْ تَرَکُوا‘‘پڑھ کہ وہ مر گیا اور اس کا محل کھنڈر بن چکا ہے۔ دوسری جگہ جہاں زائر کو لازماً جانا چاہیے وہ حضرت حذیفہ یمانی  کا مزار ہے کہ جو رسول اللہ (ص)کے عالی قدر صحابہ میں سے تھے اور وہ امیر المومنین کے خاص رفقا میں سے تھے۔ تمام صحابہ میں جناب حذیفہ کو یہ خصوصیت حاصل تھی کہ انہیں منافقوں کے نام معلوم تھے اور آپ ان کو پہنچانتے تھے اس لیے جب ان میں سے کوئی ایک مرتا تھا تو آپ اس کے جنازے پر نہیں جاتے تھے اور آپ کی دیکھا دیکھی خلیفہ ثانی بھی اس کے جنازے میں شریک نہ ہوتے تھے۔ خلیفہ دوم نے حضرت حذیفہ کو مدائن کا والی مقرر کیا بعد میں انہیں معزول کر کے ان کی جگہ حضرت سلمان فارسی کو والی بنایا اور جب ان کی وفات ہو گئی تو دوبارہ جناب حذیفہ ہی کو والی مدائن مقرر کر دیا۔ امیر المومنین کے ظاہری خلافت پر متمکن ہونے تک آپ اس منصب پر فائز رہے‘ حضرت نے اہل مدائن کو اپنی خلافت سے آگاہ کیا اور حضرت حذیفہ کو اس عہدے پر بحال رکھا‘ جب آپ جنگ جمل کیلئے مدینہ سے روانہ ہوئے تو آپ کے لشکر کی مدائن آمد سے قبل حذیفہ کی وفات ہو گئی اور آپ کواس شہر میں دفن کر دیا گیا۔ ابو حمزہ ثمالی سے روایت ہے کہ جب حضرت حذیفہ کا وقت آخر آیا تو انہوں نے اپنے بیٹے کو اپنے پاس بلایا اور اسے ان اچھی باتوں پر عمل کرنے کی وصیت فرمائی اور کہا: اے فرزند! ہر اس چیز سے اپنی امید قطع کر لے جو دوسروں کے ہاتھ میں ہے کیونکہ اسی میں توانگری و بے نیازی ہے‘ اپنی حاجات کیلئے لوگوں کے پاس نہ جا کہ یہ فقر و محتاجی ہے‘ ہر دن اس طرح بسر کر کہ تیرا آج کا دن گزرے ہوئے دن سے بہتر ہو۔ جب نماز پڑھے تو یہ تصور کر کہ یہ تیری آخری نماز ہے اور کوئی ایسا کام نہ کر جس پر تجھے معافی مانگنا پڑے۔ یہ بھی یاد رہے کہ حضرت سلمان کے حرم کے قریب مدائن کی جامع مسجد ہے جو امام حسن عسکری کی طرف منسوب ہے کہ یہ آپ نے تعمیر کروائی اور اس میں نماز ادا کی تھی پس زائر اس مسجد میں دو رکعت نماز تحیت مسجد بجا لانے کے اجر و ثواب سے محروم نہ رہنے پائے۔

 

 

 

فہرست مفاتیح الجنان

فہرست سورہ قرآنی

تعقیبات, دعائیں، مناجات

جمعرات اور جمعہ کے فضائل

جمعرات اور جمعہ کے فضائل
شب جمعہ کے اعمال
روز جمعہ کے اعمال
نماز رسول خدا ﷺ
نماز حضرت امیرالمومنین
نماز حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا
بی بی کی ایک اور نماز
نماز امام حسن
نماز امام حسین
نماز امام زین العابدین
نماز امام محمد باقر
نماز امام جعفر صادق
نماز امام موسیٰ کاظم
نماز امام علی رضا
نماز امام محمد تقی
نماز حضرت امام علی نقی
نماز امام حسن عسکری
نماز حضرت امام زمانہ (عج)
نماز حضرت جعفر طیار
زوال روز جمعہ کے اعمال
عصر روز جمعہ کے اعمال

