اجتماعی زندگی کے کچھ اصول

١۔”قتال المؤمن کفر و اکل لحمہ معصیة”
١۔ مومن سے جنگ کرنا کفر ہے اور اس کا گوشت کھانا(اس کی غیبت کرنا)معصیت ہے ۔

٢۔ ”حرمة المؤمن میتاً کحرمتہ حیاً”
٢۔ مرجانے والا مومن ویسا ہی محترم ہے جیسا زندگی میں محترم تھا۔

٣۔”کرامة المیت تعجیلہ فی التجھیز”
٣۔ میت کی عظمت میں سے یہ بھی ہے کہ اس کے غسل و کفن اور دفن وغیرہ میں عجلت کی جائے۔

٤۔”المومنون اخوة تتکافأ دماؤھم و یسعیٰ بذمتھم ادناھم و ھم ید علیٰ من سواھم”
٤۔ مومنین آپس میں بھائی بھائی ہیں ۔ان سب کا خون برابر ہے اور اگر ان میں سے چھوٹا بھی امان دیدے تو سب اسے محترم سمجھیں گے اور غیر کے مقابلہ میں وہ ایک ہیں۔

٥۔”الولاء للعتق”
٥۔ولاء اس کے لئے ہے جس نے آزاد کیا ہے ۔

٦۔”الولاء لحمة کلحمة النسب”
٦۔ ولاء ایک قسم کا خونی رشتہ ہے جیسے نسب ہو تا ہے ۔

٧۔”سباب المؤمن فسوق”
٧۔ مومن پر سب و شتم کرنا فسق ہے ۔

٨۔”کل مسکر حرام”
٨۔ ہر نشہ آور چیز حرام ہے ۔

٩۔”ما اسکر کثیرة فالجرعة من حرام”
٩۔ جس چیز کی زیادتی سے نشہ ہوتا ہے اس کا گھونٹ پینا حرام ہے ۔

١٠۔”عذاب القبر من النمیمة و الغیبة و الکذب”
١٠۔ نکتہ چینی، غیبت اور جھوٹ، عذاب قبر کا باعث ہے ۔

١١۔”لا غیبة لفاسق”
١١۔ فاسق کے عیوب کو بیان کرنا غیبت نہیں ہے ۔

١٢۔”حرم لباس الذھب علیٰ ذکور امتی و حل لاناثھم”
١٢۔ میری امت کے مردوں پرسونے کا لباس حرام ہے اور ان کی عورتوں کے لئے حلال ہے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منارۂ ہدایت،جلد ١ (سیرت رسول خداۖ)
سیدمنذر حکیم اور عدی غریباوی
(گروہ تالیف مجمع جہانی اہل بیتؑ )