ur

افکار اسلامی

مسلما ن جوانوں کی ذمہ داری، امامِ خمینیؒ کی نظر میں

’’تم مسلما ن جوانوں کی ذمہ داری ہے کہ سیاسی،اقتصادی،اجتماعی جیسے شعبوں میں حقا ئق اسلام کی تحقیق کو مد نظر رکھتے ہوئے،اس امتیاز کو فراموش نہ کرو ،جس کی وجہ سے اسلام دوسرے تمام مکاتب فکرپر بالا دستی رکھتا ہے۔ہمارے جوانوں کو جاننا چاہئے کہ،جس شخص میں معنویت اور توحید پر عقیدہ نہ ہو ،اس کے لئے ممکن نہیں ...

مزید پڑھیں »

اخلاق، بعثت کا ایک اہم پیغام

:رہبر معظم سید علی خامنہ ای فرماتے ہیں ہمیں چاہیے کہ اپنی اصلاح کریں ، اپنے اخلاق کی اصلاح کریں ، خود کو باطنی لحاظ سے خدا سے قریب کریں ، ایک فرد کی حیثیت سے شخصی اور ذاتی اصلاح کریں ، خدا وند کریم کی آیات کا مشاہدہ کریں اور قرب خداوند حاصل کریں ۔ یہ ہماری ذمہ داری ...

مزید پڑھیں »

(رہبر عالمِ اسلام سید علی خامنہ ای (مدظلہ العالی

اقبال وہ درخشاں ستارہ جس کی یاد ،جس کا شعر ،جس کی نصیحت اور سبق گٹھن کے تاریک ترین ایام میں ایک روشن مستقبل کو ہماری نگاہوں کے سامنے مجسم کررہا تھا،آج خوش قسمتی سے ایک مشعل فروزاں کی طرح ہماری قوم کی توجہ کو اپنی طرف مبذول کیے ہوئے ہے۔ رہبر عالمِ اسلام سید علی خامنہ ای(مدظلہ العالی)

مزید پڑھیں »

حیات طیبہ اور اسلام : رہبر عالم اسلام سید علی خامنہ ای

حیات طیبہ اور اسلام آپ جس وقت عبادت خدا انجام دیتے ہیں ، نماز پڑھتے ہیں ، کسی غریب کی مدد کرتے ہیں یا کوئی دوسرا نیک عمل انجام دیتے ہیں تو آپ کو اندرونی لذت حاصل ہوتی ہے۔ یقینا آپ نے اس روحانی لذت کا احساس کیا ہو گا۔ یہ احساس کسی مادی فعل کی انجام دہی کے ذریعہ ...

مزید پڑھیں »

آج کے دانشوروں کا فرض :ڈاکٹر علی شیرییتی

آج کے دانشوروں کا یہ فرض ہے کہ وہ اسلام کو ایسے مکتب فکر کی حیثیت سے سمجھیں جو انسانیت کے لیے زندگی بخش ہے یعنی افراد کے لیے بھی اور معاشرے کے لیے بھی اسلام کا مشن انسانیت کے مستقبل کی راہ کو روشن کرنا ہے۔ ڈاکٹر علی شیرییتی

مزید پڑھیں »

تین عادتیں کمال ایمان؛ ترجمہ و تشریح ۔رہبر معظم سید علی خامنہ ای رسول کریم ﷺ نے فرمایا جس شخص میں یہ تین عادتیں ہوں اس میں ایمانی صفات کامل ہو جائیں گی: جب کسی چیز سے راضی و خوشنود ہو تو یہ خوشی اور پسندیدگی اسے باطل کی حدود میں داخل نہ کر دے جب غصہ آئے تو وہ دائرہ حق سے خارج نہ ہو جائے جب قوت و طاقت حاصل ہو تو جو چیز اس کی نہیںہے اس کی طرف دست درازی نہ کرے۔ شرح: روایت کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ایمان انہی تین عادتوں تک محدود ہے بلکہ مراد یہ ہے کہ جس شخص کے یہاں یہ تینوں صفتیں ہوں اس کے یہاں گویا ایمان کی سبھی صفات جمع ہیں۔ کیونکہ ان میں سے ہر ایک صفت، نیک صفات کا گلدستہ ہے اور ایک صفت پیدا ہونے سے صفات حسنہ کے بہت سے پھول کھل جاتے ہیں۔ کسی کی خوشنودی اور محبت اس کو باطل کی طرف نہ کھینچ لے جائے کہ وہ اس کا دفاع کرنے لگے یا اسی طرح کسی سے غصہ و ناراضگی ہے جو غلط روئی کا باعث بنتی ہے۔ جب قوت و اقتدار مل جائے تو انسان ایسا کوئی کام نہ کرے جو اس کو نہیں کرنا چاہئے۔ (تحف العقول، صفحہ 43)

مزید پڑھیں »

شہید مرتضیٰ مطہریؒ قرآن کریم میں میاں بیوی کے باہمی تعلق کو محبت اور مودّت سےتعبیر کیا گیا ہے۔اور یہ ایک انتہائی عالی نکتہ ہے جو جو ازدواجی زندگی میں حیوانی سطح سے بلند انسانی پہلو کی طرف اشارہ کرتاہے۔ نیز اس بات کی طرف بھی اشارہ ہے کہ ازدواجی زندگی کےلیے صرف شہوت کا عامل ہی طبیعی رابطہ نہیں ہے ، بلکہ اصل رابطہ خلوص و صفا اور دو روحو ں کا باہمی اتحاد ہے،باالفاظ دیگر میاں بیوی کویگانگت کے رشتےمیں منسلک کرنے والی چیز محبت،مودّت و خلوص و صفا ہے، نہ کہ شہوت جو کہ حیوانوں میں بھی پائی جاتی ہے۔

مزید پڑھیں »