تعین ایام ہفتہ برائے معصومین

بعض مشہور دعائیں

قرآنی آیات اور دعائیں

مناجات خمسہ عشرہ

ماہ رجب کی فضیلت اور اعمال

ماہ شعبان کی فضیلت واعمال

ماہ رمضان کے فضائل و اعمال

ماہ رمضان کے فضائل و اعمال
(پہلا مطلب)
ماہ رمضان کے مشترکہ اعمال
(پہلی قسم )
اعمال شب و روز ماہ رمضان
(دوسری قسم)
رمضان کی راتوں کے اعمال
دعائے افتتاح
(ادامہ دوسری قسم)
رمضان کی راتوں کے اعمال
(تیسری قسم )
رمضان میں سحری کے اعمال
دعائے ابو حمزہ ثمالی
دعا سحر یا عُدَتِیْ
دعا سحر یا مفزعی عند کربتی
(چوتھی قسم )
اعمال روزانہ ماہ رمضان
(دوسرا مطلب)
ماہ رمضان میں شب و روز کے مخصوص اعمال
اعمال شب اول ماہ رمضان
اعمال روز اول ماہ رمضان
اعمال شب ١٣ و ١٥ رمضان
فضیلت شب ١٧ رمضان
اعمال مشترکہ شب ہای قدر
اعمال مخصوص لیلۃ القدر
اکیسویں رمضان کی رات
رمضان کی ٢٣ ویں رات کی دعائے
رمضان کی ٢٧ویں رات کی دعا
رمضان کی٣٠ویں رات کی دعا

(خاتمہ )

رمضان کی راتوں کی نمازیں
رمضان کے دنوں کی دعائیں

ماہ شوال کے اعمال

ماہ ذیقعدہ کے اعمال

ماہ ذی الحجہ کے اعمال

اعمال ماہ محرم

دیگر ماہ کے اعمال

نوروز اور رومی مہینوں کے اعمال

باب زیارت اور مدینہ کی زیارات

مقدمہ آداب سفر
زیارت آئمہ کے آداب
حرم مطہر آئمہ کا اذن دخول
مدینہ منورہ کی زیارات
کیفیت زیارت رسول خدا ۖ
زیارت رسول خدا ۖ
کیفیت زیارت حضرت فاطمہ سلام اللہ علیہا
زیارت حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا
زیارت رسول خدا ۖ دور سے
وداع رسول خدا ۖ
زیارت معصومین روز جمعہ
صلواة رسول خدا بزبان حضرت علی
زیارت آئمہ بقیع
قصیدہ ازریہ
زیارت ابراہیم بن رسول خدا ۖ
زیارت فاطمہ بنت اسد
زیارت حضرت حمزہ
زیارت شہداء احد
تذکرہ مساجد مدینہ منورہ
زیارت وداع رسول خدا ۖ
وظائف زوار مدینہ

امیرالمومنین کی زیارت

فضیلت زیارت علی ـ
کیفیت زیارت علی
پہلی زیارت مطلقہ
نماز و زیارت آدم و نوح
حرم امیر المومنین میں ہر نماز کے بعد کی دعا
حرم امیر المومنین میں زیارت امام حسین ـ
زیارت امام حسین مسجد حنانہ
دوسری زیارت مطلقہ (امین اللہ)
تیسری زیارت مطلقہ
چوتھی زیارت مطلقہ
پانچویں زیارت مطلقہ
چھٹی زیارت مطلقہ
ساتویں زیارت مطلقہ
مسجد کوفہ میں امام سجاد کی نماز
امام سجاد اور زیارت امیر ـ
ذکر وداع امیرالمؤمنین
زیارات مخصوصہ امیرالمومنین
زیارت امیر ـ روز عید غدیر
دعائے بعد از زیارت امیر
زیارت امیر المومنین ـ یوم ولادت پیغمبر
امیر المومنین ـ نفس پیغمبر
ابیات قصیدہ ازریہ
زیارت امیر المومنین ـ شب و روز مبعث

کوفہ کی مساجد

امام حسین کی زیارت

فضیلت زیارت امام حسین
آداب زیارت امام حسین
اعمال حرم امام حسین
زیارت امام حسین و حضرت عباس
(پہلا مطلب )
زیارات مطلقہ امام حسین
پہلی زیارت مطلقہ
دوسری زیارت مطلقہ
تیسری زیارت مطلقہ
چوتھی زیارت مطلقہ
پانچویں زیارت مطلقہ
چھٹی زیارت مطلقہ
ساتویں زیارت مطلقہ
زیارت وارث کے زائد جملے
کتب حدیث میں نااہلوں کا تصرف
دوسرا مطلب
زیارت حضرت عباس
فضائل حضرت عباس
(تیسرا مطلب )
زیارات مخصوص امام حسین
پہلی زیارت یکم ، ١٥ رجب و ١٥شعبان
دوسری زیارت پندرہ رجب
تیسری زیارت ١٥ شعبان
چوتھی زیارت لیالی قدر
پانچویں زیارت عید الفطر و عید قربان
چھٹی زیارت روز عرفہ
کیفیت زیارت روز عرفہ
فضیلت زیارت یوم عاشورا
ساتویں زیارت یوم عاشورا
زیارت عاشورا کے بعد دعا علقمہ
فوائد زیارت عاشورا
دوسری زیارت عاشورہ (غیر معروفہ )
آٹھویں زیارت یوم اربعین
اوقات زیارت امام حسین
فوائد تربت امام حسین

