Danishkadah Danishkadah Danishkadah
حضرت امام جعفر صادق نے فرمایا، در حقیقت خد ا کی خاص مہربانیوں کی ابتدا اس کی آزمائشوں کی انتہا پر ہوتی ہے۔ مستدرک الوسائل حدیث2405

نہج البلاغہ خطبات

خطبہ 27: جہاد پر برانگیختہ کرنےکے لیے فرمایا

جہاد جنت کے دروازوں میں سے ایک دروازہ ہے جسے اللہ نے اپنے خاص دوستوں کے لئے کھولا ہے ۔ یہ پرہیز گاری کا لباس اللہ کی محکم زرہ اور مضبوط سپر ہے جو اس سے پہلو بچاتے ہوئے اسے چھوڑ دیتا ہے ۔ خدا اسے ذلت و خواری کا لباس پہنا اور مصیبت و ابتلا کی روا اوڑھا دیتا ہے اور ذلتوں اور خواریوں کے ساتھ ٹھکرا دیا جاتا ہے ۔ اور مدہوشی و غفلت کا پردہ اس کے دل پر چھا جاتا ہے ۔ اور جہاد کو ضائع و بربا د کرنے سے حق اس کے ہاتھ سے لے لیا جاتا ہے ۔ ذلت اسے سہنا پڑتی ہے اور انصاف اس سے روک لیا جاتا ہے ۔ میں نے اس قوم سے لڑنے کے لئے رات بھی اور دن بھی علانیہ بھی اور پوشیدہ بھی تمہیں پکارا اور للکارا، اور تم سے کہا کہ قبل اس سے کہ وہ جنگ کے لئے بڑھیں تم ان پر دھاوا بول دو۔ خدا کی قسم جن افراد قوم پر ان کے گھروں کے حدود کے اندر ہی حملہ ہو جاتا ہے ۔ وہ ذلیل و خوار ہوتے ہیں ۔ لیکن تم نے جہاد کو دوسروں پرٹال دیا اور ایک دوسرے کی مدد سے پہلو بچانے لگے ۔ یہاں تک کہ تم پر غارت گریاں ہوئیں اور تمہارے شہروں پر زبردستی قبضہ کر لیا گیا۔ اسی بنی غامد کے آدمی (سفیان ابنِ عوف) ہی کو دیکھ لو کہ اس کی فوج کے سوار (شہر) انبار کے اندر پہنچ گئے اور حسان ابنِ حسان بکری کو قتل کر دیا اور تمہارے محافظ سواروں کو سرحدوں سے ہٹا دیا اور مجھے تو یہ اطلاعات بھی ملی ہیں کہ اس جماعت کا ایک آدمی مسلمان اور ذمی عورتوں کے گھروں میں گھس جاتا تھا اور اس کے پیروں سے کڑے (ہاتھوں سے کنگن) او گلو بند اور گوشوارے اتار لیتا تھا اور ان کے پاس اس سے حفاظت کا کوئی ذریعہ نظر نہ آتا تھا ۔ سوا اس کے کہ اِنّاَ لِلہِ وَ اِنّاَ اِلَیْہِ رَاجِعُوْن کہتے صبر سے کام لیں یا خوشامدیں رک کے اس سے رحم کی التجا کریں ۔ وہ لدے پھندے ہوئے پلٹ گئے ۔ نہ کسی کے زخم آیا نہ کسی کا خون بہا۔ اب اگر کوئی مسلمان ان سانحات کے بعد رنج و ملال سے مر جائے تو اسے ملامت نہیں کی جا سکتی بلکہ میرے نزدیک ایسا ہی ہونا چاہیئے۔ العجب ثم العجب خدا کی قسم ان لوگوں کا باطل پر ایکا کر لینا اور تمہاری جمعیت کا حق سے منتشر ہو جانا ۔ دل کو مردہ کر دیتا ہے اور رنج و اندوہ بڑھا دیتا ہے ۔ تمہارا بُرا ہو ۔ تم غم و حزن میں مبتلا رہو۔ تم تو تیروں کا از خود نشانہ بنے ہوئے ہو، تمہیں ہلاک و تاراج کیا جا رہا ہے مگر تمہارے قدم حملے کے لئے نہیں اٹھتے ۔ وہ تم سے لڑ بھڑ رہے ہیں اور تم جنگ سے جہ چراتے ہو۔ اللہ کی نافرمانیاں ہو رہی ہیں اور تم راضی ہو رہے ہو۔ اگر گرمیوں میں تمہیں ان کی طرف بڑھنے کے لئے کہتا ہوں تو تم یہ کہتے ہو کہ یہ انتہائی شدت کی گرمی کا زمانہ ہے ۔ اتنی مہلت دیجئے کہ گرمی کا زور ٹوٹ جائے ۔ اور اگر سردیوں میں چلنے کے لئے کہتا ہوں ۔ تو تم یہ کہتے ہو کہ کڑا کے کا جاڑا پڑ رہا ہے ، اتنا ٹھہر جائیے کہ سردی کا موسم گزر جائے ۔ یہ سب سردی اور گرمی سے بچنے کے لئے باتیں ہیں ۔ جب تم سردی اور گرمی سے اس طرح بھاگتے ہو تو پھر خدا کی قسم ! تم تلواروں کو دیکھ کر اس سے کہیں زیادہ بھاگو گے ۔ اسے مردوں کی شکل و صورت والے نامردو! تمہاری عقلیں بچوں کی سی، اور تمہاری حجلہ نشین عورتوں کے مانند ہے ۔ میں تو یہی چاہتا تھا کہ نہ تم کو دیکھتا ، نہ تم سے جان پہچان ہوتی ۔ ایسی شناسائی جو ندامت کا سبب اور رنج واندوہ کا باعث بنی ہے ۔ اللہ تمہیں مارے ، تم نے میرے دل کو پیپ سے بھر دیا ہے ۔ اور میرے سینے کو غیظ و غضب سے چھلکا دیا ہے ۔ تم نے مجھے غم و غزن کے جرعے پَے در پَے پلائے، نافرمانی کر کے میری تدبیر و رائے کو تباہ کر دیا۔ یہاں تک کہ قریش کہنے لگے کہ علی ہے تو مردِ شجاع ۔ لیکن جنگ کے طور طریقوں سے واقف نہیں ۔

