Danishkadah Danishkadah Danishkadah
حضرت امام محمد باقر نے فرمایا، حضرت قائم آلِ محمد ؑ کی دو طرح کی غَیبت ہوگی جن میں سے ایک میں (تو)کہا جائے گا کہ وہ (گویا)اس دنیا سے رخصت ہوچکے ہیں اور معلوم نہیں کہ کس وادی میں جاچکے ہیں الغیبۃ للنعمانی باب10 حدیث8

نہج البلاغہ خطبات

ان دونوں (طلحہ و زبیر) میں سے ہر ایک اپنے لیے خلافت کا امیدوار ہے اور اسے اپنی ہی طرف موڑ کر لانا چاہتا ہے۔ نہ اپنے ساتھی کی طرف‘ وہ اللہ کی طرف کسی وسیلہ سے توسل نہیں ڈھونڈھتے اورنہ کوئی ذریعہ لے کر اس کی طرف بڑھنا چاہتے ہیں ۔ وہ دونوں ایک دوسرے کی طرف سے (دلوں میں کینہ) لیے ہوئے ہیں اور جلد ہی اس سلسلے میں بے نقاب ہوجائیں گے۔ خدا کی قسم اگر وہ اپنے ارادوں میں کامیاب ہوجائیں تو ایک ان میں دوسرے کو جان ہی سے مار ڈالے اور ختم کرکے ہی دم لے (دیکھو) باغی گروہ اٹھ کھڑا ہوا ہے (اب) کہاں ہیں اجر و ثواب کے چاہنے والے جب کہ حق کی راہیں مقرر ہوچکی ہیں اور یہ خبر انہیں پہلے سے دی جاچکی ہے۔ ہر گمراہی کیلئے حیلے بہانے ہوا کرتے ہیں اور ہر پیمان شکن (دوسروں ) کو اشتباہ میں ڈالنے کیلئے کوئی نہ کوئی بات بنایا کرتا ہے خدا کی قسم! میں اس شخص کی طرح نہیں ہوں گا جو ماتم کی آواز پر کان دھرے۔ موت کی سنائی دینے والے کی آواز سنے اور رونے والے کے پاس (پرسے کیلئے) بھی جائے اور پھر عبرت حاصل نہ کرے۔

خطبہ 146: طلحہ وزبیر کے متعلق فرمایا