کاظمین کی زیارت

زیارت امام رضا

سامرہ کی زیارت

زیارات جامعہ

چودہ معصومین پر صلوات

دیگر زیارات

ملحقات اول

ملحقات دوم

باقیات الصالحات

مقدمہ
شب وروز کے اعمال
شب وروز کے اعمال
اعمال مابین طلوعین
آداب بیت الخلاء
آداب وضو اور فضیلت مسواک
مسجد میں جاتے وقت کی دعا
مسجد میں داخل ہوتے وقت کی دعا
آداب نماز
آذان اقامت کے درمیان کی دعا
دعا تکبیرات
نماز بجا لانے کے آداب
فضائل تعقیبات
مشترکہ تعقیبات
فضیلت تسبیح بی بی زہرا
خاک شفاء کی تسبیح
ہر فریضہ نماز کے بعد دعا
دنیا وآخرت کی بھلائی کی دعا
نماز واجبہ کے بعد دعا
طلب بہشت اور ترک دوزخ کی دعا
نماز کے بعد آیات اور سور کی فضیلت
سور حمد، آیة الکرسی، آیة شہادت اورآیة ملک
فضیلت آیة الکرسی بعد از نماز
جو زیادہ اعمال بجا نہ لا سکتا ہو وہ یہ دعا پڑھے
فضیلت تسبیحات اربعہ
حاجت ملنے کی دعا
گناہوں سے معافی کی دعا
ہر نماز کے بعد دعا
قیامت میں رو سفید ہونے کی دعا
بیمار اور تنگدستی کیلئے دعا
ہر نماز کے بعد دعا
پنجگانہ نماز کے بعد دعا
ہر نماز کے بعد سور توحید کی تلاوت
گناہوں سے بخشش کی دعا
ہرنماز کے بعد گناہوں سے بخشش کی دعا
گذشتہ دن کا ضائع ثواب حاصل کرنے کی دعا
لمبی عمر کیلئے دعا
(تعقیبات مختصر)
نماز فجر کی مخصوص تعقیبات
گناہوں سے بخشش کی دعا
شیطان کے چال سے بچانے کی دعا
ناگوار امر سے بچانے والی دعا
بہت زیادہ اہمیت والی دعا
دعائے عافیت
تین مصیبتوں سے بچانے والی دعا
شر شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا
رزق میں برکت کی دعا
قرضوں کی ادائیگی کی دعا
تنگدستی اور بیماری سے دوری کی دعا
خدا سے عہد کی دعا
جہنم کی آگ سے بچنے کی دعا
سجدہ شکر
کیفیت سجدہ شکر
طلوع غروب آفتاب کے درمیان کے اعمال
نماز ظہر وعصر کے آداب
غروب آفتاب سے سونے کے وقت تک
آداب نماز مغرب وعشاء
تعقیبات نماز مغرب وعشاء
سونے کے آداب
نیند سے بیداری اور نماز تہجد کی فضیلت
نماز تہجد کے بعددعائیں اور اذکار

صبح و شام کے اذکار و دعائیں

صبح و شام کے اذکار و دعائیں
طلوع آفتاب سے پہلے
طلوع وغروب آفتاب سے پہلے
شام کے وقت سو مرتبہ اﷲاکبر کہنے کی فضیلت
فضیلت تسبیحات اربعہ صبح شام
صبح شام یا شام کے بعد اس آیة کی فضیلت
ہر صبح شام میں پڑھنے والا ذکر
بیماری اور تنگدستی سے بچنے کیلئے دعا
طلوع وغروب آفتاب کے موقعہ پر دعا
صبح شام کی دعا
صبح شام بہت اہمیت والا ذکر
ہر صبح چار نعمتوں کو یاد کرنا
ستر بلائیں دور ہونے کی دعا
صبح کے وقت کی دعا
صبح صادق کے وقت کی دعا
مصیبتوں سے حفاظت کی دعا
اﷲ کا شکر بجا لانے کی دعا
شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا
دن رات امان میں رہنے کی دعا
صبح شام کو پڑھنی کی دعا
بلاؤں سے محفوظ رہنے کی دعا
اہم حاجات بر لانے کی دعا