اللہ ان کا بھلا کرے ، کیا ان میں سے کوئی ہے جو مجھے سے زیادہ جنگ کی مذادلت رکھنے والا اور میدانِ و نما میں میرے پہلے سے کارِ نمایا کئے ہوئے ہو، میں تو ابھی بیس برس کا بھی نہ تھا کہ حرب و ضرب کے لئے اٹھ کھڑا ہوا۔ اور اب تو ساٹھ سے اوپر ہو گیا ہوں ، لیکن اس کی رائے ہی کیا جس کی بات نہ مانی جائے۔

(۱) جنگِ صفین کے بعد معاویہ نے ہر طرف کشت و خون کابازار گرم کر رکھا تھا اور امیر الموٴمنین کے مقبوضہ شہروں پر جارحانہ اقدامات شروع کر دیئے تھے۔ چنانچہ اس سلسلہ میں ہیت، انبار اور مدائن پر حملہ کرنے کے لئے سفیان ابنِ عوف غامدی کو چھ ہزار کی جمعیت کے ساتھ روانہ کیا۔ وہ پہلے تو ہیت پہنچا ، مگر اسے خالی پا کر انبار کی طرف بڑھ نکلا۔ یہاں امیر الموٴمنین کی طرف سے پانچ سو سپاہیوں کا ایک دستہ حفاظت کے لئے مقرر تھا۔ مگر وہ مُعاویہ کے اس لشکرِ جرار کو دیکھ کر جم نہ سکا۔ صرف سو آدمی اپنے مقام پر جمے رہے اور انہوں نے جہاں تک ممکن تھا، ڈٹ کر مقابلہ بھی کیا۔ مگر دشمن کی فوج نے مل کر ایسا سخت حملہ کیا کہ ان کے بھی قدم اکھڑ گئے اور رئیس لشکر حسان ابن حسان بکری تیس آدمیوں کے ساتھ شہید کر دیئے گئے ۔ جب میدان خالی ہو گیا ، تو دشمنوں نے پوری آزادی کے ساتھ انبار کو لُوٹا اور شہر کو تباہ و برباد کر کے رکھ دیا۔

امیر الموٴمنین کو جب اس حملہ کی اطلاع ملی ، تو آپ منبر پر تشریف لے گئے اور لوگوں کو دشمن کی سرکوبی کے لئے ابھارا ، اور جہاد کی دعوت دی مگر کسی طرف سے صدائے ”لبیک “ بلند نہ ہوئی ، تو آپ پیچ و تاب کھاتے ہوئے منبر سے نیچے اتر آئے، اور اسی عالم میں پیادہ پار چشمن کی طرف چل کھڑے ہوئے ۔ جب لوگوں نے یہ دیکھا ، تو ان کی غیرت و حمیت بھی جوش میں آئی ، اور وہ بھی پیچھے پیچھے ہو لئے ۔ جب وادی ٴ نخیلہ میں پہنچ کر حضرت نے منزل کی ، تو ان لوگوں نے آپ کے گرد گھیرا ڈال لیا، اور با صرار کہنے لگے کہ یا امیر الموٴمنین (ع) آپ پلٹ جائیں ۔ ہم فوجِ دشمن سے نپٹ لینے کے لئے کافی ہیں ۔ جب ان لوگوں کا اصرار حد سے بڑھا، تو آپ پلٹنے کے لئے آمادہ ہو گئے اور سعید ابنِ قیس آٹھ ہزار کی جمعیت کے ساتھ ادھر روانہ ہو گئے ۔ مگر سفیان ابنِ عوف کا لشکر جا چکا تھا اور سعید ابنِ قیس بے لڑے واپس آئے ۔ جب سعید کو فہ پہنچے ، تو ابنِ ابی الحدید کی روایت کی بناء پر حضرت رنج و اندوہ کے عالم میں باب السدّہ پر آکر بیٹھ گئے اور ناسازی و طبیعت کی وجہ سے یہ خطبہ لکھ کر اپنے غلام سعد کو دیا کہ وہ پڑھ کر سنا دے ۔ مگر مبرو نے ابن عائشہ سے یہ روایت کیا ہے کہ حضرت نے یہ خطبہ مقامِ نخیلہ میں ایک بلندی پر کھڑے ہو کر ارشاد فرمایا، اور ابنِ میثم نے اسی قول کو ترجیح دی ہے ۔