دن کی بعض ساعتوں میں دعائیں

پہلی ساعت
دوسری ساعت
تیسری ساعت
چوتھی ساعت
پانچویں ساعت
چھٹی ساعت
ساتویں ساعت
آٹھویں ساعت
نویں ساعت
دسویں ساعت
گیارہویں ساعت
بارہویں ساعت
ہر روز وشب کی دعا
جہنم سے بچانے والی دعا
گذشتہ اور آیندہ نعمتوں کا شکر بجا لانے کی دعا
نیکیوں کی کثرت اور گناہوں سے بخشش کی دعا
ستر قسم کی بلاؤں سے دوری کی دعا
فقر وغربت اور وحشت قبر سے امان کی دعا
اہم حاجات بر لانے والی دعا
خدا کی نعمتوں کا شکر ادا کرنے والی دعا
دعاؤں سے پاکیزگی کی دعا
فقر وفاقہ سے بچانے والی دعا
چار ہزار گناہ کیبرہ معاف ہو جانے کی دعا
کثرت سے نیکیاں ملنے اور شر شیطان سے محفوظ رہنے کی دعا
نگاہ رحمت الہی حاصل ہونے کی دعا
بہت زیادہ اجر ثواب کی دعا
عبادت اور خلوص نیت
کثرت علم ومال کی دعا
دنیاوی اور آخروی امور خدا کے سپرد کرنے کی دعا
بہشت میں اپنے مقام دیکھنے کی دعا

دیگر مستحبی نمازیں

نماز اعرابی
نماز ہدیہ
نماز وحشت
دوسری نماز وحشت
والدین کیلئے فرزند کی نماز
نماز گرسنہ
نماز حدیث نفس
نماز استخارہ ذات الرقاع
نماز ادا قرض وکفایت از ظلم حاکم
نماز حاجت
نماز حل مہمات
نماز رفع عسرت(پریشانی)
نماز اضافہ رزق
نماز دیگر اضافہ رزق
نماز دیگر اضافہ رزق
نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
دیگر نماز حاجت
نماز استغاثہ
نماز استغاثہ بی بی فاطمہ
نماز حضرت حجت(عج)
دیگر نماز حضرت حجت(عج)
نماز خوف از ظالم
تیزی ذہن اور قوت حافظہ کی نماز
گناہوں سے بخشش کی نماز
نماز دیگر
نماز وصیت
نماز عفو
(ایام ہفتہ کی نمازیں)
ہفتہ کے دن کی نماز
اتوار کے دن کی نماز
پیر کے دن کی نماز
منگل کے دن کی نماز
بدھ کے دن کی نماز
جمعرات کے دن کی نماز
جمعہ کے دن کی نماز

بیماریوں کی دعائیں اور تعویذات

بیماریوں کی دعائیں اور تعویذات
دعائے عافیت
رفع مرض کی دعا
رفع مرض کی ایک اوردعا
سر اور کان درد کا تعویذ
سر درد کا تعویذ
درد شقیقہ کا تعویذ
بہرے پن کا تعویذ
منہ کے درد کا تعویذ
دانتوں کے درد کا تعویذ
دانتوں کے درد کا تعویذ
دانتوں کے درد کا ایک مجرب تعویذ
دانتوں کے درد کا ایک اور تعویذ
درد سینے کا تعویذ
پیٹ درد کا تعویذ
درد قولنج کا تعویذ
پیٹ اور قولنج کے درد کا تعویذ
دھدر کا تعویذ
بدن کے ورم و سوجن کا تعویذ
وضع حمل میں آسانی کا تعویذ
جماع نہ کر سکنے والے کا تعویذ
بخار کا تعویذ
پیچش دور کرنے کی دعا
پیٹ کی ہوا کیلئے دعا
برص کیلئے دعا
بادی وخونی خارش اور پھوڑوں کا تعویذ
شرمگاہ کے درد کی دعا
پاؤں کے درد کا تعویذ
گھٹنے کے درد
پنڈلی کے درد
آنکھ کے درد
نکسیر کا پھوٹن
جادو کے توڑ کا تعویذ
مرگی کا تعویذ
تعویذسنگ باری جنات
جنات کے شر سے بچاؤ
نظر بد کا تعویذ
نظر بد کا ایک اور تعویذ
نظر بد سے بچنے کا تعویذ
جانوروں کا نظر بد سے بچاؤ
شیطانی وسوسے دور کرنے کا تعویذ
چور سے بچنے کا تعویذ
بچھو سے بچنے کا تعویذ
سانپ اور بچھو سے بچنے کا تعویذ
بچھو سے بچنے کا تعویذ

کتاب الکافی سے منتخب دعائیں

سونے اور جاگنے کی دعائیں

گھر سے نکلتے وقت کی دعائیں

نماز سے پہلے اور بعد کی دعائیں

وسعت رزق کیلئے بعض دعائیں

ادائے قرض کیلئے دعائیں

غم ،اندیشہ و خوف کے لیے دعائیں

بیماریوں کیلئے چند دعائیں

چند حرز و تعویذات کا ذکر

دنیا وآخرت کی حاجات کیلئے دعائیں

بعض حرز اور مختصر دعائیں

حاجات طلب کرنے کی مناجاتیں

بعض سورتوں اور آیتوں کے خواص

خواص با سور قرآنی
خواص بعض آیات سورہ بقرہ وآیة الکرسی
خواص سورہ قدر
خواص سورہ اخلاص وکافرون
خواص آیة الکرسی اورتوحید
خواص سورہ توحید
خواص سورہ تکاثر
خواص سورہ حمد
خواص سورہ فلق و ناس اور سو مرتبہ سورہ توحید
خواص بسم اﷲ اور سورہ توحید
آگ میں جلنے اور پانی میں ڈوبنے سے محفوظ رہنے کی دعا
سرکش گھوڑے کے رام کی دعا
درندوں کی سر زمین میں ان سے محفوظ رہنے کی دعا
تلاش گمشدہ کا دستور العمل
غلام کی واپسی کیلئے دعا
چور سے بچنے کیلئے دعا
خواص سورہ زلزال
خواص سورہ ملک
خواص آیہ الا الی اﷲ تصیر الامور
رمضان کی دوسرے عشرے میں اعمال قرآن
خواب میں اولیاء الہی اور رشتے داروں سے ملاقات کا دستور العمل
اپنے اندر سے غمزدہ حالت کو دور کرنے کا دستور العمل
اپنے مدعا کو خواب میں دیکھنے کا دستور العمل
سونے کے وقت کے اعمال
دعا مطالعہ
ادائے قرض کا دستور العمل
تنگی نفس اور کھانسی دور کرنے کا دستور العمل
رفع زردی صورت اور ورم کیلئے دستور العمل
صاحب بلا ومصیبت کو دیکھتے وقت کا ذکر
زوجہ کے حاملہ ہونے کے وقت بیٹے کی تمنا کیلئے عمل
دعا عقیقہ
آداب عقیقہ
دعائے ختنہ
استخارہ قرآن مجید اور تسبیح کا دستور العمل
یہودی عیسائی اور مجوسی کو دیکھتے وقت کی دعا
انیس کلمات دعا جو مصیبتوں سے دور ہونے کا سبب ہیں
بسم اﷲ کو دروزے پر لکھنے کی فضیلت
صبح شام بلا وں سے تحفظ کی دعا
دعائے زمانہ غیبت امام العصر(عج)
سونے سے پہلے کی دعا
پوشیدہ چیز کی حفاظت کیلئے دستور العمل
پتھر توڑنے کا قرآنی عمل
سوتے اور بیداری کے وقت سورہ توحید کی تلاوت خواص
زراعت کی حفاظت کیلئے دستور العمل
عقیق کی انگوٹھی کی فضیلت
نیسان کے دور ہونے جانے کی دعا
نماز میں بہت زیادہ نیسان ہونے کی دعا
قوت حافظہ کی دوا اور دعا
دعاء تمجید اور ثناء پرودرگار

موت کے آداب اور چند دعائیں

ملحقات باقیات الصالحات

ملحقات باقیات الصالحات
دعائے مختصراورمفید
دعائے دوری ہر رنج وخوف
بیماری اور تکلیفوں کو دور کرنے کی دعا
بدن پر نکلنے والے چھالے دور کرنے کی دعا
خنازیر (ہجیروں )کو ختم کرنے کیلئے ورد
کمر درد دور کرنے کیلئے دعا
درد ناف دور کرنے کیلئے دعا
ہر درد دور کرنے کا تعویذ
درد مقعد دور کرنے کا عمل
درد شکم قولنج اور دوسرے دردوں کیلئے دعا
رنج وغم میں گھیرے ہوے شخص کا دستور العمل
دعائے خلاصی قید وزندان
دعائے فرج
نماز وتر کی دعا
دعائے حزین
زیادتی علم وفہم کی دعا
قرب الہی کی دعا
دعاء اسرار قدسیہ
شب زفاف کی نماز اور دعا
دعائے رہبہ (خوف خدا)
دعائے توبہ منقول از امام سجاد